نمود - سحر انصاری

سیدہ شگفتہ نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 16, 2008

  1. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    فطرت



    سوچتے کیا ہو
    بے رحم اندھی ہوا
    پیڑ کے زرد پتوں سے کیوں آ کے ٹکرا گئی
    شاخ در شاخ کن آرزوؤں کا نوحہ لکھا ہے

    پیڑ کے نرم سائے کو دم توڑتے دیکھ کر
    دھوپ کے لمس کو اپنی محرومیوں میں نہ شامل کرو
    سارے لمحات بے رحم اندھی ہوا کے قدموں سے لپٹے ہوئے ہیں
    سوچتے کیا ہو
    ٹوٹے ہوئے زرد پتے کہاں جا رہے ہیں
    اپنی تنہائی کا کوئی ساتھی نہیں
    جسم کے گرد آلود ملبوس ہیں
    آنسوؤں کی قطاریں بھی گُم ہو گئیں

    دھند میں چُھپ کے سورج کے مانند رونے سے کیا
    اور جیون کی مالا میں کانٹے پرونے سے کیا
    آتی جاتی رتوں سے الجھتی ہوا کے اشاروں پہ چلتے رہو
    اپنے قدموں تلے خشک پتّے مسلتے رہو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    ہر نظر پریشاں ہے ، ہر نفس ہراساں ہے
    ہر خیال ویراں ہے ، شہر ہے کہ زنداں ہے

    دل کا امتحاں کیسا ، دل تو ضبط کے ہاتوں
    چارہ گر سے نادم ہے درد سے پشیماں ہے

    ایسی روشنی کی داد کس سے پائیں جُز خورشید
    آندھیوں کے حلقے میں شمعِ جاں فروزاں ہے

    آج کون سمجھے گا اس تضادِ پنہاں کو
    زندگی سے نالاں ہوں ، زندگی کا ارماں ہے

    حرف ہی تو سیکھے ہیں ، لفظ ہی تو لکھے ہیں
    انکشافِ معنی کب جُرمِ بے گناہاں ہے

    ذرّہ و بیاباں کا رمز ڈھونڈنے والو
    کارِ ذات مشکل ہے ، کارِ زیست آساں ہے

    عشق چند لمحوں کا اعتبار ہے شاید
    کس کو کس کی خواہش ہے ، کس کو کس کا ارماں ہے

    روشنی کے دشمن کیا آنکھ کے بھی اندھے ہیں
    خون دل کے چھینٹوں سے ہر طرف چراغاں ہے

    اس سے بڑھ کے کیا ہو گا انقلاب ہستی میں
    قطرہ بحرِ عنواں ہے ، ذرّہ دشتِ ساماں ہے

    کس سے حالِ دل کہیے ، کس سے دادِ غم لیجیے
    جسم کا تماشائی سایہ گریزاں ہے

    ہاں سحر ضروری ہے ہم نوائی غالب
    "برقِ خرمن راحت خونِ گرم دہقاں ہے"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    نیا مثالیہ



    جانِ جاں !
    تو عہد گاہِ جسم و جاں میں تھی کبھی
    نو بہارِ بستر و نو روزِ آغوشِ وصال

    اپنی دنیا سے نکل کر اس نئی دنیا کو دیکھ
    جس کے آئینے میں تُو لیلٰی نہیں شیریں نہیں
    کوہ پیما ہے ، خلائی راہرو ہے ، آگ ہے
    آگ سارے دیوتاؤں سے بغاوت کی اساس

    جانِ جاں !
    دیکھ آغوشِ طلسمِ روز و شب میں ان دنوں
    کیسی کیسی صورتیں ہیں ، کیسے کیسے جسم ہیں
    کار گاہِ وقت کی زنجیر میں جکڑے ہوئے

    آگ ان کے حق میں وہ دیوار ہے جس کے تلے
    کامرانی اِک طرف ہے ، نا رسائی اک طرف
    یہ جواں لاشے ، یہ فصلِ زندگانی کے شجر
    جبرِ محنت کی صلیبوں پر ہیں آویزان ابھی
    (مُشترک ہیں تُجھ پہ اُن پہ جبرِ محنت کے کرم)

    جانتی ہے زندگی ان کے لہو کے سارے نام
    صبح کی دہلیز سے تا آستانِ شمعِ شام
    ان کی آنکھوں کا سفر ہے انتظارِ انقلاب
    دستِ صر صر میں ہے اُن کے لالہ و گل کا شباب

    جانِ جاں !
    ایسے عالم میں یہ آگاہی ہے نعمت یا عذاب
    اَن گنت لمحوں کی معدومی کے اندھے دشت میں
    چند لمحے ، میرے تیرے قرب کے پابند ہیں

    جانِ جاں !
    صورتِ مرگِ مسلسل اس میں ہم بھی زندہ ہیں
    دیکھ اس دنیا کو دیکھ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    محبتوں کے سلیقے مرّوتوں میں کہاں
    جو بات تجھ میں تیری شباہتوں میں کہاں

    یہاں تو چاکِ گریباں کا ہوش بھی ہے عذاب
    ملی ہے آ کے تری یاد وحشتوں میں کہاں

    فشارِ زیست نے سمتیں بھی چھین لیں شاید
    یہ گردشیں نظر آتی تھیں ساعتوں میں کہاں

    فسونِ نیم نگاہی ، ترے جمال کی خیر
    جو رمز میں ہے وہ جادو ، وضاحتوں میں کہاں

    ہیں آج داد طلب کیوں تکلفات ترے
    یہ فاصلے نکل آئے ہیں قربتوں میں کہاں

    شعورِ غم سے الجھتی ہے قرصِ خواب آور
    سکوں ملا ہے سکوں کی ضرورتوں میں کہاں

    ہم اس نگاہ میں کچھ ہیں سحر تو ہیں ورنہ
    ملے گی اپنی گواہی عدالتوں میں کہاں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    اب تک حرم و دیر سے مانوس نہیں ہوں
    انسان ہوں شرمندہ ناموس نہیں ہوں

    ہو کس کو مری ذات کے آلام کا عرفان
    میں شہر میں معلوم ہوں محسوس نہیں ہوں

    دنیا کی خبر لے کے کہاں جاؤں فلک پر
    میں عرشِ خداوند کا جاسوس نہیں ہوں

    کسبِ درم و دام میں زندانی حالات
    اشعار میں آزاد ہوں ، محبوس نہیں ہوں

    افکار ہی اجسام میں ڈھل جائیں گے اک روز
    میں اپنے خیالات سے مایوس نہیں ہوں

    الفاظ و تراکیب پہ کیا فخر ہو مجھ کو
    گنجینہ احساس ہوں ، قاموس نہیں ہوں

    رہتا ہوں سحر یک دل و یک باطن و یک رنگ
    میں قامتِ اضداد کا ملبوس نہیں ہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  6. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    دکانِ کوزہ گر ہوئی ہی کیوں ، پیوندِ خاک آخر
    مجھی کو ریزہ ریزہ کر گیا لمحوں کا چاک آخر

    زمانہ اس قدر دُشمن کہاں تھا رنگِ اُلفت کا
    مگر میرے ہی افسوں نے کیا مجھ کو ہلاک آخر

    شعورِ غم کی دولت میکدے میں لُٹ گئی ہوتی
    رگ و پے میں سما کر رہ گیا زہرابِ تاک آخر

    حقائق خواب بن کر کیوں مرے ہمراہ چلتے ہیں
    مری آنکھیں رہیں گی اور کب تک خوابناک آخر

    گریبانوں پہ ہوتا تھا گُمانِ شاخِ گُل لیکن
    وہ فصل آئی کہ دل ہونے لگے زخموں سے پاک آخر

    تعجب کیا اگر کچھ آشنا ، نا آشنا نکلے
    کہیں گم ہو گیا ہو گا دلوں کا انہماک آخر
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    گرگ آشتی


    گھنے درختوں کو اور سرسبز وادیوں کو
    خزاں نے تاراج کر دیا ہے
    تمام دفتر تمام بازار بند ہیں اور ہر سڑک پر
    برف اپنی سفید بے حس تہیں بچھائے
    ہوا کے نادیدہ نقشِ پا کی اداس دولت سمیٹتی ہے
    ہوا جو یخ بستہ شہر کی نامراد گلیوں میں
    سرکشیدہ گزر رہی ہے

