غزل : سب کے حصے میں غزل گوئی کہاں آتی ہے - فرحان محمد خان

فرحان محمد خان نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 21, 2019

  1. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    غزل
    سب کے حصے میں غزل گوئی کہاں آتی ہے
    وحیِ ربی ہے سرِ نوکِ سناں آتی ہے

    دے رہے ہیں یہ بچھڑتے ہوئے احباب خبر
    فصلِ گل بیت گئی اب کے خزاں آتی ہے

    خوب کہتے ہیں میاں حضرتِ اختر عثمان
    خون جلتا ہے تو پھر شعر میں جاں آتی ہے

    اتنے خائف ہو جو اسلاف سے پیارے بچو
    واقفِ میر ہو حافظ کی زباں آتی ہے؟

    دفن ہیں اُس میں مرے خواب نہ جانے کتنے
    گھر کے رستے میں کتابوں کی دکاں آتی ہے

    اُن کے ہونٹوں پہ تبسم کی وہ ہلکی سی لکیر
    جیسے دریا میں کوئی موجِ رواں آتی ہے

    کافرِ عشق تھا میں تُو مرے حالات بھی دیکھ
    دل دھڑکتا ہے کہ سینے سے فغاں آتی ہے

    میرے غمخوار ہیں یہ شہر کے سارے بچے
    انھیں دیکھوں تو مرے جسم میں جاں آتی ہے

    اذن ہوتا ہے غزل کا، اسے سمجھو فرحان
    دل کے کعبے سے جب آوازِ اذاں آتی ہے
    فرحان محمد خان
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 3
  2. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,467
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    فرحان بھائی ، یہ مطلع برائے مطلع کہا ہے یا واقعی آپ ایسا سمجھتے ہیں؟! کچھ الجھن میں پڑ گیا میں اسے پڑھ کر۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    182
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    واہ زبردست!! فرحان محمد خان صاحب، نہائت عمدہ

    آدابِ محفل سے ناواقف ہوں، نا جانے یہ جسارت کتنی قابلِ گرفت ٹھہرے مگر غزل پڑھتے ہوئے ایک شعر موزوں ہو گیا ہے

    اک تبسم ہی سجائے ہوئے پھرتا ہوں شکیل
    کب مرے درد کو آہوں کی زباں آتی ہے

    اگر یہ گستاخی کے زمرے میں آتا ہے تو پیشگی معذرت اسدرخواست کے ساتھ کہ احباب میں سے کوئی نشاندہی فرما دے تاکہ آئندہ محتاط رہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  4. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    2,752
    سر نوک سناں امام حسین علیہ السلام سورہ کہف کی تلاوت کررہے تھے
    ان کے علاوہ سر نوک سناں کسی اور کے لئے نہیں سنا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,467
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    فاخر بھائی، آپ سمجھے نہیں ۔ میرا سوال اس بارے میں تھا کہ مطلع میں غزل گوئی کو وحیِ ربی کہا گیا ہے ۔ یہ مبالغہ کچھ ہضم نہیں ہورہا ۔ اب اس کی اصل تشریح اور توجیہہ تو فرحان بھائی ہی آکر کریں گے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  6. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    7,827
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    یہ گستاخی تو ہوچکی! اب یوں کیجے کہ اس مقطع پر غزل بھی کہہ لیجیے۔
     
    • متفق متفق × 1
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    33,747
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اختر عثمان کی زمین ہے کیا؟ میاں سے لگتا ہے کہ اختر عثمان کی کوئی بزرگ حوصلہ افزائی کر رہا ہے، مگر اس کے ساتھ حضرت اختر عثمان؟ اگر دوسرا مصرع انہیں کا ہے تو میرا مشورہ ہے کہ اس شعر کو نکال ہی دو، محض نوٹ میں زمین کے استفادے کے ضمن میں اختر کا ذکر کرو۔
    باقی اشعار پسند آئے، بشمول مطلع، یہ مبالغہ تو شاعر کو ہوتا ہی ہے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    182
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    محترم محمد خلیل الرحمٰن
    اگر گستاخی ہے تو پوری غزل کہنے کی شہہ دے کر مزید کستاخ تو نہ بنائیے۔
    ویسے میں حقیقتاََ کنفیوز ہوں اپنی جسارت پر براہِ مہربانی رہنمائی فرمائیں
     
  9. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    7,827
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ہمارے مراسلے کو دوبارہ دیکھیے۔ ہمارے مراسلے پر استادِ محترم نے متفق کا ٹیگ دیا ہے۔ آگے آپ خود سمجھ لیجیے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    7,827
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ہمارے مراسلے کو دوبارہ دیکھیے۔ ہمارے مراسلے پر استادِ محترم نے متفق کا ٹیگ دیا ہے۔ آگے آپ خود سمجھ لیجیے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    السلام عليكم ظہیر بھائی میں نے وحی کو اصطلاحی معنی میں استعمال نہیں کیا باقی یہ ہے جہاں تک غزل کا تعلق ہے میں اسے خاص مالک کی عطا سمجھتا ہوں کوئی بھی الہام یا خیال اس وقت تک دماغ میں نہیں آ سکتا جب مالک کی عطا و رضا نہ ہو اس ضمن میں قرآن کی ایک آیات پیش کر رہا ہوں

    وَ مَا تَشَآءُوۡنَ اِلَّاۤ اَنۡ یَّشَآءَ اللّٰہُ ؕ اِنَّ اللّٰہَ کَانَ عَلِیۡمًا حَکِیۡمًا ﴿٭ۖ۳۰﴾
    ترجمہ:
    اور تم چاہوگے نہیں جب تک اللہ نہ چاہے۔ اور اللہ علم کا بھی مالک ہے، حکمت کا بھی مالک۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  12. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    بابا جانی آپ کی محبت

    زمین اختر عثمان صاحب کی نہیں میں نے ان کے اس شعر سے استفاده کیا تھا اس لیے مصرعِ اولی میں ان کا ذکر کر دیا

    جان کاوی سے غزل ہوتی تھی اخترؔ عثمان
    خون جلتا تھا مگر شعر میں جاں ہوتی تھی

    اپنے شعر میں کومہ لگنا بھول گیا جس کی وجہ سے یہ ابہام پیدا ہوا کے میاں سے میرے مخاطب اختر عثمان صاحب ہیں

    خوب کہتے ہیں میاں، حضرتِ اختر عثمان
    خون جلتا ہے تو پھر شعر میں جاں آتی ہے
     
    • متفق متفق × 1
  13. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    گستاخی کیسی صاحب یہ تو آپ نے ہماری حوصلہ افزائی کی ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,859
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    بہت عمدہ اشعا ر فرحان بھائی!

    بہت سی داد آپ کےلئے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    2,467
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    سب کے حصے میں غزل گوئی کہاں آتی ہے
    وحیِ ربی ہے سرِ نوکِ سناں آتی ہے

    فرحان بھائی آپ نے تو بات مزید الجھادی ۔ جہاں تک آیتِ قرآنی کا تعلق ہے تو ہم سب کا ایمان ہے کہ اس کائنات کا ہر کام اللہ کی رضا اور اذن سے ہورہا ہے ۔ ہر خیر اور شر اُسی کے اذن سے واقع ہورہا ہے ۔ یہ بات تو ایمان کا حصہ ہے ۔ تو سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ پھر غزل گوئی ہی کی تخصیص کیوں؟! نظم ہو یا نثر یہ بات تو پھر ہر قسم کی تحریر پر صادق آتی ہے ، خواہ کوئی اچھی بات ہو یا فحش گوئی ہو یا بیہودہ بکواس ہو ۔ پھر تو سب اسی "وحیِ ربی" کے تحت آجائیں گے ۔
    دوسری بات یہ کہ بیشک آپ نے وحی کو اصطلاحی معنوں کے بجائے لغوی معنوں میں استعمال کیا ہو لیکن ایسا سمجھا نہیں جائے گا ۔(بعض الفاظ اصطلاح بننے کے بعد اپنے لغوی معنی کھو بیٹھتے ہیں) ۔ بالخصوص جب آپ "وحیِ ربی" کے الفاظ استعمال کررہے ہوں اورکہنے والا ایک انسان ہو تو اس کے اصطلاحی معنی ہی لئے جائیں گے ۔
    تیسری بات یہ کہ اگر کوئی لکھاری ایک پیراگراف نثر کا لکھے اور کہے کہ یہ وحیِ ربی ہے تو اس سے کیا سمجھا جائے گا ؟!
    چوتھی بات یہ کہ ادیبوں اور شاعروں کے ایک خاصےبڑے طبقے کا یہ کہنا اور ماننا ہےکہ شاعری جزویست از پیمبری ۔ (اورآپ کامطلع اس بات کی تائید کر رہا ہے) ۔ اور یہ بات اسلامی عقیدے کے بالکل خلاف ہے ۔ قرآن نے کئی جگہوں پر اس بات کی صاف لفظوں میں وضاحت کی ہے کہ پیغمبر نہ تو شاعر ہیں اور نہ شاعری کرتے ہیں ۔

    فرحان بھائی میں معذرت چاہتا ہوں کہ بات طویل ہوگئی لیکن اس کا مقصد بحث برائے بحث نہیں ہے ۔ میں صرف اپنے ذمہ داری پوری کرنا چاہتا ہوں کہ اس ضمن میں میرا نقطۂ نظر آپ تک اور پڑھنے والوں تک پہنچ جائے ۔ میری اپنی پالیسی یہ ہے کہ میں شعر کا دامن ایسے حساس اور پُر خطر معاملات سے ہر ممکن حد تک صاف رکھتا ہوں ۔ ایسی بلندی تک پرواز کا کیا فائدہ کہ جہاں پر جلنے کا اندیشہ ہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  16. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    محبت پیارے بھائی بہت شکریہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. فرحان محمد خان

    فرحان محمد خان محفلین

    مراسلے:
    2,109
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheeky
    ارے آپ سے بحث کیسی آپ ہمارے بڑے ہیں اور آپ کی باتیں ہمارے لیے مشعلِ راہ ہیں
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر