پرانے کمپیوٹر خریدتے اور بیچتے وقت اس کہانی سے سبق سیکھ لیں

عبدالقدیر 786 نے 'آئی ٹی کے سوال و جواب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 22, 2017

  1. عبدالقدیر 786

    عبدالقدیر 786 محفلین

    مراسلے:
    842
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy


    رائٹر عبدالقدیر
    تاریخ 21 ستمبر 2017
    جگہ کراچی
    کل رات میں میرا کمپیوٹر آخری سانسیں لے رہا تھا بار بار چلتے چلتے میں خود بہ خود ری
    اسٹارٹ ہو جاتا تھا میں نے سوچا کہ یہ ریم کی وجہ سے ہوگا میں نے ریم نکالی پھر لگائی پر کچھ افاقہ نہ ہوا میرے پاس دو ریمیں تھیں میں نے سوچا کہ شاید ان میں سے کوئی ایک ریم خراب ہوگی دونوں بدل کر دیکھیں پھر بھی کوئی فائدہ نہ ہوا میں نے پھر ذہن نے اِدھر اُدھر دوڑنا شروع کیا تو ایک آئیڈیا اور ذہن میں آیا کہ ہوسکتا ہے ریم کی سلوٹ خراب ہو تو ایسا کرتا ہوں کہ ریم دوسریسلوٹ میں لگا کر دیکھ لیتا ہوں پر یہ آئیڈیا بھی کارگر ثابت نہ ہوا تو اور آخر کار میرا کمپیوٹرنے آخری سانس لی اور مجھے گُڈ بائے کہتا ہوا چلا گیا مجھے پھر بھی سکون نہ آیا میں نے بھی کمپیوٹر کی طرف دیکھ کر دل میں کہا آج تو رات ہوگئی کل نپٹونگا تجھ سے چلو جی پھر میں بھی سو گیا کام پر گیا کام پر سے واپس آیا کھانا وغیرہ کھایا فارغ ہوکر پھر کمپیوٹر پر نظر پڑی میں نے
    سوچا چلو ہوسکتا ہے کہ کوئی معجزہ ہی ہوجائے کمپیوٹر آن ہوجائے چلایا پر کوئی ریسپانس نہ آیا جیسے تو سانس ہی نہیں ہو میں نے بھی اُمید نہیں چھوڑی اُس کو ڈاکٹر کے پاس لے کر گیا پر پتا چلا کمپیوٹر کے ڈاکٹر صاحب تو 3 دن کیلئے پنجاب گئے ہوئے ہیں میں نے کہا چلو پھر اب تمہیں بڑے ڈاکٹر کے پاس لے کر چلتے ہیں وہاں سے چلا میں اِس مریض کو لے کر ایک صاحب کو دیکھایا پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری ہے
    ہمارے پاکستان میں پرانے کمپیوٹر کیوں آتے ہیں - Taleem Hi Taleem
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 22, 2017
  2. گلزار خان

    گلزار خان محفلین

    مراسلے:
    806
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    میں نے عنوان دیکھا تو سوچا کے کے پتہ نہیں ایسا کیا ہوگیا جو سبق سیکھنا چاہے لیکن جب پوری پڑھلی تب نیچے لکھا ملا کے جاری ہے تو لنک پر کلک کیا تو وہ جناب بھی اوپن نہیں ہو رہے ہیں جب یہ مکمل نہیں لکھنی تھی تو چھیڑا ہی اسکو اور اگر عنوان ہی ایسا کیوں دیا کہ دوسرا بندہ آدھی ادھوری بات پڑھے اور آپ غائب رہیں اور سب انتظار ہی کرتے رہیں کے کب لکھیں گے اگلی قسط اب تک ڈیرھ سال بھی گزر گیا تقریبا اسکو لیکن مکمل نہیں لکھا ابھی تک آپ نے
     
  3. عبدالقدیر 786

    عبدالقدیر 786 محفلین

    مراسلے:
    842
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    رائٹر: عبدالقدیر
    تاریخ: 05 مارچ 2019
    جگہ : کراچی

    بقیہ بھی بتا دیتا ہوں ۔ گلزار خان صاحب کی فرمائش پر اِس کہانی کو بھی مکمل کردیتا ہوں۔ جب دیکھنے والے ہوتے ہیں تب ہی مزا آتا ہیں کہانی سُنانے کا چلیں اب کہانی کی طرف چلتے ہیں اور بقیہ حصہ بھی پورا کرلیتے ہیں ۔
    میں کمپیوٹر کو بڑے ڈاکٹر کے پاس لے کر جانے لگا پر سوچا راستے میں اِس کا چیک اپ کرالوں یہ نہ ہوکہ جاتے جاتے دم ہی نہ توڑ جائے تو اُن صاحب کو بتایا کہ میرا کمپیوٹر چلتے چلتے بند ہوگیا ہے اُن صاحب نے بھی کمپیوٹر کو ایسے کھولا جیسے اِن سے بڑا ڈاکٹر(کمپیوٹر ہارڈوئیر) کوئی اور ہے ہی نہیں اور مجھے بتایا کہ آپ کے کمپیوٹر کی ماں (مدربورڈ) مر چکی ہے اب اگر اِس کمپیوٹر کو زندہ دیکھنا چاہتے ہو تو ڈاکٹر (کمپیوٹر ہارڈوئیر ) کی جیب کو گرم کرو میں نے کہا کہ آپ اِس کمپیوٹر کو ویسے ہی پیک کردیں آپ کی مہربانی اور میں اُٹھا کر چلنے لگا پیچھے سے آواز آئی بھائی چیک اپ کی فیس میں پہلے ہی صدمے میں تھا کہ میرے کمپیوٹر کی ماں (مدربورڈ ) مر چکی تھی میں نے کہا بھائی آپ کی کتنی فیس ہے تو اُس نے بتایا کہ صرف 50 روپے میں نے اُسے دئیے اور اپنے ساتھ ایک کزن کو لے کر بڑے ڈاکٹر (صدرریگل کمپیوٹرہارڈوئیر ) کے پاس لے کر چلا گیا وہاں پر میں نے کمپیوٹر کی ماں (مدر بورڈ) تبدیل کرائی پھر جاکر میرے کمپیوٹر نے سانس لی ۔ آج اللہ کا شکر ہے ابھی تک صحیح ہے انشااللہ آئندہ بھی دُعا کریں کہ صحیح رہے آمین
     

اس صفحے کی تشہیر