ٹیکنالوجی اور ہمارا مستقبل

زیک نے 'آپ کی تحریریں' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 27, 2009

  1. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    نوٹ: ابنِ سعید اور باقی ارکان کو کھلی اجازت ہے کہ اس مضمون میں مضمون‌نگاری کی غلطیاں نکالیں مگر ساتھ یہ خیال رکھیں کہ پچھلے پندرہ سالوں میں میرا پہلا اردو مضمون ہے۔

    ٹیکنالوجی اور انسان کا چولی دامن کا ساتھ ہے۔ کچھ لوگوں کا تو کہنا ہے کہ یہ ٹیکنالوجی ہی ہے جو ہمیں جانوروں سے ممیز کرتی ہے۔ اگرچہ کچھ جانور بھی محدود طور پر اوزار کا استعمال کرتے ہیں مگر انسان اوزار ایجاد کرنے اور مختلف ٹکنیکس استعمال کرنے میں ایک علیحدہ ہی کلاس میں ہے۔ اس کا آغاز لاکھوں سال پہلے ہومو ایریکٹس کے پتھر کے اوزار بنانے سے ہوتا ہے۔ مختلف ماہرِ عمرانیات و آنتھروپالوجی ٹیکنالوجی کی تاریخ کو مختلف طریقوں سے تقسیم کرتے ہیں۔ ماضی کی اہم ٹیکنالوجی میں پتھر کے اوزار (25 لاکھ سال پہلے)، آگ کا استعمال(شاید 10 سے 15 لاکھ سال پہلے)، کپڑے (ایک لاکھ سال پہلے)، جانوروں کو پالتو بنانا (15 ہزار سال پہلے)، زراعت (10 ہزار سال پہلے)، تانبا، کانسی اور پھر لوہے کا استعمال، پہیہ (6 ہزار سال پہلے)، لکھائ (6 ہزار سال پہلے) وغیرہ ہیں۔ ان مختلف ٹیکنالوجیز کی بدولت انسان شکار اور چیزیں اکٹھی کرنے سے بڑھ کر گنجان آباد زرعی سوسائٹی کا حصہ بنا۔ پھر اٹھارہویں اور انیسویں صدی میں صنعتی انقلاب نے پہلے یورپ اور پھر دنیا کو بدل دیا۔

    آج ہم post-industrial دور سے گزر رہے ہیں جہاں انفارمیشن کے انقلاب نے دنیا کے مختلف خطوں میں رہنے والوں کو قریب‌تر کر دیا ہے۔کمپیوٹر، ٹیلی‌فون، انٹرنیٹ اور سروس اکنامی ہمارے دور کی اہم ایجادات ہیں۔ نہ صرف یہ کہ ہم باہم رابطے میں پرانے وقتوں سے بہت مختلف حالات میں رہتے ہیں بلکہ آج ترقی‌یافتہ ممالک میں صنعت سے زیادہ اہم انفارمیشن ہے اور بہت سے لوگ manufacturing کی بجائے information سے متعلقہ جاب کر رہے ہیں جن میں معلومات کو اخذ کرنا، انہیں شیئر کرنا، تعلیم، ریسرچ وغیرہ شامل ہیں۔

    کل ہمیں کیسی ٹیکنالوجی دکھائے گا؟ اس سوال کا جواب ایک لحاظ سے مشکل ہے کہ ہم اپنے کل کو آج ہی کے تناظر میں دیکھتے ہیں۔ جیسے بیسویں صدی کے پہلے حصے کے لوگوں‌کا خیال تھا کہ جیسے ان کے زمانے میں گاڑی اور جہاز کی ایجاد سے سفر بہت آسان ہوا اسی طرح مستقبل میں اسی فیلڈ میں ترقی ہو گی اور انتہائ تیزرفتار اور فضائ کاریں دستیاب ہوں گی۔ ایسا نہ ہو سکا بلکہ تیزرفتار کنکورڈ جہاز کچھ عرصہ پہلے بند ہو گیا۔ مگر آج ہوائ سفر اتنا سستا اور آسان ہو چکا ہے کہ سال میں کروڑوں لوگ دور دور کا سفر کرتے ہیں۔ اسی طرح 1969 میں چاند پر قدم رکھنے کے بعد انسان کا خیال تھا کہ چند ہی دہائیوں میں انسان خلاؤں کا سفر کرے گا مگر آج ہمیں لگتا ہے کہ unmanned space exploration ہی پر اکتفا کرنا پڑے گا۔ روبوٹس اور آرٹیفیشل انٹیلیجنس اگرچہ کافی کامیاب رہے مگر ساتھ ہی انتہائ مشکل ثابت ہوئے۔ روبوٹس کا استعمال صنعت میں تو عام ہے مگر سائنس فکشن کے انداز میں مصنوعی ذہانت سے بھرپور جنرل پرپز روبوٹس دیکھنے میں نہیں آئے۔

    ہم انفارمیشن کے زمانے میں رہتے ہیں تو بہت سی انفارمیشن آج ڈیجٹل شکل میں دستیاب ہے اور اسے کمپیوٹرز سے پراسیس کیا جا سکتا ہے۔ اس سے جہاں معلومات کو دنیا بھر میں پھیلانا آسان ہو گیا ہے اسی طرح انٹلیکچوئل پراپرٹی اور پرائیویسی بھی متاثر ہوئ ہے۔ آج بہت لوگ آسانی سے گانے اور فلمیں کاپی کر کے مفت میں بانٹ سکتے ہیں جس پر میوزک اور فلم انڈسٹری نالاں ہیں۔ مگر اس کے ساتھ ساتھ ہمارے متعلق بہت سی معلومات بھی ڈیجٹل فارمیٹ میں دستیاب ہیں۔ مثال کے طور پر ہم آجکل ای‌ٹکٹ پر جہاز میں سفر کرتے ہیں اور ہماری جہاز، ہوٹل، کار وغیرہ کی بکنگ تمام آن لائن ہی ہوتی ہے۔ کریڈ کارڈ اور بنک اکاؤنٹ کا تمام ریکارڈ بھی آن لائن ہوتا ہے۔ یہ تو پھر پرائیویٹ ڈیٹا ہے مگر ہمارے بلاگ، فورم، ٹویٹر، فیس‌بک وغیرہ بھی ہمارے متعلق بہت سی معلومات رکھتے ہیں۔ اسی طرح فون‌بک بھی آن لائن ہیں اور بہت سے کالج اور یونیورسٹی کی ڈائریکری بھی۔ ہم آن‌لائن سٹور سے خریداری کرتے ہیں تو وہ ڈیٹا بھی ہے اور اگر کسی لوکل سپرسٹور سے تو اس کے ڈسکاؤنٹ کارڈ ہیں جن سے آپ کی خریداری ٹریک کی جا سکتی ہے۔ بہت سے پبلک مقامات پر کیمرے نصب ہیں اور ہمارے سیل فون میں بھی اکثر assisted GPS موجود ہیں جن سے یہ معلوم کیا جا سکتا ہے کہ آپ اس وقت کدھر موجود ہیں۔ چہرے پہچاننے کی ٹیکنالوجی بھی اب کافی حد تک میچور ہو رہی ہے اور وہ وقت شاید دور نہیں جب آپ کہیں بھی جائیں تو خود بخود آپ کو پہچان لیا جائے۔ اس سب ڈیٹا کو کون کب اور کیسے استعمال کر سکتا ہے اس بارے میں ابھی فیصلہ مشکل ہے البتہ یہ لازم ہے کہ کچھ نسلوں بعد انسان کی پرائیویسی کا آئیڈیا آج سے کافی مختلف ہو گا۔

    سال کے شروع میں ایج نے سائنسدانوں، مصنفین اور نامور لوگوں سے پوچھا کہ ان کے خیال میں ان کی زندگی میں ایسا کونسا سا سائنسی آئیڈیا سامنے آئے گا جو دنیا کو بدل ڈالے گا۔ ہر کسی نے اپنا خیال پیش کیا۔ اگر مجھ سے پوچھتے تو میرا جواب ہوتا: بائیوٹیکنالوجی۔ اس میں سٹیفن پنکر کا اپنا ذاتی جینوم sequence کرانا اور اس کے نتیجے میں آپ کی جینز کے مطابق آپ کے ڈاکٹر کا آپ کا علاج کرنا بھی شامل ہے اور جینز یعنی وارثت کے ذریعہ پھیلنے والی بیماریوں‌کا تدارک بھی۔ اس کے ساتھ ساتھ جینز کی بدولت ہم شاید یہ بھی معلوم کر سکیں کہ ہمارے اباؤاجداد کہاں سے تھے۔

    کیا ہم مستقبل کی ٹیکنالوجی سے مثبت فوائد حاصل کر سکتے ہیں؟ ایک ٹیکنوفائل کی حیثیت سے میں تو یہی کہوں گا کہ بالکل بلکہ سائنس اور ٹیکنالوجی ہی ہمیں کئ مسائل سے نجات دلانے میں ممد و معاون ثابت ہو گی۔ گلوبل وارمنگ کے نتیجے میں انسان اور دنیا جس تباہی اور تبدیلی کا شکار ہو رہی ہے اور ہو گی اس کا تدارک energy conservation کے ساتھ ساتھ نئ ٹیکنالوجی کی ایجاد اور استعمال بھی ہو گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 14
  2. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    بہت اچھا مضمون ہے، زیک بھائی۔ ٹیکنالوجی کے ضمن میں میں یہ کہنا چاہوں گا کہ ہر سال ریسرچ کی وجہ سے ڈھیروں نت نئی ایجادات اور علوم دریافت ہوتے ہیں۔ مگر ان میں سے اکثر لیبارٹری سے باہر نہیں آتے۔ میں‌اس پر کافی تحقیق کر چکا ہوں۔ یہاں کچھ سیاست دانوں اور کچھ پہلے سے موجود کھرب ہا کھرب مالیت کی کارپوریشنز کا قصور ہے کہ وہ نئی ٹیکنالوجی کو عام کرنے سے گھبراتی ہیں کہ اسکا اثر انکے کاروبار پر پڑے گا۔ ۔۔ مثال کے طور پر ہم جانتے ہیں کہ بجلی کی کی گاڑیاں اور Renew-able توانائی پر اگر كام كیا جائے تو ماحولی فضلے سے بہت حد تک بچا جا سکتا ہے۔ مگر گاڑی کی صنعتیں اس پوزیشن میں نہیں ہیں کہ بجلی سے چلنے والی گاڑیوں کو عام کریں۔
    اسی طرح مقناطیسی پلیٹ پر چلنے والی ٹرینیں جو کہ موجودہ ہوائی جہازوں سے کئی گناہ تیز چل سکتی ہیں، صرف اسی لیے عام نہیں ہو رہیں، کیونکہ سیاست دانوں نے اپنے بجٹ ’’تیل‘‘ کی پروڈکشن میں لگائے ہوئے ہیں جس سے مزید جنگیں اور تنازعات پیدا ہو رہے ہیں۔۔۔
    ٹیکنالوجی کا مثبت اور انسانیت کیلئے استعمال بہت مشکل نظر آتا ہے کیونکہ ہر نئی ٹیکنالوجی مزید منافع کے حُصول کیلئے استعمال کی جاتی ہے۔۔۔ بے شک اوپری سطح پر ایسا ہی محسوس ہو رہا ہوتا ہے کہ یہ فلاحِ عامہ کیلئے ہے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  3. ابن سعید

    ابن سعید خادم

    مراسلے:
    60,163
    خفی الفاظ میں مجھے بدنام کرنے کی کوشش۔ :)

    زکریا بھائی آپ نے پہلی بار ہی سہی، لکھا تو بلکہ شاید پہلی بار نہیں ہے پندرہ سالوں میں پہلی بار ہے۔ یعنی اس سے پہلے کی تاریخ ممکن ہے مضمون نگاری کی مثالیں رکھتی ہو۔ جب کہ ہمیں آج تک کبھی بھی توفیق نہیں ہوئی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    واقعی مجھے زیک بھائی کا یہ بیان کچھ مشکوک سا لگا ہے۔ شاید کسی اور کا نام لکھنا چاہ رہے تھے;)
     
  5. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,033
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بہت خوبصورت مضمون ہے زیک، انسان کی یہ خوب سے خوب تر کی تلاش اگر اس میں موجود نہ ہوتی تو آج بھی درختوں پر اور غاروں میں بسیر ہوتا اور اسکی یہی جدوجہد اسے باقی تمام مخلوقات سے ممتاز کرتی رہی ہے اور کرتی رہے گی! اچھا لگا آپ کا مضمون!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. شاہ حسین

    شاہ حسین محفلین

    مراسلے:
    2,901
    بہت اچھا مضمون لکھا ہے آپ نے بڑی ہمّت کی بات ہے کہ آپ کا پہلا مضمون ہے اور آپ نے شامل کرنے کی ہم۔ت کی ۔
    میں نے بھی لکھا پر بہت چاہنے کے باوجود ہمت نہیں کر پایا۔
    م
     
  7. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    عمدہ مضمون ہے زیک ، خصوصا ماضی و مستقبل کاذکر خوب ہے۔۔
    وسلام
     
  8. احسن الزماں

    احسن الزماں محفلین

    مراسلے:
    44
    Very interesting article. All those technologies that we've had in last 15 to 20 years or so, they all now face the most daunting task ever faced by human - changing climate or Global Warming (in my opinion). It is time all these so called civilized nations put their efforts together in finding the solution to a phenomena which has put absolute drastic effects on our future generations. Recently, British Gas has built world's largest off-shore wind farm but thats not enough. Hybrid cars once came up as alternative to fuel cars but that to be honest hasnt worked well with fuel organisations. LPG gas is a fantastic alternative as its much greener and efficient but then again as someone has already mentioned anything other than Petrol/Diesel doesn't bode well with big fishes. Solutions are there, but "riches" of the world wouldnt let that happen as it breaks their hold on the world finances.
     
  9. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    محفل پر خوش آمدید "اھسن"۔ بھائی یہ اردو کا فارم ہے۔ یہاں انگریزی لکھنے سے گریز کریں!
     
  10. احسن الزماں

    احسن الزماں محفلین

    مراسلے:
    44
    بہت شکریہ عارف بھائ۔۔ معاف کیجیے گا میرے لیے اردو میں تبصرہ کرنا خاصا مشکل ہو جاتا ہے۔۔ :)
     
  11. زین

    زین لائبریرین

    مراسلے:
    12,400
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بھائی کبھی نہ کبھی ہمت تو کرنی پڑے گی ۔
    آپ نے غلط کیا۔ اگر لکھا ہے تو اب بھی پوسٹ کردیجئے ۔
     
  12. MyOwn

    MyOwn محفلین

    مراسلے:
    162
    میں‌اس موضوع کو
    http://itmag.pk/ پر شائع کرنے کی اجازت چاہوں گا۔


    والسلالم
     
  13. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    اجازت ہے اگر آپ اس تھریڈ کا لنک اور میرے بلاگ کا لنک ساتھ دیں۔

    شکریہ۔
     
  14. MyOwn

    MyOwn محفلین

    مراسلے:
    162
    itmag.pk پر ہر آرٹیکل اصلی مصنف کے نام کے ساتھ ہی شائع کیا جاتا ہے۔ اور ہر مصنف کو ایک مکمل پیچ بایو گرافی کا شائع کرنے کی اجازت ہے۔ اگر اپ ایک پیج بنا کر مجھے دیے دیں‌تو میں‌اس کو بھی شامل کر دوں گا۔ پیج کا ایچ ٹی ایمل میں ہونا ضروری ہے اپنی اچھی سی تصویر بھی اپ شامل کر سکتے ہیں۔

    والسلام
     
  15. امکانات

    امکانات محفلین

    مراسلے:
    382
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    اچھا اور معلوماتی مضمون ہے روایت کے مطابق مجھے اآپ کو داد نہیں دینی چاہیے کیونکہ آپ بھی داد دیتے وقت کنجوسی کا مظاہرہ کرتے ہیں میری داد یہ ہے زکریا بھائی اگر آپ اپنا پورانام جواب میں لکھ دیں تو میں اس تحریر کو روزنامہ مقدمہ کے ادارتی صفحے پر لگاوں گا
     
  16. جیا راؤ

    جیا راؤ محفلین

    مراسلے:
    1,888
    زبردست تحریر ہے۔۔ !:):)

    متفق۔۔ !!
     
  17. عین لام میم

    عین لام میم محفلین

    مراسلے:
    280
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Amused
    ماشاءاللہ آپ نے مضمون واقعی خوب لکھا ہے۔ ۔ ۔ موضوع کو بھی خوب نبھایا ہے اور انداز بھی اچھا ہے۔ ۔
    لگتا ہے میرا ووٹ آپ کے حصے میں ہی آئے گا۔۔ ۔ ۔ ۔!!
     
  18. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,232
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Amused
    میں بھیجتا ہوں آپ کو۔

    آپ شاید مقابلے پر داد دیتے ہیں۔ :p ویسے تو محفل ہی پر میرا نام آپ کو مل جائے گا مگر ذپ کر رہا ہوں۔

    شکریہ جیا اور عین۔
     
  19. ساقی۔

    ساقی۔ محفلین

    مراسلے:
    3,304
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    بہت اچھا آرٹیکل ہے جناب. لیکن جہاں ٹکنالوجی کے بہت سے مفائد ہیں وہاں ان کے نقصانات بھی ہیں . لیکن مفائد کے مقابلے میں نہ ہونے کے برابر ہی سمجھیئے. سب سے بڑا نقصان تو یہ ہے کہ انسان "کاہل" ہو گیا ہے .

    بہر حال اچھے اور مدلل مضمون پر مبار ک باد کے مستحق ہیں آپ.
     

اس صفحے کی تشہیر