کہکشاں

بافقیہ نے 'ادبی ملٹی میڈیا' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 4, 2020

  1. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    صالح ادب کی تعمیر و تشکیل میں نعت خوانوں ، موسیقاروں اور خوش نواؤں کا حصہ فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ آج بڑی مشکل سے معیاری کلام سماعت سے ٹکراتا ہے۔ اور اگر معیاری کلام، صحت تلفظ اور خوب صورت لب و لہجے کے ساتھ سماعت کے پردے میں سمائے تو جی بلیوں اچھلنے لگتا ہے۔ اور احساسات، جذبات اور کیفیات کا ایک بحر بیکراں امڈا چلا آتا ہے۔

    اسی غرض سے یوٹیوب پر ایک چینل کا آغاز کیا گیا ہے۔
    امید ہے کہ اردو محفل فورم کی باذوق ہستیاں جن کا نعرہ ہی ادب کی ترویج ہے نوجوانوں کی اس پیشکش سے خوش ہوں گے۔ اور ہمیں اپنی آراء سے نوازیں گے۔

    آپ کی آراء ادبی ، فنی اور تکنیکی ہر اعتبار سے ہمارے لئے راہنما ثابت ہوں گی۔
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 4, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    کبھی اے نوجواں مسلم تدبّر بھی کیا تو نے از علامہ اقبال
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    کہاں میں کہاں مدح ذات گرامی (نعت)
     
    • زبردست زبردست × 1
  4. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    کعبۃ اللہ کے دامن میں کی گئی التجا
    آواز : زفیف شنگیری

    زفیف آج کل کی مشہور اور جانی مانی شخصیت ہے۔ جس کا ڈسا پانی بھی نہیں مانگتا۔:D
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    الحمد للّٰہ کہکشاں کے نام سے ہمارے یہاں طلبہ کے لیے علم وادب کے فروغ کے مقصد سے یہ محفل سجائی گئی ہے، ان کوششوں کو سراہنے کی ضرورت ہے کیوں کہ جب تک ہم باطل کے خلاف پوری طاقت کے ساتھ معرکہ آرا نہیں ہوں گے ہماری بات مؤثر نہیں ہوسکتی، معیاری ادب کا فروغ، نوخیز نسل کو ایک پلیٹ فارم مہیا کرنا، زبان کی اصلاح، صحت تلفظ، ذوق کو جلا بخشنا، فنی محاسن اور کمالات کی رعایت “کہکشاں” کے مقاصد میں شامل ہے، آپ سے درخواست ہے کہ ان بچوں کو ہمت افزا کلمات اور دعاوں سے نوازیں، کہکشاں سے جڑیں اور دوسروں کو جوڑیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    کہکشاں کی جانب سے ایک اور نظم۔

    ہند و پاک کے تمام چینلوں کو دیکھنے کے بعد اس کی ضرورت و اہمیت کا اندازہ ہوا۔ کہ پورے پاکستان میں ایک چینل بھی ایسا نہیں جہاں کلام ، آواز اور ایڈیٹنگ سب خوب ہو۔ تو ہم نے دین و ادب کی خدمت کی خاطر یہ بیڑا ہندوستان میں اٹھایا۔ اللہ کا شکر ہے ہمارے پاس نوجوانوں اور لڑکوں کی بڑی تعداد موجود ہے۔ جو خوب گاتے ہیں۔ بلکہ سماں باندھ دیتے ہیں۔
    اکثر جہاں سبسکرائبرس کی لاکھوں تعداد موجود ہے وہاں کلام اتنا بازاری، اوچھا اور غیر معیاری کہ اسے کسی طور اردو کی خدمت نہیں کہا جاسکتا۔

    آئیے دیکھئے اور اپنے مفید مشوروں سے نوازیئے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    بر صغیر میں کوئی ایسا چینل ہے ؟ جو اس طرز پر دین و ادب کی خدمت کرنے کی خواہش رکھتا ہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    تم روٹھ چکے دل ٹوٹ چکا اب یاد نہ آؤ رہنے دو
    بآواز : اصغر احمد
    کلام : عامر عثمانی
    لیبل : کہکشاں (ادارہ ادب اطفال بھٹکل)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    کلام : آغا حشر کاشمیری
    بہ آواز : انس ابو حسینا

    آہ جاتی ہے فلک پر رحم لانے کے لیے
    بادلو! ہٹ جاؤ دے دو رہ جانے کے لیے


    از : کہکشاں (ادارہ ادب اطفال بھٹکل)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile


    *جمعہ کی مبارک ساعتوں میں عشق و مستی میں ڈوب کر نعت پاک سنیں اور درود کے نذرانے پیش کریں*

    *اک رند ہے اور مدحتِ سلطان مدینہ*

    *کلام:جگر مراد آبادی*

    *️آواز : زفیف ندوی*

    *پیشکش: کہکشاں*
    *زیراہتمام: ادارہ ادب اطفال بھٹکل*
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    ہمیں یوں محسوس ہورہا ہے کہ فورم کے احباب سماع سے بالکل تعلق نہیں رکھتے۔ سماع اہل تصوف، اہل علم وادب کا شیوہ رہا ہے۔
    کہکشاں کے پلیٹ فارم سے کئی ایک بہترین کلام سامنے آچکے ہیں۔ اور سینکڑوں قطار میں ہیں۔
     
  12. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    جگر مرادآبادی: اک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ

    اجمیر شریف میں نعتیہ مشاعرہ تھا، فہرست بنانے والوں کے سامنے یہ مشکل تھی کہ جگر مرادآبادی صاحب کو اس مشاعرے میں کیسے بلایا جائے ، وہ کھلے رند تھے اورنعتیہ مشاعرے میں ان کی شرکت ممکن نہیں تھی۔ اگر فہرست میں ان کانام نہ رکھا جائے تو پھر مشاعرہ ہی کیا ہوا۔ منتظمین کے درمیان سخت اختلاف پیداہوگیا۔ کچھ ان کے حق میں تھے اور کچھ خلاف۔ دراصل جگرؔ کا معاملہ تھا ہی بڑا اختلافی۔

    بڑے بڑے شیوخ اور عارف باللہ اس کی شراب نوشی کے باوجود ان سے محبت کرتے تھے۔ انہیں گناہ گار سمجھتے تھے لیکن لائق اصلاح۔ شریعت کے سختی سے پابند علماء حضرات بھی ان سے نفرت کرنے کے بجائے افسوس کرتے تھے کہ ہائے کیسا اچھا آدمی کس برائی کا شکار ہے۔ عوام کے لیے وہ ایک اچھے شاعر تھے لیکن تھے شرابی۔ تمام رعایتوں کے باوجود علماء حضرات بھی اور شاید عوام بھی یہ اجازت نہیں دے سکتے تھے کہ وہ نعتیہ مشاعرے میں شریک ہوں۔آخر کار بہت کچھ سوچنے کے بعد منتظمین مشاعرہ نے فیصلہ کیا کہ جگر ؔکو مدعو کیا جانا چاہیے۔یہ اتنا جرات مندانہ فیصلہ تھا کہ جگرؔ کی عظمت کا اس سے بڑااعتراف نہیں ہوسکتاتھا۔جگرؔ کو مدعو کیا گیا تووہ سر سے پاؤں تک کانپ گئے۔ ’’میں گنہگار، رند، سیہ کار، بد بخت اور نعتیہ مشاعرہ! نہیں صاحب نہیں‘‘ ۔ اب منتظمین کے سامنے یہ مسئلہ تھا کہ جگر صاحب ؔکو تیار کیسے کیا جائے۔ ا ن کی تو آنکھوں سے آنسو اور ہونٹوں سے انکار رواں تھا۔ نعتیہ شاعر حمید صدیقی نے انہیں آمادہ کرنا چاہا، ان کے مربی نواب علی حسن طاہر نے کوشش کی لیکن وہ کسی صورت تیار نہیں ہوتے تھے، بالآخر اصغرؔ گونڈوی نے حکم دیا اور وہ چپ ہوگئے۔ سرہانے بوتل رکھی تھی، اسے کہیں چھپادیا، دوستوں سے کہہ دیا کہ کوئی ان کے سامنے شراب کا نام تک نہ لے۔ دل پر کوئی خنجر سے لکیر سی کھینچتا تھا، وہ بے ساختہ شراب کی طرف دوڑتے تھے مگر پھر رک جاتے تھے، لیکن مجھے نعت لکھنی ہے ،اگر شراب کا ایک قطرہ بھی حلق سے اتراتو کس زبان سے اپنے آقا کی مدح لکھوں گا۔ یہ موقع ملا ہے تو مجھے اسے کھونانہیں چاہیے،

    شاید یہ میری بخشش کا آغاز ہو۔ شاید اسی بہانے میری اصلاح ہوجائے، شایدمجھ پر اس کملی والے کا کرم ہوجائے، شاید خدا کو مجھ پر ترس آجائے ایک دن گزرا، دو دن گزر گئے، وہ سخت اذیت میں تھے۔ نعت کے مضمون سوچتے تھے اور غزل کہنے لگتے تھے، سوچتے رہے، لکھتے رہے، کاٹتے رہے، لکھے ہوئے کو کاٹ کاٹ کر تھکتے رہے، آخر ایک دن نعت کا مطلع ہوگیا۔ پھر ایک شعر ہوا، پھر تو جیسے بارش انوار ہوگئی۔ نعت مکمل ہوئی تو انہوں نے سجدۂ شکر ادا کیا۔ مشاعرے کے لیے اس طرح روانہ ہوئے جیسے حج کو جارہے ہوں۔ کونین کی دولت ان کے پاس ہو۔ جیسے آج انہیں شہرت کی سدرۃ المنتہیٰ تک پہنچنا ہو۔ انہوں نے کئی دن سے شراب نہیں پی تھی، لیکن حلق خشک نہیں تھا۔ادھر تو یہ حال تھا دوسری طرف مشاعرہ گاہ کے باہر اور شہرکے چوراہوں پر احتجاجی پوسٹر لگ گئے تھے کہ ایک شرابی سے نعت کیوں پڑھوائی جارہی ہے۔ لوگ بپھرے ہوئے تھے۔ اندیشہ تھا کہ جگرصاحب ؔ کو کوئی نقصان نہ پہنچ جائے یہ خطرہ بھی تھاکہ لوگ اسٹیشن پر جمع ہوکر نعرے بازی نہ کریں۔ ان حالات کو دیکھتے ہوئے منتظمین نے جگر کی آمد کو خفیہ رکھا تھا۔وہ کئی دن پہلے اجمیر شریف پہنچ چکے تھے جب کہ لوگ سمجھ رہے تھے کہ مشاعرے والے دن آئیں گا۔جگر اؔپنے خلاف ہونے والی ان کارروائیوں کو خود دیکھ رہے تھے اور مسکرا رہے تھے؎
    کہاں پھر یہ مستی، کہاں ایسی ہستی
    جگرؔ کی جگر تک ہی مے خواریاں ہیں

    آخر مشاعرے کی رات آگئی۔جگر کو بڑی حفاظت کے ساتھ مشاعرے میں پہنچا دیا گیا۔ سٹیج سے آواز ابھری’’رئیس المتغزلین حضرت جگر مرادآبادی!‘‘ ۔۔۔۔۔۔اس اعلان کے ساتھ ہی ایک شور بلند ہوا، جگر نے بڑے تحمل کے ساتھ مجمع کی طرف دیکھا… اور محبت بھرے لہجے میں گویاں ہوئے۔۔
    ’’آپ لوگ مجھے ہوٹ کررہے ہیں یا نعت رسول پاک کو،جس کے پڑھنے کی سعادت مجھے ملنے والی ہے اور آپ سننے کی سعادت سے محروم ہونا چاہتے ہیں‘‘۔
    شور کو جیسے سانپ سونگھ گیا۔ بس یہی وہ وقفہ تھا جب جگر کے ٹوٹے ہوئے دل سے یہ صدا نکلی ہے…
    اک رند ہے اور مدحتِ سلطان مدینہ
    ہاں کوئی نظر رحمتِ سلطان مدینہ
    جوجہاں تھا ساکت ہوگیا۔ یہ معلوم ہوتا تھا جیسے اس کی زبان سے شعر ادا ہورہا ہے اور قبولیت کا پروانہ عطا ہورہا ہے۔نعت کیا تھی گناہگار کے دل سے نکلی ہوئی آہ تھی،خواہشِ پناہ تھی، آنسوؤں کی سبیل تھی، بخشش کا خزینہ تھی۔وہ خود رو رہے تھے اور سب کو رلا رہے تھے، دل نرم ہوگئے، اختلاف ختم ہوگئے، رحمت عالم کا قصیدہ تھا، بھلا غصے کی کھیتی کیونکر ہری رہتی۔’’یہ نعت اس شخص نے کہی نہیں ہے، اس سے کہلوائی گئی ہے‘‘۔مشاعرے کے بعد سب کی زبان پر یہی بات تھی.نعت یه تھی..
    اک رند ہے اور مدحتِ سلطان مدینہ
    ہاں کوئی نظر رحمتِ سلطان مدینہ

    دامان نظر تنگ و فراوانیِ جلوہ
    اے طلعتِ حق طلعتِ سلطانِ مدینہ

    اے خاکِ مدینہ تری گلیوں کے تصدق
    تو خلد ہے تو جنت ِسلطان مدینہ

    اس طرح کہ ہر سانس ہو مصروفِ عبادت
    دیکھوں میں درِ دولتِ سلطانِ مدینہ

    اک ننگِ غمِ عشق بھی ہے منتظرِ دید
    صدقے ترے اے صورتِ سلطان مدینہ

    کونین کا غم یادِ خدا ور شفاعت
    دولت ہے یہی دولتِ سلطان مدینہ

    ظاہر میں غریب الغربا پھر بھی یہ عالم
    شاہوں سے سوا سطوتِ سلطان مدینہ

    اس امت عاصی سے نہ منھ پھیر خدایا
    نازک ہے بہت غیرتِ سلطان مدینہ

    کچھ ہم کو نہیں کام جگر اور کسی سے
    کافی ہے بس اک نسبت ِسلطان مدینہ

    (جگر مراد آبادی)
     
  13. بافقیہ

    بافقیہ محفلین

    مراسلے:
    520
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Volatile
    اس کا
    اس کا حوالہ مطلوب ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر