آتش خواجہ حیدر علی آتؔش ::::: خُدا کرے نہ تمھیں میرے حال سے واقف ::::: Khwaja Haidar Ali Aatish

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 7, 2019

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,620
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    غزل
    خواجہ حیدر علی آتشؔ

    خُدا کرے نہ تمھیں میرے حال سے واقف
    نہ ہو مزاجِ مبارک ملال سے واقف

    نہیں جو روز شب وماہ وسال سے واقف
    وہی ہے خُوب زمانےکے حال سے واقف

    زباں سے کِس کی مہِ چاردہ نہیں سُنتے!
    زمانہ ہے تِرے فضل و کمال سے واقف

    دُعائے خیر ، یہی ہے مری حَسِینوں کو
    نہ ہو کمال تمھارا زوال سے واقف

    فسانہ طُورِ تجلّی کا سُن کے، کان کُھلے!
    نہ تھے کرشمۂ حُسن و جمال سے واقف

    فنا کے بعد کُھلا دِل کو عِشق کا پردہ
    تمام ہو کے ہُوئے ہم کمال سے واقف

    ازل سے محرمِ رازِ پَری ہُوں مَیں مجنُوں
    میرے فرشتے نہیں میرے حال سے واقف

    نہ چند روزِ جُدائی بھی مُنقَضی ہوں گے
    کہاں فراق، ہُوئے جب وصال سے واقف

    رقیب مبتذل اُس گُل عذار کے ہوں
    یہ خار و خس نہیں آتشؔ کے حال سے واقف

    خواجہ حیدر علی آتشؔ

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر