وہ شمع اجالا جس نے کیا۔۔ (مشہور نعتیہ کلام) از ظفر علی خان مرحوم

dehelvi نے 'حمد، نعت، مدحت و منقبت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 26, 2010

  1. dehelvi

    dehelvi محفلین

    مراسلے:
    433
    وہ شمع اُجالا جس نے کیا چالیس برس تک غاروں میں
    اک روز جھلکنے والی تھی سب دنیا کے درباروں میں
    گر ارض و سما کی محفل میں لولاک لما کا شور نہ ہو
    یہ رنگ نہ ہو گلزاروں میں، یہ نور نہ ہو سیّاروں میں
    جو فلسفیوں سے کھل نہ سکا اور نکتہ وروں سے حل نہ ہوا
    وہ راز اک کملی والے نے بتلادیا چنداشاروں میں
    وہ جنس نہیں ایماں جسے لے آئیں دُکانِ فلسفہ سے
    ڈھونڈے سے ملے گی عاقل کو یہ قرآں کے سی پاروں میں
    ہیں کرنیں ایک ہی مشعل کی بوبکر و عمر عثمان و علی
    ہم مرتبہ ہیں یارانِ نبی کچھ فرق نہیں ان چاروں میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. ابو ثمامہ

    ابو ثمامہ محفلین

    مراسلے:
    249
    موڈ:
    Amazed
    ماشاء اللہ بہت خوب۔۔۔۔۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر