میں اجنبی سہی - سید آلِ‌ احمد

نوید صادق نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 29, 2007

  1. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    بسم اللہ الرحمن الرحیم




    میں اجنبی سہی
     
  2. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    شاید میں تیرے دھیان میں پھر سے اُبھر سکوں
    میں اجنبی سہی‘ مجھے پہچان کے تو دیکھ
     
  3. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    میں اجنبی سہی




    سید آلِ احمد




    الاشراق ‘ لاہور
     
  4. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    ضابطہ

    جملہ حقوق بحق بیگم سیّد آلِ احمد محفوظ ہیں

    اشاعتِ اول ۔۔۔۔۔۔۔۔فروری ۲۰۰۷ء
    ترتیب و تدوین ۔۔۔۔نوید صادق
    اہتمامِ اشاعت ۔۔۔خالد علیم
    سرورق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وسیم الحق
    کمپوزنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔الاشراق کمپوزنگ سنٹر‘ لاہور
    تعدادِ اشاعت ۔۔۔۔۔۵۰۰
    مطبع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سجاد ابرار پرنٹنگ پریس‘ لاہور
    قیمت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔/200 روپے

    کتاب ملنے کے پتے :
    ۱۔ الاشراق پبلی کیشنز‘ ۲۱۷۔سرکلر روڈ‘ لاہور
    ۲۔ دفتر ہفت روزہ ’’کارواں‘‘ احمد نگر۔ بہاول پور
    ۳۔ ارسلان عمرانٹر پرائزز‘ فوجی بستی‘ یزمان روڈ‘ بہاول پور
    ۴۔ وہاڑی انٹرپرائزز‘ امام بارگاہ روڈ‘ سرہند کالونی‘ وہاڑی
    ۴۔ عمر اینڈ اصغر انٹرپرائزز‘ پریس کلب مارکیٹ‘ لودھراں
     
  5. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    انتساب

    اپنے جگر پاروں
    سید ارسلان احمد
    اور
    سید عدنان احمد
    کے نام
     
  6. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    سید آلِ احمد کی شاعری نوائے سروش چاہے ہو یا نہ ہو مگر اس میں انسانی دل کی دھڑکنیں ضرور بند ہیں۔ سید آلِ احمد کی شاعری وہ دوراہا ہے جہاں جدت اور قدامت کے راستے پھٹتے ہیں۔ اُن کے کلام میں جوش و تازگی کے ساتھ تنوع بھی ہے۔اُن کی ’’لے‘‘ ساز کے پردوں کی طرح کہیں نرم و شریں ہے اور کہیں چونکا دینے والی!

    (مولاناماہرالقادری)
     
  7. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    سید آلِ احمد بہاولپور کے نوجوانوں میں ایک خاص رُخ کے انسان ہیں۔ وہ شاعر بھی ہیں اور صحافی بھی ‘ اور شاعری و صحافت کا آمیزہ اُن کی شاعری میں نہایت حسین صورت اختیار کر لیتا ہے۔ اُن کی صحافت میں شاعری کے خدوخال اُبھرتے معلوم ہوتے ہیں‘ اور شاعری میں سیاست کی گتھیاں نکلتی نظر آتی ہیں۔ وہ فکر و خیال کے اعتبار سے جدید لکھنے والوں کی صف میں آتے ہیں اور اُن کی ترقی پر بھی حدود نہیں لگائی جا سکتیں۔

    (احسان دانش)
     
  8. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    سب سے ہٹ کے بات کرنے والا ایک علیحدہ لغت لیے اپنی علیحدہ زبان میں شاعری کرنے والا آلِ احمد مجھے پہلی ہی ملاقات میں اچھا لگا کہ سچ بول رہا تھا۔ وہ ادب کے روایتی وڈیروں کے خلاف تھا۔ کبھی کسی کو چھپنے کے لیے کچھ نہیں بھیجا۔ چھوٹی جگہ پر بیٹھ کر اچھی شاعری کرنے والا آلِ احمد صاف دل لیے چُپ چاپ یہاں سے چلا گیا۔
    منیر نیازی
     
  9. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    غزل گوئی میں آپ کو بڑی دسترس حاصل ہے۔ ان کی غزلوں میں دوہوں کی سی کیفیت پائی جاتی ہے اور گیتوں کا رنگ نظر آتا ہے۔ ان کی غزلوں کا لہجہ گیتوں کی طرح میٹھا‘ ملائم‘ کومل اور گداز ہے۔

    پروفیسر محمد امین
     
  10. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    سید آلِ احمد زیادہ تر غزل ہی کے شاعر ہیں اور ان میں‘ میں نے فکر و فن کی وہ جھلکیاں دیکھیں جو نہ صرف یہ ثابت کرتی ہیں کہ صنف غزل میں لاانتہا جدتوں کا امکان ہے بلکہ اس کا ثبوت بھی ہیں۔ احمد صاحب اس کو اپنی افرادی جدت سے معمور کر سکتے ہیں۔

    ڈاکٹر محمد احسن فاروقی
     
  11. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    یوں تو غمِ دوراں اور غمِ جاناں کا حسین ترین امتزاج عصرِ حاضر کے جواں فکر شاعر سید آلِ احمد کی شاعری میں بھی نمایاں ہے مگر اس خوبی کے علاوہ اُن کی غزلوں اور نظموں میں ایک ایسی کیفیت بھی جھلکتی ہے جس کی مثال آج کل نوجوان شعراء میں خال خال ہی پائی جاتی ہے‘ وہ ہے اُن کا ’’ذاتی احساس‘‘ جو اُن کی پوری شخصیت پر طاری ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ ذاتی احساس کا سلیقے سے اظہار ایک نعمت ہے‘ اور لائقِ تحسین خوبی‘ جو آلِ احمد کے کلام میں اپنی پوری رعنائی کے ساتھ موجود ہے۔

    اختر انصاری اکبرآبادی
     
  12. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    فلیپ

    سید آلِ احمد کا جرم صرف اتنا ہے کہ وہ صرف شاعری کے سہارے ادبی دُنیا میں آیا ہے۔ اشتہار بازروں کے کسی گروہ کے سہارے نہیں‘ اور یہی وجہ ہے کہ لاہور اور کراچی سے جب آئے دن ادبی یا غیر ادبی غبارے چھوڑے جا رہے ہیں‘ آلِ احمد کا نام کہیں نظر نہیں آتا۔ وہ ایک چھوٹی سی جگہ بیٹھا خاموشی سے یہ تماشے دیکھ رہا ہے اور زیرِ لب مسکرا رہا ہے۔۔۔اس مسکراہٹ میں کتنی خوداعتمادی ہے‘ اُس کے اشعار سے ظاہر ہے۔

    حمایت علی شاعر
     
  13. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    رائے

    سید آلِ احمد بہاولپور کے ریگ زاروں اور راہ گزاروں میں سانس لینے والے ایسے باکمال سخن گو تھے کہ انھوں نے زندگی بھر قرطاس و قلم سے رشتہ جوڑے رکھا‘ اور نامساعد حالات میں بھی اپنے فن اور اپنے حرف سے وابستگی قائم رکھی۔ وہ خلیق‘ بامروّت اور ملنسار انسان تھے۔ قدرت نے انھیں ذوق آشنا قلب عطا کیا تھا مگر قسمت نے انھیں ایک ایسے ریگ زار میں رکھا جہاں اُن کی صلاحیتیں پورے طور پر عوام الناس کے سامنے نہ آ سکیں۔ روایت کے ساتھ رشتہ جوڑنے اور اپنے ماضی کو اپنے حال کے ساتھ منسلک کرنے کے فن سے سید آلِ احمد بخوبی واقف تھے۔

    محسن احسان
     
  14. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    رائے

    روایت میں ایک خرابی ہے کہ اس میں شاعر کی انفرادیت زیرِ زمین چلی جاتی ہے اس لیے روایت کو برقرار رکھتے ہوئے ایسا شعر کہنا جس پر شاعر کی انفرادیت کی چھاپ گہری ہو اور محسوسات کا نیا پن بھی موجود ہو‘ فنی پختگی کا تقاضا کرتا ہے۔ سماجی عدل و انصاف‘ معاشرتی اور اقتصادی مسائل کلاسیکی غزل کے موضوعات نہیں ہیں۔ یہ آج سے چند دہائیاں پہلے کی بات ہے جب نئے شاعر نے غزل کو ان عصری موضوعات سے روشناس کرایا اور غزل کی یکسانیت کو ایک نیا آہنگ دیا۔ سید آلِ احمد اپنے فن کے لحاظ سے اسی گروہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اُن کے ہاں عصری آگہی کے ساتھ ساتھ غزل کی روایتی غنائیت بھی موجود ہے‘ اور یہی وجہ ہے کہ اُن کے کلام کو ہر طبقہ میں مقبولیت حاصل ہے۔

    پروفیسر غلام جیلانی اصغر
     
  15. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دیباچہ

    سیّد آلِ احمد کا مخصوص طرزِ سخن

    ۱۹۸۰ء میں سترہ برس کے بعد بہاول پور جانا ہوا تو یہ محسوس کرکے خوشگوار حیرت ہوئی کہ یہ پُرسکون شہر اُس حد تک نہیں بدلا تھا کہ جس حد تک اتنے عرصے کے بعد آنے والوں کو اندیشہ ہو سکتا ہے۔ اس کے مانوس خد و خال مجھے جوں کے توں نظر آئے۔ سائیکل رکشا بھی اُس زمانے تک چل رہے تھے۔ بیکانیری گیٹ اب فرید گیٹ کہلانے لگا تھا مگر اُس کی شکل و شباہت بھی جوں کی توں تھی۔ اُس کے برابر میں پان والے کی دکان بھی موجود تھی۔ مجھے خیال آیا کہ یہاں سیّد آلِ احمد کھڑے رہا کرتے تھے۔ دیکھتا کیا ہوں کہ وہ اُس وقت بھی کھڑے ہیں۔ ہاں یہ فرق ضرور آ گیا تھا کہ اب وہ سوٹ میں ملبوس تھے۔
    پہلی بار جب ۱۹۶۲ء میں عربی کے لیکچرار کی حیثیت سے میں گورنمنٹ انٹر کالج بہاول پور آیا تو جن لوگوں سے بہت جلد مانوس ہو گیا اور جن کی صحبت میں لاہور سے دُور وہ اداس شام و سحر اچھے گزر جاتے تھے ان میں سید آلِ احمد کو ایک نمایاں حیثیت حاصل تھی۔ اُس زمانے میں وہ مستقلاً گیروا کرتا اور چھوٹے پائنچوں کا سفید پاجامہ پہنا کرتے تھے۔ بیکانیری گیٹ کے برابر میں حبیب ہوٹل تھا اور اس سے ذرا آگے ایک سادہ سا نیا ہوٹل ہمارے سامنے ہی شروع ہوا تھا ’’باغ و بہار ہوٹل‘‘۔ کالج سے واپسی پر اور پھر شام کو ہم چند لیکچرار کھانا یہیں کھاتے تھے۔ شہر کے جو ادیب و شاعر حضرات یہاں مستقلاً چائے پینے آتے تھے ان میں سید آلِ احمد سب سے زیادہ باقاعدہ تھے۔ چنانچہ اُن سے ملاقات روزانہ کا معمول تھا۔ ’’باغ و بہار ہوٹل‘‘ میں شعر و سخن کی محفل بھی خوب جمتی۔ ہوٹل کے مالک ایک معمر بزرگ تھے۔ نام یاد نہیں۔ بڑے خلیق آدمی تھے۔ ہمیں دور سے آتا دیکھتے تو گرم روٹیاں لگوانا شروع کر دیتے‘ اور ہماری طویل ادبی نشستوں سے الجھن محسوس کرنے کے بجائے بہت خوش ہوتے۔ سید آلِ احمد کے اُس زمانے کے کچھ شعرلوحِ دل پر‘ اُن کی آواز میں‘ اب تک نقش ہیں:

    ہنگامہ سرا مصر کا بازار نہیں اب
    یوسف سا کوئی حُسن طرح دار نہیں اب

    ہو بھی تو کوئی اُس کا خریدار نہیں اب
    دامانِ زلیخا میں کوئی تار نہیں اب

    ہم تو ہیں ہمیں سنگ و گل و خشت سے مارو
    منصور اگر کوئی سرِ دار نہیں اب

    یہ اشعار سید صاحب اکثر مشاعروں اور شعری نشستوں میں تواتر کے ساتھ سنایا کرتے تھے۔ ایک اور غزل تھی:

    پر شکستہ کسی سہمے ہوئے طائر کی طرح
    وقت کے کانپتے ہاتھوںمیں نہ مرنا اب کے

    سید آل احمدنے ایک اچھے شاعر اور محبت کرنے والے انسان کی حیثیت سے بہت جلد ہمارے دلوں میں گھر کر لیا۔ اُن کے کلام میں روایت سے پیوستگی کے ساتھ ایک تخلیقی لپک تھی جو اُن کے کلام کو محض ’’روایتی‘‘ بن جانے سے بچاتی تھی اور فنی خد و خال میں ان کی انفرادیت کو اُبھار کر سامنے لاتی تھی۔
    سید صاحب چونکہ خود مست شاعر تھے اور اُس زمانے میں دُور دُور تک تعارف رکھنے کے باوجود پی آر کو سیڑھی کے طور پر استعمال کرنے کا فن نہیں جانتے تھے اس لیے آگے چل کر کہنی مار دوڑ میں شمولیت نہ کر سکے اور ہر چند کہ خواص ان کے فنی مرتبے سے ناواقف نہ تھے‘ وہ ’’لائم لائٹ‘‘ سے دور ہوتے چلے گئے۔ ان کا بس ایک مختصر سا مجموعہ ’’صریرِ خامہ‘‘ کے عنوان سے ۱۹۶۴ء میں بہاول پور ہی سے شائع ہوا جس کی پذیرائی کرنے والوں میں ماہرالقادری‘ حمایت علی شاعر‘ اختر انصاری اکبر آبادی‘ محمد احسن فاروقی‘ منظور حسین شور اور دیگر کئی ممتاز سخن شناس شامل تھے۔
    ایک طویل عرصے کے بعد جب نوید صادق نے اطلاع دی کہ سید صاحب بسترِ علالت پر ہیں اور ان کا ایک اور مجموعہ اشاعت کے لیے تیار ہے ‘ جس پر مجھے بھی کچھ اظہارِ خیال کرنا ہے تو مجھے بڑی مسرت ہوئی اور میں نے محسوس کیا کہ یہ اظہارِ خیال تو میرے لیے خود اپنی عمرِ رفتہ کو آواز دینے کے مترادف ہوگا لیکن عجیب تلخ اتفاق یہ ہوا کہ اگلے روز جب نوید صادق مسودّہ میرے حوالے کرنے آئے تو میں اخبار میں سیّد صاحب کی رحلت کی خبر پڑھ چکا تھا‘ جس کا خود نوید صادق کو علم نہ تھا۔
    سید آلِ احمد کا یہ تازہ مجموعہ ان کے مخصوص رنگِ سخن کا آئینہ دار ہے‘ جو شدتِ احساس‘ رومانیت‘ روایت اور جدت کے ایک دلکش امتزاج سے عبار ت ہے۔ چند شعر ملاحظہ ہوں

    میری خاطر نہ تکلف کیجئے
    میں تو کا نٹوں پہ بھی سو جاتا ہوں

    پتھر کہیں گے لوگ‘ سرِ رہ گزر نہ بیٹھ
    چہروں کی دھوپ چھاؤں میں یوں بے خبر نہ بیٹھ

    احمد ہوائے شہر مخالف بھی ہے اگر
    خائف نہ ہو‘ نظر نہ چرا‘ چھپ کے گھر نہ بیٹھ

    کیسے ٹھہرے ہو سوچ میں احمد
    اتنی سردی میں رات کو تنہا

    کس مسافت کے بعد پہنچا ہے
    تیرے رُخسار پر مرا آنسو

    افسوس کہ ہم اس مجموعے کا استقبال بہت دیر سے کر رہے ہیں۔ تاہم دُنیائے فن میں حیاتِ ظاہری کی اہمیت کچھ زیادہ نہیں۔ امید ہے کہ یہ مجموعہ سیّد صاحب کے لیے بقائے دوام کا ضامن ہوگا۔

    ڈاکٹرخورشید رضوی
     
  16. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    میں نے جب بھی کسی تخلیق کا سوچا ۔۔۔ اور جب بھی کوئی پیکر تراشا ہے تو کوشش کی ہے کہ میرے خواب و ادراک کی تعمیر کا جو وجود قرطاس پر اُبھرے‘ وہ عجز و سلیقہ کے حیات افروز شانوں سے حروف کا وہ بوجھ زائل کر دے جو ’’صورت‘ آواز اور معنی کے مرتب شدہ نقوش کے جسموں کی کمر جھکا دیتا ہے۔
    میں اس تحمل اور لغزشوں کی منزل میں کس حد تک خوش نتائج اور عاقبت نااندیش مسافت طے کر سکا ہوں۔۔۔آئنہ ہے۔

    سید آلِ احمد
     
  17. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دل کا شیشہ ٹوٹ گیا آوازے سے

    دل کا شیشہ ٹوٹ گیا آوازے سے
    تیرا پیار بھی کم نکلا اندازے سے

    تم جو میری بات سُنے بِن چل دیتے
    رات لپٹ کر رو دیتا دروازے سے

    رنجِ سکوں تو ترکِ وفا کا حصہ تھا
    سوچ کے کتنے پھول کھلے خمیازے سے

    آنکھیں پیار کی دھوپ سے جھلسی جاتی ہیں
    روشن ہے اب چہرہ درد کے غازے سے

    تیرا دُکھ تو ایک لڑی تھا خوشیوں کی
    تار الگ یہ کس نے کیا شیرازے سے

    کتنے سموں کے شعلوں پر اک خواب جلے
    کتنی یادیں سر پھوڑیں دروازے سے

    احمد گہری سوچ کی خو کب پائی ہے
    تم تو باتیں کرتے تھے اندازے سے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    جسم کے گھور اندھیرے سے نہ باہر نکلوں

    جسم کے گھور اندھیرے سے نہ باہر نکلوں
    اس کی خواہش ہے کہ میں اپنا سفر جاری رکھوں

    اپنی تنہائی کا یہ حبس مٹانے کے لیے
    جی یہ چاہے کہ ترے حسن پہ آوازہ کسوں

    تو نے ناحق ہی گرجنے کا تکلف برتا
    میں تو بپھرے ہوئے طوفان کا رُخ موڑتا ہوں

    عمر بھر جس کے لیے میں نے دعائیں مانگیں
    اب اسے‘ کوئی بتاؤ‘ میں برا کیسے کہوں

    ہے کوئی؟ خستہ لکیروں کی جو قبریں کھودے
    کتنے مضمون ہیں مجھ سوختہ تن میں مدفوں

    اب تو حالات سے پتھرانے لگی ہیں آنکھیں
    زندگی! اور کہاں تک ترا رستہ دیکھوں

    تیری بستی میں تو پتھر کے سجے ہیں اصنام
    آدمی کوئی نظر آئے تو کچھ بات کروں

    زُلف ہوتا تو کسی دوشِ سکوں پر کھلتا
    میں تو وہ زخمِ وفا ہوں کہ مہک بھی نہ سکوں

    کتنی آنکھیں مری خواہش پہ جھپٹ پڑتی ہیں
    جب بھی اس شخص سے ملنے کی فراغت ڈھونڈوں

    کس کو فرصت ہے مجھے ڈھونڈنے نکلے احمد
    اپنی ہی چاپ پہ کب تک میں پلٹ کر دیکھوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    سوچ کی دستک نہیں یادوں کی خوشبو بھی نہیں

    سوچ کی دستک نہیں یادوں کی خوشبو بھی نہیں
    زیست کے بے خواب گھر میں کوئی جگنو بھی نہیں

    نااُمیدی! تیرے گھیراؤ سے ڈر لگنے لگا
    دھڑکنوں کے دشت میں اک چشم آہو بھی نہیں

    جسم کے حساس پودے کو نمو کیسے ملے
    قرب کی ٹھنڈی ہوا کیا کرب کی لو بھی نہیں

    ہم سفر ہیں مصلحت کا خول سب پہنے ہوئے
    دوستی کیا اب کوئی تسکیں کا پہلو بھی نہیں

    ضبط کے گہرے سمندر کو تموج بخش دے
    پیار کی جلتی ہوئی آنکھوں میں آنسو بھی نہیں

    وقت نے تجھ سے ترے لہجے کی خوشبو چھین لی
    میں جسے اپنا سمجھتا تھا وہ اب تو بھی نہیں

    شام کی خستہ لحد پر بے سکوں ٹھہرا ہوں میں
    میرا مونس کوئی ’’داتا‘‘ کوئی ’’باہو‘‘ بھی نہیں

    خواب جو دیکھے تھے احمد سب ادھورے رہ گئے
    اب کسی خواہش کے آگے دل ترازو بھی نہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. نوید صادق

    نوید صادق محفلین

    مراسلے:
    2,278
    دوش ہوا کے سات بہت دُور تک گئی

    دوش ہوا کے سات بہت دُور تک گئی
    خوشبو اُڑی تو رات بہت دُور تک گئی

    بادل برس رہا تھا کہ اک اجنبی کی چاپ
    شب‘ رکھ کے دل پہ ہات بہت دور تک گئی

    یہ اور بات لب پہ تھی افسردگی کی مہر
    برقِ تبسمات بہت دُور تک گئی

    خورشید کی تلاش میں نکلا جو گھر سے میں
    تاریکیِ حیات بہت دور تک گئی

    احمد سفر کی شام عجب مہرباں ہوئی
    اک عمر میرے سات بہت دور تک گئی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر