وہ اردو اشعار جن میں فارسی گو شعراء کا ذکر ہے

حسان خان نے 'ادبیات و لسانیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 18, 2015

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ناسخ! یہ فصاحت و بلاغت
    گویا سلمانِ ساوجی ہے

    (امام بخش ناسخ)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مندرجۂ ذیل بیت میں سعدی شیرازی کا تو ذکر نہیں ہے، لیکن اُن کی شہرۂ عالَم تصنیف 'گلستان' کا ذکر ضرور موجود ہے، اور مجھے اِس بیت کو شریک کرنے کے لیے یہی دھاگا مناسب لگا:

    وہ عاشق ہوں پڑھی جس دم گلستاں میں نے طفلی میں
    پسند آئی نہایت ہر حکایت بابِ پنجم کی
    (امیر مینائی)

    × گلستانِ سعدی کے بابِ پنجم کا عنوان 'در عشق و جوانی' ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سید شائق حُسین سفیر نے بھی اپنی ایک بیت میں ایسا مضمون بیان کیا ہے:
    پڑھا ہے میں نے گلستاں میں بابِ پنجمِ عشق
    نہ پِیر ہو کے بھی بھولا سبق گلستاں کا
    (سید شائق حُسین سفیر)
     
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اے سفیر اشعار میں میرے بھی ہے صائب کا رنگ
    ہم صفیر اب میں ہوں گویا بلبلِ تبریز کا

    (سید شائق حُسین سفیر)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بُلبُلِ شیراز کوں کرتا ہوں یاد
    حُسن کوں تیرے گُلستاں بوجھ کر

    (ولی دکنی)

    × بُلبُلِ شیراز = سعدی شیرازی
     
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    میر تقی میر اپنی ایک غزل کی بیتِ آخریں میں کہتے ہیں:
    ہے جی میں غزل در غزل اے طبع یہ کہیے
    شاید کہ نظیری کے بھی عہدے سے بر آوے
    (میر تقی میر)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    (رباعی)
    ہاں بُلبُلِ سدرہ شورِ تحسیں ہو جائے
    وہ نظم پڑھوں کہ بزم رنگیں ہو جائے
    پھل نُقطے ہوں، پھول حَرف، طوبیٰ مصرع
    فردوسی اگر آئے تو گُلچیں ہو جائے
    (مرزا دبیر)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    (رباعی)
    اے ابر تری گُہر فشانی کیا ہے
    آ دیکھ کہ یہ دُرِّ معانی کیا ہے
    یاں گُل ہے چراغ انوَری کا بالکل
    اے شمع تری چرب زبانی کیا ہے
    (مرزا دبیر)

    × مندرجۂ بالا بیت میں احتمالاً انوَری ابیوَردی کا ذکر ہے۔
     
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مصحفی نے کوئی مطلع جو لکھا درد آمیز
    خصمِ بے درد اُسے شعرِ فغانی سمجھا

    (غلام ہمدانی مصحفی)
     
    آخری تدوین: ‏مئی 6, 2018
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مصحفی درد ٹپکتا ہے سُخن سے تیرے
    غزل اِس لُطف کی دیوانِ فغانی میں نہیں

    (غلام ہمدانی مصحفی)
     
    آخری تدوین: ‏مئی 6, 2018
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مصحفی کچھ ریختہ ہی میں نہیں استادِ وقت
    فارسی میں بھی نظیریِ نِشاپوری ہے یہ

    (غلام ہمدانی مصحفی)
     
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گیا مصحفی تیرا شورِ فصاحت
    فلک تک، تو ظالم فغانی ہے گویا

    (غلام ہمدانی مصحفی)

    × بابا فغانی شیرازی
     
    آخری تدوین: ‏مئی 10, 2018
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    میر محبوب علی خان بہادر نظام الملک آصف جاہ سُلطانِ دکن کی مدح میں کہے گئے ایک قصیدے میں سے ابیات:
    "کلامِ خُسروی کیونکر نہ دُنیا سے نرالا ہو
    شہِ یکتا کا ہر مضمون یکتا ہو ہی جاتا ہے
    خدا رکّھے جہاں دو گُل کِھلائے طبعِ رنگیں نے
    گُلستاں بوستاں کا رنگ پھیکا ہو ہی جاتا ہے
    زباں پر طوطیِ ہندوستاں کو وجد آتا ہے
    بیاں پر بُلبُلِ شیراز شیدا ہو ہی جاتا ہے
    'قلق' کو داغ 'آتش' کو جلن 'جامی' کو بے ہوشی
    'صبا' کو بے کلی 'سودا' کو سودا ہو ہی جاتا ہے"

