جنگل میں دھنک - منیر نیازی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 12, 2007

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مذہبی کہانیوں کا درخت

    درخت مستی میں جھومتا ہے
    اسے نہ ھیڑو اسے نہ چھیڑو
    اسے بس اپنے اکیلے پن میں
    اُداس رہنے دو، جھومنے دو
    ہمیشہ اک جیسے رات دن کے
    اُجاڑ مدفن میں گھومنے دو

    کبھی نہ اس کے قریب جانا
    کہ اس کا پھل موت ہے ہمیشہ
    اسے بس اپنے اکیلے پن میں
    اُداس رہنے دو،جھومنے دو
    ہمیشہ اک جیسے رات دن کے
    اُجاڑ مدفن میں گھومنے دو
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وجود کی حقیقت

    جلتا ہے بدن سارا، بھڑکا ہےب لہو میرا
    لبریز ہے شعلوں کی سُرخی سے سبو تیرا

    اک سانپ مرے تن سے لپٹا ہے محبّت سے
    مجبور ہے لیکن وہ زہریلی طبیعت سے

    پھنکار کے ہونتوں پر دستا ہے وہ جب مجھ کو
    لگتا ہے عجب اس کی آنکھوں کا غضب مجھ کو
    اور زہر دکھاتا ہے اک خوابِ طرب مجھ کو

    آتی ہے سزا بن کے یاد اپنی حقیقت کی
    خواہش کے جہنّم میں اک چیخ مسرّت کی
     
  3. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    جنگل میں دھنک۔ غزلیات

    ڈوبا نڈھال سورج، تاروں کا باغ چمکا
    پیڑوں کی چوٹیوں پر مہ کا چراغ چمکا

    گزرے دنوں کی لَو سے میرا دماغ چمکا
    گم گشتہ عشرتوں کی رہ کا سراغ چمکا

    جاگی ہر اِک گلی میں عطرِ حنا کی خوشبو
    اِس نکہتِ رواں میں ہر دل کا داغ چمکا

    بہنے لگی ہے دنی اِک سُرخ رنگ مَے کی
    اِک شوخ کے لبوں کا لعلیں ایاغ چمکا
     
  4. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    وقت سے کہیو ذرا کم کم چلے
    کون یاد آیا ہے آنسو تھم چلے

    دم بخود کیوں ہے خزاں کی سلطنت
    کوئی جھونکا، کوئی موجِ غم چلے

    چار سُو باجیں پلوں کی پائلیں
    اس طرح رقاصہِ عالم چلے

    دیر کیا ہے آنے والے موسمو
    دن گزرتے جا رہے ہیں، ہم چلے

    کس کو فکرِ گُنبدِ قصرِ حباب
    آبجو پیہم چلے، پیہم چلے
     
  5. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    شام آئی ہے شراب تیز پینا چاہیے
    ہو چُکی ہے دیر اب زخموں کو سینا چاہیے

    مر گئے تو پھر کہاں ہے حُسنِ رازِ زندگی
    زخمِ دل گہرا بہت ہے پھر بھی جینا چاہیے

    آج وہ کس دھج سے سیرِ گُلستاں میں محو ہے
    چُھپ کے اُس کے ہاتھ سے وہ پھول چھینا چاہیے

    اَبر ہو چھایا ہوا اور باغ ہو مہکا ہوا
    گود میں گُلفام ہو اور پاس مینا چاہیے

    جابجا میلے لگے ہیں لال ہونٹوں کے منیر
    تیرگی میں دیکھنے کو چشمِ بینا چاہیے
     
  6. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    بادِ بہارِ غم میں وہ آرام بھی نہ تھا
    وہ شوخ آج شام لبِ بام بھی نہ تھا

    دردِ فراق ہی میں کٹی ساری زندگی
    گرچہ ترا وصال بڑا کام بھی نہ تھا

    رستے میں ایک بھولی ہوئی شکل دیکھ کر
    آواز دی تو لب پہ کوئی نام بھی نہ تھا

    کیوں دشتِ غم میں خاک اُڑاتا رہا منیر
    میں جو قتیلِ حسرتِ ناکام بھی نہ تھا
     
  7. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    جب بھی گھر کی چھت پر جائیں ناز دکھانے آ جاتے ہیں
    کیسے کیسے لوگ ہمارے جی کو چلانے آ جاتے ہیں

    دن بھر جو سورج کے ڈر سے گلیوں میں چُھپ رہتے ہیں
    شام آتے ہی آنکھوں میں وہ رنگ پرانے آ جاتے ہیں

    جن لوگوں نے اُن کی طلب میں صحراؤں کی دھول اُڑائی
    اب ہو حسیں اُن کی قبروں پر پھول چڑھانے آ جاتے ہیں

    کون سا وہ جادو ہے جس سے غم کی اندھیری، سرد گھپا میں
    لاکھ نسائی سانس دلوں کے روگ مٹانے آ جاتے ہیں

    زے کے ریشمیں رومالوں کو کس کس کی نظروں سے چُھپائیں
    کیسے ہیں وہ لوگ جنھیں یہ راز چُھپانے آ جاتے ہیں

    ہم بھی منیر ان دُنیا داری کرکے وقت گزاریں گے
    ہوتے ہوتے جینے کے بھی لاکھ بہانے آ جاتے ہیں
     
  8. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    اپنا تو یہ کام ہے بھائی، دل کا خُون بہاتے رہنا
    جاگ جاگ کر ان راتوں میں شعر کی آگ جلاتے رہنا

    اپنے گھر سے دور بنوں میں پھرتے ہوئے آوارہ لوگو
    کبھی کبھی جب وقت ملے تو اپنے گھر بھی جاتے رہنا

    رات کے دشت میں پھول کِھلے ہیں، بھولی بسری یادوں کے
    غم کی تیز شراب سے ان کے تیکھے نقش مٹاتے رہنا

    خوشبو کی دیوار کے پیچھے کیسے کیسے رنگ جمے ہیں
    جب تک دن کا سورج آئے، اس کی کھوج لگاتے رہنا

    تم بھی منیر اب اِن گلیوں سے اپنے آپ کو دُور ہی رکھنا
    اچھا ہے جھوٹے لوگوں سے اپنا آپ بچاتے رہنا
     
  9. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    گھپ اندھیرے میں چُھپے سُونے بنوں کی اور سے
    گیت برکھا کے سنو رنگوں میں ڈوبے مور سے

    شام ہوتے ہی دلوں کی بےکلی بڑھنے لگی
    ڈر رہی ہیں گوریاں چلتی ہوا کے زور سے

    رات کے سنسان گنبد میں رچہ ہے راس سی
    پہرے داروں کی صداؤں کے طلسمی شور سے

    لاکھ پلکوں کو جھکاؤ، لاکھ گھونگٹ میں چھپو
    سامنا ہو کر رہے گا دل کے موہن چور سے

    بھاگ کر جائیں کہاں اس دیس سے اب اے منیر
    دل بندھا ہے پریم کی سُندر، سجیلی ڈور سے
     
  10. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    “ اپنے گھر کو واپس جاؤ “رو رو کر سمجھاتا ہے
    جہاں بھی جاؤں میرا سایہ پیچھے پیچھے آتا ہے

    اس کو بھی تو جا کر دیکھو، اس کا حال بھی مجھ سا ہے
    چُپ چپ رہ کر دکھ سہنے سے تو انساں مرجاتا ہے

    مجھ سے محبت بھی ہے اس کو، لیکن یہ دستور ہے اس کا
    غیر سے ملتا ہے ہنس ہنس کے، مجھ سے وہ شرماتا ہے

    کتنے یار ہیں پھر بھی منیر اس آبادی میں اکیلا ہے
    اپنے ہی غم کے نشے میں اپنا جی بہلاتا ہے
     
  11. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    جو دیکھے تھے جادو ترے ہات کے
    ہیں چرچے ابھی تک اسی بات کے

    گھٹا دیکھ کر خوش ہوئی لڑکیاں
    چھتوں پر کھلے پھول برسات کے

    مجھ درد دل کا وہاں لے گیا
    جہاں دَر کھلے تھے طلسمات کے

    ہوا جب چلے پھڑپھڑا کر اُڑے
    پرندے پُرانے محّلات کے

    نہ تُو ہے کہیں اور نہ میں ہوں کہیں
    یہ سب سلسلے ہیں خیالات کے

    منیر آ رہی ہے گھڑی وصل کی
    زمانے گئے ہجر کی رات کے
     
  12. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    پھول تھے، بادل بھی تھا اور وہ حسیں صورت بھی تھی
    دل میں لیکن اور ہی اِک شکل کی حسرت بھی تھی

    جو ہوا بھی گھر بنائے کاش کوئی دیکھتا
    دشت میں رہتے تھے پر تعمیر کی عادت بھی تھی

    کہہ گیا میں سامنے اس کے جو دل کا مدعا
    کچھ تو موسم بھی عجب تھا، کچھ مری ہمت بھی تھی

    اجنبی شہروں میں رہتے عمر ساری کٹ گئی
    گو ذرا سے فاصلے پر گھر کی ہر راحت بھی تھی

    کیا قیامت ہے منیر اب بھی یاد آتے نہیں
    وہ پرانے آشنا، جن سے ہمیں اُلفت بھی تھی
     
  13. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    تجھ سے بچھڑ کر کیا ہوں میں، اب باہر آ کر دیکھ
    ہمت ہے تو میری حالت آنکھ ملا کر دیکھ

    شام ہے گہری تیز ہوا ہے، سر پہ کھڑی ہے رات
    رستہ گئے مسافر کا اب دِیا جلا کر دیکھ

    دروازے کے پاس آ آ کر واپس مُڑتی چاپ
    کون ہے اُس سُنسان گلی میں، پاس بُلا کر دیکھ

    شاید کوئی دیکھنے والا ہوجائے حیران
    کمرے کی دیواروں پر کوئی نقش بنا کر دیکھ

    تُو بھی منیر اب بھرے جہاں میں مل کر رہنا سیکھ
    باہر سے تو دیکھ لیا اب اندر جا کر دیکھ
     
  14. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    پِی لی تو کچھ پتا نہ چلا وہ سُرور تھا
    وہ اس کا سایہ تھا کہ وہی رشکِ حور تھا

    کل میں نے اس کو دیکھا تو دیکھا نہیں گیا
    مجھے سے بچھڑ کے وہ بھی بہت غم سے چُور تھا

    رویا تھا کون کون مجھے کچھ خبر نہیں
    میں اس گھڑی وطن سے کئی میل دور تھا

    شامِ فراق آئی تو دل ڈوبنے لگا
    ہم کو بھی اپنے آپ پہ کتنا غرور تھا

    چہرہ تھا یا صدا تھی کسی بھولی یاد کی
    آنکھیں تھی اس کی یارو کہ دریائےِ نور تھا

    نکلا جو چاند، آئی مہک تیز سے منیر
    میرے سوا بھی باغ میں کوئی ضرور تھا
     
  15. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    عجب رنگ رنگیں قباؤں میں تھے
    دل و جان جیسے بلاؤں میں تھے

    طلسمات ہونٹوں پہ، آنکھوں میں غم
    نئے زیورات اُن کے پاؤں میں تھے

    مہک تھی ترے پیرہن کی کہیں
    گُلستاں سے شب کی ہواؤں میں تھے

    ذرا پی کے دیکھا تو چاروں طرف
    مکاں و مکیں سب خلاؤں میں تھے

    یہ شعلے جو سڑکوں پہ پھرتے ہیں اب
    پہاڑوں کی کالی گھپاؤں میں تھے

    اگر روک لیتے تو جاتا نہ وہ
    مگر ہم بھی اپنی ہواؤں میں تھے

    کلر باکس جیسا کھلا تھا منیر
    کچھ ایسے ہی منظر فضاؤں میں تھے
     
  16. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    اپنی ہی تیغِ ادا سے آپ گھائل ہوگیا
    چاند نے پانی میں دیکھا اور پاگل ہوگیا

    وہ ہوا تھی شام ہی سے رستے خالی ہوگئے
    وہ گھٹا برسی کے سارا شہر جل تھل ہوگیا

    میں اکیلا اور سفر کی شام رنگوں میں ڈھلی
    پھر یہ منظر میری آنکھوں سے بھی اوجھل ہوگیا

    اب کہاں ہوگا وہ ہوگا بھی تو ویسا کہاں
    سوچ کر یہ بات جی کچھ اور بوجھل ہوگیا

    حُسن کی دہشت عجت تھی وصل کی شب میں منیر
    ہاتھ جیسے انتہائے شوق سے شل ہوگیا
     
  17. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    بادل برس رہا تھا جب ہو مہماں ہوا
    کل شام وہ مجھ پہ عجب مہرباں ہوا

    شاخِ گُلِ انار کُھلی بھی تو سنگ میں
    وہ دل ترا ہوا یا لبِ خونفشاں ہوا

    مرغ سحر کی تیز صدا پچھلی رات کو
    ایسی تھی جیسے کوئی سفر پر رواں ہوا

    ٹھنڈی ہوا چلی تو جلیں مشعلیں ھزار
    جو غم نظر میں چمکا تھا اب کہکشاں ہوا

    مَے بھی حریفِ دردِ تمنّا نہیں ہوئی
    اپنے ہی غم کے نشے سے میں سرگراں ہوا

    زردی تھی رُخ پہ ایسی کہ میں ڈر گیا منیر
    کیا عطر تھا کہ صرف قبائےِ خزاں ہوا
     
  18. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    بیٹھ جاتا ہے وہ جب محفل میں آ کے سامنے
    میں ہی بس ہوتا ہوں اُس کی ہر ادا کے سامنے

    تیز تھی اتنی کے سارا شہر سُونا کر گئی!
    دیر تک بیٹھا رہا میں اُس ہوا کے سامنے

    رات اِک اُجڑے مکاں پر جا کے جب آواز دی
    گونج اُٹھے بام و دَر میری صدا کے سامنے

    وہ رنگیلا ہاتھ میرے دل پہ اور اُس کی مہک
    شمعِ دل بُجھ سی گئی رنگِ حنا کے سامنے

    میں تو اس کو دیکھتے ہی جیسے پتھر ہوگیا
    بات تک منہ سے نہ نکلی، بےوفا کے سامنے

    یاد بھی ہیں اے منیر اُس شام کی تنہائیاں
    ایک میداں، اکِ درخت اور تُو خُدا کے سامنے
     
  19. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں
    تُو نے مجھ کو کھو دیا، میں نے تجھے کھویا نہیں

    نیند کا ہلکا گلابی سا خمار آنکھوں میں تھا
    یوں لگا جیسے وہ شب کو دیر تک سویا نہیں

    ہر طرف دیوار و دَر اور ان میں آنکھوں کے ہجوم
    کہہ سکے جو دل کی حالت وہ لبِ گویا نہیں

    جُرم آدم نے کیا اور نسلِ آدم کو سزا
    کاٹتا ہوں زندگی بھر میں نے جو بویا نہیں

    جانتا ہوں ایک ایسے شخص کو میں بھی منیر
    غم سے پتھّر ہوگیا، لیکن کبھی رویا نہیں
     
  20. عمر سیف

    عمر سیف محفلین

    مراسلے:
    36,733
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Where
    شبِ مہتاب نے شہ نشیں پہ عجیب گُل سا کھلا دیا
    مجھے یوں لگا کسی ہاتھ نے مرے دل پہ تیر چلا دیا

    کوئی ایسی بات ضرور تھی شبَ وعدہ جو نہ آ سکا
    کوئی اپنا وہم تھا درمیاں یا گھٹا نے اس کو ڈرا دیا

    یہی آن تھی میری زندگی، لگی آگ دل میں تو اُف نہ کی
    جو جہاں میں کوئی نہ کر سکا وہ کمال کر کے دیکھا دیا

    یہ جو لال رنگ پتنگ کا سرِ آسماں ہے اُڑا ہوا
    یہ چراغ دستِ حنا کا ہے جو ہوا میں اُس کو جلا دیا

    مرے پاس ایسا طلسم ہے، جو کئی زمانوں کا اسم ہے
    اُسے جب بھی سوچا بُلا لیا، اُسے جو بھی چاہا بنا دیا
     

اس صفحے کی تشہیر