1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

جون ایلیا ہم رہے پر نہیں رہے آباد - جون ایلیا

محمداحمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 30, 2008

  1. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,602
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed

    غزل

    ہم رہے پر نہیں رہے آباد
    یاد کے گھر نہیں رہے آباد

    کتنی آنکھیں ہوئی ہلاک ِ نظر
    کتنے منظر نہیں رہے آباد

    ہم کہ اے دل سخن تھے سر تا پا
    ہم لبوں پر نہیں رہے آباد

    شہرِ دل میں عجب محلے تھے
    جن میں اکثر نہیں رہے آباد

    جانے کیا واقعہ ہوا، کیوں لوگ
    اپنے اندر نہیں رہے آباد


    جون ایلیا

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 7
  2. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,737
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    ہم کہ اے دل سخن تھے سر تا پا
    ہم لبوں پر نہیں رہے آباد​

    خوبصورت غزل شیئر کرنے پر شکریہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. ہما

    ہما محفلین

    مراسلے:
    407

    زبردست ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,999
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    شکریہ احمد صاحب جون ایلیا کی خوبصورت غزل شیئر کرنے کیلیئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. ابن علی

    ابن علی محفلین

    مراسلے:
    37
    واہ جی کیا کلام ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,602
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    اسلم صاحب , خرم شہزاد خرم صاحب , فاتح صاحب , وارث صاحب اور ابنِ علی صاحب

    نے حد نوازش آپ سب کی!
     
  7. فرحت کیانی

    فرحت کیانی لائبریرین

    مراسلے:
    10,984
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    جانے کیا واقعہ ہوا، کیوں لوگ
    اپنے اندر نہیں رہے آباد


    بہت خوب :) بہت شکریہ محمد احمد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,602
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    فرحت کیانی صاحبہ ،

    آج یہ غزل پھر سے یاد آئی تو آپ کی رائے دیکھی۔

    دیر سے سہی!شکریہ کے لئے حاضر ہیں۔
     

اس صفحے کی تشہیر