میں اجنبی سہی - سید آلِ‌ احمد

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 29, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    نہ سہی پیار‘ حقارت سے کبھی بول کے دیکھ

    نہ سہی پیار‘ حقارت سے کبھی بول کے دیکھ
    کوئی تو زہر مری روح میں تو گھول کے دیکھ

    میری آواز کہاں تک تری دیوار بنے
    شدتِ کرب سے تو بھی تو کبھی بول کے دیکھ

    اپنی تنہائی کے اس گھور اندھیرے سے نکل
    کیا ہے باہر کی فضا آنکھ ذرا کھول کے دیکھ

    مجھ سے دریافت نئی صبح کا سورج ہوگا
    ریگِ صحرا کے اندھیروں میں مجھے رول کے دیکھ

    ماند پڑ جائے گی ہر مہرِ زر و سیم کی دھوپ
    مجھ کو میزانِ تحمل میں کبھی تول کے دیکھ

    میرے اخلاص کی تصویر جلانے والے!
    دکھ کا منظر تو درِ دیدہ و دل کھول کے دیکھ

    مجھ سا خوش فہم تو ہر دُکھ کو بھلا دیتا ہے
    وضع داری کے بہانے ہی سہی بول کے دیکھ

    دیکھ کس طاق میں جلتا ہے ترا دُکھ احمد
    سوچتا کیا ہے‘ درِ قصرِ غزل کھول کے دیکھ
     
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ویران کر دیا بھرا جنگل پڑاؤ نے

    ویران کر دیا بھرا جنگل پڑاؤ نے
    رکھا ہے دل میں سبز قدم کس لگاؤ نے

    بے لطف دوستی کے سفر نے تھکا دیا
    ساحل پہ دے کے مارا بھنور سے جو ناؤ نے

    اے دوست! زخم تہمتِ تازہ لگا کہ پھر
    سرسبز کر دیا ہے شجر سکھ کے گھاؤ نے

    ان قربتوں کا ہدیۂ اخلاص کچھ تو دے
    خوش بخت کر دیا تجھے جن کے لگاؤ نے

    اُن پستوں کو روح کی نزدیکیوں سے دیکھ
    کاٹا ہے جن کو دل کی ندی کے بہاؤ نے

    تجھ کو تو رفعتوں کا وہ بادل بنا گیا
    تسخیر کر لیا جسے دُکھ کے الاؤ نے

    کیا کیا بسنت ہونٹ تراشے ہیں دستِ فن
    مواج کر دیا ہے تبسم کٹاؤ نے

    اب تو عذابِ مصلحت‘ اے ہم سفر! نہ دے
    پتھرا دیے ہیں دیدہ و دل رکھ رکھاؤ نے

    احمد زبانِ صدق کی تذلیل کی قسم
    تہذیب یافتہ کیا فن کے جھکاؤ نے
     
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ہم ذات کے اوراق پہ بکھری ہوئی شب ہیں

    ہم ذات کے اوراق پہ بکھری ہوئی شب ہیں
    معیار علیحدہ ہیں پہ انسان تو سب ہیں

    آسیب زدہ ہے ترے ہونٹوں کی حلاوت
    افسردۂ خاطر ترے لہجے کے سبب ہیں

    دولت کی ترازو میں بھی ایمان بکا ہے؟
    ہم صاحبِ کردار ہیں‘ پروردہ رب ہیں

    دیروز کے چہرے کی عبارت بھی ذرا پڑھ
    معمار ہیں آئندہ کے قاتل ترے کب ہیں

    سوگند ہمیں صبح کے کھلتے ہوئے در کی
    تعزیر لگاؤ کہ ہمیں رہزنِ شب ہیں

    ہم دونوں محبت کے سوا جانتے کیا تھے
    ایسے تو نہ تھے دوست کہ جس حال میں اب ہیں

    وہ حُسن کا پیکر ہے کہ اعصاب کا قاتل
    آنکھیں کسی آہو کی ہیں یاقوت سے لب ہیں

    جسموں کے ذخائر کا سمندر ہے مگر ہم
    اک چشم ستم پیشہ سے اخلاص طلب ہیں
     
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دھوپ کو اوڑھ کے سائے سے نکل کر آتے

    دھوپ کو اوڑھ کے سائے سے نکل کر آتے
    اپنے قدموں سے مرے گھر کبھی چل کر آتے

    ذہن‘ نایافت بشارت کا سمندر ہوتا
    حرف تہذیب کی خوشبو میں جو پل کر آتے

    اس الاؤ سے مجھے خوف بہت آتا ہے
    اجنبی! پیار کے کپڑے تو بدل کر آتے

    سہل‘ فردا کے تقاضوں کی مسافت ہوتی
    غم دیروز سے باہر جو نکل کر آتے

    جانے کس خواب کی تعبیر سے ٹکرائے ہو
    اتنے زخمی تو نہ ہوتے جو سنبھل کر آتے

    رتجگا اتنا مناتے کہ سحر ہو جاتی
    قربِ روئیدہ سے اک پل جو بہل کر آتے

    حوصلہ مند ہی احمد یہ ادا رکھتا ہے
    سوئے مقتل کبھی مجرم نہیں چل کر آتے
     
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    موسم کی طرح رنگ بدلتا بھی بہت ہے

    موسم کی طرح رنگ بدلتا بھی بہت ہے
    ہم زاد مرا قلب کا سادہ بھی بہت ہے

    نفرت بھی محبت کی طرح کرتا ہے مجھ سے
    وہ پیار بھی کرتا ہے رُلاتا بھی بہت ہے

    وہ شخص بچھڑتا ہے تو برسوں نہیں ملتا
    ملتا ہے تو پھر ٹوٹ کے ملتا بھی بہت ہے

    خوشحال ہے مزدور بہت عہدِ رواں کا
    ماتھے پہ مگر اس کے پسینہ بھی بہت ہے

    برسا ہے سرِ دشتِ طلب ابر بھی کھل کر
    سناٹا مری روح میں گونجا بھی بہت ہے

    تم یوں ہی شریک غم ہستی نہیں ٹھہرے
    سچ بات تو یہ ہے تمہیں چاہا بھی بہت ہے

    اُٹھتی ہی نہیں آنکھ حیا سے کبھی اُوپر
    دوپٹہ مگر سر سے ڈھلکتا بھی بہت ہے

    ہر دُکھ کو تبسم میں اُڑا دیتا ہے احمد
    بچوں کی طرح پھوٹ کے روتا بھی بہت ہے
     
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    شب کی آغوش میں سو جاتا ہوں

    شب کی آغوش میں سو جاتا ہوں
    سنگ ہوں موم بھی ہو جاتا ہوں

    دل کا دروازہ کھلا مت رکھو
    یاد آنکھوں میں پرو جاتا ہوں

    جس کے لہجے میں وفا کھلتی ہو
    میں تو اُس شخص کا ہو جاتا ہوں

    دن میں سہتا ہوں بصیرت کا عذاب
    شام کے شہر میں کھو جاتا ہوں

    میری خاطر نہ تکلف کیجیے
    میں تو کانٹوں پہ بھی سو جاتا ہوں

    گاہے اظہار کو دیتا ہوں ہنر
    گاہے دیوالیہ ہو جاتا ہوں

    جب بھی بحران کا رَن پڑتا ہے
    میں تری ذات میں کھو جاتا ہوں

    میں ہوں احساس کی برکھا احمد
    چشم اعصاب بھگو جاتا ہوں
     
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اس توقع پہ آس رکھتا ہوں

    اس توقع پہ آس رکھتا ہوں
    آنکھ چہرہ شناس رکھتا ہوں

    جانے کس لمحہ تو پلٹ آئے
    اک یہی دل میں آس رکھتا ہوں

    نہ سہی زر ادا تری قربت
    دولتِ درد پاس رکھتا ہوں

    مسکرا کر تو دیکھ ایک نظر
    ہدیۂ صد سپاس رکھتا ہوں

    صحبتِ گفتگو عطا تو کر
    شہد ایسی مٹھاس رکھتا ہوں

    سر سے پا تک شفق گلاب ہو تم
    میں دھنک کا لباس رکھتا ہوں

    مسکراتا ہوں بے سبب احمد
    یا طبیعت اُداس رکھتا ہوں
     
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    وقت کے طشت میں رکھا ہوا پتھر ہوں میں

    وقت کے طشت میں رکھا ہوا پتھر ہوں میں
    حرف کا دشت ہوں معنی کا سمندر ہوں میں

    کون جانے کہ یہ خوشبو ہے عبارت مجھ سے
    کیسے سمجھاؤں کہ پھولوں کا مقدر ہوں میں

    مجھ کو آتا نہیں کاندھے پہ جنازہ رکھنا
    منجمد شہر! حرارت کا پیمبر ہوں میں

    اب بھی آتی ہے ترے قرب کے ایام کی آنچ
    اب بھی احساس کا ذخار سمندر ہوں میں

    آخر شب ہے‘ مری ذات سے نظریں نہ چرا
    اے غمِ ہجر! ترے قد کے برابر ہوں میں

    شہر میں حفظ مراتب کا بہت قحط ہے اب
    آپ چاہیں تو چلے آئیں کہ گھر پر ہوں میں
     
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    اس نے اقرار کیا ہے مگر انکار کے ساتھ

    اس نے اقرار کیا ہے مگر انکار کے ساتھ
    سلسلہ جڑ تو گیا حُسنِ طرح دار کے ساتھ

    صاحبِ دل ہیں‘ کوئی رُت ہو‘ بھرم رکھتے ہیں
    اپنا رشتہ ہے ازل سے رَسَن و دار کے ساتھ

    اب کسے تن پہ سجائے گا کڑی دھوپ میں پیڑ
    ٹوٹ کر پتے لگے بیٹھے ہیں دیوار کے ساتھ

    اِک ذرا دیر ٹھہر جا بُتِ خاموش مزاج!
    نطق زنجیر تو کر لوں لبِ اظہار کے ساتھ

    عمر بھر کس نے اصولوں کو ترازو رکھا
    کون رُسوا ہوا اس شہر میں کردار کے ساتھ

    ایک لمحے کو کھلا تھا درِِ مقتل شب کا
    رغبتِ خاص ہے ہر صبح کو تلوار کے ساتھ

    کس نے ترتیب دیا ذروں سے عالم کا نظام
    مہر و مہ کس نے نمائش کیے پرکار کے ساتھ

    آنکھ پتھرا گئی تکتے ہوئے رستہ لیکن
    روح کا ربط ہے قائم رُخِ دلدار کے ساتھ

    میرا خالق ہے مرے فن کی ضمانت احمد
    حرف ترتیب سے چنتا نہیں معیار کے ساتھ
     
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    جنگل سے گزرنا پڑتا ہے
    ہر سائے سے ڈرنا پڑتا ہے

    کب لوٹ کے آتا ہے کوئی
    یہ زخم تو بھرنا پڑتا ہے

    ہر شام اُجڑ جاتے ہیں ہم
    ہر صبح سنورنا پڑتا ہے

    دہلیز تو پار وہ کر لیتا
    طوفاں سے گزرنا پڑتا ہے

    اب جیب بھی خائف رکھتی ہے
    بچوں سے بھی ڈرنا پڑتا ہے

    یہ پیٹ کا دوزخ بھی کیا ہے
    سو طرح سے بھرنا پڑتا ہے

    سر ہے تو یہ پتھر آئیں گے
    برداشت تو کرنا پڑتا ہے

    کیا تم سے ہاتھ ملائیں ہم
    خفت سے گزرنا پڑتا ہے

    اے زیست! سفر طے کتنا کریں
    اک روز تو مرنا پڑتا ہے

    کتنی بھی بلندی سر کر لو
    نیچے تو اُترنا پڑتا ہے

    اک دشت سراب ہے یہ‘ احمد
    خوابوں کو بکھرنا پڑتا ہے
     
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    آتشِ کرب سے گزرتا ہوں
    اب دعاؤں سے پیٹ بھرتا ہوں

    تم سے ملنے کا حوصلہ ہی نہیں
    بدگمانی سے اتنا ڈرتا ہوں

    اس اذیت میں جی رہا ہوں
    صبح مرتا ہوں‘ شام مرتا ہوں

    سوچ پتھرا گئی اسی دُکھ میں
    سطح دریا پہ کب اُبھرتا ہوں

    ابر کھل کر برس نہ جائے کہیں
    بادلوں کی گرج سے ڈرتا ہوں

    نکہتِ حرفِ جاودانی ہوں
    دھڑکنوں کو غزل میں بھرتا ہوں

    اپنے پیڑوں کا پھل نہیں کھاتا
    مسکراتا ہوں‘ صبر کرتا ہوں

    صبح سے شام کی مسافت تک
    دُھوپ کے دشت سے گزرتا ہوں

    خود گڑھا کھودتا ہوں اپنے لیے
    اور پھر خود ہی اس کو بھرتا ہوں

    دُکھ کی بے مہریوں کا موسم ہے
    سُکھ کی آشفتگی سے ڈرتا ہوں

    تیرے دل میں اُتار کر سورج
    اپنی آنکھوں میں رات بھرتا ہوں

    اہرمن کون ہے‘ فرشتہ کون
    مہرباں دوستوں سے ڈرتا ہوں

    اے زمانہ! میں اب کھلونا نہیں
    اَب میں بچوں سے پیار کرتا ہوں

    کون ہوتا ہے خلوتوں میں مکیں
    رات بھر کس سے بات کرتا ہوں

    اَب میں اپنے ہی شہر سے احمد
    مثلِ گردِ سحر گزرتا ہوں
     
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    چراغِ راہ بجھا ہے تو سوچتا ہوں میں
    نہ جانے کون تھا جس سے بچھڑ گیا ہوں میں

    درِ سماع سے دستک جو دے کے لوٹ آئی
    شکستِ قیمت دل کی وہ اک صدا ہوں میں

    ہیں میرے گرد مرے دوستوں کے دُکھ کتنے
    کوئی بھی لمحۂ فرصت ہو‘ سوچتا ہوں میں

    نہ جانے کون سی خوش فہمیٔ وفا کو لیے
    دُکھوں کے تیز الاؤ میں جل رہا ہوں میں

    کسے یقیں ہے رہیں گے بھی استوار سدا
    تعلقات کی دہلیز پر کھڑا ہوں میں

    غمِ حیات سے جب بھی ملا ہے مجھ کو فراغ
    تمہاری یاد کی بانہوں میں آ گیا ہوں میں

    کوئی بتائے کبھی لوٹ کر بھی آئیں گے
    گئے سموں کو جو آواز دے رہا ہوں میں

    تو اپنا ہاتھ ذرا اپنے دل پہ رکھ کے تو دیکھ
    دھڑک اُٹھے گا یقینا کہ غم زدہ ہوں میں

    نظر ملا کہ مرا حوصلہ جوان رہے
    سکوتِ شہر! ترے سامنے کھڑا ہوں میں

    نہ پوچھ دل پہ جو گزری ہے جستجو میں تری
    خود اپنے گھر کا پتہ پوچھتے پھرا ہوں میں

    لگا نہ ہاتھ مرے جسم کو تو بادِ وفا!
    گزرتے وقت کی ڈھلوان پر کھڑا ہوں میں

    جو تیرا قرب بھی گزرے تو ٹھوکریں کھائے
    رہِ وفا میں وہ پتھر بنا ہوا ہوں میں

    شعور ہے تو مری ذلتوں کو سجدہ کر
    ترے وقار کی بنیاد ہو گیا ہوں میں

    جہاں کسی کے تبسم کی اک کرن بھی نہیں
    غمِ حیات کے اُس موڑ پر کھڑا ہوں میں

    رکھا نہ اُس نے مرے پیار کا بھرم احمد
    وہ آدمی کہ جسے اب بھی پوجتا ہوں میں
     
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    دُکھ کی دیوار تلے روح کو سستانے دو
    یہ جو طوفاں سا اُمڈ آیا ہے‘ رُک جانے دو

    مدتوں بعد تو پلٹا ہے بدل کر ملبوس
    گھر کا دروازہ کھلا رکھو‘ اسے آنے دو

    وقت بیمار مسافر ہے‘ گزر جائے گا
    رائگاں ایک بھی لمحہ نہ کوئی جانے دو

    اک تہی دست ہے اور ایک مقدر کا دھنی
    کتنے مقبول ہوئے شہر میں دیوانے دو

    عمر بھر کون سا برسا ہے کرم کا بادل
    گھر میں آتا ہے جو سیلابِ بلا‘ آنے دو

    آئنہ سامنے رہنے دو ابھی ماضی کا
    سلوٹیں دیکھ کے پیشانی پہ پچھتانے دو

    محبسِ ربط سے باہر تو نہیں جا سکتا
    قید جتنا بھی رکھو اشک تو تھم جانے دو

    زندگی کرب کے سانچے میں ڈھلی جاتی ہے
    اب تو اس پیکر بے مثل کو گھر آنے دو
     
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    چھا گئے بامِ جدائی پہ سحاب
    ہو گئے خواب‘ تبسم کے گلاب

    عمر بھر ہم سر قربت ٹھہرے
    دل میں دیکھا نہ اُترتا مہتاب

    پہلے تہذیب کا مکتب تھے دیے
    اب سکھاتی ہیں ہوائیں آداب

    کتنا بھی پیار کا بادل برسے
    دل کا صحرا نہیں ہوتا سیراب

    کرب کی دھوپ مسلسل جو پڑے
    سوکھ جاتا ہے بدن کا تالاب

    اے ہوا! بند دریچہ مت کھول
    ٹوٹ جائے نہ کہیں صبح کا خواب

    دستِ خامہ میں ہے لرزش کی لکیر
    طاسِ تحریر ہے دشتِ بے آب

    ایک بھی گھر نہ بچے گا اب کے
    پورے جوبن پہ ہے برکھا کا شباب

    دن کا اُجیالا ہے قاتل احمد
    اب اندھیرے میں مہکتا ہے گلاب
     
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    ترے لہو میں ہے شامل مرے خلوص کی بو
    مجھے اُجاڑنے والے! مرا شعور ہے تو

    میں تیرے شہر میں یوں صبح و شام کاٹتا ہوں
    نڈھال زخموں سے ہو جیسے دشت میں آہو

    خدا کے واسطے یہ کھیت مت اُجاڑنے دو
    زمیں کی کھاد بنا دو بدن کا گرم لہو

    میں تیرے نام کا کتبہ اُٹھائے پھرتا ہوں
    جبین دہر کی تابندگی! کہاں ہے تو

    فقیہِ شہر بتا اتنی قحط سالی کیوں
    ہے اختیار تو کر ان کی بھوک کا دارو

    زبان و حرف قفس ہوں‘ خیال و فکر صلیب
    تم ان خطوط پہ دو گے دماغ و دل کو نمو

    نکھر رہے ہیں نئی رُت میں خار و خس احمد
    بکھر رہی ہے چمن میں گلاب کی خوشبو
     
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    اب حل مسائل کوئی سوچا نہیں جاتا
    حالات کے گرداب سے نکلا نہیں جاتا

    اب گھر میں سکوں کی کوئی تصویر نہیں ہے
    اب شہر کی سڑکوں پہ بھی گھوما نہیں جاتا

    ہر آنکھ جہاں سنگِ ملامت لیے اُٹھے
    آئینۂ احساس بچایا نہیں جاتا

    دل پاؤں پکڑتا ہے مگر لب نہیں ہلتے
    اب جاتے ہوئے شخص کو پکڑا نہیں جاتا

    سوچوں تو اُبھرتے نہیں خال و خدِ الفاظ
    چاہوں بھی تو اب خط اُسے لکھا نہیں جاتا

    ہر لمحہ نیا دُکھ مجھے زنجیر کیے ہے
    باہر قفس فکر سے آیا نہیں جاتا

    کس شخص کا دل جیتو گے اس شہر میں احمد
    اس آنکھ کا کاجل تو چرایا نہیں جاتا
     
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    جب سے پیدا ہوا ہوں تنہا ہوں
    خواب میں تتلیاں پکڑتا ہوں

    قامت و قد میں ہوں پہاڑ مگر
    اپنے اندر میں ریزہ ریزہ ہوں

    چھاؤں کرتا ہوں شہر میں تقسیم
    اپنے چہرے پہ دھوپ ملتا ہوں

    بجھ گیا ہے الاؤ جذبوں کا
    سوچ کی رہگذر پہ تنہا ہوں

    مرثیہ ہوں جو مصلحت برتو
    دل سے چاہو تو ایک نغمہ ہوں

    بیعتِ حاکم غلط کرنا
    لعنتِ زندگی سمجھتا ہوں

    جو شبِ تیرہ میں چمکتا ہے
    میں وہ کردار کا ستارہ ہوں

    مہرباں سائے یاد آتے ہیں
    ہاڑ کی دوپہر میں جلتا ہوں

    جانے والوں کے لکھ رہا ہوں کرم
    آنے والوں کی سوچ پڑھتا ہوں

    شمعِ دل تو جلا کے دیکھ مجھے
    تیری منزل کا سیدھا رستہ ہوں

    ہر تہی خُلق عہد میں احمد
    غم زدوں کے لیے مسیحا ہوں
     
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    چھپے گی سامنے آ کر یہ خستہ حالی کیا
    ملے گا شہر میں ہم کو مکان خالی کیا

    چھلک پڑے جو تمہیں دیکھ کر‘ بتاؤ مجھے
    ان آنسوؤں نے مری آبرو بچا لی کیا

    یہ دھڑکنیں ہیں علامت‘ چھپا ہوا تو نہیں
    نظر کی اوٹ میں پیکر کوئی خیالی کیا

    کسی طرح تو طلسمِ سکوتِ لب ٹوٹے
    کوئی تو رنگِ تبسم‘ یہ قحط سالی کیا

    یہاں تو سب ہی پریشاں دکھائی دیتے ہیں
    دُکھوں کے شور میں ہوگا بدن سوالی کیا

    جواں ہوئے تو کئی سال ہو گئے احمد
    ہے اب بھی اُس کی طبیعت میں لا اُبالی کیا
     
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    وہ حبسِ لب بڑھا کہ بدن ڈولنے لگا
    میں جب سکوتِ شہر کا در کھولنے لگا

    اک خوف سا لگا مجھے خالی مکان سے
    کل رات اپنے سائے سے دل ہولنے لگا

    انگڑائی لے رہا ہو کوئی جیسے بام پر
    خورشید روئے شرق پہ پر تولنے لگا

    دوں گا کسے صدا کہ سماعت کو آ سکے
    اے یادِ یار! زخم اگر بولنے لگا

    ہم اہلِ اعتماد کنارے پہ آ گئے
    گرداب میں سفینہ اگر ڈولنے لگا

    روشن ہوئے نہ تھے ابھی آثار صبح کے
    دل بانجھ جرأتوں کی گرہ کھولنے لگا

    احمد میں اپنے صدق پہ ثابت ثمر رہا
    نفرت کا زہر قرب اگر گھولنے لگا
     
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    غزل

    کُھلا تھا اک یہی رستہ تو اور کیا کرتا
    نہ دیتا ساتھ ہوا کا تو اور کیا کرتا

    بہت دنوں سے پریشان تھا جدائی میں
    جو اَب بھی تجھ سے نہ ملتا تو اور کیا کرتا

    نہ کوئی دشتِ تسلی‘ نہ ہے سکون کا شہر
    اُجالتا جو نہ صحرا تو اور کیا کرتا

    بشر تو آنکھ سے اندھا تھا کان سے بہرہ
    تجھے صدا جو نہ دیتا تو اور کیا کرتا

    مرے سفر میں محبت کا سائبان نہ تھا
    بدن پہ دھوپ نہ ملتا تو اور کیا کرتا

    ترے حضور بھی جب اذنِ مدعا نہ ملا
    متاعِ جاں نہ گنواتا تو اور کیا کرتا

    حصارِ یاد کی زنجیر توڑ کر احمد
    کھلی فضا میں نہ آتا تو اور کیا کرت
     

اس صفحے کی تشہیر