قطعات

سیدہ شگفتہ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 20, 2006

  1. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439



    ---×------ قطعات ------×---




     
  2. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    بہ حُضُورِ شاہ


    اے شہنشاہِ فلک منظرِ بے مثل و نظیر
    اے جہاندارِ کرم شیوۂ بے شبہ و عدیل

    پانو سے تیرے مَلے فرقِ ارادتِ ا َورنگ
    فرق سے تیرے کرے کسبِ سعادتِ اِ کلیل

    تیرا اندازِ سُخَن شانۂ زُ لفِ اِلہام
    تیری رفتارِ قلم جُنبشِ بالِ جبریل

    تجھ سے عِالم پہ کُھلا رابطۂ قُربِ کلیم
    تُجھ سے دنیا میں بِچھا مائدۂ بَذلِ خلیل

    بہ سُخَن ا َوجِ دہِ مرتبۂ معنی و لفظ
    بہ کرم داغِ نِہِِ ناصیۂ قُلزُم و نِیل

    تا ، ترے وقت میں ہو عَیش و طرب کی توفیر
    تا ، ترے عہد میں ہو رنج و اَلَم کی تقلیل

    ماہ نے چھوڑ دیا ثَور سے جانا باہر
    زُہرہ نے ترک کیا حُوت سے کرنا تحویل

    تیری دانش ، مری اصلاحِ مَفاسد کی رَہین
    تیری بخشش ، مِرے اِنجاحِ مقاصد کی کفیل

    تیرا اقبالِ تَرَحُّم مِرے جینے کی نَوِید
    تیرا اندازِ تَغافُل مِرے مرنے کی دلیل

    بختِ ناساز نے چاہا کہ نہ دے مُجھ کو اماں
    چرخِ کج باز نے چاہا کہ کرے مُجھ کو ذلیل

    پیچھے ڈالی ہے سرِ رشتۂ اوقات میں گانٹھ
    پہلے ٹھونکی ہے بُنِ ناخُنِ تدبیر میں کیل

    تَپِشِ دل نہیں بے رابطۂ خَوفِ عظیم
    کششِ دم نہیں بے ضابطۂ جَرِّ ثقیل

    دُرِ معنی سے مِرا صفحہ ، لقا کی ڈاڑھی
    غَمِ گیتی سے مِرا سینہ ا َمَر کی زنبیل

    فکر میری گُہر اندوزِ اشاراتِ کثیر
    کِلک میری رقَم آموزِ عباراتِ قلیل

    میرے ابہام پہ ہوتی ہے تصدُق توضیح
    میرے اجمال سے کرتی ہے تراوش تفصیل

    نیک ہوتی مِری حالت تو نہ دیتا تکلیف
    جمع ہوتی مِری خاطر تو نہ کرتا تعجیل

    قبلۂ کون و مکاں ، خستہ نوازی میں یہ دیر؟
    کعبۂ امن و اماں ، عُقدہ کُشائی میں یہ ڈھیل؟


    --------×××××--------


     
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    گئے وہ دن۔۔۔

    گئے وہ دن کہ ، نادانستہ ، غیروں کی وفاداری
    کیا کرتے تھے تم تقریر ہم خاموش رہتے تھے

    بس اب بگڑے پہ کیا شرمندگی ، جانے دو ، مل جاؤ
    قَسم لو ہم سے گر یہ بھی کہیں کیوں ہم نہ کہتے تھے


    -----×××-----


     
  4. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    ہاے ہاے

    کلکتے کا جو ذکر کیا تُو نے ہم نشیں !
    اِ ک تِیر میرے سینے میں مارا کہ ہاے ہاے

    وہ سبزہ زار ہاے مُطرّا کہ ، ہے غضب !
    وُہ نازنیں بُتانِ خود آرا کہ ہاے ہاے!

    صبر آزما وہ اُن کی نگاہیں کہ حف نظر !
    طاقت رُبا وہ اُن کا اشارا کہ ہاے ہاے !

    وہ میوہ ہاے تازۂ شیریں کہ ، واہ واہ
    وہ بادہ ہاے نابِ گوارا کہ ہاے ہاے !

    -----×××-----

     
  5. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    بیسنی روٹی

    نہ پُوچھ اِس کی حقیقت ، حُضُورِ والا نے
    مجھے جو بھیجی ہے بیسن کی رَوغَنی روٹی
    نہ کھاتے گیہوں ، نکلتے نہ خُلد سے باہر
    جو کھاتے حضرتِ آدم یہ بیسَنی روٹی

    -----×××-----

     
  6. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    روزہ

    افطارِ صوم کی جسے کچھ دستگاہ ہو
    اُس شخص کو ضرور ہے روزہ رکھا کرے
    جس پاس روزہ کھول کے کھانے کو کچھ نہ ہو
    روزہ اگر نہ کھائے تو ناچار کیا کرے



    ----×××-----

     
  7. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    سیہ گلیم

    سیہ گلیم ہوں ، لازم ہے میرا نام نہ لے
    جہاں میں جو کوئی فتح و ظفر کا طالب ہے
    ہوا نہ غلبہ میسر کبھی کسی پہ مجھے
    کہ جو شریک ہو میرا ، شریکِ غالب ہے

    -----×××-----

     
  8. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    سہل تھا مُسہل

    سہل تھا مُسہل ولے یہ سخت مُشکل آپڑی
    مجھ پہ کیا گُزرے گی ، اتنے روز حاضر بِن ہوئے
    تین دن مسہل سے پہلے ، تین دن مسہل کے بعد
    تین مُسہل ، تین تَبریدیں ، یہ سب کَے دِن ہوئے؟

    -----×××-----

     
  9. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    خُجستہ ۔۔۔

    خُجستہ انجمن طُوے میرزا جعفر
    کہ جس کے دیکھے سے سب کا ہوا ہے جی محظوظ
    ہوئی ہے ایسے ہی فرخندہ سال میں غالب
    نہ کیوں ہو مادۂ سالِ عیسوی " محظوظ "

    (1854ء)

    -----×××-----

     
  10. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    گُزارشِ مُصنف بہ حُضُورِ شاہ

    اَے شَہنشاہِ آسماں اَورنگ
    اَے جہاندارِ آفتاب آثار

    تھا میں اِک بے نَوَاے گوشہ نشیں
    تھا میں اِک دردمندِ سینہ فگار

    تُم نے مجھ کو جو آبرُو بخشی
    ہوئی میری وہ گرمئ بازار

    کہ ہوا مجھ سا ذرۂ ناچیز
    رُوشناسِ ثوابت و سیّار

    گر چہ از رُوے ننگ و بے ہُنری
    ہوں خود اپنی نظر میں اتنا خوار

    کہ گر اپنے کو میں کہوں خاکی
    جانتا ہوں کہ آے خاک کو عار

    شاد ہوں لیکن اپنے جی میں کہ ہوں
    بادشہ کا غلامِ کار گزار

    خانہ زاد اور مُرید اور مداح
    تھا ہمیشہ سے یہ عریضہ نگار

    بارے نوکر بھی ہو گیا صد شُکر
    نسبتیں ہو گئیں مُشخص چار

    نہ کہُوں آپ سے تو کس سے کہوں
    مُدعائے ضروری الاظہار

    پِیر و مُرشد ! اگرچہ مجھ کو نہیں
    ذوقِ آرائشِ سر و دستار

    کچھ تو جاڑے میں چاہیے آخر
    تا نہ دے بادِ زَمہریر آزار

    کیوں نہ درکار ہو مجھے پوشش
    جسم رکھتا ہوں ، ہے اگرچہ نَزار

    کچھ خریدا نہیں ہے اب کے سال
    کچھ بنایا نہیں ہے اب کی بار

    رات کو آگ اور دن کو دُھوپ!
    بھاڑ میں جائیں ایسے لَیل و نہار !

    آگ تاپے کہاں تلک اِنسان
    دُھوپ کھاوے کہاں تلک جاندار

    دُھوپ کی تابِش ، آگ کی گرمی !
    وَقِنَا رَبَّنَا عَذَاب النَّار !

    میری تنخواہ جو مقرر ہے
    اُس کے ملنے کا ہے عجب ہنجار

    رسم ہے مُردے کی چھ ماہی ایک
    خلق کا ہے اِسی چلن پہ مدار

    مجھ کو دیکھو تو ، ہُوں بہ قیدِ حیات
    اور چھ ماہی ہو سال میں دوبار !

    بسکہ لیتا ہوں ہر مہینے قرض
    اور رہتی ہے سُود کی تکرار

    میری تنخواہ میں تہائی کا
    ہوگیا ہے شریک ساہُو کار

    آج مجھ سا نہیں زمانے میں
    شاعرِ نغزگوے خوش گُفتار

    رزم کی داستان گر سُنئیے
    ہے زباں میری تیغِ جوہر دار

    بزم کا التزام گر کیجے
    ہے قلم میری ابرِ گوہر بار

    ظُلم ہے گر نہ دو سُخن کی داد
    قہر ہے گر کرو نہ مجھ کو پیار

    آپ کا بندہ ، اور پِھروں ننگا ؟
    آپ کا نوکر ، اور کھاؤں اُدھار ؟

    میری تنخواہ کیجے ماہ بہ ماہ
    تا ، نہ ہو مجھ کو زندگی دُشوار

    ختم کرتا ہُوں اب دُعا پہ کلام:
    (شاعری سے نہیں مجھے سروکار)

    تُم سلامت رہو ہزار برس
    ہر برس کے ہوں دن پچاس ہزار



    -----×××-----

     
  11. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    اِنشراحِ جشنِ جمشید

    ہوئی جب میرزا جعفر کی شادی
    ہوا بزمِ طرب میں رقصِ ناہید
    کہا غالب سے: " تاریخ اس کی کیا ہے؟ "
    تو بولا : " اِنشراحِ جشنِ جمشید"

    -----×××-----

     
  12. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    ہم آشنا نہیں !

    گو ایک بادشاہ کے سب خانہ زاد ہیں
    دربار دار لوگ بہم آشنا نہیں
    کانوں پہ ہاتھ دھرتے ہیں کرتے ہوئے سلام
    اس سے مُراد یہ ہے کہ ہم آشنا نہیں

    -----×××-----

     
  13. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    چہار شنبہ آخرِ ماہِ صَفَر

    ہے چار شنبہ آخرِ ماہِ صَفَر چلو
    رکھ دیں چمن میں بھر کے مے مُشک بُو کی ناند

    جو آئے ، جام بھر کے پیے ، اور ہو کے مست
    سبزے کو رَوندتا پھرے ، پُھولوں کو جائے پھاند

    غالب یہ کیا بیاں ہے ، بجُز مدحِ پادشاہ
    بھاتی نہیں ہے اب مجھے کوئی نوشتِ خواند

    بَٹتے ہیں سونے رُوپے کے چھلے حُضُور میں
    ہے جن کے آگے سیم و زر مہر و ماہِ ماند

    یوں سمجھیے کہ بیچ سے خالی کیے ہوئے
    لاکھوں ہی آفتاب ہیں اور بے شمار چاند


    -----×××-----

     
  14. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    مَدحِ نُصرت الملک

    نُصرت الملک بہادُر مجھے بتلا کہ مجھے
    تجھ سے جو اتنی اِرادت ہے تو کس بات سے ہے؟

    گرچہ تُو وہ ہے کہ ہنگامہ اگر گرم کرے
    رونقِ بزم مہ و مہر تری ذات سے ہے

    اور میں وہ ہوں کہ ، گر جی میں کبھی غور کروں
    غیر کیا ، خود مجھے نفرت میری اوقات سے ہے

    خستگی کا ہو بھلا ، جس کے سبب سے سرِ دست
    نسبت اِک گونہ مرے دل کو ترے ہات سے ہے

    ہاتھ میں تیرے رہے توسنِ دَولت کی عِناں
    یہ دُعا شام و سحر قاضئ حاجات سے ہے

    تُو سکندر ہے مِرا ، فخر ہے ملنا تیرا
    گو شرف خضر کی بھی مجھ کو ملاقات سے ہے

    اِس پہ گُزرے نہ گماں رِیو و رِیا کا زِنہار
    غالب خاک نشیں اہلِ خرابات سے ہے


    -----×××-----

     
  15. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    در مدح شاہ

    اے شاہِ جہانگیرِ جہاں بخش جہاں دار
    ہے غیب سے ہر دم تجھے صد گُونہ بشارت

    جو عُقدۂ دُشوار کہ کوشش سے نہ وا ہوا
    تو وَا کرے اُس عُقدے کو ، سو بھی بہ اشارات

    ممکن ہے ، کرے خضر سکندر سے ترا ذ کر
    گر لب کو نہ دے چشمۂ حیواں سے طہارت

    آصف کو سُلیماں کی وزارت سے شرف تھا
    ہے فخرِ سُلیماں ، جو کرے تیری وزارت

    ہے نقشِ مُریدی ترا ، فرمانِ الٰہی
    ہے داغِ غُلامی تِرا ، توقیعِ امارت

    تُو آب سے گر سلب کرے طاقتِ سیلاں
    تو آگ سے گر دفع کرے تابِ شرارت

    ڈُھونڈے نہ مِلے موجۂ دریا میں روانی
    باقی نہ رہے آتشِ سوزاں میں حرارت

    ہے گر چہ مجھے نُکتہ سرائی میں توغُل
    ہے گر چہ مجھے سحر طرازی میں مہارت

    کیونکر نہ کروں مدح کو میں ختم دُعا پر
    قاصر ہے ستائش میں تِری ، میری عبارت

    نَو روز ہے آج اور وہ دن ہے کہ ہوئے ہیں
    نظارگئ صنعتِ حق اہلِ بصارت

    تجھ کو شرفِ مہرِ جہانتاب مُبارک !
    غالب کو ترے عتبۂ عالی کی زیارت !



    -----×××-----

     
  16. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    بیانِ مُصنف

    منظُور ہے گُزارشِ احوالِ واقعی
    اپنا بیانِ حُسنِ طبیعت نہیں مجھے

    سَو پُشت سے ہے پیشۂ آبا سپہ گری
    کچھ شاعری ذریعۂ عزت نہیں مجھے

    آزادہ رَو ہوں اور مِرا مسلک ہے صلحِ کُل
    ہر گز کبھی کسی سے عداوت نہیں مجھے

    کیا کم ہے یہ شرف کہ ظفر کا غلام ہوں
    مانا کہ جاہ و منصب و ثروت نہیں مجھے

    اُستادِ شہ سے ہو مجھے پَرخاش کا خیال؟
    یہ تاب ، یہ مجال ، یہ طاقت نہیں مجھے

    جامِ جہاں نُما ہے شہنشاہ کا ضمیر
    سَوگند اور گواہ کی حاجت نہیں مجھے

    میں کون ، اور ریختہ ، ہاں اِس سے مدعا
    جُز انبساطِ خاطرِ حضرت نہیں مجھے

    سِہرا لکھا گیا ز رہِ امتثالِ اَمر
    دیکھا کہ چارہ غیر اطاعت نہیں مجھے

    مقطع میں آ پڑی ہے سُخن گُسترانہ بات
    مقصود اس سے قطعِ محبت نہیں مجھے

    رُوئے سُخن کسی کی طرف ہو تو رُوسیاہ
    سودا نہیں ، جُنوں نہیں ، وحشت نہیں مجھے

    قسمت بُری سہی پَہ طبیعت بُری نہیں
    ہے شُکر کی جگہ کہ شکایت نہیں مجھے

    صادق ہوں اپنے قول میں غالب ، خدا گواہ
    کہتا ہوں سچ کہ جُھوٹ کی عادت نہیں مجھے



    -----×××-----

     
  17. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439


    خوش ہو اے بخت ۔۔۔

    خوش ہو اَے بخت کہ ہے آج تِرے سر سہرا
    باندھ شہزادہ جواں بخت کے سر پر سہرا

    کیا ہی اِس چاند سے مُکھڑے پہ بھلا لگتا ہے!
    ہے تِرے حُسنِ دل افروز کا زیور سہرا

    سر پہ چڑھنا تجھے پھبتا ہے پر اے طرفِ کُلاہ
    مجھ کو ڈر ہے کہ نہ چھینے تِرا لمبر سہرا

    ناؤ بھر کر ہی پروئے گئے ہوں گے موتی
    تب بنا ہوگا اِس انداز کا گز بھر سِہرا

    رُخ پہ دُولھا کے جو گرمی سے پسینا ٹپکا
    ہے رگِ ابرِ گُہر بار سَراسَر سِہرا

    یہ بھی اِک بے ادبی تھی کہ قبا سے بڑھ جاے
    رہ گیا آن کے دامن کے برابر سِہرا

    جی میں اِترائیں نہ موتی کہ ہمیں ہیں اِک چیز
    چاہیے پُھولوں کا بھی ایک مقرر سہرا

    جب کہ اپنے میں سماویں نہ خوشی کے مارے
    گوندھے پُھولوں کا بھلا پھر کوئی کیونکر سِہرا

    رُخ روشن کی دَمک ، گوہرِ غلتاں کی چمک
    کیوں نہ دکھلاے فرُوغِ مہ و اختر سہرا

    تار ریشم کا نہیں ، ہے یہ رَگِ ابرِ بہار
    لاے گا تابِ گرانبارئ گوہر سِہرا !

    ہم سُخن فہم ہیں ، غالب کے طرفدار نہیں
    دیکھیں ، اس سہرے سے کہہ دے کوئی بڑھ کر سہرا



    -----×××-----

     
  18. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439



    ---×-----------اختتام -----------×---



     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ۔ق۔
    ہم نشیں تارے ہیں، اور چاند شہاب الدیں خاں
    بزمِ شادی ہے فلک، کاہکشاں ہے سہرا
    انکو لڑیاں نہ کہو، نحر کی موجیں سمجھو
    ہے تو کشتی میں، ولے بحرِ رواں ہے سہرا
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,667
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ۔ق۔
    چرخ تک دھوم ہے، کس دھوم سے آیا سہرا
    چاند کا دائرہ لے، زہرہ نے گایا سہرا
    رشک سے لڑتی ہیں آپس میں اُلجھ کر لڑیاں
    باندھنے کے لئے میں نے جو اُٹھایا سہرا
     

اس صفحے کی تشہیر