    نہ ساعتِ نانِ گرم ہے اب
    نہ اخگرِ منقلِ گل و لالہ کی دمک ہے
    زمیں کی ویران وسعتوں میں
    ہزار راہوں کی سرد لہروں کا اک جلوس
    اپنے کانپتے پرچموں کو لے کر
    گزر رہا ہے

    نہ کانوا جسم کا محافظ
    نہ حلقہ نار میں لپکتی ہوئی زبانیں
    پاسبانانِ اذنِ گویائی بن رہی ہیں

    سگانِ آوارہ نان اور استخوان کی کمیاب حسرتوں کو
    دلوں میں اپنے چھپائے پھرتے ہیں کوچہ کوچہ
    سبھی مکانوں کے در ہیں بستہ
    سبھی دریچوں سے برف کی ناشگفتہ کلیوں کے ہار کٹ کٹ کے گر رہے ہیں

    تمام جھیلوں کے آئینے ہو گئے شکستہ
    تمام راہوں میں اک صدا سائیں سائیں کی گشت کر رہی ہے
    نہ حرفِ لب میں خلوص و مہر و وفا کی حدت
    نہ جسمِ قرطاس سے لپٹتے ہوئے خطوں اور دائروں میں کوئی تپش ہے
    کہ جیسے اس شہر کی ہر اک شئے ہے سوز و جذب و اثر سے محروم

    نقابِ ابرِ سفید کی اوٹ سے
    ۔ ۔ ۔ سفید بستر پہ اک مریضِ جواں کے چہرے کی طرح
    حیران و مضمحل ۔ ۔ ۔

    بے وجود سورج
    اپنی کرنیں سمیٹتا ہے

    دُور اک دائرے میں گرگانِ گرسنہ
    نشہ خوابِ تلخ میں چُور
    اپنے اپنے شکم کی بے رحم آگ سے
    ہات تاپتے ہیں
    ہزار مجبوریوں کے نرغے میں جاگتے ہیں
    ہر ایک گرگِ گرسنہ اپنی نگاہ کے دائرے سے پیہم
    دوسرے گرگِ گرسنہ کی نڈھال آنکھوں کو تک رہا ہے
    ہر ایک دل میں یہ سوچتا ہے
    کہ دوسرے کی ذرا سی غفلت
    نیند کی اک مختصر سی نویدِ مخفی
    تمام گرگانِ گرسنہ کا علاج بن کر
    دوستی اور آشتی کی تمام کہنہ روایتوں کو اگر بچا لے

    تو اس جہاں کی بقا کا سامان کر کے ہم سب یہ کہہ سکیں گے
    کہ دوستی زندگی کی ساری عظیم قدروں سے
    (اس جہاں میں) عظیم تر ہے

     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    تنگ آتے بھی نہیں کشمکش دہر سے لوگ
    کیا تماشا ہے کہ مرتے بھی نہیں زہر سے لوگ

    شہر میں آئے تھے صحرا کی فضا سے تھک کر
    اب کہاں جائیں گے آسیب زدہ شہر سے لوگ

    نخلِ ہستی نظر آئے گا کبھی نخلِ صلیب
    زیست کی فال نکالیں گے کبھی زہر سے لوگ

    ہم کو جنت کی فضا سے بھی زیادہ ہے عزیز
    یہی بے رنگ سی دنیا ، یہی بے مہر سے لوگ

    مطمئن رہتے ہیں طوفانِ مصائب میں کبھی
    ڈوب جاتے ہیں کبھی درد کی اک لہر سے لوگ

    اے زمیں آج بھی ذرّے ہیں ترے مہر تراش
    اے فلک آج بھی لڑتے ہیں ترے قہر سے لوگ

    صرف محرومی فرہاد کا کیا ذکر سحر
    بیستوں کاٹ کے محروم رہے نہر سے لوگ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    اک آس کا دھندلا سایہ ہے ، اک یاس کا تپتا صحرا ہے
    کیا دیکھ رہے ہو آنکھوں میں ، ان آنکھوں میں کیا رکھا ہے

    جب کھونے کو کچھ پاس بھی تھا تب پانے کا کچھ دھیان نہ تھا
    اب سوچتے ہو ، کیوں سوچتے ہو ، کیا کھویا ہے کیا پایا ہے

