ٹائپنگ مکمل اختر ضیائی ۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 6, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    جس کا ہر نقشِ وفا دل سے مٹایا ہم نے
    یاد ہے آج بھی گو لاکھ بھلایا ہم نے

    ہر نئی سانس نئی آس سے معمور رہی
    زندگی ہنس کے ترا بوجھ اٹھایا ہم نے!

    کوئی آیا نہ گیا کنجِ ندامت میں کبھی
    پیار کا دیپ کچھ اس طرح بجھایا ہم نے!

    خلوت افروز رہا لعل و گہر کی صورت
    جو ترا زخم سدا سب سے چھپایا ہم نے

    کیوں پریشان ہوں رفیقانِ سفر جب اختر
    ان سے جو عہد کیا وہ تو نبھایا ہم نے​
     
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    عدم کی وادیوں میں کھو گئے ہیں
    مسافر تھک کے آخر سو گئے ہیں

    نہ پایا زخمِ دانش کا مداوا
    جنوں کی سرحدوں تک تو گئے ہیں

    وفا نا آشنا، یادوں کے کانٹے
    ہماری کشتِ جاں میں بو گئے ہیں

    رہے ہم دُور بازارِ ہوس سے
    ہزاروں اہلِ حاجت گو گئے ہیں

    غنیمت ہیں یہی اشکِ ندامت
    گناہوں کی سیاہی دھو گئے ہیں

    یہی ہیں رخصتِ شب کے ستارے
    تلاشِ صبحِ نو میں جو گئے ہیں

    نقوشِ پا نہ کوئی گرد اختر
    نہ جانے کس طرف رہرو گئے ہیں​
     
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    پہنچے فرازِ خلد سے یہ اجنبی کہاں
    دشتِ فنا میں چھوڑ گئی زندگی کہاں

    مٹ کر بھی جس کی خوئے تجسس نہ کم ہوئی
    لے جائے گی اسے ہوسِ آگہی کہاں

    رہتی ہے جس کو لحظہ بہ لحظہ نئی طلب
    اس رہروِ حیات کو آسودگی کہاں

    دل تو اسی کے حسن کی آماجگاہ تھا
    برقِ نگاہِ یار بھی آ کر گری کہاں

    اختر جو دل کو سوزِ تمنا نہ دے سکے
    الفاظ کا فریب ہے وہ، شاعری کہاں​
     
    • زبردست زبردست × 1
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    جو مخلص ہوں انہیں نزدیک رکھیئے
    محبت کا قرینہ، ٹھیک رکھیئے

    شرافت ہے نہ عزت خودفروشی
    غرض کی منفعت کو بھیک رکھیئے

    نوازش ناروا ہے بندہ پرور!
    تو اپنے پاس ہی یہ بھیک رکھیئے!

    نمودِ ظاہری کے پیچ و خم میں
    نگاہِ جستجو باریک رکھیئے!

    سخن کا حسن کیا روشن خیالی
    اگر دل کا نگر تاریک رکھیئے

    وفا کوشوں کے حق میں اپنے لب پر
    ہمیشہ ہدیۂ تبریک رکھیئے!

    ہوس کی گرم بازاری میں اختر
    نجاتِ خلق کی تحریک رکھیئے!​
     
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    چند اُس طرف، کچھ اِس طرف گرے
    ایک دو جام سے کم ظرف گرے

    اس کے چہرے کی خفت دیدنی تھی
    لب سے اقرار کے جب حرف گرے

    ہوں تصور میں مضامیں اتریں
    جس طرح بھور سمے برف گرے

    سچ بیزار ہے دنیا جیسے
    قیمت سکہ بےصرف گرے

    کند ہو تیغِ بلاغت اختر
    یوں کہ معیار سے اک حرف گرے​
     
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    شہر والوں کے ڈیرے

    پہاڑوں میں چھوٹے سے گاؤں
    سے چل کر
    بڑے شوق سے میں نگر کوٹ آیا
    دھوئیں کے بگولے
    بسیں، ٹیکسیاں، ریل گاڑی
    ۔ ۔ ۔ ۔ ہزاروں مسافر
    بہت تیز چلتے
    وہ اک دوسرے کے تعاقب میں جیسے
    اچکتے، پھسلتے، سنبھلتے
    رواں تھے
    کہ مغرب میں سورج کے ڈھلنے
    کے آثار بھی تو عیاں تھے

    عجب ہی سماں
    اجنبی سے مناظر کا اک سلسلہ تھا
    در و بام، گلیاں
    وہ جھلمل ستاروں کے مانند
    روشن ہنڈولے
    رفیقوں کے ٹولے

    کھلی شاہراہیں، وہ آباد سڑکیں
    دکانوں میں خوش رنگ سامان
    ہوٹل، کلب، سنیما گھر
    حسیں میکدے، رقص گاہیں
    وہ فلمی ستاروں کے فوٹو
    دل مشتری کو لبھانے کی چالیں
    ہجوم ہوس میں
    کہاں تک طبیعت سنبھالیں
    گناہوں سے دامن بچا لیں
    فلک بوس
    اک دوسرے پر بنائے گئے
    شہر والوں کے ڈیرے
    مکانات کی اونچی اونچی چھتوں پر
    بسائی گئیں
    بیکراں بستیاں سی!
    کچھاروں میں جیسے
    طلسمات کی دھند میں اونگھتی
    جادوئی ہستیاں سی
    ہرے پارکوں میں
    وہ شاداب اونچے گلابوں
    کے خلوت کدے
    جن میں نازک بدن پھول سی اپسرائیں
    حسیں خوبرو نوجوانوں کے پہلو میں
    الفت کی شمعیں جلائیں

    بصد عشوہ و ناز نگہت فشاں تھیں
    ۔ ۔ ۔ ۔ ہنسی دل لگی۔ ۔ ۔ قہقہے۔۔ ۔ ۔ ۔ گیت
    اور میں یہاں
    چوک کے دائرے پہ کھڑا
    رات کو لحظہ لحظہ
    فلک سے زمین پر اترتے ہوئے دیکھتا تھا!
    بسیں، ٹیکسیاں، تیز کاریں
    حسیں میکدے، رقص گاہیں
    یہاں ہر طرف
    اجنبی صورتوں کا تھا ریلا
    اداسی کی یلغار اور میں اکیلا!
    ۔ ۔ ۔ قدم الٹی جانب اٹھے
    تیز بھاگا

    یکایک جو جاگا
    وہی گھر تھا اپنا
    یہ سب کچھ تھا سپنا
    پسینے میں تر جسم تھا
    سانس بھاری
    ابھی تک اعصاب پر خوف طاری!
    چکا چوند تھی۔ ۔ ۔ ٹھیک ہے
    میں نے سوچا!
    مگر شکر ہے خیر سے گاؤں پہنچا
     
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ان آنکھوں میں جھانک کے دیکھو!

    سچ کہ جیون ایک سفر ہے
    ہجرت بھی اک معنئ بقا ہے
    ایک تغیر شام و سحر ہے
    لیکن لوگو!
    پل دو پل خلوت میں بیٹھو
    اور کچھ تو سوچو!
    کیا کھویا ہے کیا پایا ہے؟
    اپنوں سے ہے چاہت کتنی
    اور اغیار سے نسبت کیا ہے!
    رسم کہن سے آزادی کا
    اس دھرتی پر آبادی کا
    یہ سودا ہے
    پرکھوں کی تہذیب کو تج کر
    آئندہ نسلوں کا کیا اندازِ نظر ہے؟
    جن کو تم نے
    اپنے وقتوں کا جو یہ ماحول دیا ہے
    حاضر خوشیوں کے بدلے میں
    مستقبل کا ہول دیا ہے
    خواہش کے خوش رنگ سبو میں
    حسرت کا بس گھول دیا ہے!
    تم کو خبر ہے!
    یہ دنیا اک رہ گزر ہے!!

