1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

جمال احسانی غزل ۔ عشق میں خود سے محبت نہیں کی جا سکتی -جمال احسانی

محمداحمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 9, 2011

  1. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    غزل

    عشق میں خود سے محبت نہیں کی جا سکتی
    پر کسی کو یہ نصیحت نہیں کی جا سکتی

    کنجیاں خانۂ ہمسایہ کی رکھتے کیوں ہو
    اپنےجب گھر کی حفاظت نہیں کی جا سکتی

    کچھ تو مشکل ہے بہت کارِ محبت اور کچھ
    یار لوگوں سے مشقت نہیں کی جاسکتی

    طائرِ یاد کو کم تھا شجرِ دل ورنہ
    بے سبب ترکِ سکونت نہیں کی جاسکتی

    اک سفر میں کوئی دو بار نہیں لُٹ سکتا
    اب دوبارہ تری چاہت نہیں کی جا سکتی

    کوئی ہو بھی تو ذرا چاہنے والا تیرا
    راہ چلتوں سے رقابت نہیں کی جاسکتی

    آسماں پر بھی جہاں لوگ جھگڑتے ہوں جمالؔ
    اُس زمیں کے لئے ہجرت نہیں کی جا سکتی

    جمالؔ احسانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  2. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    بہت عمدہ محمد احمد بھائی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,169
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    کیا خوبصورت غزل ہے، مطلع اور مقطع دونوں ہی لاجواب ہیں، واہ واہ واہ۔۔۔۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    انتخاب کی پسندیدگی کا شکریہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. محسن وقار علی

    محسن وقار علی محفلین

    مراسلے:
    12,013
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کنجیاں خانۂ ہمسایہ کی رکھتے کیوں ہو
    اپنےجب گھر کی حفاظت نہیں کی جا سکتی


    آسماں پر بھی جہاں لوگ جھگڑتے ہوں جمالؔ
    اُس زمیں کے لئے ہجرت نہیں کی جا سکتی


    (y):notworthy::applause: :best::khoobsurat::zabardast1:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر