غوری سلطنت سے نریندر مودی تک

رباب واسطی نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 8, 2019

  1. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,977
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    بالکل یہی مؤقف راقم کے مراسلوں کا ہے، کہ جب ثبوت نہیں تو بلا وجہ ”گل پاشی“ نہیں کرنی چاہیے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. جان

    جان محفلین

    مراسلے:
    1,810
    موڈ:
    Dead
    یہ جواب تو ان کو دینا بنتا ہے جو ایسا کر رہے ہیں، ہمارے اُس مراسلے میں ایسی کوئی گل پاشی نہیں کی گئی جس کا آپ نے اول اقتباس لیا ہے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  3. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    14,292
    اس کے مطابق (اگر یہ صحیح تاریخ ہے) تو ہندوستان پر سب سے زیادہ حکومت ہندو ریاستوں نے کی ہے۔
     
  4. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    14,292
    آپ سائنس سے لے کر تاریخ اور تاریخ سے لے کر سیاست تک ہر چیز کو اسلام دشمنی کی نگاہ سے کیوں دیکھتے ہیں؟ یاد رہے کہ نادر شاہ نے جن وجوہات کی بنیاد پر دہلی کو تہس نہس کیا تھا۔ ان میں آپ کا اسلام بھی شامل تھا۔
    “اورنگزیب کی وفات کے تیس سال بعد ایک سردار نادر خاں نے فارس کے تخت پر قبضہ کر کے نادر شاہ کا لقب اختیار کیا اور افغانستان بھی فتح کر لیا۔ اس کے بعد محمد شاہ کے پاس دوستانہ سفیر بھیجا۔ محمد شاہ سفیر کے ساتھ نخوت سے پیش آیا اور کہنے لگا کہ آج نادر شاہ بادشاہ ہوگئے ہیں۔نادر شاہ تند مزاج اور پکا مسلمان تھا۔ اس نے محمد شاہ پر یہ الزام لگایا کہ وہ مسلمان بادشاہ کے فرائض ادا کرنے سے قاصر ہے۔ یعنی اس نے ہندوئوں سے جزیہ کیوں نہیں لیا اور دون ہمتی کے ساتھ بت پرست مرہٹوں کو چوتھ کیوں دی؟ اس بہانے سے نادر شاہ نے محمد شاہ کی گوشمالی کا ارادہ کیا”
    http://m.dunya.com.pk/index.php/special-feature/2013-11-07/6885
     
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    14,292
    یہ صرف آپ کا دعوی ہے۔ اس کی کوئی حقیقت نہیں۔ کیونکہ آپ خود بے جا اسلام پسندی کا شکار ہیں۔
    اور جو مورخین تاریخ کو دوسرے زاویے سے لکھتے ہیں ان کو آپ “اسلام بیزار” سمجھتے ہیں۔ دنیا اس طرح سیاہ سفید نہیں ہوتی۔ اور تاریخ تو بالکل نہیں ہوتی۔
     
  6. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,554
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    ویڈیو میں تاریخ درست ہے۔

    آپ یہ دیکھیے کہ چار ہزار سال سے زائد عرصے میں صرف چند ایک موقعوں پر، اور وہ بھی بہت زیادہ عرصے کے لیے نہیں، برصغیر کا وسیع و عریض و رنگا رنگ علاقہ ایک مرکزی سلطنت یا ریاست کے تحت رہا ہے ۔مستقبل کے لیے ایک دلچسپ فیکٹ!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  7. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    2,940
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    فرق ہے آئیڈیالوجی کا ، کہ اسلام مساوات سکھاتا ہے ، جب کہ بتوں کے پوجنے والوں کا یہ نظام ، ذاتوں کی برتری کی تعلیم دیتا ہے۔ بتوں کے توڑنے سے کچھ نہیں ہوگا، وہ بت جو ذہنوں میں ہیں کہ " ہم برتر ہیں" - ان خیالات کے بتوں کو توڑنا، مساوات کو پھیلانا ضروری ہے ۔

    براہمن، کھتری، شودر ہو یا ہو کوئی گندہ
    سب کی سمجھ میں آجائے گا مساوت کا فنڈا
     
    آخری تدوین: ‏اگست 12, 2019
    • زبردست زبردست × 1
  8. آصف اثر

    آصف اثر محفلین

    مراسلے:
    2,977
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    ”ہم برتر ہیں“ کو ”یہ ضابطۂ حیات برتر ہے“ سے تبدیل کرکے سوچیں۔ دو مختلف نظام مساوی نہیں ہوسکتے۔
     
    • متفق متفق × 1
  9. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    14,292
    ہر مذہب پر ایمان لانے والے اسکی تعلیمات کو دیگر مذاہب سے برتر جاننے کی وجہ سے ہی مانتے ہیں۔ اس لئے آپ اس مفروضہ کو من و عن تسلیم نہیں کروا سکتے کہ صرف اسلامی ضابطہ حیات ہی سب سے برتر ہے۔ کیونکہ دیگر مذاہب کے لوگوں کا اپنی مذہبی تعلیمات سے متعلق یہی ایمان ہے۔
     

اس صفحے کی تشہیر