خلق میں ایک ہی تو نام نہیں

عاطف ملک نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 29, 2019

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,241
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    ایک کاوش استادِ محترم اور احباب کے ذوق کی نذر:

    خلق میں ایک ہی تو نام نہیں
    شاعری اس ہی پر تمام نہیں

    اب وہ پہلے سے صبح و شام نہیں
    اس کی گلیوں میں اب قیام نہیں

    آج ہم ہو گئے خفا اس سے
    یہ بھی چاہت کا تو مقام نہیں

    کیوں کریں یاد ہر گھڑی اس کو
    کیا ہمیں اور کوئی کام نہیں

    دل کے بدلے میں دل ملے بھی تو کیوں
    چاہتیں "بارٹر" نظام نہیں

    میں اسی کا ہوں سر سے پاؤں تلک
    اس میں ہرگز کوئی کلام نہیں

    جاں چھڑکتے تھے جن پہ آپ کبھی
    آج اُن سے دعا سلام نہیں

    عمر بھر ایک ہی سے ہو کے رہے
    عشق کو ایسا بھی دوام نہیں

    فرقتیں گر نہ ہوں مقدر میں
    عاشقی مشغلہ ہے کام نہیں

    منحصر اس کے ذوق پر بھی ہے
    شعر عاطفؔ تمہارا خام نہیں

    عاطفؔ ملک
    نومبر ۲۰۱۹
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 30, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    996
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    چاہتیں بارٹر نظام نہیں :)
    آہ کیا یاد دلا دیا ۔۔۔ انگریزی الفاظ کے استعمال پر سرور راز صاحب سے بہت ڈانٹ کھائی ہے :)

    "میں اسی کا ہوں سر سے پاؤں تک"
    یہ مصرعہ بحر سے خارج معلوم ہو رہا ہے. ممکن ہے کتابت کی غلطی ہو کیونکہ تک کو تلک کرنے سے نقص دور ہوجاتا ہے. واللہ اعلم

    "کیوں کریں یاد ہر گھڑی اس کو"
    اچھا ہے!

    "آج ہم ہوگئے خفا اس سے"
    دوسرا مصرعہ کچھ کمزور ہے اور مزید توجہ کا متقاضی ہے.

    باقی کوئی دوست رہنمائی کر سکتا ہے کہ یہ تمغے دینے کا آپشن کہاں میسر ہے؟ مجھے ڈیسک ٹاپ اور موبائل دونوں میں نہیں مل پا رہا. شکریہ

    دعاگو
    راحل
     
  3. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,241
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    :)
    پاؤں بر وزن فعلن باندھا ہے۔۔۔۔۔۔شاید اس وجہ سے ایسا لگ رہا ہے۔
    ممنون ہوں
    دیکھتا ہوں اگر کچھ بہتر صورت ہو سکے تو:)
    غالباً تمغے دینے کیلیے کم از کم پچاس مراسلوں کا حامل ہونا لازم ہے :)
    تب تک اپنے تیر کمان سنبھال کر رکھیے :p
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,229
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اچھی غزل ہے ماشاء اللہ
    راحل نے پاؤں کی طرف اچھی توجہ دلائی ہے۔ پاؤں بمعنی پیر کا رواں تلفظ فعل ہوتا ہے فاعلن نہیں۔ جب کہ پانا مصدر سے پاؤں کا بہتر تلفظ بر وزن فعلن ہے۔ یہاں پاؤں تلک کر دینے سے روانی بہتر ہی لگتی ہے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    325
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
  6. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,369
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    واہ! بہت خوب! اچھے اشعار ہیں عاطف!
    غزل کے اوصاف میں سے ایک یہ بھی ہے کہ مطلع جہاں تک ہوسکے صاف ، اسقام سے پاک بلکہ زوردار ہونا چاہئے ۔ ورنہ غزل قاری کی توجہ اپنی طرف کھینچنے میں ناکام رہتی ہے ۔ مطلع کے مصرع اولیٰ میں خلق اور نام کی رعایت کمزور اور عجیب سی ہے ۔ خلق کی رعایت سے تو شخص یا آدمی یا فرد کا ذکر آنا چاہئے ۔وغیرہ وغیرہ۔ دوسرے مصرع میں اُس ہی پر کے بجائے اُسی پر فصیح ہوگا ۔ یہ میری مختصر اور ناقص سی رائے ہے ۔ گستاخی معاف۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,241
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    جی بالکل،اچھا مطلع کہنے کی کوشش تو ہوتی ہے۔
    بہت بہتر،کوئی متبادل صورت دیکھتا ہوں۔
    اسی سے مصرع بحر میں ہی رہے گا محترم؟
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,369
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اگر الفاظ کی ترتیب یونہی رکھتے ہوئے "اس ہی" کو "اسی" سے بدل دیں گے تو ظاہر ہے کہ بحر میں نہیں رہے گا ۔ الفاظ کی ترتیب بدلنی پڑے گی ۔ یوں کردیکھئے: اُسی پرشاعری تمام نہیں --- یا --- شاعری اس پہ ہی تمام نہیں ۔ وغیرہ
     

اس صفحے کی تشہیر