1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

ہجر تو روح کا موسم ہے - بانی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 6, 2007

ٹیگ:
  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دن کو دفتر میں اکیلا، شب۔۔۔ بھرے گھر میں اکیلا
    میں کہ عکسِ منتشر، ایک ایک منظر میں اکیلا
    اُڑ چلا وہ، اک جدا خاکہ لئے سر میں۔۔۔۔ اکیلا
    صبح کا پہلا پرندہ آسماں بھر میں اکیلا!!
    کون دے آواز خالی رات کے اندھے کنوئیں میں
    کون اُترے۔۔۔ خواب سے محروم بستر میں ۔۔۔اکیلا
    اُس کو تنہا کر گئ کروٹ کوئی پچھلے پہر کی
    پھر اُڑا بھاگا وہ سارا دن، نگر بھر میں اکیلا
    ایک مدھّم آنچ سی آواز، سرگم سے الگ کچھ،
    رنگ اک دبتا ہوا سا، سارے منظر میں اکیلا
    بولتی تصویر میں اِک نقش، لیکن کچھ ہٹا سا،
    ایک حرفِ معتبر لفظوں کے لشکر میں اکیلا
    جاؤ موجو، میری منزل کا پتہ کیا پوچھتی ہو
    اک جزیرہ ۔۔۔ دور افتادہ۔۔۔ سمندر میں اکیلا
    جانے کس احساس نے آگے نہیں بڑھنے دیا تھا
    اب پڑا ہوں قید، میں رستے کے پتھّر میں اکیلا

    ہوٗ بہوٗ میری طرح چپ چاپ مجھ کو دیکھتا ہے
    اک لرزتا، خوبصورت عکس، ساغر میں اکیلا
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہر طرف سامنا کوتاہ کمالی کا ہے
    عشق اب نام کسی قدرِ زوالی کا ہے
    شہر کا شہر نمونہ ہے عجب وقتوں کا
    ایک اک شخص یہاں وضعِ مثالی کا ہے
    کوئ منظر ہے نہ عکس، اب کوئ خاکہ ہے نہ خواب
    سامنا آج یہ کس لمحۂ خالی کا ہے
    آ ملاؤں تجھے اک شخص سے آئینے میں
    جس کا سر شاہ کا ہے، ہاتھ سوالی کا ہے

    اب مرے سامنے بانی کوئ رستہ ہے نہ موڑ
    عکس چاروں طرف اک شہرِ خیالی کا ہے

     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مجھے پتہ تھا کہ یہ حادثہ بھی ہونا تھا
    میں اُس سے مل کے نہ تھا خوش۔۔۔ جُدا بھی ہونا تھا
    چلو کہ جذبۂ اظہار چیخ میں تو ڈھلا
    کسی طرح اسے آخر ادا بھی ہونا تھا
    بنا رہی تھی عجب چِتر ڈوبتی ہوئ شام
    لہو کہیں کہیں شامل مرا بھی ہونا تھا
    عجب سفر تھا کہ ہم راستوں میں کٹتے گئے
    پھر اس کے بعد ہمیں لا پتا بھی ہونا تھا
    میں تیرے پاس چلا آیا لے کے شکوے گِلے
    کہاں خبر تھی کوئ فیصلہ بھی ہونا تھا
    غُبار بن کے اُڑے تیز رَو، کہ ِان کے لئے
    تو کیا ضرور کوئ راستہ بھی ہونا تھا
    سرائے پر تھا دھواں جمع ساری بستی کا
    کچھ اس طرح کہ کوئ سانحہ بھی ہوتا تھا

    مجھے ذرا سا گماں بھی نہ تھا، اکیلا ہوں
    کہ دشمنوں کا کہیں سامنا بھی ہونا تھا
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گزر رہا ہوں سیہ، اندھے فاصلوں سےمیں
    نہ اب ہوں رہ سے عبارت، نہ منزلوں سےمیں
    کہاں کہاں سے الگ کر سکوگے تم مجھ کو
    جُڑا ہوا ہوں یہاں لاکھ سلسلوں سےمیں
    قدم ملانے میں سب کر رہے تھے قوّتیں صرف
    مِلا ہوں راہ میں کتنے ہی قافلوں سےمیں
    میں اس کے پاؤں کی زنجیر دیکھتاتھا بہت
    کچھآشنا نہ تھا اپنی ہی مشکلوں سےمیں
    عجیب لوگ ہیں، کچھ کہہ لو، مان لیتے ہیں!!
    ہوا ہوں زیر بہت زوٗد قاتلوں سےمیں

    کہو تو ساتھ بہا لے چلوں یہ دکھ بھرے شہر
    الگ نہیں اِنھیں کھوٹے کھرے دلوں سےمیں
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مجھ سے اک اک قدم پر بچھڑتا ہوا کون تھا
    ساتھ میرے، مجھے کیا خبر! دوسرا کون تھا
    تا بہ منزل یہ بکھری ہوئ گردِ پا کس کی ہے
    اے برابر قدم دوستو، وہ جُدا کون تھا؟
    جانے کس خطرے نے بخش دی ہم کو ہمسائیگی
    ورنہ اک دوسرے سے یہاں آشنا کون تھا
    پہلے کس کی نظر میں خزانے تھے اُس پار کے
    مثم میرے، حدوں سے اُدھر دیکھتا کون تھا
    کون تھا، موسمِ صاف بھی جس کو آیا نہ راس
    کچھ تو ہم سے کہو،وہ ہلاکِ ہوا کون تھا
    کون تھا، میرے پر تولنے پر نظر جِس کی تھی
    جَس نے سر پر مرے آسماں رکھ دیا کون تھا
    کس کی بھیگی صدا جھانکتی تھی مری خاک سے
    میں تھا اپنا کھنڈر، اس میں میرے سوا کون تھا

    کون تھا۔۔ قائلِ قہر ہونا تھا جس کو ابھی،
    ٹوٗٹ کر جس پہ برسی بھیانک گھٹا،کون تھا؟؟
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عجیب تجربہ تھا بھیڑ سے گزرنے کا
    اُسے بہانہ ملا مجھ سے بات کرنے کا
    ھر ایک موج تہِ آب اُس کو کھینچ گئ
    تماشہ ختم ہوا ڈوبنے اُبھرنے کا
    مجھے خبر ہے کہ رستہ مزار چاہتا ہے
    میں خستہ پا سہی، لیکن نہیں ٹھہرنے کا
    تھما کے ایک بکھرتا گلاب میرے ہاتھ
    تماشہ دیکھ رہا ہےوہ میرے ڈرنے کا
    یہ آسماں میں سیاہی بکھیر دی کس نے
    ہمیں تھا شوق بہت اس میں رنگ بھرنے کا
    کھڑے ہوں دوست کہ دشمن صفیں سب ایک سی ہیں
    وہ جانتا ہے ادھر سے نہیں گزرنے کا
    نگاہ ہم سفروں پر رکھو سرِ منزل
    کہ مرحلہ ہے یہ اک دوسرے سے ڈرنے کا
    لپک لپک کے وہیں ڈھیر ہو گئے آخر
    جتن کیا تو بہت سطح سے ابھرنے کا



    (ق)

    کراں کراں نہ سزا کوئی سیر کرنے کی
    سفر سفر نہ کوئی حادثہ گزرنے کا
    کسی مقام سے کوئی خبر نہ آنے کی
    کوئی جہاز زمیں پر نہ اب اترنے کا
    کوئی صدا نہ سماعت پہ نقش ہونے کی
    نہ کوئی عکس مری آنکھ میں ٹھہرنے کا
    نہ ان ہوا مرے سینے میںن سنسنانے کی
    نہ کوئی زہر مری روح میں اترنے کا
    کوئی بھی بات نہ مجھ کو اداس کرنے کی
    کوئی سلوک نہ مجھ پہ گراں گزرنے کا

    بس ایک چیخ گری تھی پہاڑ سے یک لخت
    عجب نظارہ تھا پھر دھند میں بکھرنے کا
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہاں سے اب کوئی آئے گا لوٹ کر بھی کیا!
    حریف کیا ، مرے یارانِ معتبر بھی کیا!
    نہ اب ہے آب میں موتی نہخاک میں سونا
    مری طرح ہوئے خالی یہ بحر و بر بھی کیا؟
    نہیں رہے گا یہ ہنگامہ کچھ قدم تک بھی
    پھر اُس کے بعد مرے ساتھ ہم سفر بھی کیا!
    خبر اُڑانے سے موقعے پہ چوکتا بھی نہیں
    ہمارا دوست ہے لیکن ہے بے ضرر بھی کیا!
    وہ فاصلے تھے کہ دونوں کو راس آتے گئے
    کسی کو دوسرے کی پھر کوئی خبر بھی کیا!
    ہمارے دل میں ہے کیا؟ سن تو کچھ تسلّی سے
    کہ ٹوکنا یہ ترا بات بات پر بھی کیا!
    کسی چٹان کے اندر اتر گیا ہوں میں
    کہ اب مرے لیے طوفان بھی کیا، بھنور بھی کیا
    عجب مثال ہے غم کی یہ قصّہ۔۔ پڑھیے اسے
    کہیں کہیں سے بھی کیا، اور تمام تر بھی کیا!
    چلو کہ چین سے بیٹھیں کہیں تو اے یارو!
    نہیں ہے شہر سے باہر کوئی کھنڈر بھی کیا!
    یہی کہ کالی سے لفظوں کو معنی دیتے پھریں
    ہمارے پاس ہے اس کے سوا ہنر بھی کیا!
    ذرا تو دیکھو کہ کس حال میں ہیں میرے رقیب
    کہ اب نگاہ نہ ڈالو گے تم اُدھر بھی کیا؟
    جواب دِہ نہ ہوئے ہم کہیں بھی تیرے بعد
    کہ سچ تو یہ ہے ہمیں تھا کسی کا ڈر بھی کیا
    تمام سلسلسے ان گیسوؤں کے ساتھ گئے
    ردائے ابر بھی کیا، سایۂ شجر بھی کیا!
    جھلستی خاک پہ تنہا پڑا ہے برگِ امید
    ہوا کا اس لُٹے رستے سے اب گزر بھی کیا!
    کھلے فراغ سے اک روز ہم سے آ مل بیٹھ
    کبھی کبھی کی ملاقاتِ مختصر بھی کیا!
    عجیب گھور سیاہی میں گم کھڑا ہوں میں
    برونِ در بھی یہاں کیا، درونِ در بھی کیا!
    اٹھائی خود ہی یہ دیوار۔۔ خود نہ پھاند سکے
    وہ پہلی جست بھی کیا، کوششِ دگر بھی کیا!
    کسی عجیب سی دھُن میں اداس پھرتا ہوں
    مرے لیے یہ تماشائے رہگزر بھی کیا!
    ہمارے آگے تو یوں بھی نہ تھے نشانِ راہ
    ہوا نے چاٹ لی گردِ پسِ سفر بھی کیا؟
    میں ہوں عجیب سی محرومیوں میں گم اس وقت
    کہ مجھ پہ تیری محبّت بھی نظر بھی کیا!

    یہ تم نے کس کے لئے شہر چھورا اے بانی
    کہ اب نہ لوٹ کے آؤ گے اپنے گھر بھی کیا؟
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اک دھواں ہلکا ہلکا سا پھیلا ہوا ہے اُفق تا اُفق
    ہر گھڑی اک سماں ڈوبتی شام کا ہے اُفق تا اُفق
    کس کے دل سے اڑیں ہیں سلگتے ہوئے غم کی چنگاریاں
    دوستو شب گئے یہ اجالا سا کیا ہے اُفق تا اُفق
    ہجر تو روح کا ایک موسم سا ہے جانے کب آئے گا
    سرد تنہائیوں کا عجب سلسلہ ہے اُفق تا اُفق
    سینکڑوں وحشتیں چیختی پھر رہی تھیں کراں تا کراں
    آسماں نیلی چادر سی تانے پڑا ہے اُفق تا اُفق
    روتے روتے کوئی تھک کے چپ ہو گیا دو گھڑی کے لیے
    ایک نمناک سنّاٹا اب چیختا ہے اُفق تا اُفق
    ایک میں ہوں پرانا ہوا جا رہا ہوں نفس یک نفس
    وہ سحر ہے شفق در شفق، وہ فضا ہے اُفق تا اُفق

    میرے ذہنِ شگفتہ کی رنگینیوں کی طرح ہو بہو
    ایک نظّارہ لمحہ بہ لمحہ نیا ہے اُفق تا اُفق
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    قدم زمیں پہ نہ تھے راہ ہم بدلتے کیا
    ہوا بندھی تھی یہاں پیٹھ پر۔۔ سنبھلتے کیا
    پھر اس کے ہاتھ ہمیں اپنا قتل بھی تھا قبول
    کہ آ چکے تھے قریب اتنے، بچ نکلتے کیا
    یہی سمجھ کے وہاں سے میں ہو لیا رخصت
    وہ چلتے ساتھ، مگر دور تک تو چلتے کیا
    تمام شہر تھا اک موم کا عجائب گھر
    چڑھا جو دن تو یہ منظر نہ پھر پگھلتے کیا
    وہ آسماں تھے کہ آنکھیں سمیٹتیں کیسے
    وہ خواب تھے کہ مری زندگی میں ڈھلتے کیا
    نباہنے کی اسے بھی تھی آرزو تو بہت
    ہوا ہی تیز تھی اتنی۔۔ چراغ جلتے کیا
    اُٹھے اور اٹھ کے اسے جا سنایا دُکھ اپنا
    کہ ساری رات پڑے کروٹیں بدلتے کیا

    نہ آبروئے تعلّق ہی جب رہی بانی
    بغیر بات کیے ہم وہاں سے ٹلتے کیا
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جو زہر ہے مرے اندر وہ دیکھنا چاہوں
    عجب نہیں میں ترا بھی کبھی برا چاہوں
    میں اپنے پیچھے عجب گرد چھوڑ آیا ہوں
    مجھے بھی رہ نہ ملے گی جو لوٹنا چاہوں
    وہ اک اشارۂ زیریں ہزار خوب سہی
    میں اب صدا کے صِلے میں کوئی صدا چاہوں
    مرے حروف کے آئینے میں نہ دیکھ مجھے
    میںٕ اپنی بات کا مفہوم دوسرا چاہوں
    کھُلی ہے دل پہ کچھ اس طرح غم کی بے سببی
    تری خبر نہ کچھ اپنا ہی اب پتا چاہوں
    کوئی پہاڑ، نہ دریا، نہ آگ رستے میں
    عجب سپاٹ سفر ہے کہ حادثہ چاہوں

    ۔ق۔

    نہ چاہوں دور سے آتی ہوئی کوئی آواز
    نہ اپنے ساتھ میں اپنی صدائے پا چاہوں
    نہ چاہوں سامنے اپنے کوئی بھی عکسِ سفر
    نہ سر پہ راہ دکھاتی ہوئی ہوا چاہوں

    وہ لائے تو کسی رنجش کو درمیاں بانیؔ
    میں بات کرنے کو تھوڑا سا فاصلہ چاہوں
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آج تو رونے کو جی ہو جیسے
    پھر کوئی آس بندھی ہو جیسے
    شہر میں پھرتا ہوں تنہا تنہا
    آشنا ایک وہی ہو جیسے
    ہر زمانے کی صدائے موعتوب
    میرے سینے سے اٹھی ہو جیسے
    خوش ہوئے ترکِ وفا کر کے ہم
    اب مقدّر بھی یہی ہو جیسے
    اس طرح شب گئے ٹوٹی ہے امید
    کوئی دیوار گری ہو جیسے
    یاس آلود ہے ایک ایک گھڑی
    زرد پھولوں کی لڑی ہو جیسے
    میں ہوں اور وعدۂ فردا تیرا
    ۔۔۔اور ۔۔۔ اک عمر پڑی ہو جیسے
    بے کشش ہے وہ نگاہِ صد لطف
    اِک محبّت کی کمی ہو جیسے

    کیا عجب لمحۂ غم گزرا ہے۔۔۔
    عمر اک بیت گئی ہو جیسے
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بجائے ہم سفری اتنا رابطہ ہے بہت
    کہ میرے حق میں تری ’بے ضرر‘ دعا ہے بہت
    تھی پاؤں میں کوئی زنجیر۔۔۔ بچ گئے، ورنہ
    رمِ ہوا کا تماشہ یہاں رہا ہے بہت
    یہ موڑ کاٹ کے منزل کا علس دیکھو گے
    اسی جگہ مگر امکانِ حادثہ ہے بہت
    بس ایک چیخ ہی یوں تو ہمیں ادا کر دے
    معاملہ ہُنرِ حرف کا جدا ہے بہت
    مری خوشی کا وہ کیا کیا خیال رکھتا ہے
    کہ جیسے میری طبیعت سے آشنا ہے بہت
    تمام عمر جنھیں ہم نے ٹوٹ کر چاہا
    ہمارے ہاتھوں انھیں پر ستم ہوا ہے بہت
    ذرا چھوا تھا کہ بس پیڑ آ گرا مجھ ہر
    کہاں خبر تھی کہ اندر سے کھوکھلا ہے بہت
    کوئی کھڑا ہے مری طرح بھیڑ میں تنہا
    نظر بچا کے مری سمت دیکھتا ہے بہت

    یہ احتیاط کدہ ہے کڑے اصولوں کا
    ذرا سے نقص پہ بانیؔ یہاں سزا ہے بہت
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شب وہاں تذکرۂ کم ہنراں تھا کتنا
    کیا چمکتا کوئی شعلہ کہ دھواں تھا کتنا
    ہم کھنچے بیٹھے تھے شمشیرِ برہنہ کی طرح
    ہم پہ اک پھول کا سایہ بھی گراں تھا کتنا
    پھر نہ گنجائشِ یک صدمہ بھی ہم تم پہ رہی
    ٹوٹتا سلسلہ دونوں پہ عیاں تھا کتنا
    دیکھ لی تھی مرے اندر کی سیاہی اس نے
    اِک ستارہ مری جانب نگراں تھا کتنا
    آنکھ سورج نے چرا لی، تو جبیں پربت نے
    کچھ ہوا لے اُڑی، سرمایۂ جاں تھا کتنا
    ایک آواز کہ ہونتوں پہ جمی تھی کب سے
    ایک زہراب کہ سینے میں رواں تھا کتنا

    بن کے ہم رہ گئے یک قطرہ تلاطم کا ہی جھاگ
    ہم کہ پی جائیں گے دریا ہی، گماں تھا کتنا
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نہ حریفانہ مرے سامنے آ، میں کیا ہوں
    تیرا ہی جھونکا ہوں اے تیز ہوا، میں کیا ہوں
    رقصِ یک قطرۂ خوں، آپ کشش، آپ جنوں
    اے کہ صد تشنگیِ حرف و صدا، میں کیا ہوں
    ایک ٹہنی کا یہاں اپنا مقدّر کیسا
    پیڑ کا پیڑ ہی گرتا ہے جدا۔۔۔۔ ، میں کیا ہوں
    اک بکھرتی ہوئی ترتیبِ بدن ہو تم بھی
    راکھ ہوتے ہوئے منظر کے سوا، میں کیا ہوں
    تو بھی زنجیر بہ زنجیر بڑھا ہے مری سمت
    ساتھ میرے بھی روایت ہے، نیا میں کیا ہوں
    کون ہے جس کے سبب تجھ میں محبّت جاگی
    مجھ میں کیا تجھ کو نظر آیا۔۔ بتا۔۔ میں کیا ہوں

    ابھی ہونا ہے مجھے اور کہیں جا کے طلوع
    ڈوبتے مہر کے ہمراہ بجھا میں کیا ہوں
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اگر باقی کوئی رشتہ رہے گا
    ترے جی کو بھی کچھ دکھ سا رہے گا
    چلو رسمِ وفا ہم بھی اُٹھا دیں
    کوئی دن شہر میں چرچا رہے گا
    نہ جائے گا کبھی دل سے ترا غم
    یہ جوگی دشت میں بیٹھا رہے گا
    ترے خستہ مزاجوں کو ہمیشہ
    جنوں ترکِ محبّت کا رہے گا
    یہ دشتِ دل ہے، کوئی آئے یا جائے
    برابر ایک سنّاٹا رہے گا
    ہوائے یاس کا ہلکا سا جھونکا
    ترے آنے سے پہلے آ رہے گا
    ہم اک دن خود سے گافل ہو رہیں گے
    ترا غم دل ہی میں رکھّا رہے گا
    عدم کی سمت بڑھتا جائے گا دل
    تجھے آواز بھی دیتا رہے گا

    ابد تک ادھ کھلی آنکھوں میں تیری
    کوئی جادو، کوئی دھوکا رہے گا
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چھپی ہے تجھ میں کوئی شے، اسے نہ غارت کر
    جو ہو سکے تو کہیں دل لگا، محبّت کر
    ادا یہ کس کٹے پتّے سے تو نے سیکھی ہے
    ستم ہوا کا ہو اور شاخ سے شکایت کر
    نہ ہو مخل مرے اندر کی ایک دنیا میں
    بڑی خوشی سے بر و بحر پر حکومت کر
    وہ اپنے آپ نہ سمجھے گا تیرے دل میں ہے کیا
    خلش کو حرف بنا، حرف کو حکایت کر
    مرے بنائے ہوئے بت میں روح پھونک دے اب
    نہ ایک عمر کی محنت مری اکارت کر
    کہاں سے آ گیا تو بزمِ کم یقیناں میں
    یہاں نہ ہوگا کوئی خوش، ہزار خدمت کر
    کچھ اور چیزیں ہیں دنیا کو جو بدلتی ہیں
    کہ اپنے درد کو اپنے لیے عبارت کر
    نہیں عجب اسی پَل کا ہو منتظر وہ بھی
    کہ چھو لے اس کے بدن کو۔۔۔ ذرا سی ہمّت کر

    خلوص تیرا بھی اب زد میں آ گیا بانیؔ
    یہاں یہ روز کے قصّے ہیں، جی برا مت کر
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہوائیں زور سے چلتی تھیں ہنگامہ بلا کا تھا
    میں سنّاٹے کا پیکر منتظر تیری صدا کا تھا
    وہی اک موسمِ سفّاک تھا، اندر بھی باہر بھی
    عجب سازش لہو کی تھی، عجب فتنہ ہوا کا تھا
    ہم اپنی چُپ کو افسوں خانۂ معنی سمجھتے تھے
    کہاں دل کو خبر تھی، امتحاں حرف و صدا کا تھا
    غلط تھی راہ لیکن کس کو دم لینے کی فرصت تھی
    قدم جس سمت اٹھّے تھے، ادھر ہی رخ ہوا کا تھا
    ہمارے دوست بننے کو ضرورت حادثے کی تھی
    عجب اک مرحلہ سا درمیاں میں ابتدا کا تھا
    ہم اپنے ذہن میں کیا کیا تعلّق ا سے رکھتے تھے
    وہاں سارا کرشمہ ایک بے معنی ادا کا تھا
    مسافر تنہا تنہا لوٹ آئے راہ سے آخر
    سمجھتے تھے جسے رہبر، وہ اک جھونکا کا تھا

    وہاں ٹھنڈی سماعت تھی سمندر کی طرح بانیؔ
    یہاں الفاظ پر سایہ کسی بنجر صدا کا تھا
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آج کیا لَوٹتے لمحات میسّر آئے
    یاد تم اپنی عنایات سے بڑھ کر آئے
    آشنائی ترے جلووں سے مگر کیا تھی ضرور
    اک نظر دیکھ لیں ہم رونقیں، جی بھر آئے
    کیا خبر ترکِ تعلّق ہی اسے ہو منظور
    اب گِلہ کرتے بھی اِس جی کو بہت ڈر آئے
    تو ہی کچھ کہہ کہ ترے عہدِ وفا سے پہلے
    غم وہ کیا تھا کہ ہم اک عمر بسر کر آئے
    تیرے قصّے نہیں کم یوں تو رلانے کے لیے
    اک اچٹتا سا تعلّق بھی میسّر آئے
    اپنی خاموش نگاہی کو نہ اک راز سمجھ
    غم زدوں تک ترے پیغام برابر آئے

    کس نے دیکھی ہے مگر جنّتِ فردا بانیؔ
    یہ وہ دنیا ہے کہ بس دھیان میں اکثر آئے
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ،۔۔۔ جسے اب تک سمجھتا تھا میں پتھّر۔۔۔ سامنے تھا
    اک پگھلتی موم کا سیّال پیکر سامنے تھا
    میں نے چاہا آنے والے وقت کا اک عکس دیکھوں
    بیکراں ہوتے ہوئے لمحے کا منظر سامنے تھا
    اپنی اک پہچان دی آئی گئی باتوں میں اس نے
    آج وہ اپنے تعلّق سے بی بڑھ کر سامنے تھا
    میں یہ سمجھا تھا کہ سرگرمِ سفر ہے کوئی طائر
    جب رکی آندھی تو اک ٹٹا ہوا پر سامنے تھا
    میں نے کتنی بار چاہا خود کو لاؤں راستے پر
    میں نے پھر کوشش بھی کی، لیکن مقدّر سامنے تھا
    سرد جنگل کی سیاہی پاٹ کر نکلے ہی تھے ہم
    آخری کرنوں کو تہہ کرتا سمندر سامنے تھا
    ٹٹنا تھا کچھ عجب قہرِ سفر پہلے قدم پر
    مُڑ گئی تھی آنکھ، ہنستا کھیلتا گھر سامنے تھا
    پُشت پر یاروں کی پسپائی کا نظّارہ تھا شاہد
    دشمنوں کا مسکراتا ایک لشکر سامنے تھا

    آنکھ میں اترا ہوا تھا شام کا پہلا ستارہ
    رات کالی سر پہ تھی۔۔۔ اور سرد بستر سامنے تھا
     

اس صفحے کی تشہیر