میں اجنبی سہی - سید آلِ‌ احمد

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 29, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    اندر کا ہر کرب چھپاتے پھرتے ہیں
    ہم دیوانے لوگ ہنساتے پھرتے ہیں

    چہرہ چہرہ ہر دل کی دیوار سے ہم
    اپنے نام کے حرف مٹاتے پھرتے ہیں

    شاخ سے ٹوٹ کے قریہ قریہ برگِ سبز
    فصلِ بہار کا حال سناتے پھرتے ہیں

    وہ جو دل کو دل کی رحل پہ رکھتے تھے
    اب ہم ان کا کھوج لگاتے پھرتے ہیں

    پہلے دھوپ کے لمس کو ہم نے برف کیا
    اب ہم برف پہ پاؤں جلاتے پھرتے ہیں

    اب تو اپنے سائے سے آئینہ لوگ
    اپنا عیب ثواب چھپاتے پھرتے ہیں

    احمد قحطِ سماعت سے دیواروں کو
    تازہ غزل کے شعر سناتے پھرتے ہیں
     
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    دل یہ کہتا ہے کہ تعبیر کا گھر دیکھوں گا
    رات آنکھوں میں گزاروں تو سحر دیکھوں گا

    اے غم زیست! کوئی موڑ بھی منزل کا نہیں
    اور کب تک میں مسلسل یہ سفر دیکھوں گا

    یہ جو ہر لمحہ دھڑکتی ہے مرے سینے میں
    اس کسک کو بھی کبھی جسم بدر دیکھوں گا

    مجھ کو تصویر کا بس ایک ہی رُخ بھاتا ہے
    کس طرح سے ترا ویران نگر دیکھوں گا

    اب تو اس خواب سے پتھرانے لگی ہیں آنکھیں
    کب سراپا کو ترے ایک نظر دیکھوں گا

    یہ مرا شہر ہے‘ اس شہر میں میں رہتا ہوں
    کیسے ان آنکھوں سے جلتے ہوئے گھر دیکھوں گا

    اُفقِ شرق سے پو پھوٹ رہی ہے احمد
    اب میں بستی کا ہر اک فرد نڈر دیکھوں گا
     
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    بے سبب کون سا سینہ ہے جو شق ہوتا ہے
    بعض ایثار کا اک عمر قلق ہوتا ہے

    لفظ اخلاص کا دھڑکن میں چھپا رہتا ہے
    لبِ اظہار تو اک سادہ ورق ہوتا ہے

    آئنہ صاف خدوخال دکھا دیتا ہے
    چہرہ غیروں کا نہیں اپنوں کا فق ہوتا ہے

    میں تجھے کون سے لہجے میں ملامت بھیجوں
    اچھے گھوڑے کو تو چابک بھی سبق ہوتا ہے

    میرے ہر جرمِ وفا سے ہے شناسا عالم
    تیرے اخلاص کا احساس ادق ہوتا ہے

    جب بھی ماتھے پہ چمکتا ہے عرق بن کے لہو
    مطلعِ دل پہ عجب رنگِ شفق ہوتا ہے

    کون محروم رہا خُلقِ وفا سے احمد
    تیرا چہرہ تو مسرت کی رمق ہوتا ہے
     
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    دل خزینے کا امیں ہوگا نہ رہزن ہوگا
    کتنے چہروں کے تبسم کا یہ مدفن ہوگا

    تو اگر مجھ سے گریزاں ہے کوئی بات نہیں
    کوئی چہرہ تو مرے قلب کی دھڑکن ہوگا

    مجھ سے آئے گی تجھے شعلۂ کردار کی آنچ
    میرے معیار پہ اُترے گا تو کندن ہوگا

    نہ کوئی خواب‘ نہ تعبیر‘ نہ خواہش‘ نہ کسک
    اتنا ویران کسی گھر کا نہ آنگن ہوگا

    عمر بھر دُکھ کے الاؤ میں جلیں گے احمد
    تن کے دوزخ کا غمِ زیست ہی ایندھن ہوگا
     
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    میں ہوں دھوپ اور تو سایا ہے سب کہنے کی باتیں ہیں
    جگ میں کس کا کون ہوا ہے سب کہنے کی باتیں ہیں

    من مورکھ ہے‘ مت سمجھاؤ‘ کرنی کا پھل پائے گا
    چڑھتا دریا کب ٹھہرا ہے سب کہنے کی باتیں ہیں

    تم تو اب بھی مجھ سے پہروں دھیان میں باتیں کرتے ہو
    ترکِ تعلق کیا ہوتا ہے سب کہنے کی باتیں ہیں

    جانے والے حد یقیں تک‘ ہم نے جاتے دیکھے ہیں
    واپس لوٹ کے کون آتا ہے سب کہنے کی باتیں ہیں

    میں سوچوں کی جلتی دھوپ اور وہ تسکین کی گہری چھاؤں
    میرا اس کا ساتھ ہی کیا ہے‘ سب کہنے کی باتیں ہیں

    اک تجھ پر ہی کیا موقوف کہ سب ہی پیٹ کے ہلکے ہیں
    کس کا ظرفِ دل گہرا ہے؟ سب کہنے کی باتیں ہیں

    احمد اس کا چہرہ اس کے جھوٹ کی چغلی کھاتا ہے
    تیرے دُکھ میں وہ رویا ہے‘ سب کہنے کی باتیں ہیں
     
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    گراں ہے جنسِ وفا شہر میں خوشی کی طرح
    پرانے دوست بھی ملتے ہیں اجنبی کی طرح

    کبھی تو آئے گا چشمِ یقیں کے حلقے میں
    بساطِ دل پہ جو اُبھرا ہے چاندنی کی طرح

    کوئی چراغ نہ ہو جس کے صحن میں روشن
    مرا وجود ہے اس شب کی تیرگی کی طرح

    وہ ابرِ خاص کہ جس سے بڑی توقع تھی
    دیارِ روح سے گزرا ہے اجنبی کی طرح

    مری نظر میں کوئی منزلِ خرد نہ جچی
    سدا سفر میں رہا ذوقِ گمرہی کی طرح

    کچھ اور دور ہو مجھ سے کہ اور نکھرے گا
    ترا شعور مرے فن شاعری کی طرح

    تھے جتنے جسم کے عقدے وہ حل ہوئے احمد
    لہو کی خاک بھی چھانی تو دشت ہی کی طرح
     
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    دُکھوں میں ضبط کی زنجیر تو پہن لوں گا
    میں اپنا سر کسی دہلیز پر نہ رکھوںگا

    میں تیرے قرب کے تسکین بخش پہلو میں
    یہ ایک رات تو کیا ساری عمر جاگوں گا

    میں اپنا دُکھ نہ سناؤں گا شہر والوں کو
    ترے وقار کی اے دوست لاج رکھوں گا

    وہ ایک شخص بھی اخلاص سے تہی نکلا
    وفا کی سرد ترازو میں کس کو تولوں گا

    شکستِ شیشۂ دل سے تو موت بہتر ہے
    کوئی بتائے کہ کب تک یہ زہر چاٹوں گا

    میں ایک شعلۂ احساس ہوں‘ اے شہر سکوت!
    دماغ و دل بھی ہوئے منجمد تو بولوں گا

    یہ تیرے ماتھے پہ تازہ شکن جو اُبھری ہے
    اسی لکیر کے گرداب سے میں اُبھروں گا

    ترے لبوں کے تبسم کے سرخ پتھر پر
    میں اپنی روح کے لرزیدہ ہونٹ رکھ دوں گا

    وہ میرے پاس بھی آ کر ستائے گا احمد
    میں اُس سے دور بھی رہ کر دُعائیں ہی دوں گا
     
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    خواب میں کچھ اور تھا چہرہ تری تصویر کا
    مہر برلب تھا مسافت میں بدن تعبیر کا

    رنگ لاتا ہے بہرصورت لہو شبیر کا
    سلسلہ در سلسلہ پھیلاؤ ہے زنجیر کا

    ڈھونڈتا ہے کس گئی رُت کی رمیدہ خواہشیں
    جبر کے سکرات میں افتادہ دل تقدیر کا

    ایک ہالہ سا ملامت کا بنا رہتا ہے گرد
    رُخ دمکتا ہی نہیں شادابیٔ توقیر کا

    رات کی گہری سیاہی میں بھی مٹ جاتے ہیں نقش
    دھوپ میں بھی رنگ اُڑ جاتا ہے ہر تصویر کا

    جا نہیں سکتا کبھی شیشے میں بال آیا ہوا
    مٹ نہیں سکتا لکھا انسان کی تقدیر کا

    نااُمید آنکھوں کی تاریکی‘ دُعا کس سے کرے
    کون ہے‘ کس نے جلانا اب دیا تاثیر کا

    زندگی ایسی کئی قربان اس کی ذات پر
    ہاتھ آ جائے کوئی نکتہ اگر تفسیر کا

    کس کی جنبش کا تسلسل ہے زمیں سے تا اُفق
    ہے معطر طاس‘ کس کی نگہتِ تحریر کا

    قوتِ شوریدہ سے احمد کھلی چشمِ ہنر
    کس تیقن سے ہوا مجرم قدم تاخیر کا
     
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    مسرتوں کی کرن کو ترس گئے ہم تم
    ثبوتِ صبحِ وطن کو ترس گئے ہم تم

    دلوں میں پھیل گئی رنجشوں کی تاریکی
    خلوص و ربطِ بدن کو ترس گئے ہم تم

    دل و نگاہ کی بے چہرگی کے صحرا میں
    صباحتوں کی دُلہن کو ترس گئے ہم تم

    نہ اتفاق کا لہجہ‘ نہ اختلاف کی ضد
    صداقتوں کے دہن کو ترس گئے ہم تم

    یہ کیسی رات ڈھلی‘ مصلحت کا دن نکلا
    سکونِ روحِ بدن کو ترس گئے ہم تم

    سکوتِ شام کے منظر میں ڈھل گئیں سوچیں
    طوافِ قریۂ فن کو ترس گئے ہم تم

    لبوں پہ حرفِ دُعا کے گلاب سوکھ گئے
    جبیں پہ قوسِ شکن کو ترس گئے ہم تم

    ہوائے شہر کا رُخ ہی بدل گیا احمد
    نگارِ شیریں سخن کو ترس گئے ہم تم
     
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    پتھر کہیں گے لوگ‘ سر رہگذر نہ بیٹھ
    چہروں کی دھوپ چھاؤں میں یوں بے خبر نہ بیٹھ

    ناعاقبت شناس رفیقوں سے بچ کے رہ
    کج بحث دوستوں میں کبھی دیدہ ور نہ بیٹھ

    یہ تو شکستِ شیشۂ دل آشنا نہیں
    ان پتھروں کی سامنے آئینہ گر نہ بیٹھ

    اے رہروِ سکون وفا! حوصلہ نہ ہار
    محرومیوں کی تپتی ہوئی ریت پر نہ بیٹھ

    گرتی ہے جس پہ برق یہی وہ لباس ہے
    سر پر دکھوں کی کالی ردا اوڑھ کر نہ بیٹھ

    کوئی بھی رنگِ قوسِ نظر دائمی نہیں
    یہ حبس عارضی ہے دل معتبر نہ بیٹھ

    احمد ہوائے شہر مخالف بھی ہے اگر
    خائف نہ ہو‘ نظر نہ چرا‘ چھپ کے گھر نہ بیٹھ
     
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    کاخِ جذبات کا در کھول تو سکتی ہے غزل
    چپ کے اِس دور میں کچھ بول تو سکتی ہے غزل

    اتنے مایوس ہو کیوں شہر کے ماحول سے تم
    حبس کتنا بھی ہو پر تول تو سکتی ہے غزل

    تلخ اتنا تو نہیں ذائقۂ صوت و حروف
    ذہنِ ذی فہم میں رس گھول تو سکتی ہے غزل

    اور کچھ روز اسی خاک پہ پتھرانا ہے
    مجھ کو مٹی میں ابھی رول تو سکتی ہے غزل

    کتنا بھی قحطِ مسرت ہو مگر خامۂ سرخ
    غمِ ہر دل کی گرہ کھول تو سکتی ہے غزل

    اس کھڑی جھیل میں احمد کوئی پتھر پھینکو
    کسی لہجے میں سہی بول تو سکتی ہے غزل
     
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    زلفِ نگارِ درد کا سایہ نہ تھا کبھی
    یہ وہ لباس ہے کہ جو پہنا نہ تھا کبھی

    یادوں کا کارواں بھی گزرتا نہیں کوئی
    دشتِ وفا میں اتنا تو تنہا نہ تھا کبھی

    محرومیوں کی دھوپ میں جلتے ہوئے بدن
    حد نگاہ تک تو یہ صحرا نہ تھا کبھی

    کیا بات ہو گئی ہے بتا ظرفِ آبرو!
    اس تیرہ خاکداں سے تو جھانکا نہ تھا کبھی

    یہ اور بات ہے کہ تری جستجو تو تھی
    اے دردِ شادماں! تجھے دیکھا نہ تھا کبھی

    تم ڈھونڈتے ہو شہر میں جس کو گلی گلی
    ایسا گیا ہے جیسے وہ رہتا نہ تھا کبھی

    کچھ تو کہو اے دیدہ ورو کیا ہوا اسے
    بے پیرہن تو روح کو دیکھا نہ تھا کبھی

    کس تمکنت کے ساتھ ہے کانٹوں پہ محو خواب
    پھولوں کی سیج پہ بھی جو سویا نہ تھا کبھی

    احمد یہ اب سے پہلے تو ابر نشاطِ درد
    پلکوں سے اتنا ٹوٹ کے برسا نہ تھا کبھی
     
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    یہ الگ بات‘ ہر اک دکھ نے لبھایا ہے مجھے

    یہ الگ بات‘ ہر اک دکھ نے لبھایا ہے مجھے
    اے مری کاہشِ جاں! کس نے ستایا ہے مجھے

    اتنی نفرت تو مرے دل میں نہ جاگی تھی کبھی
    سوچ‘ کس شخص نے یہ زہر پلایا ہے مجھے

    پھر کوئی تازہ کسک دل کی تہوں میں اُتری
    پھر کسی خواب نے آئینہ دکھایا ہے مجھے

    کس نے لوٹا ہے مرے ذہن کی سوچوں کا سہاگ
    اے مرے قلب تپاں! کس نے چرایا ہے مجھے

    تیری چیخیں بھی کسی روز سنے گی دُنیا
    مصلحت کیش! اگر تو نے رُلایا ہے مجھے

    میں یہی سوچ کے چپ ہوں کہ کسی طور سہی
    گنبدِ درد کے کنگرہ پہ سجایا ہے مجھے

    ابر تزویر ہوا جب بھی کبھی سایہ فگن
    حدتِ شعلۂ ادراک نے پایا ہے مجھے

    میں تو سر تا بہ قدم تیرا فقط تیرا تھا
    ظرفِ کم حوصلہ! خود تو نے گنوایا ہے مجھے

    اُس کے گھر میں بھی کسی دُکھ کی سیاہی بھر دے
    شب کی دہلیز کا پتھر تو بنایا ہے مجھے

    تو مرا کیسا خدا ہے! مری لغزش تو بتا
    زندگی بھر جو بلندی سے گرایا ہے مجھے

    کس کے اخلاص سے کوتاہی ہوئی ہے احمد
    کس نے اس ضبط کا انگارہ بنایا ہے مجھے
     
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    شہر کے محتاط موسم سے خبر آئی تو ہے

    شہر کے محتاط موسم سے خبر آئی تو ہے
    رقص میں ضد پر نشاطِ معتبر آئی تو ہے

    شکر ہے توڑا تو قفلِ خامشی اک مرد نے
    مدتوں میں جرأتِ عرضِ ہنر آئی تو ہے

    گھپ اندھیرے میں تبسم کا دیا روشن کریں
    زندہ رہنے کی یہ اک صورت نظر آئی تو ہے

    قربتوں کے سرد ہاتھوں میں لیے خفگی کے پھول
    دوستی نظارگی کے بام پر آئی تو ہے

    ہم یہ سمجھے تھے کہ آنکھیں زرد ہو جائیں گی اب
    فصلِ گل صحن چمن میں لوٹ کر آئی تو ہے

    دُکھ تو ہم نے سہہ لیے اب دیکھئے آگے ہو کیا
    انقلاب صبحِ نو کی رہگذر آئی تو ہے

    ہے خجل قد سہی اخلاص کی تضحیک پر
    آبرومندی کی اب اُمید بر آئی تو ہے

    بے سبب جس نے قبیلے میں کیا رُسوا مجھے
    اُس کے چہرے پر تھکن کی دوپہر آئی تو ہے

    آؤ احمد بڑھ کے لیں تکریم سے اُس کے قدم
    تم سے ملنے اِک غزالِ وقت گھر آئی تو ہے
     
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دُکھ کے سکوں نہ سکھ کی خوشی کا سراب ہے

    دُکھ کے سکوں نہ سکھ کی خوشی کا سراب ہے
    اک رنج رائیگاں کی طلب بے حساب ہے

    لغزش کے سہو پر مجھے شرمندگی نہیں
    قربت کی ہر کجی مری گل آفتاب ہے

    پچھلے برس بھی نیکیاں سب ضائع ہو گئیں
    اب کے برس بھی جان! کڑا احتساب ہے

    بے شک وہ بے وفا ہے مگر اس کی راہ میں
    دل کی طرح چراغ جلانا ثواب ہے

    اے صبح نو! لہو کی حرارت بھی کر عطا
    ہیں برف حرف لب پہ یہی انقلاب ہے

    نفرت بھی وہ کرے تو کوئی دُکھ نہ دے اُسے
    اے رب ذوالجلال! مرا انتخاب ہے

    آنکھوں میں نفرتوں کے مضامین درج ہیں
    دل پر جو ہے رقم وہ ترا انتساب ہے

    دریا کے دو کناروں کی صورت ہے ان دنوں
    یا ضدِ اختلاف ہے یا اجتناب ہے

    فرصت ملے تو اُس کو ہر اک زاویے سے پڑھ
    وہ صرف ایک جسم نہیں ہے‘ کتاب ہے

    اندھی سماعتوں کی زمیں پر مقیم ہوں
    اب حرف مدعا بھی نشاطِ سراب ہے

    احمد وفا کے لفظ کو بدذائقہ نہ کر
    اس عہد میں تو اس کا تصور بھی خواب ہے
     
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سکوں ہوا نہ میسر ہمیں فرار سے بھی

    سکوں ہوا نہ میسر ہمیں فرار سے بھی
    ملے ہیں زخم ترے قرب کی بہار سے بھی

    متاعِ فقر بھی آئی نہ دستِ عجز کے ہاتھ
    گریز پا ہی رہا دولتِ وقار سے بھی

    ہم اہل دل ہی نہ سمجھے وفا کے منصب کو
    ہوئی ہے ہم کو ندامت ستم شعار سے بھی

    لہو ہے قلب ترے تمکنت کے لہجے سے
    عرق عرق ہے جبیں حرفِ انکسار سے بھی

    چراغِ ظلمتِ شب کی مثال ہے ہر سوچ
    ہمیں تو کچھ نہ ملا صبحِ انتظار سے بھی

    بجھا نہ شعلہ کوئی کرب کے الاؤ کا
    ترے لبوں کے تبسم کے آبشار سے بھی

    میں اُس کی ذات سے مایوس ہوں‘ محال ہے یہ
    اُسے تو پیار ہے بے حد گناہگار سے بھی

    یہ خواہشوں کی مسافت عذاب ہے احمد
    نکل کے دیکھ شبِ جسم کے حصار سے بھی
     
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    لرزشِ لب کی دھنک ہیئت تمثیلی تھی

    لرزشِ لب کی دھنک ہیئت تمثیلی تھی
    میرے احساس نے خود میری زباں کیلی تھی

    تو نے اے شیخِ حرم! چاک حسد تک نہ سیا
    ہم فقیرانِ ہوس نے تو قبا سی لی تھی

    آنکھ جس قلب میں اُتری وہی آئینہ تھا
    ہاتھ جس شاخ پہ رکھا وہی لچکیلی تھی

    حرفِ اخلاص بھی لہجے کی طرح سندر تھا
    روح پر جسم کی پوشاک بھی چمکیلی تھی

    دلِ ہر لفظ ہے آئینۂ احساس مجھے
    لبِ اظہار! تری سوچ ہی زہریلی تھی

    میں جسے شہر کے ہنگامے میں کھو آیا ہوں
    چشمِ اخلاص و تعاون تھی مگر نیلی تھی

    کس طرح پاؤں جماتا کوئی اندیشۂ غم
    میرے ادراک کی مٹی ہی بہت گیلی تھی

    اب تو ہر بندِ سخن جسم معانی پہ ہے چست
    اس سے پہلے جو کہی تھی وہ غزل ڈھیلی تھی

    وہ بھی ناواقفِ آدابِ وفا تھا احمد
    اور کچھ آپ میں بھی پہلے سے تبدیلی تھی
     
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    قصرِ سحر میں ہوں کہ کسی شب کدے میں ہوں

    قصرِ سحر میں ہوں کہ کسی شب کدے میں ہوں
    آشوبِ زندگی! میں عجب مخمصے میں ہوں

    کیوں جرم بے گناہی پہ دیتا ہے قید سخت
    فردِ عمل تو دیکھ‘ میں کس قاعدے میں ہوں

    تو میرے خال و خد کبھی پہچان کے تو دیکھ
    آئینہ ساز! میں بھی ترے آئینے میں ہوں

    اتنا نہ حد سے بڑھ کہ تجھے دُکھ ہو بعد میں
    میں عاقبت شناس ہوں اور حوصلے میں ہوں

    کچھ تو بتا اے ذہن حقیقت شناس دہر
    حلقہ بگوش وہم میں کس سلسلے میں ہوں

    وہ شورشیں تو دکھ کی لحد میں اُتر گئیں
    زندہ اگرچہ چشم یقیں دیکھنے میں ہوں

    چاہے میں تیرے دکھ کی تلافی نہ کر سکوں
    لیکن شریکِ غم تو ترے سانحے میں ہوں

    آنکھوں میں رَت جگوں کی تھکن ہی انڈیل دے
    تشنہ خلش نہ رکھ کہ ترے میکدے میں ہوں

    کن لغزشوں پہ منظر عبرت نظر ہوا
    سنگِ رہ تماشہ‘ یہ کس سلسلے میں ہوں

    احمد یہ اور بات تھکن سے ہے چور جسم
    مصروف خاکِ خوابِ سکوں چھاننے میں ہوں
     
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    وہم ہر لحظہ مٹانے پہ تلا ہے مجھ کو

    وہم ہر لحظہ مٹانے پہ تلا ہے مجھ کو
    ایک تیشہ ہے کہ بس کاٹ رہا ہے مجھ کو

    کس لیے آج یکایک مرا دل دھڑکا ہے
    کیوں تبسم ترا‘ آوازہ لگا ہے مجھ کو

    مجھ سے پھر آنکھ ملاتے ہوئے کیوں ڈرتا ہے
    قتل کرنے پہ جو آمادہ ہوا ہے مجھ کو

    مجھ کو اب شہر کے ہنگاموں میں کیوں کھینچتے ہو
    کنج تنہائی میں آرام بڑا ہے مجھ کو

    میں تجھے کون سی اب دولتِ تسکیں بخشوں
    تو تہی دست زمانے میں ملا ہے مجھ کو

    کس کو فرصت ہے مرے کرب کی فصدیں کھولے
    تم نے اک حرفِ تسلی تو دیا ہے مجھ کو

    ہے ابھی دوشِ معانی پہ وہی بارِ حروف
    ہنر تیشہ زنی آ تو گیا ہے مجھ کو

    پھر کسی خواب نے دی ہے درِ دل پر دستک
    پھر دریچے سے کوئی جھانک رہا ہے مجھ کو

    آخرِ شب ہے مرے خوں سے چراغاں رکھو
    جرسِ صبحِ کی آمد کا پتا ہے مجھ کو

    میرے انفاس میں اب دُکھ کی تھکن ہے احمد
    اپنی تنہائی کا احساس بڑا ہے مجھ کو
     
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دھوپ دل میں اُتر گئی ہے بہت

    دھوپ دل میں اُتر گئی ہے بہت
    شاخِ خواہش مگر ہری ہے بہت

    دیکھ کر بے کسی کا پیرہن
    آگہی ضبط پر ہنسی ہے بہت

    ایسے شاداب لب جزیرے پر
    چند ساعت کی ہمرہی ہے بہت

    تیرگی کی اذیتوں کے سفر!
    حوصلے میں شگفتگی ہے بہت

    راستہ صبح کا بنانا ہے
    یوں تو دیوار ڈھے گئی ہے بہت

    اب مرا نام شہر جاں کی ہوا
    آخری خط میں ڈھونڈتی ہے بہت

    ایک کھڑکی جو بند ہے کب سے
    دل کے اوراق کھولتی ہے بہت

    عمر کی سیڑھیاں نہیں گنتے
    جن کی خالق سے دوستی ہے بہت

    بور آیا ہے اب تعلق پر
    دوستی بے ثمر رہی ہے بہت

    نا اُمیدی کے دشتِ تیرہ میں
    تیری یادوں کی روشنی ہے بہت

    تشنگی برہنہ مسافت ہے
    خاک صحرا کی چھانتی ہے بہت

    عکسِ آئینہ! آنکھ قاتل کی
    وجہِ تسکین ڈھونڈتی ہے بہت

    دینے والے کاظرف دیکھنا ہے
    اپنا دامن ابھی تہی ہے بہت

    بوئے گل کو بھی قید کر لیتے
    اختیارات کی کمی ہے بہت

    بند مٹھی کو کھول کر احمد
    خود سے شرمندگی ہوئی ہے بہت
     

اس صفحے کی تشہیر