    او پگلے بےچارے لوگو!
    کبھی کبھی ان خود بچھڑے
    بالغ ہوتے بچوں کا احوال بھی پوچھو!
    ان کو اپنے پاس بٹھا کر
    ان کے چہروں پر کندہ تحریر کو سمجھو!
    جس میں ابھی الجھاؤ وہی ہے
    ان کے لئے تو شہر بھی بن ہے
    اسکولوں اور کارگہوں میں
    اور باغوں میں
    فٹ پاتھوں پر، بازاروں میں
    نفرت کا برتاؤ وہی ہے
    ہونٹوں پہ سو مسکانیں ہیں
    محرومی کا گھاؤ وہی ہے
    بس میں جو ہوتا رنگ بدلتے
    ہار چکے وہ ڈھنگ بدلتے
    اک بےنام سی آگ میں جلتے
    بیگانی راہوں پہ چلتے
    تابندہ خوابوں کے جزیرے
    پا لینے کی وہی لگن ہے
    کہنے کو تو اپنا گھر ہے
    ہرا بھرا شاداب نگر ہے
    ان آنکھوں میں جھانک کے دیکھو
    دکھ کا اک گہرا ساگر ہے
     
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    پرندے

    اک مدت سے
    ہر موسم میں ، نور کے تڑکے
    سرودوان البیلے پنچھی
    من موجی بے باک پرندے
    میرے پائیں باغ کے اک گوشے میں
    گانے آتے ہیں
    مجھے جگاتے ہیں

    (2)

    پچھلے پہر گھنے جنگل میں
    فطرت کے معصوم پکھیرو
    گرد آلود۔ ۔ ۔ ۔ اوارہ یوگی
    نٹ کھٹ با پوشاک پرندے
    متوالے پیراک پرندے
    ہری بھری نیلم وادی میں
    چنچل جھرنوں کی سنگت میں
    یوں ہر روز نہاتے ہیں
    مل کر دھوم مچاتے ہیں !

    (3)

    تاڑ اور چیل میں گھات لگا کر
    پربت کی چوٹی کے اوپر
    تپتے میدانوں میں اڑتے
    لوندی، شکرے، باز شکاری
    طاقت کے مغرور پجاری
    کچھ ظالم سفاک پرندے
    وحشی ہیبت ناک پرندے
    پنجوں کے خنجر لہراتے
    شاخوں میں سہمی چڑیوں کا
    ناحق خون بہاتے ہیں
    سب پر رعب جماتے ہیں

    (4)

    کل میں نے کالج میں دیکھا
    بڑے ہال میں
    طلبا کو اسناد کی بخشش کے موقع پر
    جبہ پوش استاد تھے جتنے
    پرعظمت دلشاد تھے کتنے؟
    میں نے سوچا!
    علم و ہنر کے پنکھ سجائے
    پڑھے لکھے چالاک پرندے
    اپنے اپنے پروں کی رنگت سے
    پہچانے جاتے ہیں

    ۔ ۔ ۔ فہم و ذکا کے،جود و سخا کے
    مہر و وفا کے،حسن عطا کے
    جگمگ دیپ جلاتے ہیں !
    یہ بھی سچ ہے
    حرص و ہوا سے پاک پرندے
    کچھ روشن ادراک پرندے
    ننھی ننھی کنکریوں سے
    ہاتھی مار بھگاتے ہیں
    جھوٹ کا نام مٹاتے ہیں


    بریڈ فورڈ: 2 جولائی 88ء
    کالج میں تقسیمِ اسناد کے موقع پر
     
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    گُنگی بستی کی کہانی

    اونگھ رہا تھا پیر کا حجرہ اونچے محل منارے تک
    بھاگ بھری کی پریم کہانی گونجی گاؤں کے دارے تک

    اونچے گھر کا رانجھا اپنی ہیر سے ملنے آتا تھا
    جس کے روپ سروپ کا چرچا پھیلا تخت ہزارے تک

    وہ معصوم، حسیں دوشیزہ، بیٹی صوبے نائی کی
    پہنچ سکی آواز نہ جس کی اپنے ساجن پیارے تک

    پچھلے پہر کی پروائی میں مست ملنگوں نے دیکھا
    پگڈنڈی پر دھندلا سایہ چلتا نہر کنارے تک

    گھیر لیا اور لے گئے اس کو باندھ کے مرشد خانے پر
    جانے پھر کیا بیتی اس پر صبح کے روشن تارے تک

    بھور سمے پھر سرکنڈوں میں لاش ملی چرواہے کو
    لہروں لہروں تیر کے پہنچی تھی جو سنگم دھارے تک

    مل کے مالک ملک ٹوانے مالک گنگی بستی کی
    پکڑ جکڑ کر کچھ "غنڈوں" کو لائے سرخ چبارے تک

    ان میں تھا اک شوخ سجیلا مل مزدروں کا لیڈر
    آ جاتی تھی ہر اک آفت اس قسمت کے مارے تک

    شک کی بنا پر موت نہیں، پر دی گئی سولہ سال کی قید
    بیوہ ماں کا لائق بیٹا آیا یوں اندھیارے تک

    زر والوں کی راہ کا کانٹا ناداروں کے دل کا چین
    پیار کی تہمت لے کر آخر آیا جیل دوارے تک

    اپنے شباب کا سونا چاندی ایک ہی وار میں ہار گیا
    جس کو لوٹ کھسوٹ کے ماہر لائے سخت خسارے تک
     
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ناری تیرے روپ کی شوبھا!

    برکھا رُت میں پیاسی پگلی
    مچلے اور نہائے
    گم سم جھیل کے آئینے میں
    چندرما شرمائے
    ساگر کی چنچل لہروں میں
    سیپ کے دیپ سمائے
    خوشبو اور دھنک مل جائے
    پون جھکولے کھائے
    اک سیماب کی مورت ایسی
    اک آنسو کی مورت
    جنم مرن کی پگڈنڈی پر
    جس کو خوف مہورت
    جگ کے غم اپنائے
    وقت پڑے تو موم کی گڑہا
    کبھی کبھی فولاد
    کبھی کبھی تو جیسے اس کو
    کچھ بھی رہے نہ یاد

    ہر سپنا بسرائے!
    مدماتی کہلائے

    میں اک شاعر
    دھرتی اور آکاش کے اندر
    کس کو بکھرا پاؤں
    کس کا آنچل دھندلا کاجل
    جب جب پاس بلائے
    اندھی یاس کے اس بن باس میں
    آس کی راہ دکھلائے
    گلشن گلشن کیاری کیاری
    کس کے گیتوں کا رس جاری
    کس کے رنگ پریم آہنگ نے
    پگ پگ پھول کھلائے
    کس کی باس سے بگیا مہکے
    کلی کلی مسکائے
    کس کے شیتل دھیان میں کھو کر
    روم روم لہرائے
    کس کے پیار کا قیدی ہو کر
    میں نے شعر بنائے
    کس کی کوکھ میں ہیرے موتی
    کس کی مانگ میں تارے
    ناری تیرے روپ کی شوبھا
    کیا کیا نقش ابھارے
     
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    سورج مکھیا!



    جنم جنم کی تُو دکھیاری پر مکھیا کہلائے
    نگر نگر وہ سونا بانٹے، سورج نام دھرائے

    پورب پچھم، اتر دکن، اس کی جگمگ لیلا
    دنیا کے تو کام سنوارے اور تجھ کو ترسائے

    تجھ کو اپنے سوامی کے درشن ہی لگیں عبادت
    جس جانب مُکھ اس کا دیکھے، اس جانب مڑ جائے

    پھر بھی کبھی تو سوچا ہوتا وہ کیوں پھرے اداس
    نسدن جس کی چاہ میں تُو نے آس کے دیپ جلائے

    گھاس کپاس نہ گل بوٹوں کو تیرے سنگ ہمدردی!
    تو من مورکھ، پگلی برہن، چُھپ چُھپ نِیر بہائے

    جب آکاش پہ پھیلے ہر سُو وہ پرکاش اجالا
    تیرے لئے بھگوان پدھاریں، پریتم چَھب دکھلائے

    تیرا سپنا ہر دم تپنا ، کب ہو گا سوئیکار
    ساگر اندر وہ جل مندر میں جو ڈوب نہائے

    تُو دھرتی میں وہ امبر پر، تیرا میل نہ ہوئے
    رات گئے ہمراز سہیلی اوس بچاری روئے
     
  12. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    آخر کار جدائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا
    گلی گلی رسوائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    شہروں شہروں آج ہمارے عشق کا چرچا عام ہوا
    اپنی بات پرائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    وہ چت چور، وہ بھولا بھالا، وہ معصوم سا پردیسی
    اس نے نیند چرائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    کیاری کیاری صحنِ چمن میں پھرنے والی موجِ صبا
    پی کا سندیسہ لائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    اہلِ ستم سے مہر و وفا کی ہم کو کوئی امید نہ تھی
    یوں بےدرد خدائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    بن جانے جو کر بیٹھے تھے، اس وعدے کے بندھن سے
    موت کے بعد رہائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا

    صبحِ طرب کی آس لگائے اپنا جیون بیت چلا
    اتنی دیر ضیائی ہو گی، یہ تو نہ ہم نے سوچا تھا​
     
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    بےسبب رُوٹھ گیا چھوڑ کے جانے والا
    پھر سے شاید وہ نہیں لوٹ کے آنے والا

    وہ جو برسا نہ کُھلا، ابرِ گریزاں کی طرح
    چشم مے گوں سے میری پیاس بجھانے والا

    وہ دھنک تھا کہ شفق، پیکر خوشبو بن کر
    دل کے آنگن میں نئے پھول کھلانے والا

    مٹ گیا حرفِ غلط کی طرح وہ دنیا سے
    کیا کوئی اور نہ تھا نقش مٹانے والا!

    سب کو کچھ روز ٹھہرنا ہے، گزر جانا ہے
    ہے یہاں کون بھلا ٹھور ٹھکانے والا ؟

    جانے کیوں غیر سا لگتا ہے بھری محفل میں
    دل میں رہ کر بھی سدا آنکھ چرانے والا

    کیا تعجب اسے احساس ہے یکتائی کا!
    کہ میرا عشق نہیں عام زمانے والا

    اب نہ دیکھو گے کبھی چاند سا مکھڑا اختر
    خُوں رُلا کر بھی نگاہوں میں سمانے والا​
     
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    قول و قرار، مہر و وفا، دوستی میں ہے
    سچ ہے کہ زندگی کا مزا دوستی میں ہے

    رنج و ملال، جور و جفا، دشمنی کے رنگ
    پراعتماد لطف و عطا دوستی میں ہے

    جانِ بہار بادِ صبا کا پیام سن!
    بُلبُل کا سوز، گل کی ادا دوستی میں ہے

    معصوم لغزشوں پہ میری بدگماں نہ ہو
    آنکھوں کا جرم، دل کی سزا دوستی میں ہے

    تم کو ہے مال و زر کے تعاقب کی بے کلی
    مجھ کو جو یہ سکُون ملا، دوستی میں ہے

    میں اپنے آپ میں نہ رہا تجھ کو دیکھ کر
    اور بےخودی میں جو بھی کہا دوستی میں ہے

    او ناسپاس نامِِ خدا بےرخی کو چھوڑ!
    اختر کے دردِ دل کی دوا دوستی میں ہے​
     
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    نظر نظر کا نصاب چہرے
    شباب رُت میں گلاب چہرے

    برنگِ قندیلِ نیم شب وہ
    دمکتے زیرِ نقاب چہرے

    خطاب کرتے مسافروں سے
    سوال پر لاجواب چہرے

    حروف پلکیں نقوش زلفیں
    حدیث باطن کتاب چہرے

    بکھرتے آنچل نکھرتے منظر
    سحاب گیسو شہاب چہرے

    تھی جن سے روشن بساطِ یاراں
    کدھر گئے آفتاب چہرے

    مرے تخیل کی آبرو ہیں
    گئے دنوں کے وہ خواب چہرے

    فریب دیتے ہیں دوستی کا
    کبھی کبھی انتخاب چہرے

    کہاں یہ غربت کی دُھول اختر
    کہاں شرافت مآب چہرے​
     
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    سفر بے منزل و بے انتہا کیا
    "نہ ہو مرنا تو جینے کا مزا کیا"

    غرض مندی کے بازارِ ہوس میں
    کسی کی بےوفائی کا گلہ کیا

    خیالِ یار میں ہر دم پریشاں
    مریضِ عشق پائے گا شفا کیا

    الجھ کر عقل کے کارِ زیاں میں
    دلِ ناداں تجھے آخر ملا کیا؟

    توجہ ہے کبھی نہ ربط باہم
    تعلق میں ہمارے اب رہا کیا

    عمل میں گر نہ ہو اخلاص تو پھر
    کہا کیا آپ نے، ہم نے سُنا کیا

    سبھی محتاج ہیں اس در کے اختر
    تونگر کیا، فقیرِ بےنوا کیا​
     
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    جلوہء حسن چار سُو کیا ہے
    اور نگاہوں میں جستجو کیا ہے

    اہلِ حرص و ہوا کو کیا معلوم
    لذتِ زخم آرزو کیا ہے

    معجزہ ہے صدف نشینی کا
    ورنہ قطرے کی آبرو کیا ہے

    تجھ کو اجداد کی سند پہ غرور
    مجھ کو اتنی غرض کہ تُو کیا ہے

    جز محبت ہم اہل دل کے لیے
    اور موضوع گفتگو کیا ہے

    پتی پتی میں رنگ بھرتی ہوئی
    مستقل خواہش نمو کیا ہے

    وقت کے بیکنار صحرا میں
    میری ہستی کی آبجو کیا ہے

    دوستوں کا خلوص دیکھ اختر
    تجھ کو اندیشۂ عدو کیا ہے​
     
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    ساون نے رم جھم برسائی تیری یاد
    پھولوں کی خوشبو، پروائی تیری یاد

    شام ڈھلے جب سارے ساتھی چھوڑ گئے
    ہردے کا پٹ کھول کے آئی تیری یاد

    ہر چہرے پر تیرے رخ کی جوت جگی
    ہر پیمانے میں لہرائی تیری یاد

    اب تو یہ میرے جیون بھر کے ساتھی ہیں
    میٹھا میٹھا غم، تنہائی، تیری یاد!

    جب جب آس کا پنچھی پت جھڑ میں بھٹکے
    جاگ اٹھے میری انگنائی تیری یاد

    باقی دنیا کی دم سازی جھوٹی بات
    دکھیا جیون کی سچائی تیری یاد

    ہر موسم کے ساتھ چلی آتی ہے جو
    اختر نے سو بار بھلائی تیری یاد​
     
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    رہتا ہے سدا حسن جواں دل کے نگر میں
    ارزاں ہے بہت جنسِ گراں دل کے نگر میں

    اللہ رے ویرانئ جذبات کا عالم!
    شعلے نہ شرارے نہ دھواں، دل کے نگر میں

    تم ڈھونڈ چکے ہو جسے شائد یہیں مل جائے
    دیکھو ذرا صاحبِ نظراں دل کے نگر میں

    پھر بسنے لگیں اجڑی تمناؤں کے ایواں
    آ جاؤ کبھی راحتِ جاں دل کے نگر میں

    تنہائی میں اکثر یوں کھنکتی ہے سماعت
    جیسے ہو کوئی رقص کناں دل کے نگر میں

    دامن میں چھپائے ہوئے ہے اک نئی دنیا
    ہر منظر صد رشک جناں دل کے نگر میں

    تا عمر کبھی ہم کو نہ بھولے گا وہ اختر!
    دیکھا ہے اک ایسا بھی سماں دل کے نگر میں​
     
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    غم کے پاتال میں جیتے رہنا
    یعنی ہر حال میں جیتے رہنا

    جب کوئی آس نہ ہو ، مشکل ہے
    بس مہ و سال میں جیتے رہنا

    بخت کا ساتھ نبھانے کے لیے
    وقت کی چال میں جیتے رہنا

    تلخ صہبائے گرانباری کے
    رود و سیال میں جیتے رہنا

    اپنی کرنی کی سزا ہو جیسے
    جی کے جنجال میں جیتے رہنا

    خوش مزاجی کا چلن لگتا ہے
    خواہشِ مال میں جیتے رہنا

    یہ تو مرنا ہے نہ جینا اختر
    بھوک اور کال میں جیتے رہنا​
     

اس صفحے کی تشہیر