    میں جھوٹ کو سچ سے کیوں بدلوں اور رات کو دن میں کیوں گھولوں
    کیا سننے والا بہرا ہے ، کیا دیکھنے والا اندھا ہے

    ہر خاک میں ہے گوہر غلطاں ، ہر گوہر میں مٹی رقصاں
    جس رُوپ کے سب گُن گاتے ہیں وہ رُوپ بھی کس نے دیکھا ہے

    کس دل کی بات کہیں ہم تم ، کس دل کا درد سہیں ہم تم
    دل پتھر ہے ، دل شیشہ ہے ، دل صحرا ہے ، دل دریا ہے

    اب سارے تارے کنکر ہیں ، اب سارے ہیرے پتھر ہیں
    اس بستی میں کیوں آئے ہو ، اس بستی میں کیا رکھا ہے

    یہ مرنا جینا بھی شاید مجبوری کی دو لہریں ہیں
    کچھ سوچ کے مرنا چاہا تھا کچھ سوچ کے جینا چاہا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    سوادِ شب


    نیم شب کی ریگ آلودہ ہوا
    کن جزیروں سے گزر کر آئی ہے
    منزلوں کی ریزہ ریزہ روشنی
    کن ستاروں سے اتر کر آئی ہے
    اور میرے ذہن کی بوجھل تھکن
    کن خرابوں کا سفر کر آئی ہے

    ہیں ہوا کے دامنِ صد میں چاک
    خشک پتے ، پیرھن کی دھجیاں
    فصلِ گُل کے پیرھن کی دھجیاں
    اعتبارِ کاوشِ آئندگاں

    حلقہ شب تنگ ہے مانندِ طوق
    ساعتوں کی جنبش کے درمیاں
    رفتہ رفتہ بڑھ رہا ہے تا گُلو
    بے محابا تیرگی کا ارتکاز

    ڈوبتی جاتی ہیں دل کی دھڑکنیں
    آگ بن کر گھل رہی ہیں خون میں
    جسم کی نا آشنا آسائشیں
    سوچتا ہوں ، صبح کی تحصیل تک

    رات ہے پرچھائیوں کا اک دیار
    جاگتی تنہائیوں کا اک دیار
    جس کی راہوں میں سفر ممکن نہیں
    جس کی راہوں سے مفر ممکن نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    اب اپنے دل کا آئینہ بھی دیکھیں
    غبارِ چہرہ دنیا بھی دیکھیں

    نگہباں ہم تو ہیں ریگِ تپاں کے
    ہمیں کیوں جانبِ دریا بھی دیکھیں

    رہیں شہروں کے ہنگاموں میں شامل
    انہی شہروں میں سناٹا بھی دیکھیں

    ہجومِ زیست کے احساں اٹھائیں
    اور اپنے آپ کو تنہا بھی دیکھیں

    جو میری آرزو پر معترض ہیں
    تجھے دیکھیں ، کوئی تجھ سا بھی دیکھیں

    بہت دیکھے سحر گھر کے در و بام
    چلو کچھ وسعتِ صحرا بھی دیکھیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439

    ہمیں نبض شناس بھی وقت کے تھے کہ بہار و خزاں کے اسیر ہوئے
    کبھی صرصرِ دشت کی طرح پھرے ، کبھی نکہتِ گُل کے سفیر ہوئے

    یہاں نام و نمود پہ فخر ہی کیا ، یہ نشیب و فراز حیات کے ہیں
    بنے شاہ جو فرق پہ تاج رکھے ، وہی کاسہ بدستِ فقیر ہوئے

    یہاں وقت کا کون سا رُوپ نہیں ، یہاں چھاؤں نہیں ہے کہ دُھوپ نہیں
    کبھی مہر بھی ذرّوں کے دست نگر ، کبھی ذرّے بھی ماہِ منیر ہوئے

    رہی سود و زیاں ہی کی بات مگر ترے حرف دو حرف کے بولنے سے
    ترا کون سا ایسا خسارہ ہوا ، ہمیں کون سے ایسے امیر ہوئے

    کبھی مصلحتوں کو سنوارنے پر ، کبھی رسمِ زمانہ نباہنے پر
    ملی دادِ ہوا و ہوس تو بہت مگر اپنی نظر میں حقیر ہوئے

    کبھی دُزد بنے ، کبھی شعر لکھے ، کبھی عشق کیا ، کبھی جوگ لیا
    کبھی سارے نقاب اُتار دیئے تو ہم آپ ہی اپنی نظیر ہوئے

    کفِ شحنہ سے رزق بھی پاتے رہے ، شبِ ہجر میں جی بھی جلاتے رہے
    وہی لوگ جو اہلِ خبر تھے سحر ، وہی لوگ جو غالب و میر ہوئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    آبِ جُو



    تجھے میرے قرب سے کیا ملا
    کہ میرا وجود تو ایک دشت٫ خراب ہے
    جسے ایک لمحہ آرزو بھی عذاب ہے

    تیرا جسم موجہ آبِ جُو
    جسے میرے قُرب کی تپتی ریت نے پی لیا
    زہے جُستجُو ، زہے آرزُو

    تری اس میں کوئی خطا نہیں
    کسی تشنہ رُوح کو آبِ تازہ کی پیشکش
    تو سدا سے کارِ عظیم ہے
    تجھے کیا خبر تھی کہ تازہ موجہ آبِ جُو
    کسی تشنہ دشت میں آ کے اپنے وجود کو
    نہ بچا سکے گی غمِ وفا کے سراب سے
    نہ بچا سکے گی نثارِ جاں کے عذاب سے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    ہو فریبِ زندگی ، لیکن فریب آسا نہ ہو
    زندگی اک زخم بن جائے ، اگر ایسا نہ ہو

    ہم ہی کر لیں گے گوارا تہمتِ ترکِ وفا
    تُو ، ہم اہلِ درد کی خاطر بہت رُسوا نہ ہو

    دشتِ خاموشی میں ہے اک آشنا آوازِ پا
    میرا سایہ ہی تعاقب میں کہیں آیا نہ ہو

    رقص کرتی ہیں مرے چاروں طرف پرچھائیاں
    ڈر رہا ہوں یہ بھی عکسِ چہرہ دنیا نہ ہو

    اس سے کیا پوچھوں ، ترا احوال ، تیرے روز و شب
    جس نے تیرا عالمِ افسردگی دیکھا نہ ہو

    گھر کی تنہائی بھی کرب انگیز ہے لیکن سحر
    کوئی ہنستے گنگناتے شہر میں تنہا نہ ہو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439

    جراثیم


    دوستو ، تخم ِ احساس کو چار سُو
    منتشر کر کے قائم رکھو دہر میں
    مزرعِ زیست کا اختیارِ نمُو
    کچھ نہیں مصلحت کی کمیں گاہ میں
    اب بھی نادیدہ دشمن ہیں اس راہ میں

    چشمِ فطرت کے اشکوں نے دھویا انہیں
    تخمِ احساس ہیں مہر و ماہِ نجوم
    نور نے آسمانوں میں بویا انہیں
    روز و شب موسمِ فصلِ سیارگاں
    نخلِ جاں بے نیازِ بہار و خزاں

    بزمِ ظاہر سے پنہاں نکالے ہوئے
    کتنے نادیدہ دشمن ، جراثیمِ نو
    غیر مرئی فضاوں میں پالے ہوئے
    ڈھونڈتے ہیں پناہیں اسی آس میں
    پھونک دیں زہر پوشیدہ انفاس میں

    ذہنِ انساں حریفِ جراثیم ہے
    خورد بینوں سے اتلاف کے وار تک
    اک سپاہِ تمنا کی تنظیم ہے
    اپنے اپنے حریفوں سے جنگیں بھی ہیں
    قلعہ جاں میں پنہاں سُرنگیں بھی ہیں

    نوکِ ناوک کو ہے جستجوئے ہدف
    جسم ، ملبوسِ زر سے دمکتے ہوئے
    اور ملبوس میں تہہ بہ تہہ ، صف بہ صف
    آئینوں کی چمکتی جبینیں سہی
    پہرہ دارانِ جاں خورد بینیں سہی

    خورد بینوں کی آنکھوں سے ڈرتے ہوئے
    زہر کی تیز سفاک مقراض سے
    دیدہ و دل کے رشتے کترتے ہوئے
    ریزہ ریزہ جراثیم چھا جائیں گے
    سب حریفانِ پنہاں کو کھا جائیں گے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    ٹیکسلا


    مٹے مٹے ، لُٹے لُٹے نشان
    تازہ زندگی کے دائروں میں گھومتے ہوئے
    یہ سوچتے ہیں زندگی کے کتنے رُوپ ہیں

    خموش راستے ، سیہ مہیب بام و در
    ہر ایک باغ بے شجر
    کہ جیسے کوئی قافلہ
    پڑاو کی نشانیاں ، الاو کی اُداس راکھ ، چھوڑ کر چلا گیا
    نہ برگدوں کی چھاوں ہے ، نہ لوگ ہیں ، نہ شہر ہیں
    رگوں میں جو لہو کی گرم دھاریاں تھیں کھو گئیں
    زمیں کی کیسری وشائین جیسے تھک کے سو گئیں

    یہاں کبھی ، کسی مکان کے بدن میں کوئی راگ تھا
    کسی کی پھول جیسی انکھڑیوں میں رنگ تھا
    اور اب یہاں نہ رُوپ ہے نہ انگ ہے
    نہ راگ ہے نہ رنگ ہے
    شکستہ مورتوں ، نہفتہ صورتوں کا اک ہجوم ہے

    وہ آتما ، مہاتما
    جو اپنی بازگشت کے نقوشِ پا کو ڈھونڈتی
    سمے کے سارے بندھنوں کو توڑ کر نکل گئی
    وہ آتما جو زندگی کے سارے زہر پی گئی
    وہ مسکرا کے موت سے گلے ملی تو جی گئی
    پراشچت کے سارے بھید ان گنت گپھاوں میں سمو گئی
    امر ، مہان ہو گئی

    ہماری آنکھ کی صنم گری
    ہمارے ذہن کی مصوری
    گپھاوں کی شکستہ مورتوں ، نہفتہ صورتوں کے
    خد و خال یوں نکھارتی ہے
    جیسے ان کی اک کڑی بھی گم نہیں ہوئی کہیں
    اسی صنم گری ، مصوری کی دین ہے
    کہ سارے نام ، سارے لوگ ، ساری بستیاں جو مٹ گئین
    ہمارے درمیان خود ہماری طرح زندہ ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439

    بستیاں خواب ہوئیں دیدہ بے خواب کے بعد
    عکس ہی عکس ملے آئینہ آب کے بعد

    جیسے ان میں کبھی آباد نہ ہوگا کوئی
    یوں مکانوں کے نشاں رہ گئے سیلاب کے بعد

    خواہشِ خواب میں آنکھیں بھی رکھیں بند مگر
    نظر آتا ہے وہی خواب کہاں ، کہاں خواب کے بعد

    کام سب محورِ فرصت کے بدلنے تک تھے
    اب کوئی کام نہیں فرصتِ کمیاب کے بعد

    اُڑتے پھرتے ہیں فضاوں میں پرندے کیا کیا
    زندگی ختم نہیں حلقہ گرداب کے بعد

    دل میں قصے تو بہت ہیں غمِ بیداری کے
    کیا کہے کوئی تری چشمِ گراں خواب کے بعد

    زندہ رہنے کی ضرورت کا خیال آتا ہے
    خاص کر وہ بھی سحر پرسشِ احباب کے بعد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    ہم نے آدابِ غم کا پاس کیا
    نقدِ جاں کو زیاں قیاس کیا

    تہمتِ شعلہ زباں لے کر
    صورتِ زخم التماس کیا

    آ گیا جب سلیقہ تعمیر
    قصرِ ہستی کو بے اساس کیا

    خبر و آگہی کے پردے میں
    عمر بھر ماتمِ حواس کیا

    کیسے اِک لفظ میں بیاں کر دوں
    دل کو کس بات نے اداس کیا

    عرض و اظہار بھی ہیں پیراہن
    ذات کو کس نے بے لباس کیا

    کیوں سحر تم نے اپنے صحرا کو
    موجِ دریا سے روشناس کیا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  19. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439



    ۔۔۔۔۔ اختتام ۔۔۔۔۔



     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر