اک عکسِ لاوجود سے لپٹا ہوا ہوں میں

Qamar Shahzad نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 15, 2020

  1. Qamar Shahzad

    Qamar Shahzad محفلین

    مراسلے:
    25
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اک عکسِ لا وجود سے لپٹا ہوا ہوں میں
    جیسا مجھے نہ ہونا تھا ویسا ہوا ہوں میں

    میرے درختِ جسم کو خوفِ خزاں نہیں
    اُس معجزاتی ہونٹ کا چوما ہوا ہوں میں

    پورے کیے ہیں پیار کے سارے لوازمات
    اب کُن کے انتظار میں بیٹھا ہوا ہوں میں

    خود کو تمہارے بعد سمیٹا کچھ اس طرح
    لگتا نہیں کہیں سے بھی ٹوٹا ہوا ہوں میں

    آنکھیں مثالِ دشت نہیں بے سبب ہوئیں
    کچھ دور جانے والوں کو رویا ہوا ہوں میں

    ہر ایک ذی نفس پہ ہے لازم مرا ادب
    آیا نہیں زمین پہ بھیجا ہوا ہوں میں

    پرہیز چاہتا ہوں میں خوابِ وصال سے
    حالانکہ اس دوا سے ہی اچھا ہوا ہوں میں

    حیرت ہے تیرے ماتھے پہ بل تک نہیں پڑے
    سن کر جو بات آگ بگولا ہوا ہوں میں

    کھلتے نہیں ہر ایک پہ بام و درِ قمر
    گو راز ہوں پر آپ پہ افشا ہوا ہوں میں
    قمر آسی
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر