میں اجنبی سہی - سید آلِ‌ احمد

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 29, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    شاخِ آشوب پہ کب کوئی کلی کھلتی ہے

    شاخِ آشوب پہ کب کوئی کلی کھلتی ہے
    یہ الگ بات کہ اک آس لگا رکھی ہے

    کتنا ساکت ہے ترے عہد کے اخلاص کا جسم
    سوچ کی آنکھ بھی پتھرائی ہوئی لگتی ہے

    پھر کوئی تازہ مصائب کا بھنور دیکھیں گے
    آب تسکیں پہ کوئی لہر نئی اُبھری ہے

    حوصلہ ہار گیا دل تو چھٹی درد کی دُھند
    سوچ کے پاؤں ہوئے شل تو سحر دیکھی ہے

    آنکھ ہر لمحہ نئے جھوٹ میں سرگرداں ہے
    دل ہر اک لحظہ نئی چوٹ کا زندانی ہے

    اب کسے دل میں جگہ دیں کہ جسے پیار کیا
    کاہشِ رنج ہی معیارِ وفا ٹھہری ہے

    سرِ تسلیم ہے خم‘ شوق سے آوازہ کسو
    چپ کی تلوار سے یہ سنگ زنی اچھی ہے

    نہ کوئی رنگِ تبسم‘ نہ حرارت کی رمق
    زندگی ہے کہ کوئی سوکھی ہوئی ٹہنی ہے

    سخت بوجھل ہوں میں اب دُکھ کے سفر سے احمد
    رات دن ضبط کی شہ رگ سے لہو جاری ہے
     
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    منجمد ہو گیا لہو دل کا

    منجمد ہو گیا لہو دل کا
    تیرے غم کا چراغ کیا جلتا

    وہ بھی دن تھے کہ اے سکونِ نظر!
    تو مری دسترس سے باہر تھا

    بجھ گئی پیاس آخرش اے دل!
    ہو گیا خشک آنکھ کا دریا

    تو مرا پیار مجھ کو لوٹا دے
    جانے والے اُداسیاں نہ بڑھا

    پاس خاطر ہے شہر میں کس کو
    کون کرتا ہے اعترافِ وفا

    تیری خواہش بھنور بھنور ساحل
    میری منزل سکوت کا صحرا

    پوچھتی تھی خزاں بہار کا حال
    شاخ سے ٹوٹ کر گرا پتا

    کیسے ٹھہرے ہو سوچ میں احمد
    اتنی سردی میں رات کو تنہا
     
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    خاک آلود ہو گئے ابرو

    خاک آلود ہو گئے ابرو
    کٹ گئے اعتماد کے بازو

    تیرے جذبے کے ہاتھ پتھر ہیں
    میری سوچوں کے پاؤں میں گھنگرو

    سینۂ سنگ بھی دھڑکنے لگا
    چل گیا تیری آنکھ کا جادو

    گونجتا ہے دماغ سوچوں سے
    برہنہ ہے سکون کا پہلو

    اس اُداسی کو کون دور کرے
    وہم کا کس کے پاس ہے دارو

    دھڑکنوں کا شکیب ٹوٹتا ہے
    کس لیے چپ ہے میرے داتا تو!

    کس مسافت کے بعد پہنچا ہے
    تیرے رُخسار پر مرا آنسو

    ہر خوشی کو جھلس گئی احمد
    شہر انفاس میں دُکھوں کی لو
     
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    پلکوں سے اب کے ابر جو کھل کر برس گیا

    پلکوں سے اب کے ابر جو کھل کر برس گیا
    فرطِ وفا سے دل کا ہر اک تار کس گیا

    اُمید کے چراغ کی لَو خود ہی بجھ گئی
    دل کو جو کچھ سکون تھا‘ اب کے برس‘ گیا

    کس نے متاعِ رونق بازار چھین لی
    یہ روشنی کا شہر کوئی کیسے ڈَس گیا

    جس سے وفا کی کوئی توقع نہ تھی مجھے
    کتنے خلوص سے وہ مرے دل میں بس گیا

    جو کونپلیں بھی شاخ پہ پھوٹیں وہ جل گئیں
    جو پھول بھی کھلا وہ نمی کو ترس گیا

    میں نے تو کوئی دُکھ اسے اب تک نہیں دیا
    کیوں اس کے لب سے پیار کے لہجے کا رَس گیا

    دیکھی نہ انبساط کی چھاؤں تمام عمر
    احمد غموں کی دُھوپ میں چہرہ جھلس گیا
     
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    نگارِ شب ترا مہمان ہو رہا ہوں میں

    نگارِ شب ترا مہمان ہو رہا ہوں میں
    وفا میں کرب کی پہچان ہو رہا ہوں میں

    کھرچ رہا ہوں گئے موسموں کی ہر نسبت
    نئی رُتوں کا شبستان ہو رہا ہوں میں

    محیطِ تیرہ شبی کو شگفتِ لب دے کر
    طلوعِ صبح کا امکان ہو رہا ہوں میں

    ترے کرم سے لباسِ وقار ہے تن پر
    تری نگاہ پہ قربان ہو رہا ہوں میں

    سرابِ ہجر کی مرطوب صحبتوں کی قسم
    حدیثِ وصل کا عنوان ہو رہا ہوں میں

    امیر شہر پہ حرفِ ادق کی صورت ہوں
    غریب شہر پہ آسان ہو رہا ہوں میں

    عداوتوں پہ تلا ہے حریفِ آئینہ
    ثبوتِ عکس‘ مری جان! ہو رہا ہوں میں

    نشاطِ لذتِ دیروز پر ہوں شرمندہ
    خود احتساب کی میزان ہو رہا ہوں میں

    نہ کوئی ماتھا کشادہ‘ نہ کوئی دل روشن
    معاشِ وقت پہ حیران ہو رہا ہوں میں

    یہ کس کی‘ کوئے طلب میں‘ تلاش ہے احمد
    یہ کس اُمید کا دربان ہو رہا ہوں میں
     
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    نعرہ تن تنانا‘ تن تنانا ہُو کیا ہے

    نعرہ تن تنانا‘ تن تنانا ہُو کیا ہے
    دشت کہتے ہیں کسے‘ کون ہوں میں‘ تو کیا ہے

    روح گھائل ہے بھلا کیسے بدن کو سمجھائے
    اس کڑی دھوپ میں تسکین کا پہلو کیا ہے

    تجھ سے اک پل بھی جدا ہوں تو تڑپ اُٹھتا ہوں
    اے مرے پیار کی آسودہ خلش! تو کیا ہے

    کونپلیں شاخ پہ پھوٹیں بھی تو جل جاتی ہیں
    پیڑ حیراں ہیں‘ نمو چیز ہے کیا‘ لُو کیا ہے

    تو فرشتہ ہے نہ جب قادرِ لغزش احمد
    یہ اَنا کیا ہے تری اور یہ تری خو کیا ہے
     
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سوکھے ہوئے لبوں کی صدا کا اسیر ہوں

    سوکھے ہوئے لبوں کی صدا کا اسیر ہوں
    میں خواہشوں کے طاس کی ٹیڑھی لکیر ہوں

    ہر لمحہ رُخ بدلتے مزاجوں کو کیا کہوں
    میں آپ اپنے شہر میں اپنی نظیر ہوں

    جسموں کی تیز آنچ سے محفوظ رکھ مجھے
    اے شورشِ حیات! میں اب گوشہ گیر ہوں

    دستِ طلب دراز کروں کس کے سامنے
    آئے نہ جس پہ حرفِ انا وہ فقیر ہوں

    ردِعمل ہے تو مرے خوابِ سکون کا
    یا میں تری جبیں کی ادُھوری لکیر ہوں

    احمد میں کس کے لب سے غزل پرورش کروں
    غالب ہوں میں نہ شہر تغزل کا میر ہوں
     
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    نگارِ غم تری آہٹ پہ جب سے جاگا ہوں

    نگارِ غم تری آہٹ پہ جب سے جاگا ہوں
    میں خواب خواب بھنور آئنوں کو تکتا ہوں

    نہ کوئی رنگ توقع‘ نہ نقشِ پائندہ
    کسے بتاؤں کہ کن خواہشوں کا ڈھانچہ ہوں

    کسے دکھاؤں وہ آنکھیں جو جیت بھی نہ سکا
    کسے بتاؤں کہ کن آنسوؤں کا سپنا ہوں

    نہ تازگی ہی بدن میں نہ پُرسکون تھکن
    میں شاخِ عمر کا وہ زرد و سبز پتا ہوں

    جہاں یقین کے تلووں میں آبلے پڑ جائیں
    میں حادثات کی ان گھاٹیوں میں اُترا ہوں

    وہ نغمگی جسے سازِ سلیقگی نہ ملا
    میں تشنہ رنج اُسی کا سراب پیما ہوں

    یہ اور بات قرینے کی موت بھی نہ ملی
    مگر یہ دیکھ کہ کس تمکنت سے زندہ ہوں

    جو پڑھ سکے تو بہت ہے یہ ملگجی صورت
    میں تیرے دُکھ کا بدن ہوں میں تیرا سایہ ہوں

    ورق ورق ہوں مگر صحن زیست میں احمد
    مشاہدات کے جوہر کا اک ذخیرہ ہوں
     
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    تم مرا دُکھ تروتازہ نہیں رہنے دیتے!

    تم مرا دُکھ تروتازہ نہیں رہنے دیتے!
    دشت کو ابر تو پیاسا نہیں رہنے دیتے؟

    واہمے نت نئی اشکال بنا لیتے ہیں
    ورقِ دل کو بھی سادہ نہیں رہنے دیتے

    کتنے بے رحم ہیں یہ ہاتھ کہ فصلِ گل میں
    شجر سبز پہ پتا نہیں رہنے دیتے

    اب تو کچھ ایسے بچھڑ جاتے ہیں یارانِ کہن
    آنکھ میں عکسِ تمنا نہیں رہنے دیتے

    میری اَچھائیاں آئینہ بنانے والو!
    کیوں مجھے شہر میں رُسوا نہیں رہنے دیتے

    کتنے سفاک طبیعت ہیں شناسا چہرے
    ایک لمحے کو بھی تنہا نہیں رہنے دیتے

    ہم سے بے درد زمانے میں نہ دیکھے ہوں گے
    اپنے ہی گھر کو جو اپنا نہیں رہنے دیتے

    اب ترا نام جفا پیشہ ہوا کے جھونکے
    ریگِ صحرا پہ بھی لکھا نہیں رہنے دیتے

    اتنے سورج نکل آئے ہیں اُفق پر احمد
    زیر دیوار بھی سایہ نہیں رہنے دیتے
     
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    پھر تقابل میں خجالت کے کھلونے آئے

    پھر تقابل میں خجالت کے کھلونے آئے
    ہاتھ میں سنگ اُٹھائے ہوئے بونے آئے

    یوں تو اب بھی ترے خط ڈاک میں مل جاتے ہیں
    کوئی تحریر تو آنکھوں کو بھگونے آئے

    اس سے پہلے کہ کڑی دھوپ میں میلا ہو بدن
    تو اسے لمس کی خوشبو سے بھی دھونے آئے

    دھیان میں پھر سے گئی رُت کے سہانے سپنے
    کرب کے گہرے سمندر میں ڈبونے آئے

    قرب بھی جس کا رہا ہجر کے صحرا کی طرح
    اب وہ جذبہ مرے بستر پہ نہ سونے آئے

    پھر فریبوں نے دلِ زار کو زنجیر کیا
    پھر مجھے حرفِ تسلی کے کھلونے آئے

    میں ترے پھول سے انگاروں کو چھو کر تڑپوں
    تیرا بچپن مرے گھر دودھ بلونے آئے

    ان کہے لفظ نہ چہرے پہ برہنہ ہو جائیں
    تیری آنکھوں میں مرا خواب نہ رونے آئے

    کس کو اُفتاد پڑی ہے کہ اُٹھائے خفت
    کون اس شہر میں اب نیکیاں ڈھونے آئے

    آئے بے شک ترے آنگن میں چراغاں کرنے
    اپنی پہچان کوئی ہم سا نہ کھونے آئے

    التجا ہے نئے موسم کی نمو سے احمد
    بے ثمر پیڑ مرے گھر میں نہ بونے آئے
     
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ناواقف و شناسا ذرا بھی نہیں لگی

    ناواقف و شناسا ذرا بھی نہیں لگی
    خوش بھی نہیں ہوئی وہ خفا بھی نہیں لگی

    خواہش کی جلتی دُھوپ کی رُت بھی گزر گئی
    یخ بستہ موسموں کی ہوا بھی نہیں لگی

    دُکھ بھی نفس کی آنکھ کا کاجل نہ بن سکا
    اچھی بدن پہ سُکھ کی قبا بھی نہیں لگی

    شاخِ خلش پہ سُوکھ گئی لمس کی کلی
    ہاتھوں پہ آرزُو کی حنا بھی نہیں لگی

    مہکا نہیں سکون کی ساعت کا کوئی پھول
    اس سال دوستوں کی دُعا بھی نہیں لگی

    مت پوچھ کس خیال کا بادل تنا رہا
    صحرا میں تیز دھوپ ذرا بھی نہیں لگی

    دستک تو نصف شب درِ احساس پر ہوئی
    مشفق سپردگی کی صدا بھی نہیں لگی

    احمد تمام عمر وفا کا سفر کیا
    دشتِ اَنا میں ضربِ خطا بھی نہیں لگی
     
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    وہ بھی اُٹھا کے سنگِ ملامت اُداس تھا

    وہ بھی اُٹھا کے سنگِ ملامت اُداس تھا
    ہم کو بھی دوستی کے تقدس کا پاس تھا

    ٹھوکر لگی تو آنکھ سے آنسو نکل پڑے
    اک سنگِ رہگزار وفا غرقِ یاس تھا

    پگھلا دیا تھا روح کو دوری کی آنچ نے
    تیرے دُکھوں کا رنگ بدن کا لباس تھا

    تم آ گئے تو لب پہ تبسم بھی آ گیا
    ورنہ تو شام ہی سے مرا دل اُداس تھا

    نفرت کی تیز دھارنے شہ رگ ہی کاٹ دی
    اتنا خلوص تھا کہ سراپا سپاس تھا

    مدت ہوئی جسے پسِ حد نظر چھپے
    اس تیرگی کا حل اُسی سورج کے پاس تھا

    احمد گھرے ہو آ کے کہاں شورِ شہر میں
    تنہائیوں کا دشت تمہیں کتنا راس تھا
     
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    خواہشیں شہر اَنا میں سب امیروں سی لگیں

    خواہشیں شہر اَنا میں سب امیروں سی لگیں
    جستجوئیں‘ ہاتھ پھیلائے فقیروں سی لگیں

    رات بھر بیکل رہا یادوں کے جلتے دشت میں
    دھیان میں جو صورتیں بھی آئیں‘ تیروں سی لگیں

    آرزوئیں‘ پابجولاں‘ صف بہ صف ٹھہری ہوئیں
    دل سے تا بہ ذہن‘ جسموں میں اسیروں سی لگیں

    جتنے دُکھ دیکھے‘ تبسم ریز تھے‘ اطرافِ جاں
    اور خوشیاں‘ دل گرفتہ راہگیروں سی لگیں

    میں ترے خط کی عبارت پڑھ کے روتا کس لیے
    جتنی سطریں تھیں مقدر کی لکیروں سی لگیں

    یوں تو پیشانی کشادہ تھی سمندر کی طرح
    کتنی سوچیں تھیں جو ماتھے پر جزیروں سی لگیں

    میں ترے ترشے ہوئے معیار کی بینائی تھا
    لفظ و معنی کی چٹانیں تک لکیروں سی لگیں

    یک نفس احمد لبِ ساکت کی تاریکی چھٹی
    دو غزل پروردہ آنکھیں مجھ کو ہیروں سی لگیں
     
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سنگِ نظر سے ٹوٹے ہوئے آئنے تو دیکھ

    سنگِ نظر سے ٹوٹے ہوئے آئنے تو دیکھ
    ان کی طرف بھی ایک نظر ہو سکے‘ تو دیکھ

    شاید میں تیرے دھیان میں پھر سے اُبھر سکوں
    میں اجنبی سہی‘ مجھے پہچان کے تو دیکھ

    کس کس ادا سے چھانی ہے صحرائے شب کی خاک
    آنکھوں میں رتجگوں کے نئے زاویے تو دیکھ

    کتنے دُکھوں کے سامنے سینہ سپر ہوں میں
    ناواقفِ نشاطِ الم! حوصلے تو دیکھ

    کن لذتوں کے در نہ کھلے ہم پہ کیا کہیں
    یہ غم کسی کی ذات سے تجھ کو ملے تو دیکھ

    کچھ دن تو تجربات کے شعلوں پہ دل جلا
    میری طرح سے دہر میں کچھ سانحے تو دیکھ

    وارفتگیٔ شوق عجب مرحلوں میں ہے
    جذبِ طلب کے پھیلے ہوئے سلسلے تو دیکھ

    کن خواہشوں کا گرم لہو زیب خاک ہے
    میں جن سے ہو کے آیا ہوں وہ راستے تو دیکھ

    ہم اہلِ دل سے ترکِ مراسم کا دُکھ نہ پوچھ
    شاخِ شجر سے ٹوٹ کے پتا گرے تو دیکھ

    آئینۂ وفا ہے‘ سراپا خلوص ہے
    احمد کے ساتھ چند گھڑی بیٹھ کے تو دیکھ
     
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    خواہشوں کی کپاس دُھن لو گے؟

    خواہشوں کی کپاس دُھن لو گے؟
    تم بھی آوازہ کوئی سن لو گے

    کون سمجھا ہے اس کسک کی زباں
    دل کی دھڑکن تو تم بھی سن لو گے

    دوستی کر رہے ہو‘ یہ تو بتاؤ
    پاپ لو گے کہ کوئی پن لو گے

    کتنے خوابوں کو دو گے تعبیریں
    شاخ سے کتنے پھول چن لو گے

    سوچ کی جرأتوں کو قید کرو
    جال تو تم ہزار بن لو گے

    اس الاؤ سے اب گزر جاؤ
    کون سا زندگی سے ہن لو گے

    تم اگر سن لو مجھ پہ کیا گزری
    رنج سے اپنے سر کو دُھن لو گے

    تم سے جو پُرخلوص ہوں احمد
    ایسے تم کتنے نام چن لو گے
     
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اک خواب سا وجود بریدہ بدن ملا

    اک خواب سا وجود بریدہ بدن ملا
    دل کی طرح دماغ بھی بے پیرہن ملا

    میں بھی شکست شیشۂ دل سے تھا مضمحل
    وہ بھی اُداس‘ رات‘ سر انجمن ملا

    دُھندلا دئیے ہوس نے تقدس کے آئنے
    ہم نے جسے خدا کہا وہ اہرمن ملا

    مت پوچھئے سفر کی رفاقت کا ہم سے دُکھ
    جو بھی ملا‘ وفا کی قسم‘ راہزن ملا

    یہ اور بات دل تھے کدورت کی خستہ قبر
    لہجوں میں نکہتوں سے بھرا بانکپن ملا

    میں سنگِ سدِ راہ ذہانت تھا دہر میں
    انسان دوستی سے مجھے حسنِ فن ملا

    شل ہو گئیں دماغ کی شوریدہ سر رگیں
    سوچوں کو دشت میں وہ اذیت کا رن ملا

    اک حرفِ اشتیاق نہ آیا زبان پر
    احمد وہ اپنے آپ میں اتنا مگن ملا
     
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    حبس تنہائی نہ دے حبس میں کیا رکھا ہے

    حبس تنہائی نہ دے حبس میں کیا رکھا ہے
    دل سا انگارہ تو پہلے ہی بجھا رکھا ہے

    اے مرے شہر کی بے رحم زمیں کچھ تو بتا
    تو نے ہر موڑ پہ کیوں سنگِ جفا رکھا ہے

    اک ترا دُکھ ہو تو چہرے پہ بکھیرا جائے
    کتنے غم ہیں جنہیں سینے سے لگا رکھا ہے

    آپ کا اپنا تو اس میں کوئی پتھر ہی نہیں
    کس لیے دوش پہ کہسار اُٹھا رکھا ہے

    تو مری آنکھ کے گرداب کے نزدیک نہ آ
    اس میں وہ زہر ہے جو تجھ سے چھپا رکھا ہے

    رکھ رکھاؤ کے چراغوں کی لویں بجھ جائیں
    اس توقع کی اذیت میں بھی کیا رکھا ہے

    میں ترے رنج کے پتھراؤ سے گھبراتا ہوں
    ورنہ اس جسم کو زخموں سے سجا رکھا ہے

    تو مرے کرب کے احساس سے کب گزرا ہے
    یہ تو وہ دُکھ ہے جو دھڑکن میں چھپا رکھا ہے

    خود کو اب اتنی اذیت بھی نہ دیجے احمد
    سوچیے شدتِ احساس میں کیا رکھا ہے
     
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہمیں پہ شہر میں اُٹھا ہے سنگ آوازہ

    ہمیں پہ شہر میں اُٹھا ہے سنگ آوازہ
    ہمیں نے رُخ پہ ملا خونِ گرم کا غازہ

    اُداسیوں کی کڑی دُھوپ مجھ پہ رحم نہ کھا
    گئے دنوں کی وفا کا یہی ہے خمیازہ

    ہے تار تار کچھ اتنا لباس حال مرا
    شعورِ ذات بھی کسنے لگا ہے آوازہ

    مجھے بھی دے گا کوئی شہر میں کبھی ترتیب
    ہے کوئی آنکھ کہ بکھرا ہوا ہے شیرازہ

    یہ اور بات کئی حسن دلفریب ملے
    کھلا نہ ہم پہ کسی کی ادا کا دروازہ

    ہر ایک دُکھ کو بڑے صبر سے سہا احمد
    پہ حادثات میں چہرہ رہا ترو تازہ
     
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    صبر کی موت سے سرگشتہ رہوں اچھا ہے

    صبر کی موت سے سرگشتہ رہوں اچھا ہے
    ایسی آزادی سے زنداں کا سکوں اچھا ہے

    سرخ پتھر سے کئی سال تراشے ہوئے بت
    حبس کی ضرب سے میں چیخ پڑوں اچھا ہے

    جس کی تعمیر میں زخموں سے سجایا ہے بدن
    اب وہی سنگ اُٹھاتا ہے‘ کہوں‘ اچھا ہے

    خود ہی گھائل بھی ہو پتھر بھی اُٹھائے خود ہی
    زندگی! تیرا یہ اندازِ جنوں اچھا ہے

    تو چمکتے ہوئے چہروں کے بھنور میں کھو جا
    میں شرافت کے اندھیروں میں رہوں اچھا ہے

    کس نے رُسوائی کے پیکر کو عطا کی توقیر؟
    کچھ تو فرمائیے کس شخص کا خوں اچھا ہے

    میری تنہائی کا یہ دشت نہ آباد کرو
    آپ ہی روؤں میں اب آپ ہنسوں اچھا ہے

    ریزہ ریزہ کی طرح حد نظر تک بکھروں
    فرش پر اتنی بلندی سے گروں اچھا ہے

    میرے سینے میں دھڑکتا ہوا دل ہے احمد
    جس قدر حسن کے نزدیک رہوں اچھا ہے
     
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سنسناتے ہوئے پتھر نے مجھے چونکایا

    سنسناتے ہوئے پتھر نے مجھے چونکایا
    جب کسی جذبۂ خودسر نے مجھے چونکایا

    سلوٹیں دیکھ‘ کوئی اُلٹے قدم لوٹا ہے
    رات‘ تنہائی میں‘ بستر نے مجھے چونکایا

    اس کو پہلے ہی سفر کا مرے اندازہ تھا
    یک بیک راہ کے پتھر نے مجھے چونکایا

    اپنے آئینے کی قیمت سے تہی علم تھا میں
    تیری آواز کے کنکر نے مجھے چونکایا

    گرد ہر چہرہ خورشید پہ جم سکتی ہے
    ملگجی شام کے منظر نے مجھے چونکایا
     

اس صفحے کی تشہیر