غالب کی ایک مشکل غزل

رضوان راز نے 'بزم سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 28, 2020

  1. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    جنوں گرم انتظار، و نالہ بیتابی کمند آیا
    سُویدا، تا بلب، زنجیر سے دودِ سپند آیا
    مہ اختر فشاں کی بہرِ استقبال آنکھوں سے
    تماشا، کشورِ آئینہ میں آئینہ بند آیا
    تغافل، بدگمانی، بلکہ میری سخت جانی سے
    نگاہِ بے حجابِ ناز کو، بیمِ گزند آیا
    فضائے خندہ گل تنگ و ذوقِ عیش بے پرواہ
    فراغت گاہِ آغوشِ وداعِ دل، پسند آیا
    عدم ہے خیر خواہِ جلوہ کو زندانِ بیتابی
    خرامِ ناز، برقِ خرمنِ سعیِ سپند آیا
    جراحت تحفہ، الماس ارمغان، داغِ جگر ہدیہ
    مبارکباد اسدؔ ، غمخوارِ جانِ درد مند آیا
     
    مدیر کی آخری تدوین: ‏جون 29, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. فاخر رضا

    فاخر رضا محفلین

    مراسلے:
    3,139
  4. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    ی
    یہ غزل نسخۂ حمیدیہ میں ہے۔ جب کہ متداول دیوانِ غالب میں موجود نہیں ہے۔ مولانا غلام رسول مہر کی شرح متداول دیوان کی شرح ہے۔ :(
     
  5. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    شاباش ہے ! یعنی ایک مصرع یا ایک شعر نہیں بلکہ پوری غزل کی تشریح! :):):)
    بالکل ٹھیک ! اس غزل کی تشریح کم از کم تین چار صفحات کے مضمون کی متقاضی ہے ۔ اگر وقت ملا اور ذہن اس طرف آیا تو ضرور تعمیلِ ارشاد ہوگی ۔
    رضوان راز صاحب! اردو محفل میں خوش آمدید! اگر مناسب سمجھیں تو اپنے تعارف کا شرف بخشئے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  6. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,856
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    مجھے بھی انتظار رہے گا ظہیر بھائی۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    میرے خیال میں غالب نے خود ہی اس غزل کو رد کر دیا تھا اور متداول نسخوں میں صرف مقطع ملتا ہے۔ غالب نے اپنے اوائل کے زمانے کی کئی ایک غزلیں اپنے دیوان میں شامل نہیں کئی تھیں لیکن محققین بھلا ایسا کام چھوڑتے ہیں، ڈھونڈ ڈھونڈ کر وہ غزلیں نکال لائے جو غالب خود ہی چھوڑ چکے تھے۔

    خیر، شرح کے قابل کم از کم میں تو نہیں ہوں۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  8. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    صاحبِ من اگر فقط ایک مصرع بالائے فہم ہوتا تو دامنِ طلب مکمل غزل کی تشریح کے لیے نہ پھیلاتا۔
    یہاں تو پوری غزل، ایک ایک شعر ستم بالائے ستم ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  9. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    حضور چار صفحات کا مضمون قبول ہے۔
    اب ان دو شرائط کے لیے دست بہ دعا ہوں کہ پروردگار آپ کی عدیم الفرصتی میں تخفیف فرمائے اور آپ کے ذہن و قلب کو اس جانب منقلب فرمائے۔ آمین
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    10,116
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    اس غزل کو پڑھ کر ان افراد کو خراج تحسین پیش کرنے کا دل چاہتا ہے جن کی بدولت مرزا کو یہ کہنا پڑا کہ :) ۔
    شہرت شعرم بگیتی بعد من خواہد شدن ۔
    اگر مرزا اسی رستے چلتے تو آگے چل کر اسد سے غالب نہیں مغلوب ہوتے ۔
     
    آخری تدوین: ‏جون 29, 2020
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  11. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    شکریہ جناب۔
    یوں تو راز کا معروف ہونا راز کا عدم ہونا ہے لیکن تعمیلِ حکم واجب ہے اس لیے پردۂ اخفا چاک کرتا ہوں۔
    خاکسار کا نام محمد رضوان ہے۔ جنت مکانی، خلد آشیانی تایا جان مرحوم و مغفور نام کے ساتھ ملک لکھتے تھے سو ان کے تتبع میں شناختی کارڈ پر ملک محمد رضوان درج ہے گو کہ کسی قسم کا شجرۂ نسب محفوظ نہیں ہے۔ عمرِ عزیز کی اڑتیس بہاریں دیکھ چکا ہوں۔
    لاہور کے کنارے واقع ایک نو آباد بستی میں ٹھکانہ ہے گو کہ اب اسے بھی لاہور میں شمار کیا جاتا ہے۔

    بندہ سالمیاتی حیاتیات Molecular Biology میں سند یافتہ ہے سو اسی کوچہ میں سرگرمِ تحقیق ہے۔
    مزید یہ کہ تین درس گاہوں میں اے لیول کی سطح پر حیاتیات کا مدرس ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    بجا ارشاد
    یہ غزل غالب نے اپنے ابتدائی میں کہی تھی جب وہ بیدل کی پیروی میں انتہائی مشکل اشعار کہا کرتے تھے اور بعد میں اس روش کو ترک کر دیا۔ یہ غزل دیوانِ غالب کے نسخۂ حمیدیہ میں درج ہے جو کہ 1917 میں بھوپال میں دریافت ہوا۔ دیوانِ غالب کا یہ قدیم ترین نسخہ ہے جو 1821 میں چھپا۔
    ہمارے ہاں رائج دیوان غالب کی زندگی میں آخری بار 1863 میں طبع ہوا۔ موجودہ دیوان میں ابتدائی دور کی بہت سی غزلیں موجود نہیں ہیں۔ یہ کلام مشکل ہونے کی بنا پر غالب نے خود اپنے دیوان سے نکال دیا تھا۔ زیرِ نظر غزل بھی اسی کلام کا حصہ ہے اور موجودہ دیوان میں موجود نہیں۔

    لیکن صاحب ہے تو کلامِ غالب، مشکل ہی سہی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  13. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    مشکل کلام تو غالب کے موجودہ متداول دیوان میں بھی ہے اور جو نوائے سروش کی مدد کے بغیر سمجھ میں بھی نہیں آتا لیکن یہ غزل تو بس۔۔۔۔۔۔۔زیادہ سے زیادہ یہی کہہ سکتے ہیں کہ غالب کے لڑکپن کی مشق سخن ہے جسے غالب نے خود بھی اس قابل نہ سمجھا کہ اپنی پختہ شاعری کے ساتھ شامل کرتے۔

    ویسے نہ جانے کیوں آپ اس غزل کی شرح کے متمنی ہیں جب کہ ایک اور مرشد، مشتاق احمد یوسفی مرحوم یہ الہامی جملہ ارشاد فرما چکے ہیں کہ دنیا میں غالب واحد شاعر ہے جو سمجھ میں نہ آئے تو دگنا مزا دیتا ہے۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  14. محمل ابراہیم

    محمل ابراہیم لائبریرین

    مراسلے:
    301
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Angelic
    گر خاموشی سے فائدہ اخفائے حال ہے
    خوش ہوں کہ میری بات سمجھنی محال ہے
     
  15. رضوان راز

    رضوان راز محفلین

    مراسلے:
    22
    جھنڈا:
    Pakistan
    بجا ارشاد
    لیکن یہ فرمائیے کہ اگر مولانا غلام رسول مہر ہم پر احسان نہ فرماتے اور نوائے سروش تحریر نہ فرماتے تو کیا ہم غالب فہمی سے یہ کہہ کر دست بردار ہو جاتے کہ یہ تو محض گنجلک اور مہمل کلام ہے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  16. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    10,116
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    جس گناہ سے کوئی تائب ہوجائے اس پر ملامت کرنا اچھے اخلاق کی علامت نہیں ۔ :LOL:
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  17. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    آپ خیر مکالمے کو اپنی مرضی کا رنگ دے رہے ہیں۔ "مشکل" ہونا تو ایک طرف رہا، آپ اس بات پر غور فرمائیے کہ یہ غزل کسی حادثے کی وجہ سے دیوانِ غالب میں شامل ہونے سے نہیں رہ گئی بلکہ غالب کو خود لگا تھا کہ دیوان میں نہ ہو تو اچھا ہے۔

    باقی اگر "مشکل مشکل" کھیلنا ہے تو معذرت کے ساتھ غالب کے موجودہ دیوان میں بھی کئی ایک ایسے اشعار ہیں جو نہ صرف مشکل ہیں بلکہ غزل میں بھی صرف تعداد ہی پوری کرتے ہیں ، آپ کا کیا خیال ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  18. محمد ریحان قریشی

    محمد ریحان قریشی محفلین

    مراسلے:
    2,048
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    جراحت تحفہ، الماس ارمغاں، داغِ جگر ہدیہ

    یہ شعر شاید غالب کے اشاعت یافتہ دیوان میں بھی موجود ہے۔ معنوی لحاظ سے گو کہ کوئی خاص خوبی نظر نہیں آ تی مگر بندش بہت خوبصورت ہے۔ غالب کے ہاں بندشیں دیگر شعرا سے عمومی طور پر زیادہ چست ہیں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    مجھے برسوں پہلے کا فاتح صاحب کا یہ تھریڈ یاد آ گیا۔ :)

    سوزشِ دل تو کہاں اس حال میں
    جان و تن ہیں سوزنِ جنجال میں

    چشمِ بینا چشمہء منقار ہے
    دقّتِ افعال ہے اقوال میں

    نور کا عالم پری ہو یا کہ حور
    ہے صفائی سیم تن کی کھال میں

    ہم نفس کہنا غلط ہے گاؤ میش
    روغنِ گُل بیضہء گھڑیال میں

    غالبِ تیرہ دروں بیروں سیاہ
    زُلفِ مشکیں پنجہء خلخال میں
     
    • زبردست زبردست × 2
  20. عبید انصاری

    عبید انصاری محفلین

    مراسلے:
    2,678
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اس پر قدرت اللہ شہاب کے ماسٹر منگل سنگھ یاد آگئے:
    سادگی و پرکاری، بے خودی و ہشیاری
    حسن کو تغافل میں جرأت آزما پایا

    "سادگی تے اسدے نال پرکاری' بےخودی تے اسدے نال نال ہشیاری۔ حسن نوں تغافل وچ کی پایا؟ شاعر کہندا اے اس نے حسن نوں تغافل وچ جرات آزما پایا۔

    لئو اینی جئی گل سی، غالب شعر بناندا بناندا مر گیا، میں شعر سمجھاندے سمجھاندے مر جانا اے، تہاڈے کوڑھ مغزاں دے پلے ککھ نئی پینا۔ اگے چلو......
    :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 5

اس صفحے کی تشہیر