شاذ تمکنت کچھ عجب شان سے لوگوں میں رہا کرتے تھے | غزل ۔ شاذ تمکنت

شاعر بدنام نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 12, 2009

  1. شاعر بدنام

    شاعر بدنام محفلین

    مراسلے:
    41
    کچھ عجب شان سے لوگوں میں رہا کرتے تھے
    ہم خفا رہ کے بھی آپس میں ملا کرتے تھے

    اتنی تہذیب راہ و رسم تو باقی تھی کہ وہ
    لاکھ رنجش سہی وعدہ تو وفا کرتے تھے

    اُس نے پوچھا تھا کئی بار مگر کیا کہئے
    ہم مزاجاً ہی پریشان رہا کرتے تھے

    ختم تھا ہم پہ محبت کا تماشا گویا
    روح اور جسم کو ہر روز جدا کرتے تھے

    زندگی ہم سے ترے ناز اٹھائے نہ گئے
    سانس لینے کی فقط رسم ادا کرتے تھے

    ہم برس پڑتے تھے شاذ اپنی ہی تنہائی پر
    ابر کی طرح کسی دَر سے اٹھا کرتے تھے


    شاذ تمکنت (مرحوم) ، حیدرآباد ، انڈیا۔ً
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 8
  2. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,732
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    واہ واہ بہت خوب شاعر بدنام صاحب! شاذ تمکنت کی بہت خوبصورت غزل شئیر کی ہے۔ بہت شکریہ! کچھ اپنا تعارف بھی کروائیے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. شاعر بدنام

    شاعر بدنام محفلین

    مراسلے:
    41
    جی شکریہ۔
    میرا تعارف ، تعارف والے سیکشن میں دیکھ لیجئے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,893
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    'محفلِ ادب' میں بھی خوش آمدید قبلہ۔

    اور بہت شکریہ 'پورے اہتمام' کے ساتھ خوبصورت غزل پوسٹ کرنے کیلیے، نوازش آپ کی مجھے کام سے بچانے کیلیے :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,298
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ شاعر ، لگتا ہے کہ آپ بھی حیدر آباد کے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    بہت خوب جناب آصف صاحب۔۔۔
     
  7. شاہ حسین

    شاہ حسین محفلین

    مراسلے:
    2,901
    بہت خوب غزل ہے شامل محفل کرنے کا شکریہ ۔
     
  8. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    خوبصورت غزل ہے جناب۔ بہت شکریہ۔
    ایک مصرع میں "راہ" کی بجائے "رہ" لکھا جائے گا:
    اتنی تہذیبِ رہ و رسم تو باقی تھی کہ وہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر