ہجر تو روح کا موسم ہے - بانی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 6, 2007

ٹیگ:
  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہوائیں زور سے چلتی تھیں ہنگامہ بلا کا تھا
    میں سنّاٹے کا پیکر منتظر تیری صدا کا تھا
    وہی اک موسمِ سفّاک تھا، اندر بھی باہر بھی
    عجب سازش لہو کی تھی، عجب فتنہ ہوا کا تھا
    ہم اپنی چُپ کو افسوں خانۂ معنی سمجھتے تھے
    کہاں دل کو خبر تھی، امتحاں حرف و صدا کا تھا
    غلط تھی راہ لیکن کس کو دم لینے کی فرصت تھی
    قدم جس سمت اٹھّے تھے، ادھر ہی رخ ہوا کا تھا
    ہمارے دوست بننے کو ضرورت حادثے کی تھی
    عجب اک مرحلہ سا درمیاں میں ابتدا کا تھا
    ہم اپنے ذہن میں کیا کیا تعلّق ا سے رکھتے تھے
    وہاں سارا کرشمہ ایک بے معنی ادا کا تھا
    مسافر تنہا تنہا لوٹ آئے راہ سے آخر
    سمجھتے تھے جسے رہبر، وہ اک جھونکا کا تھا

    وہاں ٹھنڈی سماعت تھی سمندر کی طرح بانیؔ
    یہاں الفاظ پر سایہ کسی بنجر صدا کا تھا
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آج کیا لَوٹتے لمحات میسّر آئے
    یاد تم اپنی عنایات سے بڑھ کر آئے
    آشنائی ترے جلووں سے مگر کیا تھی ضرور
    اک نظر دیکھ لیں ہم رونقیں، جی بھر آئے
    کیا خبر ترکِ تعلّق ہی اسے ہو منظور
    اب گِلہ کرتے بھی اِس جی کو بہت ڈر آئے
    تو ہی کچھ کہہ کہ ترے عہدِ وفا سے پہلے
    غم وہ کیا تھا کہ ہم اک عمر بسر کر آئے
    تیرے قصّے نہیں کم یوں تو رلانے کے لیے
    اک اچٹتا سا تعلّق بھی میسّر آئے
    اپنی خاموش نگاہی کو نہ اک راز سمجھ
    غم زدوں تک ترے پیغام برابر آئے

    کس نے دیکھی ہے مگر جنّتِ فردا بانیؔ
    یہ وہ دنیا ہے کہ بس دھیان میں اکثر آئے
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ،۔۔۔ جسے اب تک سمجھتا تھا میں پتھّر۔۔۔ سامنے تھا
    اک پگھلتی موم کا سیّال پیکر سامنے تھا
    میں نے چاہا آنے والے وقت کا اک عکس دیکھوں
    بیکراں ہوتے ہوئے لمحے کا منظر سامنے تھا
    اپنی اک پہچان دی آئی گئی باتوں میں اس نے
    آج وہ اپنے تعلّق سے بی بڑھ کر سامنے تھا
    میں یہ سمجھا تھا کہ سرگرمِ سفر ہے کوئی طائر
    جب رکی آندھی تو اک ٹٹا ہوا پر سامنے تھا
    میں نے کتنی بار چاہا خود کو لاؤں راستے پر
    میں نے پھر کوشش بھی کی، لیکن مقدّر سامنے تھا
    سرد جنگل کی سیاہی پاٹ کر نکلے ہی تھے ہم
    آخری کرنوں کو تہہ کرتا سمندر سامنے تھا
    ٹٹنا تھا کچھ عجب قہرِ سفر پہلے قدم پر
    مُڑ گئی تھی آنکھ، ہنستا کھیلتا گھر سامنے تھا
    پُشت پر یاروں کی پسپائی کا نظّارہ تھا شاہد
    دشمنوں کا مسکراتا ایک لشکر سامنے تھا

    آنکھ میں اترا ہوا تھا شام کا پہلا ستارہ
    رات کالی سر پہ تھی۔۔۔ اور سرد بستر سامنے تھا
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تمام راستہ پھولوں بھرا ہے میرے لیے
    کہیں تو کوئی دعا مانگتا ہے میرے لیے
    تمام شہر ہے دشمن تو کیا ہے میرے لیے
    میں جانتا ہوں ترا در کھلا ہے میرے لیے
    مجھے بچھڑبے کا غم تو رہے گا ہم سفرو
    مگر سفر کا تقاضا جُدا ہے میرے لیے
    وہ ایک عکس کہ پل بھر نظر میں ٹھہرا تھا
    تمام عمر کا اب ایک سلسلہ ہے میرے لیے
    عجیب در گزری کا شکار ہوں اب تک
    کوئی کرم ہے نہ کوئی سزا ہے میرے لیے
    گزر سکوں گا نہ اس خواب خواب بستی سے
    یہاں کی مٹی بھی زنجیر پا ہے میرے لیے
    اب آپ جاؤں تو جا کر اسے سمیتوں میں
    تمام سلسلہ بکھرا پڑا ہے میرے لیے
    یہ حسنِ ختمِ سفر۔۔ یہ طلسم خانۂ رنگ
    کہ آنکھ جھپکوں تو منظر نیا ہے میرے لیے

    یہ کیسے کوہ کے اندر میں دفن تھا بانیٓ
    وہ ابر بن کے برستا رہا ہے میرے لیے
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اِدھر کی آئے گی اک رو، اُدھر کی آئے گی
    کہ میرے ساتھ تو مٹّی سفر کی آئے گی
    ڈھلے گی شام جہاں۔۔۔ کچھ نظر نہ آئے گا
    پھر اُس کے بعد بہت یاد گھر کی آئے گی
    نہ کوئی جا کے اسے دکھ مرے سنائے گا
    نہ کام دوستی اب شہر بھر کی آئے گی
    ابھی بلند رکھو یارو آخری مشعل
    اِدھر تو پہلی کرن کیا سحر کی آئے گی

    کچھ اور موڑ گزرنے کی دیر ہے بانیٓ
    صدا، نہ گرد کسی ہم سفر کی آئے گی
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    رنگ لپک سے عاری۔۔۔ جسم، ادا سے خالی
    یہ کیسی بستی ہے، عکسِ ہوا سے خالی
    ہم سے پہلے شاید کوئی آیا نہ گیا
    اک اک راہ پڑی ہے نقشِ پا سے خالی
    یوں نکلا ہوں گھر سے، گھر کے ہر منظر سے
    کچھ ٹوٹے اوپر سے، ہونٹ دعا سے خالی
    پچھلے پہر نے بڑھ کر میری چیخ سمیٹی
    کاسۂ شب تھا شاید ایک صدا سے خالی

    اب کے چلی وہ آندھی، لمحۂ روشن غائب
    دن سنگھرش سے عاری،،، رات۔۔ خدا سے خالی
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ مناظر ہیں یہاں، جن میں کوئی رنگ نہ بو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    جاتے موسم کی فجا ہے، کہیں مانگے نہ لہو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    کوئی آواز پسِ در ہے، نہ آۃت سرِ کُو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    بے صدائی کا وہ عالم ہے کہ جم جائے لہو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    یہ وہ بستی ہے جہاں شام سے سو جاتے ہیں سب اہلِ وفا
    شب کا سنّاٹا دکھائے گا عجب عالمِ ہو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    کیا عجب منظرِ بے چہرگی ہع سمت نظر آتا ہے
    ہر کوئی اور کوئی اور ہے، نہ یہاں میں ہے نہ توٗ۔۔۔۔ بھاگ چلو
    پھر کسی حرفِ تمنٓا کو اُڑا دے گا دھوئیں کے مانند
    وقت بیٹھا ہے یہاں بن کے کوئی شعبدہ جو۔۔۔۔ بھاگ چلو
    دوستو شکر کرو چاکِ جگر تک نہیں بات آئی ابھی
    یہ گریبان تو ہو جائے گا سَو بار رفُو۔۔۔۔ بھاگ چلو

    کسی تصویر کے پیچھے نہیں یاں کوئی تصوّر بانیؔ
    ایک اک چیز ہے بیگانۂ ادراکِ نمو۔۔۔۔ بھاگ چلو
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جادو گری اس پر کسی صورت نہ چلے گی
    اے عشق، تری سعیِ متانت نہ چلے گی
    مجھ سا ترا دشمن بھی یہاں کون ہے، کچھ سوچ
    دو روز بھی اپنی یہ عداوت نہ چلے گی
    خوابیدہ سے لہجے میں سنا لے ابھی قصّے
    وہ درد اٹھے گا کہ نزاکت نہ چلے گی
    تو اپنے غمِ ذات کو کیسے ہی بیاں کر
    اَوروٕ کی تراشیدہ عبارت نہ چلے گی
    جھلسی ہوئی اک راہ پہ آنے کی ہے بس دیر
    پھر ساتھ ترے گردِ مسافت نہ چلے گی
    بستی ہے مری جاں یہ عجب بند گھروں کی
    چل دے کہ یہاں رسمِ محبّت نہ چلے گی
    میں ترکِ وفا کر لوں، مگر مجھ کو بتا دو
    اس حادثے سے کوئی روایت نہ چلے گی
    جو آئے ترے دھیان میں دل باختہ کہہ دے
    بے ساختہ کہہ دے۔۔۔ کہ حکایت نہ چلے گی

    ٹوٹے ہوئے خوابوں کا یہ درماں نہیں بانیؔ
    شب بھر ترے پینے کی یہ عادت نہ چلے گی
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تیرگی بلا کی ہے، میں کوئی صدا لگاؤں
    ایک شخص ساتھ تھا، اُس کا کچھ پتا لگاؤں
    بہتے جانے کے سوا، بس میں کچھ نہیں تو کیا
    دشمنوں کے گھاٹ ہیں، ناؤ کیسے جا لگاؤں
    وہ تمام رنگ ہے، اس سے بات کیا کروں
    وہ تمام خواب ہے، اُس کو ہاتھ کیا لگاؤں
    کچھ نہ بن پڑے تو پھر ایک ایک دوست پر
    بات بات شک کروں، تہمتیں جُدا لگاؤں
    منظر آس پاس کا دوبتا دکھائی دے
    میں کبھی جو دور کی بات کا پتا لگاؤں
    ایسی تیری بزم کیا۔۔۔ ایسا نظم و ضبط کیا!
    میرے جی میں آئی ہے آج قہقہہ لگاؤں

    یہ ہے کیا جگہ میاں، کہہ رہے ہیں سب کہ یاں
    کچھ کشاں کشاں رہوں، دل ذرا ذرا لگاؤں
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گِرد میرے نہ فصیلیں ترے کام آئیں گی
    کچھ ہوائیں تو مری سمت مدام آئیں گی
    یہ مسافت کہ چلی جائے گی رستہ رستہ
    منزلیں یوں تو نئی گام بہ گام آئیں گی
    کچھ تو دل آپ ہی بجھتا سا چلا جاتا ہے
    اورکیا کیا نہ ہوائیں سرِ شام آئیں گی
    اِس اندھیرے میں نہ اک گام بھی رکنا یارو
    اب تو اک دوسرے کی آہٹیں کام آئیں گی

    بین کرتی ہوئی سمتوں سے نہ ڈرنا بانیؔ
    اتنی آوازیں تو اس راہ میں عام آئیں گی
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اختتام
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پی چکے تھے زہرِ غم۔۔۔ خستہ جاں پڑے تھے ہم۔۔ چین تھا
    پھر کسی تمنّا نے، سانپ کی طرح ہم کو ڈس لیا
    میرے گھر تک آتے ہی، کیوں جدا پوئ تجھ سے، کچھ بتا
    ایک اور آہٹ بھی ساتھ ساتھ تھی تیرے، اے صبا!
    سر میں جو بھی تھا سودا، اُڑ گیا خلاؤں میں مثلِ گرد
    ہم پڑے ہیں رستے میں، نیم جاں۔۔۔۔ سکچتہ دل۔۔۔ خستہ پا
    سب کھڑے تھے آنگن میں اور مجھ کو تکتے تھے، بار بار
    گھر سے جب میں نکلا تھا، مجھ کو روکنے والا کون تھا؟

    جوش گھٹتاجاتا تھا، ٹوٹتے سے جاتے تھے حوصلے
    اور سامنے۔۔ بانی۔۔۔ دوڑتا سا جاتا تھا راستہ!
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میں چپ کھڑا تھا تعلّق میں اختصار جو تھا
    اُسی نے بات بنائ، وہ ہوشیار جو تھا
    پٹخ دیا کسی جھونکے نے لا کے منزل پر
    ہوا کے سر ہپہ کوئ دیر سے سوار جو تھا
    محبّتیں نہ رہیں اس کے دل میں میرے لئے
    مگر وہ ملتا تھا ہنس کر، کہ وضع دار جو تھا
    عجب غرور میں آکر برس پڑا بادل
    کہ پھیلتا ہوا چاروں طرف غبار جو تھا

    قدم قدم رمِ پامال سے میں تنگ آ کر
    ترے ہی سامنے آیا، ترا شکار جو تھا
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سر بسر ایک چمکتی ہوئ تلوار تھا میں
    موجِ دریا سے مگر بر سرِ پیکار تھا میں
    میں کسی لمحۂ بے وقت کا اک سایہ تھا
    یا کسی حرفِ تہی اسم کا اظہار تھا میں
    ایک اک موج پٹخ دیتی تھی باہر مجھ کو
    کبھی اِس پار تھا میں، اور کبھی اُس پار تھا میں
    اُس نے پھر ترکِ تعلّق کا بھی موقع نہ دیا
    گھٹتے رشتوں سے کہ ہر چند خبردار تھا میں

    اس تماشے میں تاثّر کوئ لانے کے لئے
    قتل، بانی، جسے ہونا تھا وہ کردار تھا میں
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شب چاند تھا جہاں ۔۔ وہیں اب آفتاب ہے
    در پر مرے یہ صبح کا پہلا عتاب ہے
    آواز کوئ سر سے گزرتی چلی گئی
    میں یہ سمجھ رہا تھا کہ حرفِ خطاب ہے
    ہر گز یہ سچ نہیں کہ لگن خام تھی مری
    ہاں کچھ بھی جو کہے۔۔۔ جو یہاں کامیاب ہے
    شب، کون تھا یہاں جو سمندر کو پی گیا
    اب کوئ موجِ آب نہ موجِ سراب ہے

    اک لمحہ جس کے سینے میں کچھ پل رہا ہے کھوٹ
    بانی ابھی وہ اپنے لئے خود عذاب ہے
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شعلہ ادھر اُدھر۔۔۔ کبھی سایا یہیں کہیں
    ہو گا وہ برق جسم، سبک پا، یہیں کہیں!
    کن پانیوں کا زور اسے کاٹ لے گیا
    دیکھا تھا ہم نے ایک جزیرہ یہیں کہیں
    منسوب جس سے ہو نہ سکا کوئ حادثہ
    گم ہو کے رہ گیا ہے وہ لمحہ یہیں کہیں
    آوارگی کا ڈر، نہ کوئ ڈوبنے کا خوف
    صحرا ہی آس پاس۔۔۔ نہ دریا یہیں کہیں
    وہ چاہتا یہ ہوگا کہ میں ہی اُسے بلاؤں
    میری طرح وہ پھرتا ہے تنہا یہیں کہیں!

    بانی ذرا سنبھل کے محبّت کا موڑ کاٹ
    اک حادثہ بھی تاک میں ہوگا یہیں کہیں
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تنہا تھا۔۔ مثلِ آئینہ۔۔۔ تارہ، سرِ اُفق
    اُٹھتی نہ تھی نگاہ دوبارہ، سرِ افق
    سب دم بخود پڑے تھے خسِ جسم و جاں لیے
    لہرا رہا تھا کوئ شرارہ سرِ افق
    اک موجِ بے پناہ میں ہم یوں اُڑے پھرے
    جیسے کوئ طلسمی غبارہ سرِ افق
    کب سے پڑے ہیں بند زمان و مکاں کے در
    کوئ صدا نہ کوئ اشارہ سرِ افق

    سب کچھ سمیٹ کر مرے اندر سے لے گیا
    اک ٹوٹتی کرن کا نظارہ سرِ افق
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منا لینا اُس کو ہنر ہے مرا
    بہانہ ہر اک کارگر ہے مرا
    ہوا ہم سفر ہو گئ ہے مری
    قدم ہیں مرے، اب نہ سر ہے مرا
    مجھے کیا خبر تھی تری آنکھ میں
    عجب ایک رکسِ دِگر ہے مرا
    مجھے آسماں کر رہا ہے تلاش
    گھنے جنگلوں سے گزر ہے مرا
    میں دو دن میں خود تُجھ سے کٹ جاؤں گا
    کہ ہر سلسلہ مختصر ہے مرا
    زمانے۔۔۔ تری رہبری کے لیے
    بہت یہ غبارِ سفر ہے مرا

    ترے سامنے کچھ نہ ہونے کا عکس
    مرے سامنے کوئ ڈر ہے مرا
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سفر ہے مرا اپنے ڈر کی طرف
    مری ایک ذاتِ دگر کی طرف
    بھرے شہر میں اک بیاباں بھی تھا
    اشارہ تھا اپنے ہی گھر کی طرف
    مرے واسطے جانے کیا لائے گی
    گئ ہے ہوا اک کھنڈر کی طرف
    کنارہ ہی کٹنے کی سب دیر تھی
    پھسلتے گئے ہم بھنور کی طرح
    کوئ درمیاں سے نکلتا گیا
    نہ دیکھا کسی ہم سفر کی طرف
    تری دشمنی خود ہی مائل رہی
    کسی رشتۂ بے ضرر کی طرف

    رہی دل میں حسترت کہ بانی چلیں
    کسی منزلِ پُر خطر کی طرف
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,466
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    او ستم گور تو بڑا سشمنِ جاں ہے ۔۔۔ سب کا
    کوئ بھی زخم سے چیخا تو زیاں ہے ۔۔۔ سب کا
    ہے تو اک شخص کے ہونٹوں پہ ترا قصّۂ غم
    شاملِ قصّہ مگر دودِ فُغاں ہے ۔۔۔ سب کا
    آ بھی جاتے ہیں اِدھر بیتی رُتوں کے جھونکے
    اب یہی خانۂ غم کنجِ اماں ہے ۔۔۔ سب کا
    اک چمک سی نظر آ جائے، تڑپ اٹھتے ہیں
    حسن کے باب میں ادراک جواں ہے ۔۔۔ سب کا
    ایک اک شخص ہے ٹوٹا ہوا اندر سے یہاں
    کیا چھپائے گا کوئی، حال عیاں ہے ۔۔۔ سب کا
    کوئ سر پھوڑنا چاہے تو نہ اک سنگ ملے
    اب تو اس شہر میں شیشے کا مکاں ہے ۔۔۔ سب کا

    خیمۂ گرد جو راہوں میں تنا ہے بانی
    اب یہی سب کا پتہ ہے، یہ نشاں ہے ۔۔۔ سب کا
     

اس صفحے کی تشہیر