ٹائپنگ مکمل " بہت نزدیک آتے جا رہے ہو"-عدیم ہاشمی۔۔ ۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 10, 2013

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    عدیم ہاشمی
    منتخب کلام
    غزلیں
     
    • زبردست زبردست × 2
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    گُم اپنی محبت میں دونوں، نایاب ہو تم نایاب ہیں ہم
    کیا ہم کو کُھلی آنکھیں دیکھیں، اِک خواب ہو تم اِک خواب ہیں ہم
    کیا محشر خیز جُدائی ہے، کیا وصل قیامت کا ہو گا
    جذبات کا اِک سیلاب ہو تم، جذبات کا اِک سیلاب ہیں ہم
    آنکھیں جو ہیں اپنے چہرے پر، اِک ساون ہے اِک بھادوں ہے
    اے غم کی ندی تو فکر نہ کر، اِس وقت بہت سیَراب ہیں ہم
    اِس وقت تلاطم خیز ہیں ہم، گردش میں تمہیں بھی لے لیں گے
    اِس وقت نہ تیَر اے کشتئ دل، اِس وقت تو خُود گردَاب ہیں ہم
    اِک ہنس پرانی یادوں کا، بیٹھا ہوا کنکر چنُتا ہے
    تپتی ہوئی ہجر کی گھڑیوں میں، سُوکھا ہوا اِک تالاب ہیں ہم
    اے چشم فلک، اے چشم زمیں، ہم لوگ تو پھر آنے کے نہیں
    دو چار گھڑی کا سپنا ہیں، دو چار گھڑی کا خواب ہیں ہم
    کیا اپنی حقیقت، کیا ہستی، مٹی کا ایک حباب ہیں ہم
    دو چار گھڑی کا سپنا ہیں، دو چار گھڑی کا خواب ہیں ہم
     
    • زبردست زبردست × 7
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    شبِ ہجراں تھی جو بسَر نہ ہوئی
    ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی
    ایسا کیا جرم ہو گیا ہم سے
    کیوں ملاقات عُمر بھر نہ ہوئی
    اشک پلکوں پہ مُستقل چمکے
    کبھی ٹہنی یہ بے ثمر نہ ہوئی
    تیری قُربت کی روشنی کی قسم
    صُبح آئی مگر سحر نہ ہوئی
    ہم نے کیا کیا نہ کر کے دیکھ لیا
    کوئی تدبیر کار گر نہ ہوئی
    کتنے سُورج نِکل کے ڈُوب گئے
    شامِ ہجراں ! تری سحر نہ ہوئی
    اُن سے محفل رہی ہے روز و شب
    دوستی اُن سے عُمر بھر نہ ہوئی
    یہ رہِ روزگار بھی کیا ہے
    ایسے بچھڑے کہ پھر خبر نہ ہوئی
    اِس قدر دُھوپ تھی جُدائی کی
    یاد بھی سایۂ شجر نہ ہوئی
    شبِ ہجراں ہی کٹ سکی نہ عدیم
    ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 3
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    عدیم میں نے تو زخموں کو اب شمار کِیا
    میں یہ سمجھتا رہا، اُس نے ایک وار کِیا
    عدیم دل کو ہر اِک پر نہیں نِثار کِیا
    جو شخص پیار کے قابل تھا، اُس کو پیار کِیا
    پھر اعتبار کِیا، پھر سے اعتبار کِیا
    یہ کام اُس کے لیے ہم نے بار بار کِیا
    کِسی سے کی ہے جو نفرت تو اِنتہا کر دی
    کِسی سے پیار کِیا ہے تو بےشمار کِیا
    نہ تھی وصال کو بھی کچھ مداخلت کی مجال
    جب اِنتظار کِیا، صِرف اِنتظار کِیا
    اُمیدِ وصل شبِ ہجر کے سمندر میں
    یہی لگا ہے کہ تِنکے پہ اِنحصار کِیا
    بہت حسین ہوئیں بےوفائیاں اُس کی
    یہ اُس نے جان کے خُود کو وفا شعار کِیا
    اُتر گیا کوئی دل سے تو قبر میں اُترا
    اُسے سدا کے لیے شاملِ غُبار کِیا
    وہ اب مرے کہ جئے دل پہ کوئی بوجھ نہیں
    میں مطمئن ہوں کہ پہلے اُسی نے وار کِیا
    قصُور اُس کا نہیں ہے، قصُور میرا ہے
    عدیم مَیں نے اُسے پیار بےشمار کیا
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    وہ چشمِ زر کہاں، یہ مِری چشمِ تَر کہاں
    ٹکرائی بھی تو جا کے نظر سے نظر کہاں
    جانا ہے تم کو جاؤ، چلے ہو مگر کہاں
    میں ڈُھونڈتا پھروں گا تمہیں دَر بہ دَر کہاں
    قصرشہی کی بات ہے قصر شہی کے ساتھ
    تیری گلی کہاں ، تِرے دیوار و دَر کہاں
    دولت سے خوابگاہ تو جو بھی خرید لو
    نِیندیں مگر خرید سکے مال و زَر کہاں
    تُو آگ ہی لگا کے ذرا خُود کو دیکھ لے
    تجھ پر یوُنہی پڑے گی کِسی کی نظر کہاں
    میں اپنا آپ ڈُھونڈ رہا ہوں جہان میں
    مجھ کو عدیم اور کِسی کی خبر کہاں
    یہ کِس مقابلے کے لیے جا رہے ہو تم
    آنسو کہاں عدیم، صدف کا گہر کہاں
     
    • زبردست زبردست × 5
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    زندگی جب جہان میں آئی
    جان دُنیا کی جان میں آئی
    جیسے آیا شباب کشتی پر
    یوں ہوا بادبان میں آئی
    سانولی سی کوئی دُلہن جیسے
    چھاؤں یوں سائبان میں آئی
    چاند ملنے لگا تھا تاروں سے
    چاندنی درمیان میں آئی
    بات اِک داستان سے نکلی
    دوسری داستان میں آئی
    تیِر اُتنا ہی دُور مار ہوا
    جِتنی سختی کمان میں آئی
    ہم وفا کے بغیر بھی خوش تھے
    کیوں وفا درمیان میں آئی
    تیرے وہم و گمان سے نِکلی
    میرے وہم و گمان میں آئی
    یا تو آتی نہ تھی سُخن کی پری
    آئی تو ایک آن میں آئی
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    اچھی ہے دوستوں سے شِکایت کبھی کبھی
    بڑھتی ہے اِس طرح بھی محبت کبھی کبھی
    پہچان ہو گئی کئی لوگوں کی اِس طرح
    آئی ہے کام یُوں بھی ضرُورت کبھی کبھی
    ہوتے ہیں قُربتوں میں بھی محشر کئی بپَا
    آتی ہے وصل میں بھی قیامت کبھی کبھی
    پھر ایک بےپناہ سی شِدت کے واسطے
    قُربان ہم نے کی تری قُربت کبھی کبھی
    یُوں بھی لگا کہ تیرے سوا کوئی دل میں ہے
    محسُوس کی نہیں تیری چاہت کبھی کبھی
    یُوں بھی لگا کہ تیرے سوا ہے ہی کچھ نہیں
    دُنیا پہ چھا گئی تری صورت کبھی کبھی
    وہ جس کو دیکھ دیکھ کے جی تنگ آ گیا
    اچھی بہت لگی وہی صُورت کبھی کبھی
    سچائی تو ہے یہ کہ زمانے کے حُسن میں
    یاد آئی ہی نہیں تری صُورت کبھی کبھی
    دُنیا کی اور بات ہے، دُنیا تو غیر ہے
    ہوتی ہے اپنے آپ سے وحشت کبھی کبھی
    سارا ہی وقت، سارے جہاں کے لیے عدیم
    اپنے لئے بھی چاہیئے فُرصت کبھی کبھی
    دُوری کبھی کبھی بڑی اچھی لگی عدیم
    اچھی نہیں لگی ہمیں قُربت، کبھی کبھی
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    فلک سے خاک پر لایا گیا ہوں
    کہاں کھویا، کہاں پایا گیا ہوں
    میں زیور ہوں عروسِ زِندگی کا
    بڑے تیور سے پہنایا گیا ہوں
    نہیں عرض و گزارش میرا شیوَہ
    صدائے کُن میں فرمایا گیا ہوں
    بتا اے انتہائے حسنِ دنیا
    میں بہکا ہوں کہ بہکایا گیا ہوں
    مجھے یہ تو بتا اے شدتِ وصل
    میں لِپٹا ہوں کہ لِپٹایا گیا ہوں
    بدن بھیگا ہوا ہے موتِیوں سے
    یہ کِس پانی سے نہلایا گیا ہوں
    اگر جانا ہی ٹھہرا ہے جہاں سے
    تو میں دُنیا میں کیوں لایا گیا ہوں
    یہ میرا دل ہے یا تیری نظر ہے
    میں تڑپا ہوں کہ تڑپایا گیا ہوں
    مجھے اے مہرباں یہ تو بتا دے
    میں ٹھہرا ہوں کہ ٹھہرایا گیا ہوں
    تِری گلیوں سے بچ کر چل رہا تھا
    تِری گلیوں میں ہی پایا گیا ہوں
    جہاں روکی گئی ہیں میری کِرنیں
    وہاں میں صورتِ سایہ گیا ہوں
    عدیم اِک آرزُو تھی زِندگی میں
    اُسی کے ساتھ دفنایا گیا ہوں
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    مکمل عدیم اِرتقا ہو گیا
    بشر، آدمی سے خُدا ہو گیا
    بھلا ہو گیا یا بُرا ہو گیا
    چلو کوئی تو فیصلہ ہو گیا
    وہ پہلے بھی جو بےوفا ہو گیا
    یہ دل پھر اُسی پر فِدا ہو گیا
    اُسی سے نظر پھر سے ٹکرا گئی
    دوبارہ وہی حادثہ ہو گیا
    یہاں دل دیا اور وہاں دل دیا
    محبت تو کھیل آپ کا ہو گیا
    جو ملِنے کے وعدے تھے، وعدے رہے
    بِچھڑنے کا وعدہ وفا ہو گیا
    وہ کیا تِیر ہے، جو نہ دل میں گڑے
    نشانہ وہ کیا، جو خطا ہو گیا
    دل و چشم یوں باد و بارَاں بنے
    جو سُوکھا تھا جنگل، ہَرا ہو گیا
    جو سِکہ کھرا تھا، وہ کھوٹا ہوا
    جو کھوٹا تھا سِکہ، کھرا ہو گیا
    یہ دل جو کہ میرا تھا، میرا نہیں
    یہ دل آج سے آپ کا ہو گیا
    جو باقی تھا ، باقی رہا وہ عدیم
    جو فانی تھا، خُود ہی فنا ہو گیا
     
    • زبردست زبردست × 4
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,213
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    شکریہ اعجاز صاحب
    میں اس میں صرف ان کے آخری مجموعہ" بہت نزدیک آتے جا رہے ہو" سے انتخاب پیش کر رہا ہوں ۔۔۔
    "بکھر جانے سے پہلے "میں ترکش اور دیگر بکس سے انتخاب شامل ہے۔۔ اور چند غزلیں اس میں سے بھی ہیں۔۔
     
    آخری تدوین: ‏جون 6, 2014
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,213
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اوہو، تو کچھ کام رپیٹ ہو ہی گیا۔ آئندہ خیال رکھو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    رپیٹ کو میں نے ڈیلیٹ کر دیا ہے۔۔ ان کی جگہ نئی غزلیں شامل کر دی ہیں۔
    اب ان شاء اللہ یہ انتخاب "بکھر جانے سے پہلے" سے بالکل الگ ہو گا:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    اِبتدا تھی، مآل تھا، کیا تھا
    وصل تھا یا وصال تھا، کیا تھا
    عشق ماہی مثال تھا، کیا تھا
    دل کے دریا میں جال تھا، کیا تھا
    تم تو ایسے مجھے نہیں لگتے
    یہ تمہارا خیال تھا، کیا تھا
    کچھ سفید اور کچھ سیاہ تھے بال
    میرا ماضی تھا، حال تھا، کیا تھا
    نِیم وا چشم، نِیم وا سا دَہن
    یہ سوالِ وصال تھا، کیا تھا
    ایک تخلیق، ایک چشمِ حسیں
    وہ غزل تھی، غزال تھا، کیا تھا
    اِتنی بےچینیاں، خُدا کی پناہ
    یہ مِرے دل کا حال تھا، کیا تھا
    مِٹ گیا ایک اشک بہتے ہی
    تِرے چہرے پہ خال تھا، کیا تھا
    خُود کھنچے جا رہے تھے جِسم عدیم
    لمحۂ اِتّصال تھا، کیا تھا
     
    • زبردست زبردست × 1
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    اور ہے، اپنی کہانی اور ہے
    داستاں اُس کو سُنانی اور ہے
    میں تو سویا تھا ستارے اُڑھ کر
    یہ رِدائے آسمانی اور ہے
    ریگِ صحرا میں سفینہ کیا چلاؤں
    اُس سمندر کا تو پانی اور ہے
    پُھول بھی لیتا چلوں کچھ اپنے ساتھ
    اُس کی اِک عادت پُرانی اور ہے
    اجنبی! اک پیڑ بھی ہے سامنے
    اُس کے گھر کی اِک نشانی اور ہے
    یُوں دبائے جا رہا ہوں خواہشیں
    جیسے اِک عہدِ جوانی اور ہے
    پار جانے کا ارادہ تھا عدیم
    آج دریا کی روانی اور ہے
     
    • زبردست زبردست × 2
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    تم سے بہتر کون ہے ساتھی تمہارا دوسرا
    ڈُھونڈتے ہو کِس لیے کوئی سہارا دوسرا
    تب کہیں سمجھا ہوں میں اُس کا اشارہ دوسرا
    اُس نے میرے ہاتھ پر جب ہاتھ مارا دوسرا
    اِتنی دُنیا، اِتنے چہرے، اِتنی آنکھیں چار سُو
    اُس نے پھر بھی کر دیا مجھ کو اِشارہ دوسرا
    آسماں پر کوئی تھوڑے سے سِتارے تو نہیں
    ایک چمکے کم اگر، چُن لو سِتارہ دوسرا
    مجھ کو تو پہلا کِنارہ بھی نظر آتا نہیں
    ہے کہاں بحرِ فلک تیرا کِنارہ دوسرا
    درمیاں پردہ رہا اِک دِن تکلف کا بہت
    بھید سارا کُھل گیا جب دِن گزارا دوسرا
    تب کہیں مہندی لگا وہ ہاتھ پہچانا گیا
    اُس نے دَر کی اوٹ سے جب پُھول مارا دوسرا
    جان دے دی اُس کے پہلے ہی اِشارے پر عدیم
    میں نے دیکھا ہی نہیں اُس کا اِشارہ دوسرا
     
    • زبردست زبردست × 1
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    دیکھا ہے چشمِ تیز نے دُنیا کے پار تک
    اپنی نظر ہی رہ گئی گرد و غبار تک
    موسم بھی اپنی اپنی حدوں کے اِسیر ہیں
    عہدِ خزاں ہے آمدِ فصلِ بہار تک
    صحن خزاں میں پاؤں دھرے، کیا مجال ہے
    فصلِ بہار قید ہے فصلِ بہار تک
    معیاد قید ایک گھڑی پیش و کم نہیں
    ممکن نہیں ہے قیدِ جہاں سے فرار تک
    جو لکھ دیا جبیں پہ، اُسے لکھ دیا گیا
    پابند اُس کے بعد ہے پرَوردگار تک
    قسمت میں جو نہیں ہے، ملے گا وہ کِس طرح
    ترک اِس لیے کِیا ہے تِرا اِنتظار تک
    لکھا نہیں ہے وصل فقط کاتبین نے
    تحریر ہو رہا ہے تِرا اِنتظار تک
    اپنے کنوئیں ہیں جِن میں پُھدکتے ہیں سارے لوگ
    محصُور ہیں عدیم سب اپنے حصار تک
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    کھینچا گیا ہے کِس کو ابھی دَار کی طرف
    مُنصِف تو ہو گیا ہے گنہگار کی طرف
    معلُوم ہو تجھے کہ ہے دستِ بریدہ کیا
    اُنگلی اُٹھا کے دیکھ مِرے یار کی طرف
    قاتِل ہے حُسن اگر، تو ہے قاتِل کا کیا قصُور
    خُود کِھنچ رہی ہیں گردنیں تلوار کی طرف
    زَر کی کشش نے کھینچ لیا سارے شہر کو
    بازار چل پڑے ہیں خریدار کی طرف
    سارا جہاں کھڑا تھا ضرُورت کی چھاؤں میں
    کوئی گیا نہ سایۂ دیوار کی طرف
    سُوکھے ہوئے شجر پہ کوئی زخم بھی نہیں
    پتھر بھی آئے نخلِ ثمر دار کی طرف
    حیراں ہوں پھر بھی عکسِ رُخِ یار کِس طرح
    جب آئینہ نہیں ہے رُخِ یار کی طرف
    سب قبلہ رُو ہوئے تھے عبادت کے واسطے
    میں نے کیا ہے رُخ تِری دیوار کی طرف
    دھاگے میں کچھ پروئے ہوئے پُھول تھے عدیم
    پہلے خزاں چلی ہے اُسی ہار کی طرف
     
    • زبردست زبردست × 1
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    فیصلہ اُس نے سُنایا بھی نہیں تعزیر کا
    پڑ گیا ہے دل پہ پہلے ہی نِشاں زنجیر کا
    خط چُھپاؤں کِس طرح سے محرمِ دل گیِر سے
    لفظ ہر اِک بولتا ہے پیار کی تحریر کا
    باقی سارے خط پہ دھبے آنسوُؤں کے رہ گئے
    ایک ہی جملہ پڑھا میں نے تِری تحریر کا
    تیرے چہرے کا تاثر، تیری آنکھوں کا خُمار
    حُسن ایسا تو نہیں ہے وادئ کشمیر کا
    موتیوں جیسے ہیں آنسُو، پُھول جیسی ہے ہنسی
    کونسا رُخ سامنے رکھوں تِری تصویر کا
    کوئی کہتا ہے ملیں گے، کوئی کہتا ہے نہیں
    کچھ پتا چلتا نہیں ہے خواب کی تعبیر کا
    جو نصیبوں میں نہیں ہے، وہ ذرا لے لوں عدیم
    وہ تو مل ہی جائے گا ، حصّہ ہے جو تقدیر کا
    دوستوں سے بھی تعلق بن گیا ہے وہ عدیم
    جو تعلق ہے کِسی شمشِیر سے شمشِیر کا
     
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ہمراہ لیے جاؤ مرا دیدہء تَر بھی
    جاتے ہو سفر پر تو کوئی رختِ سفر بھی
    بھیجے ہیں تلاطم بھی کئی اور بھنور بھی
    اے بحرِ سُخن، چند صدف، چند گہر بھی
    پھر آنکھ وہیں ثبت نہ ہو جائے تو کہنا
    پڑ جائے اگر اُس پہ تِری ایک نظر بھی
    درکار ہے کیا آپ کو اشکوں کی دُکاں سے
    جلتی ہوئی شمعیں بھی ہیں، کچھ دیدہء تر بھی
    یہ شہرِِ جدائی ہے، اندھیرے ہیں شب و روز
    اِس شہر میں جلتے ہیں دیئے وقتِ سحر بھی
    کچھ پیاس ہے اُس حُسن کو بھی میری نظر کی
    کچھ حُسن کا پیاسا ہے مِرا حُسنِ نظر بھی
    کیا عِشق ہے، کیا حُسن ہے، کیا جانیئے کیا ہو
    محشر ہے اِدھر بھی تو قیامت ہے اُدھر بھی
    تُو چشمِ عنایت سے ذرا رُخ تو اِدھر کر
    کافی ہے تِری ایک محبت کی نظر بھی
    کچھ فرق درست اور غلط میں نہیں باقی
    ہر بات پہ کچھ لوگ اِدھر بھی ہیں اُدھر بھی
    کھنچنا ہے کہاں تک تجھے بانہوں کی کماں میں
    تُو دل کے لیے ہے تو مِرے دل میں اُتر بھی
     

اس صفحے کی تشہیر