میں اجنبی سہی - سید آلِ‌ احمد

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 29, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    قہر کا پل ہے یہ تو ہوگا

    قہر کا پل ہے یہ تو ہوگا
    دل بیکل ہے یہ تو ہوگا

    کیا قربت تھی‘ کیا دُوری ہے
    جہدِ خلل ہے یہ تو ہوگا

    سکھ تھا آنکھ کا تپتا صحرا
    دُکھ بادل ہے یہ تو ہوگا

    سائیں سائیں کرتا گھر ہے
    یا ہوٹل ہے یہ تو ہوگا

    صبح مسافت‘ شام مسافت
    خواب کا پھل ہے یہ تو ہوگا

    پھول بدن ہے‘ آنکھیں شبنم
    دُھوپ کا تھل ہے یہ تو ہوگا

    ’’جیسا کرو گے ویسا بھرو گے‘‘
    ردِعمل ہے یہ تو ہوگا

    لب نہ ہلے اور بات وہ سُن لے
    صبر کا پھل ہے یہ تو ہوگا

    سندرتا کی ایک جھلک کو
    من پاگل ہے یہ تو ہوگا

    کارِ جنوں میں بارِ خرد سے
    بازو شل ہے یہ تو ہوگا

    رسّی راکھ تو ہو گئی جل کر
    لیکن بل ہے یہ تو ہوگا

    من میں چاروں اور اندھیارا
    تن مشعل ہے یہ تو ہوگا

    صبح کا سورج تو نکلے گا
    یہ تو اٹل ہے یہ تو ہوگا

    اب تو احمد ایک اک مصرعہ
    قوسِ غزل ہے یہ تو ہوگا
     
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سامنے والے گھر میں بجلی رات گئے تک جلتی ہے

    سامنے والے گھر میں بجلی رات گئے تک جلتی ہے
    شاید مجھ سے اب تک پگلی آس لگائے بیٹھی ہے

    میری کسک‘ یہ میری ٹیسیں‘ آپ کو کیوں محسوس ہوئیں؟
    آپ کی آنکھوں میں یہ آنسو! دل تو میرا زخمی ہے

    نفس نفس اک تازہ سرابِ منزل خواب ہے یہ دُنیا
    نظر نظر قدموں سے خواہش سایہ بن کر لپٹی ہے

    چپ مت سادھو‘ جھوٹ نہ بولو‘ اب تو اطمینان سے ہو
    اب تو ہر دن سو جاتا ہے‘ اب تو ہر شب جاگتی ہے

    دل ایسا معصوم پرندہ‘ اپنے پر پھیلائے کیا؟
    اندیشوں کی کالی بلی‘ گھات لگائے بیٹھی ہے

    آپ تو بس اک خاص ادا سے ’’اپنا‘‘ کہہ کر بچھڑ گئے
    اب تک اُس اک بات کی خوشبو دوشِ ہوا پر پھیلی ہے

    کیسے اپنا دن گزرا‘ شب کیسے کٹی‘ کیا پوچھتے ہو
    دن بھر شہر کی خاک اُڑائی‘ رات آنکھوں میں کاٹی ہے

    آپ کو دیکھا‘ دل نہ مانا‘ ٹھہر گیا‘ ناراض نہ ہوں
    اتنی اچھی صورت اکثر‘ ہوش اُڑا ہی دیتی ہے

    میرے دیس کا چڑھتا سورج کیسے گرہن میں آیا ہے
    اے فرزانو! کچھ تو بتاؤ‘ دُنیا تماشہ دیکھتی ہے

    آپ کی تخلیقات پڑھے اب ایک زمانہ بیت گیا
    احمد صاحب! تازہ غزل کس الماری میں رکھی ہے
     
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہمارے گھر کے آنگن میں گھٹا کس روز آئے گی

    ہمارے گھر کے آنگن میں گھٹا کس روز آئے گی
    سکوتِ شامِ ویرانی بتا‘ کس روز آئے گی

    بہت دن ہو گئے ہم پر کوئی پتھر نہیں آیا
    شکستِ شیشۂ دل کی صدا کس روز آئے گی

    دُکھوں کے جلتے سورج کی تمازت جان لیوا ہے
    مرے حصے میں خوشیوں کی ردا کس روز آئے گی

    مسلسل حبسِ قیدِ لب سے دم گھٹنے لگا اب تو
    اسیرانِ قفس! تازہ ہوا کس روز آئے گی

    مری پلکوں پہ ظرفِ ربِ مفلس جھلملاتا ہے
    مری ماں جب یہ کہتی ہے‘ دوا کس روز آئے گی

    کہاں تک شانۂ ہستی یہ بارِ غم اُٹھائے گا
    تری دنیا میں جینے کی ادا کس روز آئے گی

    بدل دیتی ہے جو احمد مقدر کی لکیریں تک
    مرے ہونٹوں پہ دل سے وہ دُعا کس روز آئے گی
     
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    کل رات اُس کا چہرہ مجھے زرد سا لگا

    کل رات اُس کا چہرہ مجھے زرد سا لگا
    اک آگ کا الاؤ تھا جو سرد سا لگا

    مجھ سے قدم ملاتا ہوا دھوپ میں چلا
    سایہ بھی آشنائے رہِ درد سا لگا

    اُس کے بھی پاؤں میں کوئی چکر ہے ان دنوں
    وہ بھی کچھ اپنی طرح جہاں گرد سا لگا

    کس دشتِ غم کی خاک اُسے چھاننی پڑی
    کیوں چودہویں کا چاند مجھے زرد سا لگا

    دیتے رہے ہیں دُکھ جو مجھے پیار کے عوض
    وہ بھی اُسی قبیل کا اک فرد سا لگا

    وہ شخص جس نے بارِ مسائل اُٹھا لیا
    اس شہر بے سکوں میں جوانمرد سا لگا

    میں بھی بہت اُداس تھا احمد گذشتہ روز
    اُس کا مزاج بھی مجھے کچھ سرد سا لگا
     
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غمِ حالات سہیں یا نہ سہیں سوچ میں ہیں

    غمِ حالات سہیں یا نہ سہیں سوچ میں ہیں
    ہم دُکھی لوگ کسے اپنا کہیں سوچ میں ہیں

    جسم اور روح کے مابین کسک کس کی ہے
    ذہن ذی فہم کی کتنی ہی تہیں سوچ میں ہیں

    کوئی آواز‘ نہ پتھر‘ نہ تبسم‘ نہ خلوص
    اب ترے شہر میں ہم کیسے رہیں سوچ میں ہیں

    کیسا اخلاص کہ ہیں مصلحت اندیش تمام
    ہم بھی کیوں ان کی طرح خوش نہ رہیں‘ سوچ میں ہیں

    شہر بے خواب میں کب تک تن تنہا احمد
    برگِ آوارہ کی مانند رہیں‘ سوچ میں ہیں
     
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہوا کے ساتھ درختوں کے رابطے تھے بہت

    ہوا کے ساتھ درختوں کے رابطے تھے بہت
    تھا عکسِ ذات فقط ایک‘ آئینے تھے بہت

    تمہارے بعد تو سنسان ہو گیا ہے شہر
    عجیب دن تھے وہ‘ تم تھے تو رتجگے تھے بہت

    ہمیں نے ترکِ مراسم کی راہ اپنا لی
    یہ اور بات تعلق کے راستے تھے بہت

    سحر سے مانگ رہے ہیں وہ عکس خواب و خیال
    چراغِ شوق جلا کر جو سوچتے تھے بہت

    چھلک اُٹھے ہیں مرے صبر کے تموج سے
    رفاقتوں کے جو دریا اُتر گئے تھے بہت

    تھا جلوہ ریز مری خلوتوں میں اور کوئی
    یہ جب کی بات ہے‘ جب تم نے خط لکھے تھے بہت

    وہ تم نہیں تھے مگر ہوبہو وہ تم سا تھا
    اس اعتبار پہ کل رات بھی ہنسے تھے بہت

    لبوں پہ حرفِ صدا برف ہو گئے احمد
    طلوعِ مہر سے پہلے تو حوصلے تھے بہت
     
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    جرمِ اخلاص کے شعلوں کو ہوا دیتی ہے

