اقتباسات سفر نصیب از مختار مسعود

محمد خلیل الرحمٰن نے 'مطالعہ کتب' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اپریل 15, 2017

  1. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    دور تک پھیلے ہوئےسلسلہ کوہ کی برف سے پٹی ہوئی خوبصورت وادیوں اور ڈھکی ہوئی بارُعب چوٹیوں کو ہوائی جہاز کے دریچہ سے پہلی بار دیکھا تو پتہ چلا کہ گمراہی میں بے ذوقی اور کفر میں کم نظری کو کتنا دخل ہے۔ اتنے خوش منظر اور پائیدار برف کدے کے ہوتے ہوئے لوگ کیونکر آتش پرست ہوگئے۔ آگ میں وہ کیا بات ہے جو برف میں نہیں۔ اُس میں حدّت اس میں شدّت، وہ طلائی یہ نقرئی، وہ دھواں دھواں یہ اُجلی اور بے داغ۔ اور دونوں معمولاتِ زندگی کے لیے درکار اور کارآمد۔ ایک جنگ میں آتشِ انتقام بھڑکائی جاتی ہے اور دوسری سرد جنگ کہلاتی ہے۔ شعر کا ایک مصرع اگر آتشِ شوق کے ذکر سے شروع ہو تو دوسرا آہِ سرد پر ختم ہوتا ہے۔ رزم ہو کہ بزم، اگر آگ لازم ہے تو یخ ملزوم۔
     
    • زبردست زبردست × 6
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    اگر تذبذب لاحق نہ ہوتا تو ہر شخص خدائی کا دعویٰ کر بیٹھتا ۔ بیچارگی بشریت کی پہچان ٹھہری اور بے نیازی مشیّت کا خاصّہ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 2
  3. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    جانوں کا نقصان ہمیشہ تحریکوں کے لیے زندگی کا پیغام ہوتا ہے۔ شہید قلبِ تاریخ است۔ عام فہم بات ہے جو سب کی سمجھ میں آجاتی ہے۔ ایک نوشتہء دیوار ہے جسے سب پڑھ لیتے ہیں ۔ مگر تاریخ کے ہر موڑ پر حقیقت خود پسند نظروں سے اوجھل ہوجاتی ہے۔ تحریر موڑ کے ایک طرف ہوتی ہے اور صاحبِ اقتدار دوسری طرف۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
    • زبردست زبردست × 1
  4. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    کون سی ریاست اور کیسی انتظامیہ۔ سیاسیات کے سبق کو نظر انداز کیجیے۔ سادہ سی بات یہ ہے کہ حکومت نزدیک سے کی جائے تو جمہوریت، دور سے کی جائے تو پادشاہت، خلق کے لیے ہو تو خلافت، خدا کے لیے ہو تو نیابت۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
    • زبردست زبردست × 1
  5. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    تسکینِ مسافر نہ سفر میں نہ حضر میں۔ سفر خواہ کتنا ہی طویل اور دلچسپ کیوں نہ ہو، حضر کی منزل خواہ کتنی دل آرام اور خوش منظر کیوں نہ ہو، حدِّ نظر ہمیشہ حدِ سفر سے آگے نکل جاتی ہے۔ مسافر نئے مقامات جتنے شوق سے دیکھتا ہے، اسی شوق سے اَن دیکھے مقامات کے نئے خواب بھی دیکھتا ہے۔ جہاں پہنچ کر آگے جانے کا راستہ بند ہوجائے وہاں دل میں ایک کانٹا سا چبھ جاتا ہے۔ جہاں پہنچ کر آگے کچھ سُجھائی نہ دے وہاں اس کانٹے کی خلش بڑھ جاتی ہے ۔
     
    آخری تدوین: ‏اپریل 15, 2017
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  6. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    فرصت اور فراغت کے بارے میں غلط فہمیاں عام ہیں۔ فرصت کا ساعت سے کوئی تعلق نہیں، یہ ایک کیفیت کا نام ہے۔ ساعت کو شکست دینا آسان ہے۔ اس کے لیے دمِ نزع ایک اشارہ بھی کافی ہوتا ہے۔ جیسے میدانِ جنگ میں اس جاں بلب تشنہ زخمی سپاہی کا اشارہ جس نے اپنی جان اور پانی پینے کی باری دوسرے زخمی ساتھی کے حق میں دے دی۔ یہ فراغت ان نا شکری لوگوں کو کہاں نصیب ہوتی ہے جن کی زندگی ہر قدم اور ہر فیصلے پر نفع نقصان کے گوشوارہ بناتے گذر جاتی ہے۔
     
    • زبردست زبردست × 4
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    وضعداری کی بنیاد یہ جذبہ ہے کہ انسان اپنی نظروں میں نیچا نہ ہوجائے۔ اس بنیاد پر لوگوں نے طرح طرح کی عمارتیں بنارکھی ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 2
  8. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    گوتم بدھ نے کہا تھا ، تم ایک زرد پتہ کی مانند ہو۔ موت کے کارندے تمہاری گھات میں لگے ہوئے ہیں۔ تم ایک سفر کا آغاز کررہے ہو۔ کوئی اور تمہاری مدد نہیں کرسکتا۔ کیا یہ بہتر نہ ہوگا کہ تمجلد ایک شمع بن جاؤ جو تمہاری خامیوں کو جلائے اور خوبیوں کو روشن کرے۔ تاکہ تمہیں وہ جوان زندگی میسر آئے جو بڑھاپے اور موت کی زد سے باہر ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  9. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    مثنوی مولانا روم میں حکایت ہے کہ ایک شخص سردی میں ٹھٹھرے ہوئے اژدھے کو مردہ سمجھ کر جنگل سے اپنے گھر لے آیا۔ گرمیاں آئیں تو یہ اژدھا اس کو نگل گیا۔ یہ اژدھا دراصل نفسِ انسانی تھا۔ برفانی تودے بھی مولانا کے تمثیلی اژدھے سے ملتے جلتے ہیں۔ ہر انسان کے دل میں وہ ہزاروں خواہشیں جن پر دم نکلتا ہے، منجمد ہوکر ایک برفانی تودے کی شکل اختیار کرلیتی ہیں۔ اقتدار کی گرمی ملے یا شباب کی حرارت، یہ تودے پگھل کر تیزی سے نشیب کی طرف جاتے ہیں۔ جو کچھ ان کی راہ میں آتا ہے سب خس و خاشاک کی برح بہہ جاتا ہے۔ اقتدار ہو کہ اقدار ، اسلاف کی شہرت ہو کہ سادات کی عزت۔ بعض برفانی تودے اتنے خطرناک ہوتے ہیں کہ جب وہ ٹوٹیں تو بہت کچھ ٹوٹ جاتا ہے، آئین اور اتحاد، حکومت اور ملک۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  10. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    مسافر نے کے۔ٹو کی چوٹی کو دیکھا اور سوچا، جہاں منظر خود ہم کلام ہوں وہاں تبصرے کی حاجت نہیں رہتی۔ ضرورت اس گوشِ ہوش کی ہے جو مناظر کی زبان سمجھتا ہو اور اُس چشمِ بینا کی جو برف پر لکھی ہوئی تحریر کو پڑھ سکتی ہو۔ ہم نشیں نے ہولے سے کان میں کہا، کس سوچ میں پڑے ہو۔ وہ دیکھو سامنے برف کی چوٹی پر زُبور کے اشعار درج ہیں۔ ایک دلنشیں لہجے میں اس نے ٹھہر ٹھہر کر پڑھا۔
    وہ اپنا حکم زمین پر بھیجتا ہے
    اس کا کلام تیز رَو ہے
    وہ برف کو اون کی مانند گراتا ہے
    وہ پالے کو راکھ کی مانند بکھیرتا ہے
    وہ یخ کو لقموں کی مانند پھینکتا ہے
    اس کی ٹھنڈ کون سہہ سکتا ہے​
    آخری دو مصرعے پہاڑ کی برفانی ڈھلوان پر لکھے ہوئے ہیں۔
    وہ اپنا کلام نازل کرکے ان کو پگھلادیتا ہے
    وہ (حکم اور) ہوا چلاتا ہے ، پانی بہنے لگتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    30,759
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    افسوس مسافر اپنی ابدی منزل کو روانہ ہو چکا۔ انا للہ و انا الیہ راجعون
     
    • متفق متفق × 4
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  12. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    19,501
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    لاجواب کتاب سے خوبصورت اقتباسات!

    بہت شکریہ خلیل الرحمٰن بھائی
     
    • متفق متفق × 2
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  13. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    5,920
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Happy
    آداب عرض ہے محمداحمد بھائی۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. فہد اشرف

    فہد اشرف محفلین

    مراسلے:
    4,435
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Cool
    مختار مسعود کی کیا ہی بات ہے۔ خوبصورت انداز تحریر خوبصورت اقتباسات۔
    نیرنگ خیال بھائی فیسبک پہ آپ کے ہاتھوں میں ”حرفِ شوق“ دکھی تھی، اس کے اقتباسات محفل پہ شامل کریں۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  15. نیرنگ خیال

    نیرنگ خیال لائبریرین

    مراسلے:
    16,872
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    میاں پڑھ تو لیں۔ ابھی تک تو بس یوں ہی بیٹھے ہیں۔ کتاب پڑھنے کی چیز تھوڑی ہے میاں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  16. آوازِ دوست

    آوازِ دوست محفلین

    مراسلے:
    1,816
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سراتنے شاندار اقتباسات پیش کرنے پر آپ کا بہت بہت شکریہ۔ آج کل کی تحریروں میں ایسی چاشنی اوردل موہ لینے والی گہرائی کم کم ہی نظر آتی ہے۔ یہ جان کر بہت افسوس ہوا کہ مختار مسعود اب ہم میں نہیں رہے۔ حق مغفرت کرے اُنہوں نے اپنے عہد کے عروج و زوال کو اپنے الفاظ کے ذریعے مجسم کر دیا ہے۔ آوازِ دوست کے مطالعے سے پتا چلتا ہے کہ وطنِ عزیز میں جو بیماریاں آج عوام کے لیے رسوا کن اور جان لیوا روپ اختیار کر چکی ہیں اُن کے بیج ارضِ پاک میں بہت پرانے اور بہت گہرے بوئے ہوئے ہیں۔ آزادی کا باب ابھی ادھورا ہے۔ صرف چہرے اور رنگ بدلے ہیں باقی نظام وہی پرانا ہے۔ نظام بدلنے کا نعرہ لگانے والے دل و دماغ کی بجائے پیٹ سے سوچتے ہیں اور اقتدرار کی راہیں اقدار سے جدا ہوئے ایک زمانہ ہوا۔ قحط الرجال کل بھی تھا اور آج بھی ہے فرق یہ ہے کہ آج احساسِ زیاں بھی جاتا رہا ہے۔ آزادی !!! جو کہ اپنی اصل میں قوموں کی عزت اور خودداری کی پہچان ہوتی ہے انشاء اللہ ایک دن ہمیں بھی حاصل ہوگی۔ مختار مسعود کو پڑھ کر دل میں ایک آوارہ سا خیال آتا ہے کہ اگر بیورو کریسی کا دانشور طبقہ روایتی دانش و مقصد فروشی سے نوکری اور ترقی پکی کرتے ہوئے دل مظلوم عوام کی حمایت میں اور اپنے اختیارات کی تلوار غاصب حکمرانوں کی حمایت میں برتنے کی تباہ کن منافقت سے باز رہتے تو شائد اقتدار کے ایوانوں کا کلچر بن جانے والی اخلاق باختگی کو موجودہ عروج و دوام نہ مل پاتا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر