صنفِ غزل کو پسند یا ناپسند کرنے کی وجوہات

جاسمن نے 'محفل چائے خانہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 1, 2019

  1. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,428
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    چائے خانے میں چائے کے ساتھ نیا موضوع شروع کیا ہے۔ محفلین اپنے خیالات کا اظہار فرمائیں۔:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,428
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    نظم کے ساتھ ساتھ غزل کی صنف مجھے بہت پسند ہے۔ ایک شعر میں ایک پورا جہان آباد ہو سکتا ہے۔ جب ہم تشریح کیا کرتے تھے تو ایک شعر پہ صفحات بھر دیتے تھے۔ شاعر نے شاید اُن جہتوں کو سوچا بھی نہ ہو، جو ہم ایجاد کر دیا کرتے تھے۔
    کیا آپ میں سے کوئی ایسا کرتا تھا؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • متفق متفق × 1
  3. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    1,066
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    آپ نے اسکول کا زمانہ یاد کروا دیا۔ جب تشریح کے لیے یوں لکھتے تھے "شاعر اس شعر میں کہنا چاہتا ہے کہ" ۔۔۔ آہ وہ بھی کیا دن تھے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  4. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,428
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    اسکول اور پھر کالج کے ابتدائی دو سال ہم نے ایسی ایسی تشریحات کی ہیں کہ اب سوچیں تو ہنسی آتی ہے۔ میں اپنے بیٹے کو بتا رہی تھی کہ جب میں نے کسی شعر کی تشریح میں کوئی ایسا شعر استعمال کرنا ہوتا تھا جو زیرِ تشریح شعر سے زیادہ مطابقت نہیں رکھتا تھا تو میں بات کرتے کرتے موضوع کو اُدھر لے جاتی اور پھر شعر ٹانک کے رفتہ رفتہ واپس لے آتی۔:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  5. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    1,066
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    جی بالکل کچھ ایسی ہی کاروائی ہم بھی کرتے رہے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    1,066
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    میر کے شعر کی تشریح میں ان کے مشکل حالات زندگی کا تذکرہ لازمی سمجھا جاتا تھا۔ تاکہ کم از کم آدھا صفحہ تو بھرا جا سکے۔ اسی طرح غالب کی انگریز دور کی کسم پرسی اور وظیفوں پر گزارے کا تذکرہ، غالب کے ہر شعر کی تشریح میں زبردستی گھسا دیا کرتے تھے۔ اقبال کی شاعری تو بہت آسان تھی کچھ سمجھ نہ آتا تو کہتے کہ مسلمانوں کی حالت زار دیکھ کر اقبال مرحوم کا دل بھر آیا اور انھوں نے یہ درد بھرے اشعار کہے جن کی مزید تشریح کی ضرورت نہیں۔ :D
     
    • پر مزاح پر مزاح × 5
  7. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    5,932
    ارے بھئی کیا زمانہ یاد کرا دیا! تب تو بہت شغل میلے لگاکرتے تھے۔ ایک دوست نے غلطی سے لکھ دیا، شاعر اس شیر میں کہہ رہے ہیں تو اُن کا تادیر خوب مذاق بنا رہا۔ ہماری ایک محترم خاتون اُستاد کا فرمانا تھا کہ جہاں محبوب کا ذکر آئے، وہاں محبوب کی بجائے م لکھا جاوے؛ صد شکر کہ سنسر کی پابندیاں یہیں تک محدود رہیں۔ :)

    موضوع کی طرف آئیں تو ہمیں غزل محض پسند ہی نہیں ہے، بلکہ بہت ہی زیادہ پسند ہے۔۔۔!
     
    آخری تدوین: ‏فروری 1, 2019
    • پر مزاح پر مزاح × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  8. عبید انصاری

    عبید انصاری محفلین

    مراسلے:
    2,176
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    یہ بھی بتایا جانا چاہیے کہ جس کو غزل پسند نہیں اسے کیا پسند ہے؟ اور کیوں؟

    پھر اس کے لیے مناسب سزا بھی تجویز کی جائے۔ :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 8
    • متفق متفق × 1
  9. فرقان احمد

    فرقان احمد محفلین

    مراسلے:
    5,932
    مزید یہ کہ کیا اُس غریب کی ادبی نمازِ جنازہ ادا کی جا سکتی ہے یا نہیں؟ یا اُس کو بطور سزا کس شاعر کے کتنے سہ غزلے سنائے جائیں گے۔۔۔! صاحب، ذرا تفصیلات میں بھی دخل دیجیے۔۔۔!
     
    آخری تدوین: ‏فروری 1, 2019
    • پر مزاح پر مزاح × 5
  10. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,428
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    و
    ہاہاہا۔:D
    ہم جب کسی ایسے شعر کی تشریح کرتے تو "محبوب" کی ایسی ایسی خوبیاں بیان کرتے کہ عاشق صاحب پڑھ لیتے تو بے حد حیران بلکہ پریشان ہوجاتے۔ :)
    نیز عشقِ حقیقی اور عشقِ مجازی دونوں طرح کے عشق والے اشعار کی تشریح میں کوشش کی جاتی کہ دونوں سے متعلق مفصل بیان آجائے تاکہ تشریح خوب بڑھ جائے۔ پھر دونوں میں الگ الگ اشعار بھی ٹانکے جاتے تو خوب رنگ جمتا۔:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    10,428
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    غزل کے ایک شعر میں بلکہ بعض اوقات ایک مصرع میں اس قدر مکمل بات، واقعہ، کہانی بیان ہوجاتی ہے کہ حیرت ہوتی ہے۔
    آج کل توبہت سی نئی نئی تراکیب والے اشعار پڑھنے کو مل رہے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  12. فلسفی

    فلسفی محفلین

    مراسلے:
    1,066
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Pensive
    ہمیں اردو کے مضمون میں سکول (سنٹرل ماڈل ہائی سکول لوئر مال لاہور) کی حد تک ایک خاص مقام حاصل تھا۔ نانا اور دادا دونوں ضلع روہتک سے ہجرت کر کے آئے تھے۔ گھر میں اردو ہی بولی جاتی تھی۔ باہر سارے پنجابی یار دوست تھے۔ سکول میں بھی اکثر پنجابی دوست تھے، جو اردو کو ایک خاص پنجابی لہجے کے ساتھ بولتے تھے۔ آٹھویں جماعت میں، میں اور بڑے بھائی صاحب اردو صاف بولتے تھے لہذا "بھیّے" کہلائے جاتے تھے۔ استاد بھی پنجابی تھے (اصل نام یاد نہیں لیکن شاہ جی کے نام سے مشہور تھے) سر اردو غزل پڑھانے لگتے تو کہتے چل "بھیے" تو پڑھ، پھر اس کے بعد تشریح بھی ہم سے کرواتے جو ہم تیس مار خاں بننے کے چکر میں پہلے سے پڑھ کر آتے تھے۔ ان دنوں خوب غزلیں یاد بھی کیں، سمجھییں بھی اور خوب داد سمیٹی ۔۔۔

    کالج کی ابتدا سے ہی انگریزی زبان کا ایسا بھوت سوار ہوا کہ اب تک یہ حال ہے کہ نہ خدا ہی ملا نہ وصال صنم ۔۔۔ نہ اردو کے رہے نہ انگریزی کے۔ محفل پر آ کر احساس ہوا کہ اپنی مادری زبان سے کس قدر دور ہو گئے ہیں۔ الفاظ کے معنی تو دور تلفظ بھی درست ادا نہیں کرتے۔ لیکن امید ہے کہ اہل علم اور اردو زبان سے محبت رکھنے والے محفلین کی صحبت میں بہت سی خامیوں کا ان شاءاللہ ازالہ ہو جائے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  13. شکیب

    شکیب محفلین

    مراسلے:
    1,405
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Breezy
    :rollingonthefloor:
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1

اس صفحے کی تشہیر