    جرمِ اخلاص کے شعلوں کو ہوا دیتی ہے
    جب بھی آتی ہے تری یاد رُلا دیتی ہے

    بیکراں وقت کی اس کوکھ میں پلتی ہوئی سوچ
    اک نئی صبح کی آمد کا پتہ دیتی ہے

    سوچتا ہوں کہ کہیں تیرے تعاقب میں نہ ہو
    وہ اذیت جو مری نیند اُڑا دیتی ہے

    تیری تصویر مرے گھر میں جو آویزاں ہے
    خواب کو وہم کی تعبیر دکھا دیتی ہے

    غرقِ گردابِ مصائب مجھے کرنے والے!
    موجۂ کاہشِ جاں تجھ کو دُعا دیتی ہے

    ذہن آسیب زدہ سوچ کا پتھر ہے تو کیا
    خواہشِ زیست تو کہسار ہلا دیتی ہے

    اتنا لوٹا ہے گھنی چھاؤں نے اک عمر مجھے
    اب تو سائے کی بشارت بھی ڈرا دیتی ہے

    کوئی پتھر ہو‘ خدا ہو کہ فرشتہ احمد
    اپنی صحبت اُسے انسان بنا دیتی ہے
     
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اُمید کے صحرا میں جو برسوں سے کھڑا ہے

    اُمید کے صحرا میں جو برسوں سے کھڑا ہے
    حالات کی بے رحم ہواؤں سے لڑا ہے

    رُسوائی سے بھاگے تو یہ محسوس ہوا ہے
    تنہائی کی منزل کا سفر کتنا کڑا ہے

    ہیرے کی کنی ہو تو تبسم بھی بہت ہے
    لو سامنے اک کانچ کا مینار کھڑا ہے

    یوں ذہن پہ برسا ہے تری یاد کا بادل
    جیسے کہ کوئی کوہِ الم ٹوٹ پڑا ہے

    گزرے ہوئے لمحے کبھی واپس نہیں آتے
    کیوں صورتِ دیوار اندھیرے میں کھڑا ہے

    اک اختر مبہم ہوں بظاہر میں اُفق پر
    کہتے ہیں مرا نام مرے قد سے بڑا ہے

    اک میں ہی اکیلا نہیں اس دشتِ خلش میں
    جلتا ہوا سورج بھی مرے سر پہ کھڑا ہے

    ناقدریٔ جذبات کے اس عہد میں احمد
    آ جائے اگر راس تو پتھر بھی بڑا ہے
     
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دشتِ غم میں کھلا پھول جذبات کا

    دشتِ غم میں کھلا پھول جذبات کا
    کتنا سندر تھا رنگِ حنا ہات کا

    جس جگہ ہر خوشی غم کا عنواں بنے
    کون مہماں ہو ایسے محلات کا

    بھولی بسری ہوئی یاد کے بادلو
    مینہ نہ برسے گا اب پھر ملاقات کا

    بعدِ ترکِ تمنا بھی میلے رہے
    شہر سونا ہوا کب خیالات کا

    زندگی کو نگل جائے گی تیرگی
    سر پہ سورج نہ آئے گا حالات کا

    ہجر کی زُلف بکھرے تو احمد کبھی
    ختم ہوتا نہیں سلسلہ رات کا
     
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    آج بھی دھوپ میں ہوں ٹھہرا ہوا

    آج بھی دھوپ میں ہوں ٹھہرا ہوا
    ابر کا انتظار کتنا تھا

    اک الاؤ تھا رُوٹھنا اس کا
    مسکراتی تو پھول کھل جاتا

    دل کے در پر یہ کس نے دستک دی
    گونج اُٹھا ہے گھر کا سناٹا

    تیری قربت مری ضرورت تھی
    یوں تو تو نے بھی خواب دیکھا تھا

    دو قدم اور ساتھ دے لیتے
    حوصلہ آپ کا بھی کم نکلا

    کون صحرا میں دے تجھے آواز
    کون کھولے طلب کا دروازہ

    آؤ قانون کی کتاب پڑھیں
    اب صحافت میں کچھ نہیں رکھا

    میرے حصے میں غم کی دوپہریں
    تیری تقدیر میں گھنا سایہ

    آئنے میں تریڑ کیوں آتی
    تو کوئی پھول تھا نہ پتھر تھا

    خواب سا ہو گیا ہے اب اس کا
    منہ چھپا کر اِدھر اُدھر پھرنا

    انگلیوں میں عجب حرارت تھی
    جسم انگارہ سا دہک اُٹھتا

    تھی مخالف ہوائے شہر بہت
    قربتوں کا چراغ کیا جلتا

    تو تو دھڑکن تھا میرے سینے کی
    تو بھی حاکم ہی وقت کا نکلا

    تیری آنکھوں میں ڈوب جانے کو
    کون سے روز دل نہیں کہتا

    کتنا مشکل ہے ان دنوں احمد
    شہر میں دشت کی طرح رہنا
     
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    بہشتِ دل میں خوابیدہ پڑی ہے

    بہشتِ دل میں خوابیدہ پڑی ہے
    وہ اک حسرت جو میری زندگی ہے

    بہت خوش ہوں میں فن کی سرزمیں پر
    مری نیکی بدوں نے لوٹ لی ہے

    دریچے کھول دیتا ہوں طلب کے
    مجھے جب بھی شرارت سوجھتی ہے

    سیاست اب کہاں زنجیر ہوگی
    یہ کشتی اب کنارے لگ رہی ہے

    بہت نامطمئن ہے دل کی دھڑکن
    کتابِ شوق تسکیں سے بھری ہے

    مہینوں بعد دیکھا ہے تبسم
    بہت دن میں غزل تازہ کہی ہے

    بدن اب تک تر و تازہ ہے لیکن
    سفر کی دھول آنکھوں میں جمی ہے

    حکومت اک سخی کے ہاتھ میں ہے
    غریب شہر کی حالت وہی ہے

    لگا ہے جب بھی کوئی زخم تازہ
    مرے فن کو توانائی ملی ہے

    بہارِ نو کے دروازے نہ کھولو
    خزاں سے عمر بھر کی دوستی ہے

    مرے دل پر تو کوہِ غم گرا ہے
    تمہاری آنکھ کیوں بھیگی ہوئی ہے

    تجھے بھی نیند نے دھوکا دیا ہے
    تھکن تیری بھی پلکوں پر جمی ہے

    وہ کب کی جا چکی ہے اور دل میں
    ابھی تک یاد کی کھڑکی کھلی ہے

    جسے ہم سائباں سمجھے ہوئے تھے
    وہی دیوار سر پر آ گری ہے

    میں شہر دل میں اب تنہا ہوں احمد
    تعلق کی بصارت چھن چکی ہے
     
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    خزاں میں غم ذرا کچھ کم کیا کر

    خزاں میں غم ذرا کچھ کم کیا کر
    بہاروں میں بھی آنکھیں نم کیا کر

    دلوں میں قید کر رکھا ہے جن کو
    وہ باتیں بھی کبھی باہم کیا کر

    تمنا ہے کہ زہری چپ کے گیسو
    لبوں کے دوش پر برہم کیا کر

    ہر آنگن میں سحر کب بولتی ہے
    سکوتِ شام کا دُکھ کم کیا کر

    تعلق خواب ہے قدرت نہیں ہے
    شکستِ دل کا مت ماتم کیا کر

    کہیں بہتر ہے جابر سے بغاوت
    سرِ تسلیم یوں نہ خم کیا کر

    حرارت ڈھونڈ مت مہتابِ جاں میں
    لحد پر دن کی اب ماتم کیا کر

    زمانہ نفرتیں بھی بانٹتا ہے
    زمانے سے محبت کم کیا کر

    کبھی دل کو سلگتی دوپہر کر
    لہو کی لَو کبھی مدھم کیا کر

    معافی دے دیا کر دوستوں کو
    تبسم زیر لب پیہم کیا کر
     
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دھوپ اور چھاؤں کا کربِ ذات لکھتا تھا