    (نواب فصاحت جنگ بہادر جلیل)
     
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    14,634
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ہم صفیر آہ و فغاں نالہ و زاری میں ترا
    نہ فغانی ہے نہ وحشی نہ نظیری بُلبُل

    (مولانا محمد حسن خان اسیر بریلوی)

    فغانی = بابا فغانی شیرازی
    وحشی = وحشی بافقی
    نظیری = نظیری نیشابوری
     
  15. الف نظامی

    الف نظامی لائبریرین

    مراسلے:
    13,477
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    انسان کے مراتب استعداد بھی الگ الگ ہوتے ہیں۔ کچھ لوگوں کی استعداد درجہ ء حیوانیت سے متجاوز نہیں ہو پاتی اور وہ صرف حیات کی اساسی ضروریات تک ہی محدود رہتے ہیں ، یہ انسانی استعداد کا سب سے کم مرتبہ ہے۔ ان سے اونچا طبقہ ان اصحاب کا ہے جو ضروریاتِ زندگی کی فراہمی کے ساتھ ساتھ اپنی استعداد کے رجحانات اور تقاضوں کی مناسبت سے بعض علوم و فنون سیکھ لیتے ہیں۔ اس طرح ان کا شمار تعلیم یافتہ اور اربابِ فن میں ہوتا ہے ، یہ استعداد کا درجہ اوسط ہے۔ آخری اور سب سے بلند طبقہ وہ ہے جس پر جامع الکمالات ، نابغہ روزگار اور فطین کے القاب صادق آتے ہیں۔ قدرت نے انہیں استعداد کے اس نقطہء عروج پر فائز کیا ہوتا ہے کہ اگر وہ اپنی استعداد کو بروئے کار لائیں اور ذرا توجہ سے کام لیں تو کائنات کا کوئی علم اور فن ان کے دائرہ گرفت سے باہر نہیں جانے پاتا۔ بلکہ جس موضوع کو ان کے آئینہ استعداد کےروبرو پیش کیا جاتا ہے وہ نہ صرف یہ کہ اس پر برجستہ محو گفتگو ہو جاتے ہیں بلکہ اس موضوع پر ایسے عالمانہ ، محققانہ اور ناقابل تردید عقلی و نقلی دلائل کا ایک دریا بہاتے نظر آتے ہیں اور اپنے جوہر استعداد سے ایسی ایسی نادرہ زائیاں کرتے دکھائی دیتے ہیں کہ آیت "وحملھا الانسان" میں پوشیدہ حقیقت کبرٰی ذہن پر منکشف ہو جاتی ہے۔ ان کے زیر بحث موضوع کا جو صحیح تجزیہ اور حتمی نتیجہ برآمد ہوتا ہے اس کے قبول کرنے میں سلیم الطبع ، انصاف پسند، معقول اور ذی ہوش سامعین کبھی بھی تاخیر سے کام نہیں لیا کرتے۔
    مذکورہ بالا صفاتِ عالیہ ، خصائص اور استعداد کے مالک غزالیؒ ، رازیؒ ، رومیؒ اور امیرخسروؒ جیسے ذہن کے لوگ ہی ہو سکتے ہیں اور ایسے حضرات صدیوں میں پیدا ہوتے ہیں۔ اور جس خطہ ارض کو ان کی قیام گاہ کا شرف مل جاتا ہے ، وہ قیامت تک نہ صرف یہ کہ اپنے اس اعزاز پر فخر کرتا ہے ، بلکہ دنیا اس خطہ کے باشندوں کو بھی اس نابغہ روزگار سے قربت کے باعث چشمِ احترام سے دیکھتی ہے۔
    تیری محبت کے سبب مجھے اس قوم کے ساتھ بھی حسن سلوک اور مروت سے پیش آنا پڑا جو میرے دشمن تھے۔ دراصل بات یہ ہے کہ ایک آنکھ کی خاطر ہزار آنکھوں کی عزت کرنا پڑتی ہے۔
    (سید نصیر الدین نصیر ، محیطِ ادب ، صفحہ88 )
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 13, 2018 7:26 شام

اس صفحے کی تشہیر