ٹائپنگ مکمل اختر ضیائی ۔۔۔ منتخب کلام

شیزان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 6, 2014

  1. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    کشتِ جاں جس کے ترشح کو ترستی ہے ابھی
    اب وہ بادل نہ کبھی لوٹ کے پھر آئے گا


    اختر ضیائی
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    چہرے کی دھوپ، زُلف کے سائے سمٹ گئے
    پل کی جھپک میں وصل کے ایام کٹ گئے

    اور مصلحت شناس تیرا کُھل گیا بھرم!
    لے ہم ہی تیرے پیار کے رستے سے ہٹ گئے

    پاسِ ادب کہ پاسِ مرّوت کہیں اسے
    اکثر لبوں تک آئے گِلے اور پلٹ گئے

    پائی نہ پھر بتوں نے وہ یکسانی الست
    رنگوں میں بٹ گئے کبھی شکلوں میں بٹ گئے

    گلشن میں چل گیا ہے بدلتی رُتوں کا سحر
    نغمے ابل پڑے کبھی ملبوس پھٹ گئے

    گزری چمن سے موجِ صبا ناچتی ہوئی
    کانٹے مچل کے دامنِ گل سے لپٹ گئے

    اختر وہ شوقِ دید کی لذت، وہ بےکلی!
    آ کر گئے وہاں ، کبھی جا کر پلٹ گئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  3. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    سرورِ محفلِ مہتاب اب بھی زندہ ہے
    خیالِ خاطرِ احباب اب بھی زندہ ہے

    یہ اس کی فطرتِ سیماب کا تقاضا ہے
    کشا کش دلِ بیتاب اب بھی زندہ ہے

    جگر کو داغ کی قندیل بخشنے والے!
    یہ تیرا تحفۂ نایاب اب بھی زندہ ہے

    عقیدتوں کے صنم کب سے ٹوٹ پھوٹ گئے
    طلسمِ سلسلۂ خواب اب بھی زندہ ہے

    خزاں نصیب سہی معرضِ تخیل میں
    فروغِ موسمِ شاداب اب بھی زندہ ہے

    بجا کہ عشق کے ماروں کا اب نہیں چرچا
    وفا شعارئ پنجاب اب بھی زندہ ہے

    نہ جانے اہلِ نوا و صدا پہ کیا گزرے
    کہ موجِ فکر میں گرداب اب بھی زندہ ہے

    نوائے ساز کی حسرت مٹی نہیں اختر
    شعورِ لذتِ مضراب اب بھی زندہ ہے
     
  4. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    رنگوں کو، خوشبوؤں کو ترا نام بخش دوں
    جی چاہتا ہے زیست کو انعام بخش دوں

    ڈسنے لگی ہے تلخ حقائق کی تیز دھوپ
    چاہو اگر تو سایۂ اوہام بخش دوں

    الجھے تخیلات کی ترسیل کے لئے
    اظہار کو سہولتِ ابہام بخش دوں

    بہتر ہے ہمرہی میں مصائب کا تجزیہ!
    آغاز کو نہ تہمتِ انجام بخش دوں

    ایسا نہ ہو کہیں دلِ بےچین ایک دن
    ناکامیوں کا تجھ کو ہی الزام بخش دوں

    یہ دور دلفریب سرابوں کا دور ہے
    اس کو شعورِ ذات کا پیغام بخش دوں

    ان کی خبث دلی، کریں چھپ کر مخالفت
    میرا یہ حوصلہ کہ سرِ عام بخش دوں

    حور و طہور صحبتِ غلماں کی یاد میں
    آ شیخ تجھ کو بادہء گلفام بخش دوں

    کچھ دیر ذکرِ صبحِ قیامت کو بھول جا
    ناداں تجھے مہکتی ہوئی شام بخش دوں

    مدت کے بعد کیوں نہ عدم کی زبان میں
    اختر غزل کو منصبِ الہام بخش دوں
     
    • زبردست زبردست × 2
  5. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    قائد اعظم کے حضور !

    یقین تُو نے دیا ، اعتبار تُو نے دیا
    نظر کو نور، دلوں کو قرار تُو نے دیا

    ترے نثار اے ملت کے قائدِ اعظم !
    جو کھو چکے، ہمیں وہ وقار تُو نے دیا

    نشانِ منزلِ مقصود کر دیا روشن
    نقوشِ رہ گزر کو نکھار تُو نے دیا

    ورائے عقل تھیں شیرازہ بندیاں تیری
    جفا گروں کو وفا کا شعور تُو نے دیا

    شعورِ ذات کو جہدِ بقا کی لذت دی
    بھڑک اٹھا جو عمل کا شرار تُو نے دیا

    چمن میں یورشِ صر صر سے جو پریشاں تھے
    گلوں کو مژدہء عہدِ بہار تُو نے دیا

    نمو پذیر تھے گو شاخسار برسوں سے
    ہوائے شوق غمِ برگ و بار تُو نے دیا

    بھٹک رہے تھے جو مدت سے دشتِ غربت میں
    سبک سروں کو مقدس دیار تُو نے دیا

    ہزار تلخ جراحت ملے ، نہ بھولیں گے
    وہ جیسے خاک نشینوں کو پیار تُو نے دیا

    کہاں وہ طرزِ قیادت، طریقِ راہبری
    جو ہر قدم پہ بصد افتخار تُو نے دیا !
     
    • زبردست زبردست × 2
  6. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    پرچم سبز ہمارا !

    ماضی کے حالات
    آج بھی سب کو یاد ہیں
    جیسے کل کی بات

    خلقت شاد ہوئی
    غیروں کی سفاک غلامی
    سے آزاد ہوئی

    گھر گھر جلے چراغ
    مل جل کر شاداب کریں گے
    یہ خوشیوں کا باغ

    اپنا پاکستان
    قائد اعظم نے فرمایا
    ہے سب کی پہچان

    دُھول میں پُھول گئے
    قوم کے لیڈر سارے وعدے
    جیسے بُھول گئے

    نفرت ایک عذاب
    جس کے کارن بن گئے اپنے
    سارے خواب سراب

    مخلص دھوکا کھائیں
    لوٹ کھسوٹ کے ماہر ٹولے
    مل کر موج اڑائیں

    پرچم سبز ہمارا
    ہری بھری دھرتی کے اوپر
    روشن چاند ستارہ

    سدا رہے آباد
    اسلامی دستورِ اخوت
    ہے جس کی بنیاد !
     
    • زبردست زبردست × 1
  7. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    موسم کی پہلی برف باری

    فضا سرد ہے
    اور ہوائے زمستاں رواں ہے
    ہر اک سمت سنسان سی خامشی میں
    سرِشام سے ہی کلب اور ڈسکو کے نغمے
    گھنی دھند میں اونگھتے ہیں
    بس اسٹاپ، زیر زمیں ریل کے مستقر
    جیسے بےرونقی کی ردا اوڑھ کر
    سو گئے ہیں

    منڈیروں پہ، سڑکوں میں اور پارکوں میں
    پہاڑوں پہ، دریاؤں میں ، وادیوں میں
    خلاؤں ، فضاؤں کی پہنائیوں میں
    دُھنی روئی کی تتلیاں سی اترتی
    نظر آ رہی ہیں
    سبک سار گنگ آبشاروں کے جھرنے تھمے ہیں
    درختوں کی شاخوں پہ برفاب گالے جمے ہیں
    شفق رنگ پھولوں کے گجرے
    نہ سبزے کی جھالر
    نہ بور اور خوشے، نہ کونپل نہ پتے
    نہ کلیاں نہ بھنورے نہ طائر
    عجب بےکسی!
    سوگ میں جیسے بیوہ کا جوبن
    کفن پوش آنگن!!

    نئے موسموں کی تمنا میں بےچین پیغام بر
    جنگ بردوش مطرب پرندے
    کہیں کھو گئے ہیں
    مرے باغ کے کنج میں سرو تنہا
    نگوں سار اپنی لگن میں مگن
    جانے کیا سوچتا ہے
    میں کھڑکی کے شیشے سے باہر کے یخ بستہ منظر
    کو یوں دیکھتا ہوں
    کہ جیسے ابھی تک اسی خلد زار تمنا
    کے دامن میں الجھا کھڑا ہوں
    جہاں رُت کا جادو جواں ہے
    جہاں گل کدوں، سبزہ زاروں
    چناروں، بہاروں کی خوشبو
    میری روح کی خلوتوں میں رواں ہے
    کہ اس چاند کا عکسِ تاباں
    نہاں خانۂ دل میں شعلہ بجاں ہے
    میں جس کی خوشی کے لیے
    دربدر بےوطن ہو گیا ہوں
    اسے کیا خبر زرد پتوں
    رواں پانیوں
    بےنوا طائروں، شاعروں
    غم نصیبوں کی منزل کہاں ہے؟
    فضا سرد ہے
    اور ہوائے زمستاں رواں ہے
     
  8. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    خیال پارے

    یوں کشت جوانی میں
    کانٹے ہی نہ بو لینا
    جذبات کی لہروں میں
    کشتی نہ ڈبو لینا

    کیا روگ لگا بیٹھے
    اس چاند کی فرقت میں
    یاروں میں سدا ہنسنا
    تنہائی میں رو لینا

    خط آئے تو خوش ہونا
    اور طنز بھری باتیں
    پڑھ کر دلِ مضطر میں
    نشتر سے چبھو لینا

    کیا طرفہ تماشا ہے
    پانی میں گرا کر بھی
    کس شان سے کہتے ہیں
    دامن نہ بھگو لینا

    مشرق میں ٹھہرتا ہے
    آئین وفا داری
    مغرب میں حماقت ہے
    بس ایک کا ہو لینا

    غفلت میں گنواتے ہو
    کیوں نعمتِ ہستی کو
    پھر حشر تلک بےشک
    آرام سے سو لینا

    دنیا کی جفاؤں پر
    افسوس سے کیا حاصل
    ملتا ہے وہی آخر
    قسمت میں ہو جو لینا

    کردار و عمل میں ہیں
    سو طرح کے اندیشے
    گفتار میں آساں ہے
    گو نام نکو لینا

    الجھے ہو بہت اختر
    جاں سوز اندھیروں سے
    اے جانِ وفا جاں سے
    اب ہاتھ نہ دھو لینا
     
  9. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool


    میں سبک نوش ہوں مری گلرُو
    مجھ کو کافی ہے انکھڑیوں کا سبُو

    ایک بےنام بےکلی سی ہے
    اے دلِ زار چل گیا جادُو

    صبح ِ تمثیل ہیں تیرے عارض
    شام آثار ہیں تیرے گیسُو

    ترے دیدارِ یک نظر کے نثار
    آنکھ کا نُور اور جگر کا لہُو

    آہ عہدِ شباب کے لمحے
    وحشت آموز دشت کے آہُو

    عشق سے بھی مفر نہیں لیکن
    زیست کے اور بھی تو ہیں پہلُو

    چشمِ بینا کے واسطے اختر
    ان کے جلوے ہیں ہر کہیں ، ہر سُو​
     
  10. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    کنجِ زنداں فرازِ دار قبول
    یعنی ہر ہدیۂ بہار قبول

    شوکت دوجہان تج بیٹھے
    تھی جنہیں تیری رہگزار قبول

    تا بہ کے زیست سے نبھا سکتے
    کر لی آخر ہمیں نے ہار قبول

    شرط اک جلوہء بےحجابانہ!
    حشر تک ہم کو انتظار قبول

    ہم اذیت پسند لوگوں نے
    پھول دے کر کئے ہیں خار قبول

    بعض اوقات زہر بھی ساقی!
    ہنس کے کرتے ہیں میگسار قبول

    کتنے نادان تھے ہم بھی اے اختر
    کر لیا آگہی کا بار قبول​
     
  11. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool


    اُس کو منزل ملی نہ گھر ہی رہا
    تم سے بچھڑا تو در بدر ہی رہا

    آنکھ کچھ منظروں پہ رکتی رہی
    دل تو آمادہء سفر ہی رہا

    ایک عالم کی فکر تھی جس کو
    میری حالت سے بےخبر ہی رہا

    خوف سے کانپ کانپ جاتا تھا
    زرد پتہ جو شاخ پر ہی رہا

    دوسروں کے جو عیب گنتا تھا
    حیف تا عمر بےہُنر ہی رہا

    زیست صد جشنِ آرزو ٹھہری
    یہ فسانہ بھی مختصر ہی رہا

    وسعتِ کائنات میں اختر
    جلتا بجھتا سا اک شرر ہی رہا​
     
  12. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    رعنائی دستورِ مشیت کی ادا ہوں
    آئینہ صفت پرتوِ آئینہ نما ہوں

    ہر چند تیری یاد میں جاں سوز خلش ہے
    ہمت ہے کہاں پھر بھی تجھے بھولنا چاہوں

    جُز اشک میں کچھ دے نہ سکا ارضِ وطن کو
    بادل ہوں مگر دشت کے دامن سے اٹھا ہوں

    فرصت ہو تو پل بھر کے لیے غور سے دیکھیں!
    بھولے ہوئے لمحوں کا میں پیمانِ وفا ہوں

    پیتا ہوں تیری چشمِ بلا خیز کے ساغر
    گرادبِ بلا ہوں کبھی ہم دوشِ صبا ہوں

    پابندئ آدابِ تمنا سے نکل کر
    لو آج میں دیوارِِ خرد پھاند گیا ہوں

    ہستی کی کڑی دھوپ نے جُھلسا دیا اختر
    اس راہ میں ہر گام پہ مر مر کے جیا ہوں​
     
  13. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ریزہ ریزہ بکھر گئے ہم بھی
    کشتِ جاں سے گزر گئے ہم بھی

    وقت ناساز گار تھا پھر بھی
    کچھ نہ کچھ کام کر گئے ہم بھی

    ہم کہ صبحِ ازل کے بھولے تھے
    شام آئی تو گھر گئے ہم بھی

    کچھ تو ظلمت کا تُند تھا ریلا
    کچھ مثالِ شرر گئے ہم بھی

    بجھ گئی آرزُو کی چنگاری
    جس کے بجھتے ہی مر گئے ہم بھی!

    باغِ ہستی میں پُھول کی مانند
    دو گھڑی شاخ پر گئے ہم بھی

    پاسِ عہد وفا رہا اختر
    یوں تو ڈرنے کو ڈر گئے ہم بھی​
     
  14. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ظلمتوں کے پروردہ روشنی سے ڈرتے ہیں
    موت کے یہ سوداگر زندگی سے ڈرتے ہیں

    علم ہی وہ طاقت ہے، خوف کی جو دشمن ہے
    مصلحت کے خوشہ چیں آگہی سے ڈرتے ہیں

    دشمنوں کی نیت تو ہم پہ خوب ظاہر تھی
    پر قریب لوگوں کی دوستی سے ڈرتے ہیں

    جن کو فرض کی خاطر راستی پہ مرنا ہو
    کچھ بھی کر گزرنا ہو، کب کسی سے ڈرتے ہیں !

    جانے کس گھڑی کھل کر حرفِ آرزو کہہ دے
    ہم کو فکر کانٹوں کی، وہ کلی سے ڈرتے ہیں

    پائیں گی توجہ گو جذب و جوش کی باتیں
    عقل و ہوش والے تو خامشی سے ڈرتے ہیں

    وہ کہ جو سمجھتے ہیں فکر و فن کو بے معنی !
    جانے کس لئے اختر شاعری سے ڈرتے ہیں​
     
  15. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    کیاری کیاری صحن چمن میں گو تھے عام پریشاں پُھول
    فصلِ بہاراں آتے ہی پر ہو گئے چاک گریباں پُھول

    پریت لگا کر جس کو ساجن بیکل تنہا چھوڑ گیا
    کوئل کی فریاد پہ بُلبُل گم سم حیراں حیراں پُھول

    جھیل کنارے ساون رُت میں جیسے پریوں کا میلہ
    حدِ نظر تک نیلے نیلے اُجلی دُھوپ میں رخشاں پُھول

    حسب توقع توڑ کے ہم بھی زلفوں میں اٹکا دیتے
    کاش گلستاں میں مل جاتے ان کی شان کے شایاں پُھول

    جھلھل کرتے نیل گگن میں چُھپ گئے روشن تارے، اور
    ڈالی ڈالی رو کر شبنم کر گئی اور نمایاں پُھول

    تیری یاد میں میں ہوں جیسے جنگل جنگل روتی اوس
    مجھ کو بھول کے تو ہے جیسے گلشن گلشن خنداں پُھول

    لمبی عمروں والے کانٹے سب کو دکھ پہنچاتے ہیں
    اختر دل کو موہ لیتے ہیں پل دو پل کے مہماں پُھول​
     
  16. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool
    اک نظر سوئے بام کر چلئے
    چلتے چلتے سلام کر چلئے

    گردشِ وقت سے نکل کے ذرا
    شرکتِ دورِ جام کر چلئے

    ہوش کی دُھوپ جی جلاتی ہے
    خم کے سائے میں شام کر چلئے

    کیوں نہ ایامِ عشرتِ فانی
    مہ جبینوں کے نام کر چلئے

    عشق کے راستے ہیں ناہموار
    اب ذرا مجھ کو تھام کر چلئے

    کاروبارِ وفا چلانے کو
    رسمِ وحشت کو عام کر چلئے

    کچھ تو نام و نشاں رہے اختر
    کچھ تو دنیا میں کام کر چلئے​
     
  17. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    پڑے ہیں اک عمر سے قفس میں
    نفس نفس ہے کسی کے بس میں

    جُنوں کے طور و طریق الگ ہیں
    جدا ہیں عقل و خرد کی رسمیں

    بساط کونین کے حقائق
    میرے تخیّل کی دسترس میں

    بنا لیا بجلیوں نے مسکن
    میرے نشیمن کے خار و خش میں

    محال لاکھوں میں کوئی ہم سا
    عبث ہے ڈھونڈو جو پانچ دس میں​
     
  18. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ساحل پر کی آوازوں سے کبھی نہ ٹھہرا دریا
    اپنی دُھن میں بہتا جائے اندھا بہرا دریا!

    اُچھلیں گے کم ظرف چھچھورے چھوٹے ندی نالے
    اتنا ہی گھمبیر ہمیشہ جتنا گہرا دریا

    بیت گئی یوں پلک جھپک میں چھایا روپ جوانی
    ساون میں جس طرح سے اُترے دے کر لہرا دریا

    انساں اک دن اس کے من کا سیپ چرا ہی لے گا
    بپھرے طوفانوں سے دے گا کب تک پہرا دریا

    اس کا پانی پی کر اختر دھرتی سونا اُگلے
    کھیتوں کھیتوں دولت بانٹے سیٹھ سنہرا دریا​
     
  19. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ہجر میں حوصلے نہیں رہتے
    دور کے سلسلے نہیں رہتے

    حسن کی کج ادائیوں کے طفیل
    عشق میں ولولے نہیں رہتے

    جاگ اٹھے جو خواہشِ منزل
    پھر کوئی مرحلے نہیں رہتے

    تُند خُو ہیں مسائلِ ہستی
    مدتوں تک ٹلے نہیں رہتے

    چھوڑ جاتے ہیں کچھ نشاں اپنے
    دشت میں قافلے نہیں رہتے

    بوند ساگر میں جب ملے اختر
    جسم کے فاصلے نہیں رہتے​
     
  20. شیزان

    شیزان لائبریرین

    مراسلے:
    6,469
    موڈ:
    Cool

    ہر طرف شورِ فغاں ہے یارو
    ہر نشیمن میں دُھواں ہے یارو

    سہمی سہمی ہوئی ہر ایک نظر
    طالب حفظ و اماں ہے یارو

    غور فرماؤ تو خاموشی بھی
    ایک اندازِ بیاں ہے یارو!

    ہم بھی سینے میں جگر رکھتے ہیں
    اپنے منہ میں بھی زباں ہے یارو!

    چھٹ ہی جائے گی یہ تاریکئ شب
    جو کراں تا بہ کراں ہے یارو​
     

اس صفحے کی تشہیر