    دھوپ اور چھاؤں کا کربِ ذات لکھتا تھا
    دیدہ ور تھا دوری کو اختلاط لکھتا تھا

    زخم زخم گنتا تھا روشنی میں جگنو کی
    حرف حرف پلکوں پر سچی بات لکھتا تھا

    میں بھی ان خلاؤں میں ایک لحظہ پہلے تک
    خواب کا مسافر تھا‘ خواہشات لکھتا تھا

    صبحِ جاں کی شبنم ہو‘ دُھوپ ہو بدن کی تم
    سچ بتاؤ یہ جملے کس کا ہات لکھتا تھا

    برگِ زرد ہونے تک میں ہوا کی تختی پر
    منتظر نگاہوں سے التفات لکھتا تھا

    پوچھتے ہیں بام و در‘ کون‘ شہر ناپرساں!
    آنے والی ہر رُت کو بے ثبات لکھتا تھا

    خوب آدمی تھا وہ شہر کی اُداسی پر
    خامۂ تبسم سے دن کو رات لکھتا تھا

    کتنا اُنس تھا اُس کو میری ذات سے احمد
    جو بھی خط وہ لکھتا تھا ’’دل نشاط‘‘ لکھتا تھا
     
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اے رسم و راہِ شہر کے محتاط ظرف رنگ

    اے رسم و راہِ شہر کے محتاط ظرف رنگ
    ٹھوکر بھی کھا کے آیا نہ جینے کا ہم کو ڈھنگ

    آتی نہیں ہے سطحِ یقیں پر وفا کی لہر
    رہتی ہے صبح و شام مزاجوں میں سرد جنگ

    ہر صبح دُکھ سے چور ملا زخم زخم جسم
    ہر شب تھرک تھرک گیا آہٹ پہ انگ انگ

    تھا جس سے میرے سچ کے تحمل کا ربطِ خاص
    اترا اسی کے غم کا مری روح میں خدنگ

    ناآشنائے لذتِ لہجہ تھے سب ہی لوگ
    کیا کیا بساطِ لب پہ بکھیری نہ قوسِ رنگ

    پیشِ نظر ہے اب بھی کوئی پیکر لطیف
    اب بھی ہے دل میں کتنی ہی یادوں سے جلترنگ

    میری وجہ سے تو بھی ہوا شہر میں خراب
    تیرے سبب ہے مجھ پہ بھی ہر رہگذار تنگ

    کچھ تو بتا اے خواہشِ ایذا پسند دل!
    کب تک رہے تعاقبِ حاصل میں ہر اُمنگ

    سوچوں تو کوئی حلِ مسائل نہ مل سکے
    ہے ذہن کی تہوں میں حوادث سے اتنا زنگ

    کس نے کہا تھا کھیل رچاؤ خلا میں تم
    کیوں ہاتھ مل رہے ہو اگر کٹ گئی پتنگ

    ہے منفرد مزاجِ معانی کی تمکنت
    لفظوں کے پیرہن میں ہے میری انا کا رنگ

    احمد‘ لہو لہو ہے مرا پیکر نفس
    دل پر ہیں داغِ رنج‘ بدن پر ہیں زخمِ سنگ
     
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    حادثوں میں رہتا ہے چہرہ لالہ گوں اپنا

    حادثوں میں رہتا ہے چہرہ لالہ گوں اپنا
    حوصلے کا آئینہ ہے دلِ زبوں اپنا

    تیرا دھیان بھی جیسے کعبۂ تقدس ہو
    تیرے بعد بھی رکھا ہم نے سرنگوں اپنا

    رخشِ وصل کی باگیں دستِ شوق کیا تھامے
    فصلِ انبساط آگیں حال ہے زبوں اپنا

    فاصلوں کی دوپہریں رنگ رُخ اُڑاتی ہیں
    خون خشک کرتا ہے دور رہ کے کیوں اپنا

    عقل بیٹھ جاتی ہے تھک کے جب دوراہے پر
    کام آ ہی جاتا ہے جذبۂ جنوں اپنا

    تجھ پہ بار کیوں گزرا میری چپ کا سناٹا
    تو جو خود سے مخلص ہے میں نہ ساتھ دوں اپنا

    ذہن غم کی راہوں میں راستہ سجھاتا ہے
    ہر نفس ’’وفا دشمن‘‘ پاسبان ہوں اپنا

    بے سکون سچائی‘ جھوٹ کی علامت ہے
    معتدل ہی رہتا ہے قلزم دروں اپنا

    ترکِ ربط باہم پر یہ تعلقِ خاطر
    رات وہ فسردہ تھا‘ دُکھ ہوا فزوں اپنا

    تیغ بادِ بدخوئی ظرف سے پشیماں ہے
    ضبطِ غم کے مقتل میں کر رہا ہوں خوں اپنا

    مجھ کو اس کی مٹی بھی زندگی سے پیاری ہے
    خوفِ قہر رُسوائی! شہر چھوڑ دوں اپنا

    دشتِ روح کی دلدل ہے بدن کی تاریکی
    اے لہو کی خوش فہمی! کیا سراغ دوں اپنا

    رنگ و بوئے گلزارِ صبح کی ضمانت ہوں
    کشتِ ذہن تازہ کو دے رہا ہوں خوں اپنا

    بندشِ لبِ نغمہ فن کی سرد چھاؤں میں
    مصلحت کی چھینی سے بت تراش لوں اپنا

    کتنی خاک چھانی ہے پھر بتاؤں گا احمد
    پہلے دُکھ کے صحرا میں دن گزار لوں اپنا
     
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    یاد آؤں گا اُسے‘ آ کے منائے گا مجھے

    یاد آؤں گا اُسے‘ آ کے منائے گا مجھے
    اور پھر ترکِ تعلق سے ڈرائے گا مجھے

    آپ مسمار کرے گا وہ گھروندے اپنے
    اور پھر خواب سہانے بھی دکھائے گا مجھے

    مجھ کو سورج کی تمازت میں کرے گا تحلیل
    اور مٹی سے کئی بار اُگائے گا مجھے

    اپنی خوشبو سے وہ مانگے گا حیا کی چادر
    زیب قرطاسِ بدن جب بھی بنائے گا مجھے

    ربِ ایقان و عطا! عمر کے اس موڑ پہ کیا
    راستے کرب کے ہموار دکھائے گا مجھے

    میں کڑی دھوپ کا سایہ ہوں کڑے کوس کا ساتھ
    بھولنا چاہے گا وہ‘ بھول نہ پائے گا مجھے

    میری شہہ رگ پہ تمسخر کی چھری رکھے گا
    گاہے پلکوں پہ تقدس سے سجائے گا مجھے

    آنکھ لگ جائے گی جب ہجر کے انگاروں پر
    نیند میں آ کے دبے پاؤں جگائے گا مجھے

    تو بھی زنجیر پہن لے گا انا کی اک دن
    میری غزلیں مرے لہجے میں سنائے گا مجھے

    میں تو ہر بار مراسم کی بنا رکھتا ہوں
    سوچتا ہوں کہ کبھی تو بھی منائے گا مجھے

    جن سے ملتا ہو سراغِ رہِ منزل احمد
    وہ لکیریں مرے ہاتھوں پہ دکھائے گا مجھے
     
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    زرد جذبے ہوں تو کب نشوونما ملتی ہے

    زرد جذبے ہوں تو کب نشوونما ملتی ہے
    فن کو تہذیب کی بارش سے جلا ملتی ہے

    سر میں سودا ہے تو چاہت کے سفرپر نکلیں
    کرب کی دھوپ طلب سے بھی سوا ملتی ہے

    کون سی سمت میں ہجرت کا ارادہ باندھیں
    کوئی بتلائے کہاں تازہ ہوا ملتی ہے

    چاند چہرے پہ جواں قوسِ قزح کی صورت
    تیری زُلفوں سے گھٹاؤں کی ادا ملتی ہے

    ہم تو پیدا ہی اذیت کے لیے ہوتے ہیں
    ہم فقیروں سے تو دُکھ میں بھی دُعا ملتی ہے

    کتنا دُشوار ہے اب منزلِ جاناں کا سفر
    خواہش قربِ بدن آبلہ پا ملتی ہے

    بے نمو شاخوں سے پتوں کو شکایت کیا ہو
    اب تو پیڑوں کو بھی مشکل سے غذا ملتی ہے

    اور بڑھنے دو گھٹن خوف نہ کھاؤ اس سے
    شدتِ حبس سے تحریکِ بقا ملتی ہے

    کبھی فرصت کی کوئی شام سحر تک دے دے
    یوں جو ملتی ہے سرِ راہے تو کیا ملتی ہے

    سر سے چادر نہ اُتارو مرے اچھے فنکار!
    برہنہ حرف کو معنی کی ردا ملتی ہے

    تیرا انصاف عجب ہے مرے جبار و غنی!
    جرم ہم کرتے ہیں بچوں کو سزا ملتی ہے

    جب سے تنہائی کو اوڑھا ہے بدن پر احمد
    تمکنت لہجے میں پہلے سے سوا ملتی ہے
     
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    تو بے سبب ہے مری ذات سے خفا‘ کچھ سوچ

    تو بے سبب ہے مری ذات سے خفا‘ کچھ سوچ
    ہے اس خرابے میں دل کس کا آئنہ‘ کچھ سوچ

    دماغ پر ہے مسلّط سکوت سا کچھ‘ سوچ
    ہے شام ہی سے یہ دل کیوں بجھا بجھا‘ کچھ سوچ

    خفا نہ ہو کہ کڑی دوپہر میں آیا ہوں
    میں تنہا کیسے یہ لمحے گزارتا‘ کچھ سوچ

    تھا جس کی لو سے منور یہ خواہشوں کا مکاں
    وہ اک چراغ بھی تو نے بجھا دیا‘ کچھ سوچ

    یہ اجتناب‘ یہ خط فاصلے کا کیسے کھنچا
    وہ جذبہ ختم بھلا کیسے ہو گیا‘ کچھ سوچ

    تو جس کے پیار کو اپنی اَنا پہ تیاگ آیا
    وہ رات تجھ سے زیادہ اُداس تھا‘ کچھ سوچ

    بس اک نحیف سا جھونکا‘ بہارِ عہد سکوں!
    ہرے درختوں کی شاخیں جھکا گیا‘ کچھ سوچ

    تھا چاروں اور کڑی رنجشوں کی دھوپ کا دشت
    میں کس کے پیار کی چھاؤں میں بیٹھتا‘ کچھ سوچ

    وہ ماں کہ جس نے تلاطم سپرد مجھ کو کیا
    میں اس کے خواب سے کیسے گلے ملا‘ کچھ سوچ

    وہ باغ جس کی نمو میں رچا ہے میرا لہو
    میں اپنے ہاتھوں سے کیسے اُجاڑتا‘ کچھ سوچ

    نجانے کتنی ہواؤں کا زخم خوردہ ہے
    وہ ایک پتا زمیں پر جو آگرا‘ کچھ سوچ

    دروغ گوئی حقیقت کو ڈھانپ لیتی ہے
    خلوص دل سے بیاں کر وہ واقعہ‘ کچھ سوچ

    یہ کس زمین پہ رکھی تھی شہر کی بنیاد
    دُکھوں کا شور فصیلوں میں رچ گیا‘ کچھ سوچ

    وہ آدمی کہ دلاسہ دیا تھا تو نے جسے
    فسردہ ریت پہ خوابوں کی سو گیا‘ کچھ سوچ

    مرے مکان کے باہر بھی تیرگی تھی محیط
    میں کیسے تجھ کو دریچے سے جھانکتا‘ کچھ سوچ

    یہ اور بات کہ تھا پرکشش مگر احمد
    وہ اجنبی تھا‘ اُسے کیسے روکتا‘ کچھ سوچ
     
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہم اہلِ دل نے نہ دیکھے بسنت کے لمحے

    ہم اہلِ دل نے نہ دیکھے بسنت کے لمحے
    کھلے نہ پھول کبھی خواب میں بھی سرسوں کے

    عجیب مرد تھے زنجیر کرب پہنے رہے
    کنارِ شوق کسی شاخِ گل کو چھو لیتے

    اُفق پہ صبح کا سورج طلوع ہوتا ہے
    ستارے ڈوب چکے‘ مشعلیں بجھا دیجے

    مرے خدا! مری دھرتی کی آبرو رکھ لے
    ترس گئی ہیں نئی کونپلیں نمو کے لیے

    مری وفا کے گھروندے کو توڑنے والے!
    خدا تجھے بھی اذیت سے ہمکنار کرے

    بجھی نہ پیاس کبھی تجربوں کے صحرا میں
    تمام عمر سفر میں رہے ہیں سپنوں کے

    یہ اور بات کہ سروِ سہی تھے شہر میں ہم
    جو پستہ قد تھے وہی لوگ سربلند ہوئے

    ترے لبوں پہ ترے دل کا آئنہ دیکھا
    تعلقات کسی طرح تو برہنہ ہوئے

    گداز جسم کی قربت میں اتنی لذت تھی
    ہم احترام کے اسباق سارے بھول گئے

    وہی درخت گرے منہ کے بل زمینوں پر
    جنہیں غرور نے پاگل کیا تھا موسم کے

    میں آئنے میں خدوخال کس کے پہچانوں
    گئی رُتوں کے‘ رواں عہد کے یا فردا کے

    بڑے خلوص سے جس ذہن کو سنوارا تھا
    وہی صلیب کی زینت بنا رہا ہے مجھے

    سکوت سے تو پرندے بھی ڈرنے لگتے ہیں
    زمیں کے حبس کوئی انقلابِ تازہ دے

    گزر گئے ہیں برس صبح کی صلیبوں پر
    جو ہو سکے تو شب زندگی عطا کر دے

    تمام رات درِ اشتیاق وا رکھا
    کٹی نہ شب تو ستاروں سے بات کرتے رہے
     
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اگر میں ڈوب گیا تھا تو پھر سے اُبھرا کیوں

    اگر میں ڈوب گیا تھا تو پھر سے اُبھرا کیوں
    بتا اے موجۂ گرداب! یہ تماشا کیوں

    مجھے پتہ ہے ترے دل کی دھڑکنوں میں ہوں
    میں ورنہ دُکھ کی کڑی دوپہر میں جلتا کیوں

    رہِ طلب میں مسلسل تھکن سے خائف ہوں
    سکوں جو ہاتھ نہ آئے سفر ہو لمبا کیوں

    یہ امتحاں تو نمودِ وفا کا جوہر تھا
    اُسے یقین جو ہوتا مجھے رُلاتا کیوں

    یہ پائے زیست میں زنجیر بے یقینی کیا
    رکھا ہے ہم کو لبِ جو بھی اتنا تشنہ کیوں

    ابھی تو اگلے ہی زخموں کے پھول تازہ ہیں
    بدن کو چھید رہا ہے خیالِ فردا کیوں

    خجل تھا کتنا مرے ضبط کے طمانچے پر
    میں اپنے مدمقابل سے رات جیتا کیوں

    نہ کوئی رنگ‘ نہ سلوٹ‘ نہ کوئی حرفِ طلب
    ورق ہے دیدہ و دل کا یہ اتنا سادہ کیوں

    چھپاؤں کیسے‘ کروں کس طرح اسے تقسیم
    دیا ہے درد کا اتنا بڑا خزانہ کیوں

    یہ اور بات کوئی مجھ سے پرخلوص نہیں
    مری طرف سے کسی کا بھی دل ہو میلا کیوں

    جو تجھ سے پیار نہ ہوتا تو آبرو کی قسم
    ہر آتے جاتے ہوئے شخص کو یوں تکتا کیوں

    صبا کی پور سے نازک ہے اس کے ظرف کا پھول
    دیا ہے سینے میں دل یہ بہ شکل شیشہ کیوں

    کسے ہے فرصتِ یک لمحہ رُک کے دُکھ پوچھے
    کھڑے ہو دُھوپ میں آزردہ دل یوں تنہا کیوں

    وفا ناآشنا اتنا ہی تھا اگر احمد
    میں سوچتا ہوں اسے میں نے خط لکھا تھاکیوں
     

اس صفحے کی تشہیر