طارق شاہ

  1. طارق شاہ

    بشیر بدر :::::: آنسوؤں سے دُھلی خوشی کی طرح :::::: Dr. Bashir Badr

    غزل آنسوؤں سے دُھلی خوشی کی طرح رشتے ہوتے ہیں شاعری کی طرح دُور ہوکر بھی ہُوں اُسی کی طرح چاند سے دُور چاندنی کی طرح خوبصورت، اُداس، خوفزدہ وہ بھی ہے بیسویں صدی کی طرح جب کبھی بادلوں میں گھِرتا ہے چاند لگتا ہے آدمی کی طرح ہم خُدا بن کے آئیں گے ورنہ! ہم سے مِل جاؤ آدمی کی طرح سب نظر...
  2. طارق شاہ

    بشیر بدر :::::اچھّا تمھارے شہر کا دستوُر ہو گیا :::::: Dr. Bashir Badr

    غزل اچھّا تمھارے شہر کا دستوُر ہو گیا جِس کو گلے لگا لِیا ، وہ دُور ہو گیا کاغذ میں دب کے مر گئے کیڑے کتاب کے دِیوانہ بے پڑھے لِکھے مشہوُر ہو گیا محلوں میں ہم نے کتنے سِتارے سجا دیئے لیکن زمِیں سے چاند بہت دُور ہو گیا تنہائیوں نے توڑ دی ہم دونوں کی انا! آئینہ بات کرنے پہ مجبوُر ہو گیا...
  3. طارق شاہ

    باؔقر زیدی ::::: خالقِ حُسنِ کائنات ہے وہ::::: Baquer Zaidi

    نظم اللہ جمیلُ و یحبُ الجمال (اللہ حَسِین ہے اور حُسن سے محبّت کرتا ہے) خالقِ حُسنِ کائنات ہے وہ خالقِ کُلِّ ممکنات ہے وہ خالقِ کائناتِ حُسن ہی حُسن اُس کی ذات و صِفات حُسن ہی حُسن حُسن سے مُنکشف نمودِ خُدا حُسن ہی حُسن ہے وجودِ خُدا سر بَسر حُسنِ نُورِ ذات ہے وہ صاحبِ مظہَرِ صِفات ہے وہ...
  4. طارق شاہ

    مجاز اسرارالحق مجاؔز لکھنوی ::::::پَرتَوِ ساغرِ صہبا کیا تھا ::::::Majaz Lakhnawi

    غزل پرتَوِ ساغرِ صہبا کیا تھا رات اِک حشر سا برپا کیا تھا کیوں جوانی کی مجھے یاد آئی میں نے اِک خواب سا دیکھا کیا تھا حُسن کی آنکھ بھی نمناک ہُوئی عِشق کو آپ نے سمجھا کیا تھا عِشق نے آنکھ جُھکا لی، ورنہ حُُسن اور حُسن کا پردا کیا تھا کیوں مجازؔ آپ نے ساغر توڑا آج یہ شہر میں چرچا...
  5. طارق شاہ

    اعجاز رحمانی ::::: راہ دُشوار جس قدر ہوگی::::: Ejaz Rehmani

    غزل راہ دُشوار جس قدر ہوگی جُستُجو اور مُعتبر ہوگی آدمی آدمی پہ ہنستا ہے اور کیا ذِلَّتِ بشر ہوگی پتّھروں پر بھی حرف آئے گا جب کوئی شاخ بے ثمر ہوگی جاگ کر بھی نہ لوگ جاگیں گے زندگی خواب میں بسر ہوگی حُسن بڑھ جائےگا تکلّم کا جس قدر بات مُختصر ہوگی اعجاز رحمانی
  6. طارق شاہ

    شفیق خلش :::::: بے اعتناعی کی بڑھتی ہُوئی سی یہ تابی :::::: Shafiq Khalish

    غزل بے اعتناعی کی بڑھتی ہُوئی سی یہ تابی کہیں نہ جھونک دے ہم کو بجنگِ اعصابی گئی نظر سے نہ رُخ کی تِری وہ مہتابی لیے ہُوں وصل کی دِل میں وہ اب بھی بیتابی مَیں پُھول بن کے اگر بُت سے اِک لِپٹ بھی گیا زیادہ دِن تو میّسر رہی نہ شادابی مِری نمُود و نمائش ہے خاک ہی سے ، مگر سکُھا کے خاک...
  7. طارق شاہ

    ناصر کاظمی : ::::: پردے میں ہر آواز کے شامِل تو وہی ہے ::::::Nasir Kazmi

    غزل پردے میں ہر آواز کے شامِل تو وہی ہے ہم لا کھ بدل جائیں، مگر دِل تو وہی ہے موضوعِ سُخن ہے وہی افسانۂ شِیرِیں ! محِفل ہو کوئی، رَونَقِ محِفل تو وہی ہے محسُوس جو ہوتا ہے، دِکھائی نہیں دیتا دِل اور نظر میں حدِ فاصِل تو وہی ہے ہر چند تِرے لُطف سے محرُوم نہیں ہم لیکن دلِ بیتاب کی مُشکل تو وہی...
  8. طارق شاہ

    شفیق خلش :::::: نہیں کہ پیار و محبّت میں کاربند نہیں ! :::::: Shafiq Khalish

    غزل نہیں کہ پیار ، محبّت میں کاربند نہیں بس اُس کی باتوں میں پہلے جو تھی وہ قند نہیں نظر میں میری ہو خاطر سے کیوں گزند نہیں خیال و فکر تک اُس کے ذرا بُلند نہیں کب اپنے خواب و تمنّا میں کامیاب رہے ہم ایک وہ جو کسی مد میں بہرہ مند نہیں تمام زیور و پازیب ہم دِلا تو چکے! ملال پِھر بھی ،کہ...
  9. طارق شاہ

    محشؔر بدایونی :::: نشہ ہے، جہل ہے، شر ہے، اِجارہ داری ہے::::: Mehshar Badayuni

    غزل نشہ ہے، جہل ہے، شر ہے، اِجارہ داری ہے ہماری جنگ، کئی مورچوں پہ جاری ہے سَمیٹ رکّھا ہے جس نے تعیش دُنیا کے سُکونِ دِل کا تو ، وہ شخص بھی بِھکاری ہے یہ پُوچھنے کا تو حق ہے سب اہلِ خِدمت کو! ہمارے دُکھ ہیں، خوشی کیوں نہیں ہماری ہے اُس اِنتظار کا اب موت تو نہیں ہے جواز جس اِنتظار میں، اِک...
  10. طارق شاہ

    فیض احمد فیضؔ :::::ہم تو مجبور تھے اُس دِل سے کہ جس میں ہر دَم ::::: Faiz Ahmad Faiz

    ہم تو مجبور تھے اُس دِل سے ! ہم تو مجبور تھے اُس دِل سے کہ جس میں ہر دَم گردِشِ خُوں سے وہ کُہرام بَپا رہتا ہے جیسے رِندانِ بَلا نَوش جو مِل بیٹھیں بَہم میکدے میں سفرِِجام بَپا رہتا ہے سَوزِ خاطِر کو مِلا جب بھی سہارا کوئی داغِ حرمان کوئی، دردِ تمنّا کوئی مرہَمِ یاس سے ما ئل بہ شِفا ہونے لگا...
  11. طارق شاہ

    شفیق خلش ::::::راہ ِحق میں ہُوئے لڑکر ،کبھی مر کر لاکھوں ::::::Shafiq Khalish

    راہ ِحق میں ہُوئے لڑکر ،کبھی مر کر لاکھوں زندہ جاوید ہر اِک دیس کے گھر گھر لاکھوں ہو محبّت کے خزانے میں کہاں کُچھ بھی کمی! چاہے دامن لئےجاتے رہیں بھر بھر لاکھوں کوچۂ یار کومیلے کا سماں دیتے ہیں اِک جَھلک دِید کی خواہش لئے دِن بھر لاکھوں کردے مرکوُز جہاں بَھر کی نِگاہیں خود پر چاند پِھر...
  12. طارق شاہ

    امجد اسلام امجد ::::::دلِ بے خبر، ذرا حوصلہ ! ::::::Amjad Islam Amjad

    دلِ بے خبر، ذرا حوصلہ ! کوئی ایسا گھر بھی ہے شہر میں، جہاں ہر مکین ہو مطمئن کوئی ایسا دن بھی کہیں پہ ہے، جسے خوفِ آمدِ شب نہیں یہ جو گردبادِ زمان ہے، یہ ازل سے ہے کوئی اب نہیں دلِ بے خبر، ذرا حوصلہ! یہ جو خار ہیں تِرے پاؤں میں، یہ جو زخم ہیں تِرے ہاتھ میں یہ جو خواب پھرتے ہیں دَر بہ دَر، یہ...
  13. طارق شاہ

    عرشؔی بَھوپالی ::::::نِگاہِ شوق سے کب تک مُقابلہ کرتے :::::: Arshi Bhopali

    عرشؔی بَھوپالی غزل نِگاہِ شوق سے کب تک مُقابلہ کرتے وہ اِلتفات نہ کرتے تو اور کیا کرتے یہ رسمِ ترکِ محبّت بھی ہم ادا کرتے ! تِرے بغیر مگر زندگی کو کیا کرتے غُرور ِحُسن کو مانوُسِ اِلتجا کرتے وہ ہم نہیں کہ جو خود دارِیاں فنا کرتے کسی کی یاد نے تڑپا دیا پھر آ کے ہَمَیں ہُوئی تھی دیر نہ کُچھ،...
  14. طارق شاہ

    عمار اقبال :::::: رنگ و رَس کی ہَوَس اور بس :::::Umaar Iqbal

    غزل رنگ و رَس کی ہَوَس اور بس مسئلہ دسترس اور بس یُوں بُنی ہیں رَگیں جِسم کی ایک نس، ٹس سے مس اور بس سب تماشائے کُن ختم شُد کہہ دیا اُس نے بس اور بس کیا ہے مابینِ صیّاد و صید ایک چاکِ قفس اور بس اُس مصوّر کا ہر شاہکار ساٹھ پینسٹھ برس اور بس عمار اقبال کراچی، پاکستان
  15. طارق شاہ

    عمار اقبال :::::: میرے ہر وصل کے دَوران مجھے گُھورتا ہے :::::Umaar Iqbal

    غزل میرے ہر وصل کے دَوران مجھے گُھورتا ہے اِک نئے ہجر کا اِمکان مجھے گُھورتا ہے میرے ہاتھوں سے ہیں وابستہ اُمیدیں اُس کی پُھول گرتے ہیں تو، گُلدان مجھے گُھورتا ہے آئینے میں تو کوئی اور تماشہ ہی نہیں ! میرے جیسا کوئی اِنسان مجھے گُھورتا ہے اب تو یُوں ہے کہ گُھٹن بھی نہیں ہوتی مجھ کو اب...
  16. طارق شاہ

    شان الحق حقی :::::: اثر نہ ہو تو اُسی نطق بے اثر سے کہہ :::::: Shan Ul Haq Haqqee

    شان الحق حقی غزل اثر نہ ہو، تو اُسی نطقِ بے اثر سے کہہ ! چُھپا نہ درد ِمحبّت ،جہان بَھر سے کہہ جو کہہ چُکا ہے، تو اندازِ تازہ تر سے کہہ خبرکی بات ہے اِک، گوشِ بے خبر سے کہہ چَمَن چَمَن سے اُکھڑ کر رَہے گا پائے خِزاں رَوِش رَوِش کو جتا دے، شجر شجر سے کہہ بیانِ شَوق نہیں قِیل و...
  17. طارق شاہ

    احسن اللہ خان بیاؔں :::::: کیا بے طرح ہُوئی تِری دُوری میں شام آج :::::: Ahsan ullah KhaN bayaaN

    غزلِ احسن اللہ خان بیاؔں ۔ کیا بے طرح ہُوئی تِری دُوری میں شام آج مرنے کے پھر نہیں، نہ ہُوئے جو تمام آج تُو بزم سے اُٹھا، کہ ہُوئی تلخ مے کشی ! میں سچ کہوُں، شراب کو سمجھا حَرام آج غم جس کے پاس ہے، وہ فلاطُوں سے کم نہیں جمشید ہے وہ جس کو میسّر ہے جام آج اُس زُلف میں ہو گر، سَرِ مُو...
  18. طارق شاہ

    اکبر الہ آبادی ::::::اے خوفِ مرگ! دِل میں جو اِنساں کے تُو رَہے :::::: Akbar Allahabadi

    غزل اے خوفِ مرگ ! دِل میں جو اِنساں کے تُو رَہے پِھر کُچھ ہَوس رہے، نہ کوئی آرزُو رَہے فِتنہ رَہے، فساد رَہے، گُفتگُو رَہے منظُور سب مجھے، جو مِرے گھر میں تُو رَہے زُلفیں ہٹانی چہرۂ رنگیں سے کیا ضرُور بہتر ہے مُشک کی گُلِ عارض میں بُو رَہے اب تک تِرے سبب سے رَہے ہم بَلا نصیب اب تابہ حشر گور...
  19. طارق شاہ

    ڈاکٹر توصیؔف تبسّم:::::: لگی ذرا نہ طبیعت بہشت میں اپنی :::::: Dr. Tauseef Tabassum

    غزل لگی ذرا نہ طبیعت بَہِشت میں اپنی زمِیں کے دُکھ تھے بہت سرنَوِشت میں اپنی اندھیرے گھر میں یہی روشنی کا رَوزَن ہے چُنی ہے آنکھ جو دِیوارِ خِشت میں اپنی اِنہی سِتاروں سے پُھوٹیں گے تِیرَگی کے شَجر جو آسمان نے بَوئے ہیں کشت میں اپنی اِسی لِئے تو پڑی اپنے پاؤں میں زنجیر کہ سرکشی تھی...
  20. طارق شاہ

    ڈاکٹر توصیؔف تبسّم:::::: تم نے تو کہا تھا ہر حقیقت :::::: Dr. Tauseef Tabassum

    آگہی تم نے تو کہا تھا ہر حقیقت اِک خوابِ ابد ہے در حقیقت رنگوں کے سراب سے گُزر کر رعنائیِ خواب سے گُزر کر نیرنگئ زیست سب فسانہ کیا گردِشِ وقت، کیا زمانہ تاروں بھرے آسماں کے نیچے! کُھلتے نہیں نُور کے دَرِیچے تارِیک ہے زندگی کا رستا گہرے ہوں ہزار غم کے سائے چلتے رہو یُونہی چشم بَستہ اِک یاد...
Top