ٹائپنگ مکمل اختر ضیائی ۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 6, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    سنتے تو ہیں بہار کا احساس بھی تو ہو!
    جنگل کے گل کدوں میں وہ بُو باس بھی تو ہو!

    نکھری ہوئی ہیں سرخ چناروں کی چوٹیاں!
    سیرابیوں سے سیر کبھی گھاس بھی تو ہو!

    اے خضر تیری راہ شناسی میں شک نہیں
    پر رہروانِ شوق کو وشواس بھی تو ہو!

    کب تک جئیں گے کشمکشِ بیم و جور میں
    لوگوں کی زندگی میں کوئی آس بھی تو ہو

    اختر ہزار خلد نشاں ہے دیارِ غیر
    لیکن ہمیں یہ آب و ہوا راس بھی تو ہو!​
     
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    الجھے الجھے رستوں سے جو ڈر جاتے ہیں
    صبح کے بھولے شام کو اکثر گھر جاتے ہیں

    جیسے شبنم سے نکھرے پھولوں کا جوبن
    وصل کے بعد تو چہرے اور نکھر جاتے ہیں

    یار سے ملنے کی دُھن میں پاگل پروانے
    آگ کے دریاؤں کے پار اتر جاتے ہیں

    آس کی ڈوری کو ہر حال میں تھامے رکھنا
    غم کے موسم بھی اک روز گزر جاتے ہیں

    من موجی رندوں کا شوق نرالا دیکھا
    شام ڈھلے سب مل کر چاند نگر جاتے ہیں

    رنگ برنگے پھولوں کی خوشبو کے سپنے
    کبھی کبھی کانٹوں سے دامن بھر جاتے ہیں

    حیرت ہے کچھ لوگ بہار سے بھی ڈرتے ہیں
    اس کے آنے سے تو کام سنور جاتے ہیں

    جانے کیا جادو ہے اس کوچے میں اختر
    توبہ کرتے ہیں سو بار، مگر جاتے ہیں​
     
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ابتدا ہے نہ انتہا میری
    یعنی منزل ہے نارسا میری

    دشمنوں کو خبر نہیں شائد
    زہر بن جائے گی دوا میری

    زندگی کی نئی مسافت ہے
    جس کو سمجھے ہیں وہ فنا میری

    تیرے جلوے کی تاب ناممکن
    اور یہی شرطِ خوں بہا میری

    قافلہ کھو گیا سرابوں میں
    گونجتی رہ گئی صدا میری

    غرق ہونے سے ناؤ بچ جاتی
    بات سنتا جو ناخدا میری

    دار پر مجھ کو کھینچنے والو!
    کچھ بتاؤ ہے کیا خطا میری؟

    کوئے جاناں کی بےرخی اختر
    کاش ہو جائے ہمنوا میری​
     
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    تاجر دھن دولت کا رسیا، فاقہ کش مزدور وہی
    حرص و طلب کی منڈی میں مختار وہی ، مجبور وہی

    عہدِ جفا کے دشتِ زیاں میں کب سے یہی منظر ٹھہرا!
    ظالم بھوت نگر کا راجہ، خلقت بےمقدور وہی

    جیون پتھ پر گرتے پڑتے کتنے ہی یگ بیت گئے
    آس کی منزل آج بھی، جتنی صدیوں سے تھی دور، وہی

    کوئی نہیں جو اس کو سنبھالے، ڈھارس دے، فریاد سنے
    جینے کی پاداش میں تنہا دل زخموں سے چُور وہی

    لوٹ کھسوٹ کی خاطر مل کر شور مچائیں، نام دھریں
    اندگے بہرے بےدردوں کا برسوں سے دستور وہی

    دولت ہی قانون ِ مشیت، جرم و سزا تقدیرِ بشر
    طاقت والوں کی جو مرضی، دنیا کو منظور وہی

    چھوڑیئے یہ بیکار کہانی، اختر کی عادت ہے پرانی
    اوپر سے خوش باش ہمیشہ، بھیتر سے رنجور وہی​
     
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    آنکھوں میں سما جانا، یادوں میں مکیں رہنا
    اس شوخ کی عادت ہے، بس پردہ نشیں رہنا

    خلوت کو سجا دینا، خوابوں کو بسا دینا
    جس رنگ میں بھی رہنا، کچھ اور حسیں رہنا

    اس جانِ صباحت کی تقدیر میں لکھا ہے
    محبوبِ نظر ہونا، فرخندہ جبیں رہنا

    پہلے تری فرقت میں بےچین سے رہتے تھے
    پھر سیکھ لیا ہم نے ہر وقت حزیں رہنا

    یہ بھی تو کرشمہ ہے اس رشکِ مسیحا کا!
    جس دل پہ ستم کرنا، اس دل کے قریں رہنا

    یک رنگئ دوراں سے اکتا گیا جی اختر
    اس شہر سے اب رخصت، چل اور کہیں رہنا​
     
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    خار دے دو کہ چند پھول ہمیں
    جو بھی بخشو گے وہ قبول ہمیں

    بےطلب، بےغرض، طریقِ وفا
    دل نے بخشا ہے یہ اصول ہمیں

    جسم و جاں آپ کی امانت ہے
    کوئی حاصل نہ کچھ وصول ہمیں

    سوچتے ہیں کہ راس آ جاتی
    کاش تیری گلی کی دھول ہمیں

    بےوضاحت کہیں، پسند نہیں
    دوستوں کے سخن میں طول ہمیں

    اک بتِ رمز آشنا کے بغیر
    ساری محفل لگے فضول ہمیں

    ان کا چہرہ نصابِ فطرت کی
    معرفت کے لئے رسول ہمیں

    حسن کی بارگاہ میں اختر
    یاد ہے ایک ایک بھول ہمیں​
     
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    خواب لے ڈوبے ہیں تعبیروں کا بوجھ
    بن گیا تخریب تعمیروں کا بوجھ

    پاؤں پر اپنے کھڑا ہونے نہ دے
    تیسری دنیا کو زنجیروں کا بوجھ

    اپنی کج بنیاد دیواروں کو دیکھ!
    کیا اٹھا لیں گی یہ شہتیروں کا بوجھ

    دے رہا ہے جرم کو اب تو فروغ
    ناروا سفاک تعزیروں کا بوجھ

    کام تدبیروں سے لے سکتے نہ تھے
    زیست پر جن کی تھا تقدیروں کا بوجھ

    سطوتِ اجداد میں محبوس تھے
    جن کے کندھوں پر تھا جاگیروں کا بوجھ

    بن گیا بڑھ کر ندامت کا سبب
    بےہنر، بےسود تشہیروں کا بوجھ

    حیف! اختر دیدہء ظلمت سرشت
    کب اٹھا سکتا تھا تنویروں کا بوجھ​
     
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    گزر چکی ہیں جنُوں کی حکایتیں کیا کیا
    سنا رہا ہے زمانہ روایتیں کیا کیا

    ہجوم عرض طلب پیش حسن خاموشی
    رکی ہوئی ہیں زباں پر شکایتیں کیا کیا

    وہ جن کا آج یہاں نام تک نہیں باقی
    فلک کی آنکھ نے دیکھی ہیں صورتیں کیا کیا

    بچھڑ کے تم سے دلِ نامراد بجھ سا گیا
    وگرنہ اس میں فروزاں تھیں حسرتیں کیا کیا

    الم نصیب پریشان حال کیا جانیں
    کہ زندگی کو میسر ہیں راحتیں کیا کیا

    نبرد عشق میں اختر بصد خلوص ملیں
    وبالِ جان و جگر سوز ساعتیں کیا کیا​
     
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    جب تک کفِ میزان میں تعدیل نہ ہو گی
    جو صورتِ حالات ہے تبدیل نہ ہو گی

    سچ ہے کہ عزائم بھی بڑی چیز ہیں ، لیکن
    بے جہد و عمل ان کی بھی تکمیل نہ ہو گی

    وہ قادر و عادل ہے جھٹک دے گا یقینآ!
    اور ظلم کی رسی کو سدا ڈھیل نہ ہو گی

    نافذ ہے اگر حکم تو پھر روزِ مکافات
    کوتاہئ کردار کی تاویل نہ ہو گی

    ڈس لے جو کڑے وقت سیہ ناگ کی صورت
    کچھ بھی ہو تری زلف کی تمثیل نہ ہو گی

    میں پردہء ظلمات میں چھپ جاؤں گا اس دن
    جب دل میں تیرے پیار کی قندیل نہ ہو گی

    جس میں نہ غمِ زیست کے پہلو ہوں نمایاں
    اختر وہ میرے شعر کی تشکیل نہ ہو گی​
     
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    غم میں ڈوبے، خوشی کو بھول گئے
    ایسے روئے ہنسی کو بھول گئے

    زندہ رہنا ہی بس غنیمت تھا
    لوگ زندہ دلی کو بھول گئے

    چشمِ شبنم نے اشک برسائے
    پھول خندہ لبی کو بھول گئے

    مرگ سامانیوں میں گم ہو کر
    بےبصر زندگی کو بھول گئے

    رونقِ کائنات تھی جس سے
    حیف! ہم آدمی کو بھول گئے


    داغِ بےمائیگی تو مٹ نہ سکا
    اہلِ دل سرکشی کو بھول گئے

    کتنی دلچسپ بھول تھی اختر
    ہم یہ سمجھے کسی کو بھول گئے​
     
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    سرِ آفاق جو رختِ سفر تھا
    گرا خاشاک پر تو مشتِ پر تھا

    نشاطِ خلد میں کب تک بہلتا!
    تلوّن کیش اندازِ بشر تھا

    در و دیوار بھی کچھ اجنبی تھے
    جو دیکھا غور سے تو اپنا گھر تھا

    جگر کے خون سے دیکھا کئے ہم
    تمنا کا شجر جو بےثمر تھا

    وفورِ تیرگی میں برق تڑپی
    کھلا کہ چاکِ دامانِ سحر تھا

    تجھے ملنے سے پہلے جانِ الفت
    میں خود اس کیفیت سے بےخبر تھا!

    وہ کل شب بام پر بےپردہ نکلے
    فرازِ چرخ پر حیراں قمر تھا

    کرم کی آرزو میں جس کو پوجا
    بتِ نامہرباں بے دادگر تھا

    کسی کے حسن میں رنگِ غافل
    ہماری ہی وفاؤں کا اثر تھا

    عدم آباد ہی منزل تھی اختر
    قیام زیست کتنا مختصر تھا!​
     
  12. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ہم سفر بےکنار ویرانے
    بن گئے غمگسار ویرانے

    منزلوں کے سراب رخشندہ
    اور سب رہگذار ویرانے

    ہے مقفل درِ نمود و شہود
    اور طبیعت پہ بار ویرانے

    شب ڈھلے اوس کی محبت میں
    ہو گئے اشکبار ویرانے

    چند شاداب مرغزار بھی ہیں
    اور ہیں شرمسار ویرانے

    سقفِ شہرِ نگار گونج اٹھے
    اس طرح سے پکار ویرانے!

    کھا گئیں جن کو بےایماں سڑکیں
    بستیوں پر نثار ویرانے

    ایک مدت سے منتظر ہیں تیرے
    اور نسیمِ بہار، ویرانے!

    کب سے ساون کی راہ دیکھتے ہیں
    خشک سینہ فگار ویرانے

    دیکھ سنسان قریۂ جاں کو
    جس پہ قرباں ہزار ویرانے

    کارگاہیں دھواں دھواں اختر
    وقف ِ گرد و غبار ویرانے!​
     
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    گل نے کِھل کے بکھر ہی جانا ہے
    کشتِ جاں سے گزر ہی جانا ہے

    جب بھی اس دشت شام غربت سے
    جان چھوٹے گی ، گھر ہی جانا ہے

    وقت ناسازگار ہے، پھر بھی
    کچھ نہ کچھ کام کر ہی جانا ہے

    رفتہ رفتہ یہ ساغرِ ہستی
    تلخ صہبا سے بھر ہی جانا ہے

    ہر گھڑی زندگی کا ماتم کیوں؟
    آخر اک روز مر ہی جانا ہے

    ہم نے مقصودِ بندگی زاہد!
    احترامِ بشر ہی جانا ہے

    بخت کی دھوپ چھاؤں کو ہم نے
    اک فریبِ نظر ہی جانا ہے

    روشنی کا سفیر ہے اختر
    اس کو وقتِ سحر ہی جانا ہے​
     
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    صداقتوں سے سدا اجتناب کرتے ہیں
    عجیب ڈھنگ سے تعبیرِ خواب کرتے ہیں

    سرشتِ نوعِ بشر کا شعور ہے جن کو
    خود اپنی ذات کا بھی احتساب کرتے ہیں

    بہت دنوں سے تمنائے بازدید لئے
    ہم انتظارِ شب ماہتاب کرتے ہیں

    جفا کشانِ خرد کو جنوں کی راہ ملے
    جو ہو سکے تو یہ کارِ ثواب کرتے ہیں

    مچل کے عہدِ جوانی میں سیم تن اختر
    سحاب زلف تو چہرہ گلاب کرتے ہیں​
     
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ایک سا اب تو شام سویرا رہتا ہے
    ہر دم دل میں یاس کا ڈیرا رہتا ہے

    ہر لحظہ ، ہر آن بدلتی دنیا میں
    وقت نہ تیرا اور نہ میرا رہتا ہے

    دل میں غم و آلام کا جھرمٹ ہے جیسے
    مرگھٹ میں آسیب کا گھیرا رہتا ہے

    میری بستی میں بھی سکھ کے چاند نکل
    اس بستی میں گھور اندھیرا رہتا ہے

    شوق سے کھلنے والے اُجلے پُھولوں کا
    شاخ پہ کچھ دن رین بسیرا رہتا ہے

    خوف سے جس کا کوئی نام نہیں لیتا
    میرے شہر میں ایک لٹیرا رہتا ہے

    لاکھ بھلاؤ دردِ طلب اختر صاحب!
    عمر کے ساتھ کچھ اور گھنیرا رہتا ہے​
     
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    شعورِ لُطف و محبت کو عام کرنا تھا
    جہاں میں رہ سکے باقی جو کام کرنا تھا

    وفا کے نام پر مٹ کر مسافرانِ عدم
    کچھ اہتمامِ بقائے دوام کرنا تھا

    نوازشِ نگہِ التفات کا مطلب
    ہمیں اسیرِ تمنائے خام کرنا تھا

    یہ کیا کہ جس کو ہمارے وجود سے نفرت
    اسی کا ذکر ہمیں صبح و شام کرنا تھا

    جناب شیخ کی منطق عجیب، ان کے لیے
    وہ سب حلال جو ہم پر حرام کرنا تھا

    کہاں تلک دلِ خانہ خراب کی سنتے
    کہ ایک روز تو قصہ تمام کرنا تھا

    کسی کے وہم و گماں میں بھی یہ نہ تھا اختر
    کہ آدمی کو خلد میں خرام کرنا تھا!​
     
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    عہدِ وفا کا قرض ادا کر دیا گیا
    محرومیوں کا درد عطا کر دیا گیا

    پُھولوں کے داغ ہائے فروزاں کو دیکھ کر
    ارزاں کچھ اور رنگِ حنا کر دیا گیا

    وارفتگان شوق کا شکوہ سُنے بغیر
    گلشن سپردِ اہلِ جفا کر دیا گیا

    دل سے اُمنگ، لب سے فغاں چھین لی گئی
    کہتے ہیں اہلِ دل کو رہا کر دیا گیا

    مانگی تھی عافیت کی دُعا، آگہی کا غم
    پہلے سے بھی کچھ اور سوا کر دیا گیا

    یک دو نفس بھی کارِ زیاں ہم نہ کر سکے
    خُوشبُو کو پیرہن سے جدا کر دیا گیا

    اختر ہوس گرانِ عقیدت کے فیض سے
    وہ بھی جو ناروا تھا، روا کر دیا گیا​
     
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    مجھ سے وہ سرگراں سا رہتا ہے
    فاصلہ درمیاں سا رہتا ہے

    عشق کی بےقراریاں توبہ!
    ہر گھڑی امتحاں سا رہتا ہے

    ان سے ملنے کے بعد مجھ پہ محیط
    حسن کا آسماں سا رہتا ہے

    اک سمن پوش کے تصور میں
    فصلِ گل کا سماں سا رہتا ہے

    داغِ فرقت کبھی نہیں مٹتا
    دھندلا دھندلا نشاں سا رہتا ہے

    زندگی جیسے غم کے ساگر میں
    اک سفینہ رواں سا رہتا ہے

    جس پہ دونوں جہاں لٹا بیٹھے
    وہ کچھ بدگماں سا رہتا ہے

    مصلحت کوش فکر کے درپے
    عقل کا پاسباں سا رہتا ہے

    لُطفِ خُوباں کے فیض سے اختر
    شعر میرا جواں سا رہتا ہے​
     
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    دل گرفتارِ زیاں لے ڈوبا
    جلوہء حسنِ بتاں لے ڈوبا

    عشق کی دھوپ میں بھٹکے برسوں
    سایۂ ابرِ رواں لے ڈوبا

    پار اترنے کی تمنا تھی، مگر
    ہم کو اندیشۂ جاں لے ڈوبا

    ہر نئی سانس پہ اک اور طلب
    زیست کو بارِ گراں لے ڈوبا

    ان کو ساحل کا یقیں تھا کہ نہیں
    جن کو گردابِ گماں لے ڈوبا

    ہم کو ہر لہر میں طوفان ملے
    ناخدا جانے کہاں لے ڈوبا

    خواب دیکھے تو نہ تعبیر ملی
    نام چاہا تھا، نشاں لے ڈوبا

    کچھ تو حالات بھی ناساز ہی تھے
    کچھ ہمیں عزمِ جواں لے ڈوبا

    بعض لوگوں کو، یہ سچ ہے، اختر
    تیرا اندازِ بیاں لے ڈوبا!​
     
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    مانا کہ خواب خواب ہے، تعبیر کچھ تو ہو
    دھندلا سہی پہ منظرِ تصویر کچھ تو ہو

    اس شہر میں ہے دہشت و غارتگری کا راج
    فرمانروائے وقت کی تعزیر کچھ تو ہو

    رہنے دو میرے چاکِ گریباں کو تار تار
    اہلِ جنوں کی بزم میں توقیر کچھ تو ہو

    لو دے اٹھے گی میرے لہو سے جبینِ دار
    کچھ بھی ہو اس کے ظلم کی تشہیر کچھ تو ہو

    محتاط! مٹ نہ جائے کہیں آرزو کا داغ
    بجھتے ہوئے چراغ کی تنویر کچھ تو ہو

    چلنے نہ دیں گے حیلہ گروں کا کوئی فسوں
    کٹ جائے اب کے جبر کی زنجیر، کچھ تو ہو

    چھایا ہوا ہے حلقۂ دانش میں کیوں سکوت؟
    آخر نجاتِ خلق کی تدبیر کچھ تو ہو

    تخریبِ انقلاب کا کھٹکا ہے ہر گھڑی
    اختر ظہورِ صورت تعمیر کچھ تو ہو​
     

اس صفحے کی تشہیر