ٹائپنگ مکمل اختر ضیائی ۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 6, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    اوروں کا وصف اور ہنر مانتا نہیں
    اپنے سوا کسی کو وہ گردانتا نہیں

    بیگانگی سے آنکھ چرا کر نکل گیا
    جیسے وہ شخص اب مجھے پہچانتا نہیں

    جلتا رہوں ہزار مصائب کی دھوپ میں
    سر پر میں مصلحت کی رِدا تانتا نہیں

    زاہد نہ پا سکے گا تو عرفانِ بندگی
    جب تک مقامِ نوع بشر جانتا نہیں

    مجھ سے نہ محض حسنِ عقیدت کی بات کر
    دل میں اگر خلوصِ عمل ٹھانتا نہیں

    اختر میں تجزیئے کا تو قائل ضرور ہوں
    وہم و گماں کی خاک مگر چھانتا نہیں​
     
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    خواب در خواب انتشار میں ہے
    زندگی یاس کے غبار میں ہے

    پھونک سکتی ہے سطوتِ دوراں
    آگ وہ عشق کے شرار میں ہے

    بےمحابانہ سر خوشی کا سرُور!
    او ستم گار تیرے پیار میں ہے

    بےیقینی کی ابتلا میں کہاں؟
    غم کی لذت جو اعتبار میں ہے

    کشتِ امید ایک مدت سے
    موسمِ گل کے انتظار میں ہے

    اضطرابِ نمو غنیمت ہے
    موت کی بےحسی قرار میں ہے

    بن کے ملتا ہے ناصحِ مشفق
    جو بھی شامل مزاجِ یار میں ہے

    اہلِ کردار خوب جانتے ہیں
    فرق جو تخت اور دار میں ہے

    اس زمانے میں بھی وفا کا اسیر
    دیکھ مجھ سا کوئی ہزار میں ہے؟

    دا و تحسین اور تجھے اختر!
    شاعری میں تُو کس شمار میں ہے​
     
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    جیون کا نٹ کھیل

    روزِِ ازل سے
    گردش میں ہیں
    (دھرتی اور آکاش کے اندر)
    ہوش ربا خودکار مظاہر
    ایک خلا ہے اور سمندر
    رنگوں اور شکلوں کے بےانداز مناظر
    فطرت کے آئین کی پابندی کا تواتر
    اک تکمیل کے مخفی ذوقِ نمو کی خاطر
    سدا سے قائم
    کن کے ودیعت کردہ
    اپنے اپنے خاص مداروں
    کی پہچانیں
    ربطِ بہم سے
    اندھی، بنجر، بانجھ چٹانیں
    بے بس، بےرس، خاک کے تودے
    بن جائیں پُر ہیئت کدے
    اور جگ مگ روشن دنیائیں
    سیارے، تارے کہلائیں
    کبھی کبھی ٹوٹیں، مٹ جائیں

    اور پھر دائم
    کن کی ودیعت گردش میں ہے

    پھر میں دیکھوں
    صبح کو دور افق سے
    روشن سورج ابھرے
    جس کی جھلمل شیتل کرنیں
    جنگل، بن، ساگر، شہروں میں
    سایوں، خاکوں اور جسموں میں
    حرکت اور حدت پہنچائیں
    پانی پر، خشکی میں، فضا میں
    شبنم میں، سبزے پہ، ہوا میں
    زیست کی ابدی سونی خوشبو
    باطن کے اظہار کی خواہش
    میں بیکل تعمیر کا جادو
    رنگوں اور شکلوں میں کیا کیا روپ دکھائے

    گلشن گلشن پھول کھلیں، مہکیں، مسکائیں
    پت جھڑ میں سوکھیں، مر جائیں
    شام ڈھلے کرنیں چھپ جائیں
    اسی طرح ہستی کا مسافر
    وقت کے اس پنڈال میں آ کر
    دیا گیا نٹ کھیل دکھا کر
    قدم قدم آگے بڑھ جائے
     
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    الجھے رشتے

    ہار تھے جو وہ طوقِ گلو ہیں
    رشتوں کے بھی سو پہلو ہیں
    میں ان سے گھبراتا ہوں
    اکثر تنگ آ جاتا ہوں

    آج اور کل کے افسانوں سے
    لاکھ برس کے سامانوں سے
    پہرہ داروں، دربانوں سے
    طاقت ور کے تاوانوں سے
    بھوکے ننگے انسانوں سے
    خستہ تن، خستہ جانوں سے
    فرض کے مارے نادانوں سے
    جھوٹے وقتی درمانوں سے
    مطلب کے تانوں بانوں سے
    نام و نسب کی پہچانوں سے
    دلکش خالی گلدانوں سے
    خون کے پیاسے ایمانوں سے

    چھپ کر جان بچاتا ہوں
    خود کو تنہا پاتا ہوں
    ہردے کے بندھن ہر سو ہیں
    رشتوں کے بھی سو پہلو ہیں
     
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    اے مرے دل!

    دُھند سی پھیل گئی
    ڈوب گئے سب ساحل
    درد کی جوئے رواں
    چاہے جہاں لے جائے
    داغِ آزار کا غماز ہوا
    ایک انجام سے آغاز ہوا
    اٹھ گئی شہرِ زیاں کون و مکاں کی محفل
    جمع ہیں چارہ گرانِ بسمل(1)
    بجھ گئی شمع تب و تاب گماں لاحاصل!!

    محبسِ جسم سے نکلا تو نفس کا طائر
    سر بسر لذت پرواز ہوا
    بیکراں وقت کا ہمراز ہوا
    کیا یہی تھی غمِ جاں کی منزل؟
    اک نئے دور کا درباز ہوا
    کرب میں تُو بھی نہ دمساز ہوا!
    تو مرا سرِ نہاں، عزمِ جواں
    چل دیا چھوڑ کے یوں
    مجھ کو کہاں؟
    اے مرے دل، مرے دل!!

    (1۔ دل کے آپریشن کا تجربہ)
     
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ٹائپنگ مکمل
     

اس صفحے کی تشہیر