میرے والد صاحب سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری کی ایک غزل احباب کے لیے۔ضیائے خورشید سے انتخاب۔نہ پوچھو کاہنوں سے خواب کی تعبیر کے پہلو

میرے والد صاحب سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری کی ایک غزل احباب کے لیے۔
ضیائے خورشید سے انتخاب۔

نہ پوچھو کاہنوں سے خواب کی تعبیر کے پہلو
تراشو پہلوئے تدبیر سے تقدیر کے پہلو

ادھوری داستاں کی اب یہی تکمیل کرتے ہیں
تری تصویر کے آگے مری تصویر کے پہلو

تری عصیاں طلب رحمت ، مرے رحمت طلب عصیاں
ترےغفران کے پہلو ، مری تقصیر کے پہلو

ضیاء کوئی جہاں میں ہمکنارِ شادمانی ہے
لیے بیٹھا ہے کوئی آہ ِبے تاثیر کے پہلو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سید خورشید علی ضیاء عزیزی جے پوری​
 
Top