قطعات

سیدہ شگفتہ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 20, 2006

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,645
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    طائرَ دل

    اٹھا اک دن بگولہ سا جو تھا کچھ جوشِ وحشت میں
    پھر آ اسمیہ سر گھبرا گیا تھا جی بیاباں سے
    نظر آیا مجھے اک طائرِ مجروح پَر بستہ
    ٹپکتا تھا سرِ شوریدہ دیوارِ گلستاں سے
    کہا میں نے کہ "اے گمنام! آخر ماجرا کیا ہےَ
    پڑا ہے کام کا تجھ کو کس ستم گر آفتِ جاں سے"
    ہنسا کچھ کھلکھلا کر پہلے، پھر مجھ کو جو پہچانا
    تو یہ رویا کہ جوئے خوں بہی پلکوں کے داماں سے
    کہا، " میں صید ہوں اُس کا کہ جس کے دامِ گیسو میں
    پھنسا کرتے ہیں طائر روز آ کر باغِ رضواں سے
    اسی کی زلف و رُخ کا دھیان ہے شام و سحر مجھ کو
    نہ مطلب کُفر سے ہے اور نہ ہے کچھ کام ایماں سے"
    بہ چشمِ غور جو دیکھا، مِرا ہی طائرِ دل تھا
    کہ جل کر ہو گیا یوں خاک میری آہِ سوزاں سے
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,645
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    منظوم خط علائی

    خط منظوم بنام علائی

    خوشی تو ہے آنے کی برسات کے
    پئیں بادۂ ناب اور آم کھائیں
    سر آغازَ موسم میں اندھے ہیں ہم
    کہ دِلّی کو چھوڑیں، لوہارو کو جائیں
    سو ناج کے جو ہے مطلوبِ جاں
    نہ واں آم پائیں، نہ انگور پائیں
    ہوا حکم باورچیوں کو، کہ ہاں
    ابھی جا کے پوچھو کہ کل کیا پکائیں
    وہ کھٹّے کہاں پائیں اِملی کے پھول
    وہ کڑوے کریلے کہاں سے منگائیں
    فقط گوشت، سو بھیڑ کا ریشہ دار
    کہو اس کو کیا کھا کے ہم حِظ اُٹھائیں
     
  3. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    قطعۂ تاریخ

    اِس کتابِ طرب نصاب نے جب
    آب و تاب انطباع کی پائی

    فکرِ تاریخِ سال میں ، مجھ کو
    ایک صورت نئی نظر آئی

    ہندسے پہلے سات سات کے دو
    دیے ناگاہ مجھ کو دکھلائی

    اور پھر ہندسہ تھا بارہ کا
    با ہزاراں ہزار زیبائی

    سالِ ہجری تو ہوگیا معلوم
    بے شمولِ عبارت آرائی

    مگر اب ذوقِ بذلہ سنجی کو
    ہے جداگانہ کار فرمائی

    سات اور سات ہوتے ہیں چودہ
    بہ اُمیدِ سعادت افزائی

    غرض اِس سے ہیں چاردہ معصُوم
    جس سے ہے چشمِ جاں کو زیبائی

    اور بارہ امام ہیں بارہ
    جس سے ایماں کو ہے توانائی

    اُن کو غالب یہ سال اچھا ہے
    جو ائِمّہ کے ہیں تولّائی​

    -----------------------------------------------------
    چاردہ معصُوم : چہاردہ معصُوم
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,645
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    در مدح ڈلی

    ہے جو صاحب کے کفِ دست پہ یہ چکنی ڈلی
    زیب دیتا ہے اسے فس قدر اچھّا کہیے
    خامہ انگشت بہ دنداں کہ اسے کیا لکھیے
    ناطقہ سر بہ گریباں کہ اسے کیا کہیے
    مُہرِ مکتوبِ عزیزانِ گرامی لکھیے
    حرزِ بازوئے شگرفانِ خود آرا کہیے
    مِسی آلود سر انگشتِ حسیناں لکھیے
    داغِ طرفِ جگرِ عاشقِ شیدا کہیے
    خاتمِ دستِ سلیماں کے مشابہ لکھیے
    سرِ پستانِ پریزاد سے مانا لکھیے
    اخترِ سوختۂ قیس سے نسبت دیجے
    کالِ مسنینِ رُخِ دل کشِ لیلیٰ لکیے
    حجر الاسود ِ دیوارِ حرم کیجے فرض
    نافہ آہوئے بیابانِ خُتن کا کہیے
    وضع میں اس کو اگر سمجھیے قافِ تریاق
    رنگ میں سبزۂ نوخیزِ مسیحا کہیے
    صَومعے میں اسے ٹھہرائیے گر مُہرِ نماز
    مے کدے میں اسے خشتِ خُمِ صہبا کہیے
    کیوں اسے قُفلِ درِ گنجِ محبّت لکھیے
    کیوں اسے نقطۂ پرکارِ تمنّا کہیے
    کیوں اسے گوہرِ نایاب تصوّر کیجے
    کیوں اسے مردُمکِ دیدۂ عَنقا کہیے
    کیوں اسے تکمئے پیراہنِ لیلیٰ لکھیے
    کیوں اسے نقشِ پئے ناقۂ سلمیٰ کہیے
    بندہ پرور کے کفِ دست کو دل کیجے فرض
    اور اِس چِکنی سُپاری کو سُویدا کہیے
     

اس صفحے کی تشہیر