ٹائپنگ مکمل اختر ضیائی ۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 6, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ملتے رہے ہیں داغ جو بدلے میں پیار کے
    روشن ہیں یہ چراغ ہر اک یادگار کے

    دن کے قرار، رات کی نیندوں کو کھا گئے
    سوز و گداز عشق کے لیل و نہار کے

    ہم جانتے ہیں صبح ِ قیامت کی بےکلی
    جھیلے ہم نے دکھ جو شبِ انتظار کے

    گرداب نے بپھر کے سفینہ ڈبو دیا
    دیکھا ہے ناخدا کو بھی ہم نے پکار کے

    ان کو فراق و وصل کی لذت کی کیا خبر
    بیٹھے نہ دو گھڑی بھی جو پہلو میں یار کے

    رندوں نے میکدوں کو مدرسہ سمجھ لیا
    لے آئے شیخ جی کو یہاں گھیر گھار کے

    سینے میں یہ جو عشق چراغاں کا سماں ہے
    چرکے بھڑک اٹھے ہیں غمِ روزگار کے

    صحنِ چمن میں بلبل و گل برگ شاخسار
    مدت سے منتظر ہیں نسیمِ بہار کے​
     
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    خنجر سے سوا کاٹ ہے اب تارِ نفس میں
    مرنا مرے بس میں ہے نہ جینا مرے بس میں

    پھرتے ہیں جگر چاک، جنوں کیش یگانے
    اب بھی ہیں وہی کوچۂ دلدار کی رسمیں

    جُز داغِ وفا کچھ نہ ملا کوئے ستم سے
    بہتات تھی ہر جنس کی بازارِ ہوس میں

    نفرت بہ الفت ہے عداوت بھری قُربت
    مقصد کے لئے قول تو اغراض کی قسمیں !

    مدت سے نگاہوں میں وہی نقش ہے اختر
    غلطاں ہے سماعت اُسی آواز کے رس میں​
     
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ابتلائے بشر نہیں لکھتے
    جانتے ہیں مگر نہیں لکھتے

    جوڑتے ہیں حروف کو باہم
    پر ذرا سوچ کر نہیں لکھتے

    خواہشوں کے سراب میں گم ہیں
    داستانِ سفر نہیں لکھتے

    گھومتے ہیں گلی گلی لیکن
    اکتسابِ نظر نہیں لکھتے

    خود پریشاں ہیں اور دل و جاں کو
    ڈستا رہتا ہے ڈر، نہیں لکھتے

    شہر ویرانیوں کا چرچا ہے
    کیوں اجڑتے ہیں گھر، نہیں لکھتے

    جن کو دہشت ہے کنجِ عافیت
    کیا ہے اس کا اثر، نہیں لکھتے

    ایک مدت سے غم کے سوداگر
    کوئی اچھی خبر نہیں لکھتے

    راہ گزاروں میں روز مرتے ہیں
    کس کے لختِ جگر، نہیں لکھتے

    پتھروں کو خدا سمجھتے ہیں
    وصفِ لعل و گہر نہیں لکھتے

    پھرتے رہتے ہیں بےاماں اختر
    لوگ کیوں دربدر نہیں لکھتے​
     
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ڈسنے لگی جو گردشِ ایام، پی گیا
    بےچارگی میں لے کے تیرا نام پی گیا

    سوزِ فراق، دردِ محبت، جفائے دہر
    گل مے کے ساتھ میں غم و آلام پی گیا

    ساغر بدست کب سے پریشاں خیال تھا
    ملتے ہی تیری آنکھ کا پیغام پی گیا

    چھٹکی ہوئی تھی صحنِ شبستاں میں چاندنی
    کیفِ نظر سے حسن لبِ بام پی گیا

    زاہد نے جب طہور کی لذت بیان کی
    چھلکا کے میں بھی بادہء گلفام پی گیا

    اختر عجیب تھی میرے قاتل کی بےبسی
    اس نے دیا تو زہر بھرا جام پی گیا​
     
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ساز بجنے دو جام چلنے دو
    میکدے کا نظام چلنے دو

    سرمگیں گیسوؤں کے سائے میں
    جھومتی مست شام چلنے دو

    چند روزہ شباب کی عشرت
    مہ جبینوں کے نام چلنے دو

    بےخودی کی حسین وادی میں
    مجھ کو دو چار گام چلنے دو!

    بھول کر زیست کے غم و آلام
    اک تمنائے خام چلنے دو

    گھٹ گئی ہے خلوص کی قیمت
    جو بھی لگتا ہے دام، چلنے دو

    حادثوں سے مفر نہیں اختر
    دن گزرتے ہیں، کام چلنے دو!​
     
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    قصرِ سبا ،نہ تختِ سلیماں کی بات کر
    کوہِ ندا میں چشمۂ حیواں کی بات کر

    مایوسیوں کی یورشِ پیہم کو بھول جا!
    شامِ فراق کوچۂ جاناں کی بات کر

    مجھ سے متاعِ ہوش کی خوبی نہ کر بیاں
    مجھ سے طلسم خانۂ وجداں کی بات کر!

    خلعت بدوش حلقۂ دانش نہ کر قبول
    ساغر بدستِ محفلِ یاراں کی بات کر

    یک دو نفس فراغتِ ہستی کی خیر مانگ
    سنجیدگی سے عمرِ گریزاں کی بات کر

    مانا کہ دلفریب ہے ذکرِ حدیث دوش
    پیدا جو آج ہے نئے امکاں کی بات کر!

    گرد و غبارِ خارِ مغیلاں کے باوجود
    دشتِ زیاں میں کنجِ غزالاں کی بات کر

    کب سے سنا رہا ہے تو حوروں کی داستاں
    اے شیخ اب ذرا غمِ دوراں کی بات کر!

    ڈسنے لگی ہے روح کو اختر شبِ خزاں
    عہدِ بہار و صبحِِ درخشاں کی بات کر​
     
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    مخصوص کہیں اجارہ فن نہیں ہے
    خوشبوؤں کا کوئی وطن نہیں ہے

    سمجھو تو ظہور ہے نظریہ کار
    سوچو تو خیال کا بدن نہیں ہے

    درد مندو عمل کا راستہ نکالو!
    بحث و تمحیص کی یہ انجمن نہیں ہے

    زرد پتوں کے ڈھیر جا بجا ہیں بکھرے
    لوٹ ہے یہ نگہدارئ چمن نہیں ہے

    ہم ہیں جس طرح ندی کے دو کنارے
    دید ہی دید ہے پر ملن نہیں ہے

    تم ہی آزماتے پھرو نئے ڈھنگ پر ضیائی
    تجربہ ہو تو ہو یہ بانکپن نہیں ہے​
     
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    تھی جوانی کچھ تو دیوانی بہت
    ہم نے لیکن دل کی بھی مانی بہت

    محفلِ یاراں مجھے برہم لگی
    اور نگاہِ ناز بیگانی بہت

    حسن کو جلوہ گری مقصود تھی
    عشق نے کی حشر سامانی بہت

    شکر ہے بارِ گراں سے بچ گئے
    کام آئی تنگ دامانی بہت

    بادیہ گردی کی تنہا شام کو
    یاد آئی خانہ ویرانی بہت

    کاش مل جاتی کوئی راہ نجات
    خاک دشتِ ذات کی چھانی بہت

    دربدر پھرتے ہیں یوں بےنیل مرام
    تھا جنہیں زعم ہمہ دانی بہت

    سچ تو جاں جوکھوں کا کاروبار پے
    جھوٹ میں رہتی ہے آسانی بہت

    چھوڑ بھی اختر گئے وقتوں کا سوگ
    ہو چکی اب مرثیہ خوانی بہت​
     
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    خوشیوں کی آرزو میں غموں سے نڈھال ہیں
    عبرت سرائے دہر میں ہم بےمثال ہیں

    کچھ تو جواب دے انہیں اے خاطرِ ازل؟
    الجھے ہوئے نقوش سراپا سوال ہیں

    زندان باصفا کو زر و مال سے نہ جانچ
    یہ خوش مزاج لوگ بڑے باکمال ہیں

    مجھ کو بھی ہو عطا میرے حالات پر گرفت
    بےرنگ و بے نشان میرے ماہ و سال ہیں

    اختر ضیائی ظرفِ غزل میں تمہارے شعر
    آئینہ جمال و حدیث جلال ہیں​
     
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    شام سویرے یاد تمہاری ملنے آتی ہے
    تم تو جیسے بھول گئے ہو، یہ تڑپاتی ہے

    کون ہے جو ان کرب کے لمحوں میں دمساز ہے
    دل ہی اپنا یار ہے اب تو درد بھی ذاتی ہے

    بالے پن کے دھندلے سپنے زندہ رہتے ہیں
    تنہائی سو بار جنہیں اکثر دہراتی ہے

    ہر چہرے میں ان کاچہرہ، ان کے نقش نگار
    محرومی بھی کیسے کیسے رنگ دکھاتی ہے

    کب آو گے بجھنے کو ہے دو نینوں کی جوت
    جیون کے اس دیپ میں اب تو تیل نہ باتی ہے

    تن من جو الفت کی مجبوری میں ہار گیا
    سچ کہتے ہو تم لوگو، اختر جذباتی ہے​
     
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    جو ہم اس دور میں مہر و وفا کی بات کرتے ہیں
    یقینآ اک نئے ارض و سما کی بات کرتے ہیں

    ابھی تک ذات کے جنگل سے جو باہر نہیں آئے
    زمانے سے سدا بانگِ درا کی بات کرتے ہیں

    تعجب ہے سرِ دشتِ زیاں وحشی بگولوں سے
    ہم آہنگ و نوا رقصِ صبا کی بات کرتے ہیں

    سفر تو اور بھی ہوتے ہیں لیکن راہ الفت میں
    ہمیشہ ابتداء سے انتہا کی بات کرتے ہیں

    ہزاروں خوف انساں کو تحفظ دے نہیں پائے
    ابھی تک لوگ جو خوفِ خدا کی بات کرتے ہیں

    بتوں سے ہم کو بھی نسبت ہے لیکن حضرت واعظ!
    جزا کے نام پر حرص و ہوا کی بات کرتے ہیں

    کسی سے کیا کہیں اختر کہ کیوں تنہائی میں خود سے
    ہم اکثر اس وفا نا آشنا کی بات کرتے ہیں
     
  12. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    مری نظر کی اساس رہنا
    یہیں کہیں آس پاس رہنا

    تری وفا کا غرور ہوں میں
    تُو بن کے میرا لباس رہنا

    خوش آ گیا حسنِ دلربا کو
    رہینِ لطف و سپاس رہنا

    مری طبعیت کا ہے تقاضا
    کبھی کبھی وقفِ یاس رہنا

    شعور کا بوجھ بن گیا ہے
    اسیرِ ہوش و حواس رہنا

    ہوائے موسم پہ منحصر ہے
    فضائے گلشن کا راس رہنا

    سمجھ میں آتا نہیں صبا کا
    بہار میں بھی اداس رہنا

    نحیف سبزے کا درد بن کر
    نڈھال پھولوں کی باس رہنا

    اگر ہے کچھ فکرِ خلق اختر
    حیات میں غم شناس رہنا​
     
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    وہ جس کے ظلم سے ناشاد ہو گیا ہے دل
    اسی کی یاد میں برباد ہو گیا ہے دل

    نقوشِ حسن تلون شعار کیا کہیے؟
    نگار خانۂ اضداد ہو گیا ہے دل

    شعورِ ذات کا باعث بنی تھی عقل، مگر
    فشارِ عقل کی بنیاد ہو گیا ہے دل

    سرابِ وعدہء فردا میں دلکشی نہ رہی
    فریبِ لطف سے آزاد ہو گیا ہے دل

    سحر سے شام تلک تیرے دھیان میں گم ہے
    کچھ اس طرح ترا ہمزاد ہو گیا ہے دل

    تری نگاہ کی تصویر بن گئی ہے آنکھ
    تری زبان کا ارشاد ہو گیا ہے دل

    ستم ظریف غم زندگی کا شیدائی
    میرے لئے تو اک افتاد ہو گیا ہے دل

    ہوئی ہے عظمتِ آدم کی معرفت جب سے
    شریکِ مسلکِ الحاد ہو گیا ہے دل

    بصد خلوص لکھے کیوں نہ مرثیہ اختر
    شہید خنجر بےداد ہو گیا ہے دل​
     
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    کسی کی یاد کی قندیل


    کبھی کبھی غمِ ہستی کے دشتِ فرقت میں
    وہ ماہتاب سرِچرخ جھلملاتا ہے

    تو اس کے ساتھ اُبھرتا ہے سوگوار کلس
    کنارِ جہلم بےتاب خوشنما منظر

    فریب زارِ تمنا کا گوشۂ خلوت
    خود اپنے جذب دروں کے ظہور کی صورت

    وفا شعار، سبک سار، مہرباں فطرت
    کوئی فریق تھا جس کا نہ مونس و ہمدم

    طلسم زارِتخیل، عروسِ رعنائی
    دھنک کے نور میں لپٹی لطیف پروائی

    برنگِ موجِ طرب پیچ و تاب کھاتی ہوئی
    فریبِ صبح ِ مسرت میں مسکراتی ہوئی

    عجیب رنگ نمایاں سکون و راحت کے
    بھلا چکا ہوں جنہیں میں بھی ایک مدت سے

    حریمِ ذات نئی چاہتوں کا مسکن ہے
    نہ جانے پھر بھی کئی بار ایسا لگتا ہے

    کسی کی یاد کی قندیل اب بھی روشن ہے
    دمک رہا ہے گھنے گیسوؤں کے سائے میں

    کسی کا پیار سے سرشار پُریقیں چہرہ
    وہ گل عذار، سمن بار، دل نشیں چہرہ

    بسی ہوئی ہے مہک جس کی میرے خوابوں میں
    بھٹک گیا ہے غمِ زیست کے سرابوں میں

    کبھی خیال میں ظاہر، کبھی حجابوں میں
    وہ جس کی دید کی حسرت ہے اضطرابوں میں !
     
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    وہ ایک لمحہ!

    فسوں ہے
    جادو ہے، شعبدہ ہے
    میں جب بی سوچوں
    کچھ ایسا لگتا ہے
    آج بھی اس اداس گاؤں
    کی ملگجی شام جاگتی ہے
    میں دیکھتا ہوں
    گلی کے اس موڑ پر نکلتے ہی
    جھیل آنکھوں میں کھو گیا ہوں
    ۔ ۔ ۔ وہ میرے پہلو میں ایستادہ
    اور اس کے شانوں پہ بےارادہ
    ہیں ہاتھ میرے
    وہ ساتھ میرے!!

    دھواں دھواں سا تمام منظر،
    غروبِ ہستی، طلوع محشر

    ہزار جاں سے نثار دل ہے
    دمکتے عارض پہ بھوری لٹ اور
    حسیں زنخداں کی دائیں جانب
    نفیس تل ہے
    جھکی نگاہوں میں
    ہے جھجک سی
    وفورِ جذبات کی جھلک سی
    بدن سے اٹھتی مہک سی
    مرے تنفس میں گھل گئی ہے
    حیات پھولوں میں تل گئی ہے

    وہ ایک لمحہ
    جو یک بیک زیست کے افق پر
    ابھر کے اک انقلاب لایا
    دھنک میں ڈوبا شباب لایا!
    میں جانتا ہوں
    کہ کس طرح سے نوشت ِ تقدیر کے تقاضے
    سماج کے آہنی شکنجے
    میں وہ ستارہ
    بکھر کے نابود ہو گیا تھا
    مگر میں جب بھی
    گئے دنوں کی بساطِ احساس کو سمیٹوں
    تو ایسا لگتا ہے
    دور تنہا

    گلی کے اس موڑ پر ابھی تک
    نمودِ فطرت کا ایک نقشِ جمیل بن کر
    حیا کی روشن دلیل بن کر
    بہار آثار راستے میں
    شعور کا سنگِ میل بن کر
    دمک رہا ہے
    مرے تنفس میں
    اس کے مہکے بدن کی خوشبو
    مچل رہی ہے
    ۔ ۔ ۔ وہ ایک لمحہ!
    جو آج بھی عکسِ آرزو ہے
    مرے تخیل کی آبرو ہے
     
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    پہاڑوں کے سائے میں!

    سرِ شام بستی کو ہم چھوڑ آئے
    فروزاں یہاں روشنی کے علم ہیں
    وہ ٹیلوں، درختوں، چھتوں
    اور فضاؤں میں
    اودھی گھٹائیں
    ہواؤں کے کاندھوں پہ
    مدہوش خم ہیں
    پہاڑوں کے سائے
    اندھیرے کے دامن میں ضم
    اور ہم
    آشتی سے بہم ہیں
    نہیں کچھ بھی اب درمیاں
    حرزِ جاں

    خواہشوں کے فسانے
    تمنا کے خفیہ خزانے
    جو ہم نے چھپائے
    یہاں کھینچ لائے
    پہاڑوں کی چوٹی سے ابھرا
    وہ مہتاب بھی مسکرائے!

    گجردم جو سورج
    انہی برف پوش
    اونچے ٹیلوں سے جھانکے
    فضاؤں میں رنگ اور نکہت کے
    سو نقش ٹانکے
    چرندوں پرندوں کے انبوہ جاگیں
    کھی وادیوں میں اڑیں اور بھاگیں
    ہواؤں میں احساس کی گدگدی ہو!
    رواں وقت کی خوش نما ہر گھڑی ہو
    نئے راستوں پر نظر دور تک
    بےمحابانہ اٹھے!
    تو ایسے میں پوری دیانت سے ہم
    اسی آشتی سے بہم
    عمر بھر کے لئے عہد و پیماں کریں
    سدا ساتھ دینے کا اعلاں کریں

    سکاٹ لینڈ: 16 نومبر۔86ء
     
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    مہرباں دھوپ کی آغوش میں

    خلق و خورشہد کے مابین
    جو پردہ تھا ، ہٹا
    دھند کا زور گھٹا
    اوجِ افلاک سے انوار کے جھرنے پھوٹے
    تیز کرنوں کی تمازت میں بجھے تیر
    گھٹاؤں کے گنے جنگل کی
    تیرہ و تار گھپاؤں کو منور کرتے
    سوئے پہنائے زمیں
    ارض افرنگ حسیں
    منجمد بحر و بر و سبزہ و اشجار
    ۔ ۔ ۔ چمن زار کئی لاکھ نگر
    دشت و دمن میں آباد
    نسل آدم کے لئے گرمئ زیست کا سامان
    بہم کرتے ہیں

    جسم اور روح میں خوابیدہ حرارت کی طلب
    کھلے ایوانوں سمندر کے ساحل سے پرے
    مست شاداب ہرے
    خلد آثار جزیروں کی خنک ریت میں
    پوشیدہ تراوت کے سبب
    اپنی منزل کی طرف
    جوق در جوق رواں ہوتے ہیں
    محبتی فکر سے آزاد
    جہاں شادمکاں ہوتے ہیں
    جشنِ تعطیل منانے کے لیے
    پھر سے اک بار جواں ہوتے ہیں

    ۔ ۔ ۔ اور پھر بنتے ہیں جو نقش و نگار
    رامش و رنگ طرب
    قوس و محراب، سمن پوش سفیران بہار
    سقف و دیوار سے اکتائے ہوئے
    پارکوں، کھیل کے میدانوں
    ہری گھاس کے تختوں پہ دراز
    نہ کوئی راز ہی باقی نہ کوئی پردہ ساز
    گلی کوچوں میں، گلساتوں میں
    اپنی بگیا کے سجل کنج میں، میدانوں میں
    مہرباں دھوپ کی آغوش میں
    سستائے ہوئے

    سر بہ سر عالم مدہوشی میں
    مختصر نام کی محدود ستر پوشی میں
    بعض اوقات زخورد رفتہ سے شرمائے ہوئے
    کتنے خوش باش نظر آتے ہیں
    مثلِ گل کھل کے بکھر جاتے ہیں
    اور پھر رات ڈھلے
    سرد پروائی چلے
    ہاتھ میں ہاتھ دیئے
    مضمحل قدموں سے
    جیسے مجبور سے، گھر جاتے ہیں
    یوں بگڑتے ہیں
    کہ کچھ اور سنور جاتے ہیں
     
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    پھول ذرا سا !

    میرے کمرے کے پچھواڑے
    پائیں باغ کے نم گوشے میں
    جب بھی کھڑکی کا پٹ کھلتا
    گھاس کی سوندھی باس اور سبزہ
    اور دیوار سے ٹیک لگائے
    بیلے کی لچکیلی کونپل
    لہرا جاتی
    اور اس کا اکلوتا بیٹا
    (پھول ذرا سا)
    جھومے جاتا !
    اپنی چھب سے خوب رجھاتا
    ۔۔۔۔۔ میرے دھیان کی لہریں، جیسے
    گڈ مڈ، گڈ مڈ

    اس کا جوبن، ان کا مکھڑا
    یادوں کی پریاں آ آ کر
    دھوم مچاتیں !

    لیکن جب سے بھادوں آیا
    مینہ کے چھینٹے۔ ۔ ۔ اندھے جھکڑ
    رات گئے پھر بجلی کڑکی
    بھور سمے طوفان سا آیا
    خوف کے مارے
    کھڑکی کا پٹ چیخا، کانپا
    میں کچھ سویا اور کچھ جاگا
    سپنوں کی وادی میں چونکا
    دھوپ کا کندن پھیل چکا تھا
    کھڑکی سے باہر جب جھانکا
    وحشی طوفان تھم سا گیا تھا
    لیکن اندھے پاگل پن میں
    ڈالی ڈالی روند گیا تھا
    بیلے کا اکلوتا بیٹا
    پھول ذرا سا!
    بےسدھ کیچڑ میں لت پت تھا
    ہردے میں اک ہوک سی اٹھی
    آنکھوں میں آنسو بھر آئے
     
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    بام پہ روشن چاند


    شام ہوئی، صیام کا صدقہ، خوشیوں کی تمہید ملے
    بام پہ روشن چاند کو دیکھوں، وصل کی کچھ امید ملے

    رقصِ صبا، خوشبو پروائی، رنگِ چمن، نکھرے مہکے
    جشنِ بہاراں کا ساماں ہو، حسن کی گر تائید ملے

    جانے کیسے ضبط کا دامن یاس کے ہاتھ سے چھوٹ گیا
    آنکھوں میں آنسو بھر آئے، آپ سے جب ہم عید ملے

    ہم پردیس میں بسنے والے اکثر سوچتے رہتے ہیں
    کب اپنوں کو گلے لگائیں، کب یاروں کی دید ملے

    بھول گئے اسلاف کی سنت، غیروں کے محتاج ہوئے
    فرزندانِ اہل ِ یقیں بھی پابندِ تقلید ملے

    اس ناخلف اولاد کی آخر دنیا میں کیا بات بنے
    جس کے دلوں میں بت خانے، پر ہونٹوں پر توحید ملے

    ظلمتِ شب کی کوکھ سے ابھرے نورِ سحر شرمندہ
    جہدِ وفا کی راہ میں اختر ایسے بھی خورشید ملے
     
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool


    دلوں میں محبت کی جولانیاں ہیں
    وفا کوشیاں ہیں، ستم رانیاں ہیں

    زمانہ ہوا اک جھلک اُن کی دیکھے
    ابھی تک نگاہوں میں حیرانیاں ہیں

    چمن میں مسرت کے غُنچے بہت ہیں
    مگر کیا کریں تنگ دامانیاں ہیں

    رمیدہ رمیدہ تجاہل سے ظاہر
    کشیدہ کشیدہ پشیمانیاں ہیں

    تمہیں خانۂ دل کو آباد کر لو!
    یہاں ایک مدت سے ویرانیاں ہیں

    ابھی حسن و الفت کی باتیں نہ چھیڑو
    ابھی اور لاکھوں پریشانیاں ہیں

    رفیقوں کی بےمہریوں میں ضیائی
    خود اپنی ہی دراصل نادانیاں ہیں​
     

اس صفحے کی تشہیر