سری لنکا کرکٹ‌ ٹیم پر لاہور میں‌ حملہ

جہانزیب نے 'آج کی خبر' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 3, 2009

  1. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question
    میں آپ کے استدلال اور دلیل سے متاثر ہوا ۔ اس سے آگے اب کچھ کہنے کی تاب نہیں ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. سعود الحسن

    سعود الحسن محفلین

    مراسلے:
    388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    جنگ کی تازہ خبر

    سر ی لنکن ٹیم پر حملہ کر نیوالے 2 دہشت گر دوں کی گر فتار ی کا دعویٰ
    لاہور…لاہور حملے سے متعلق حساس اداروں نے لاہور اور دیگرشہروں سے 5افراد کو گرفتار کیا ہے جن میں لبرٹی حملے میں ملوث دوافراد بھی شامل ہیں۔ ذرائع کے مطابق تمام ملزمان چند روزسے لاہور میں رہائش پذیرتھے جنھیں لاہور سمیت مختلف شہروں سے معاونت حاصل تھی ۔خفیہ اداروں نے سرچ آپریشن کو محدودو کرکے حاصل ہونے والی معلومات پر مخصوص مقامات پر چھاپے مار کر ان افراد کو گرفتار کیا ۔ذرائع کے مطابق حملو ں کی ابتدائی تحقیقات میں بھارتی ایجنسی راکے ملوث ہونے کے ثبوت ملے ہیں ۔ آیندہ اٹھارہ گھنٹو ں میں دہشت گردوں کی گرفتاری کے حوالے سے رپورٹ منظر عام لاجانے کا امکان ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. زینب

    زینب محفلین

    مراسلے:
    11,211


    یہ تو ہونا ہی تھا۔مجھ سے جو بات کر رہے تھے:grin:
     
  4. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    جنگ کے مطابق را نے حملہ کیا، نوائے وقت کے مطابق گرفتار شدہ لوگ کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھتے ہیں

    ۔ جنگ اخبار کہتا ہے گرفتار شدہ افراد نائیجیریا اور ازبک ہیں اور را نے انکی افغانستان میں تربیت کی ہے۔

    ۔ ملک کے دیگر نامور اخبارات ڈان اور بی بی سی کو جنگ اخبار کے ان را والے دہشتگردوں کا کوئی علم نہیں ہے اور اتنا وقت گذر جانے کے باوجود انہوں نے جنگ کی اس خبر کی کوئی تصدیق نہیں کی ہے۔

    ۔ نوائے وقت کے مطابق ان گرفتار شدگان کا تعلق کالعدم دہشتگرد تنظیموں سے ہے۔

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. ساقی۔

    ساقی۔ محفلین

    مراسلے:
    3,304
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
  6. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    ساقی برادر،

    ہو سکتا ہے کہ اس رپورٹ کی اہمیت ہو، مگر انصار عباسی جیسے لوگ بہت حد تک سنسنی پھیلانے کے ماہر ہیں۔
    ایسی رپورٹیں ہر ہر غیر ملکی دورے یا اسلام آباد ہوٹل پر بم حملے جیسے واقعات سے پہلے موجود ہوتی ہیں۔
    حتی کہ جب بمبئی میں دھماکے ہوئے تو انڈین ایجنسیز کے پاس بھی پاکستان سے یوں دہشتگردوں کے انڈیا آ کر دہشتگردی کرنے کی رپورٹیں موجود تھیں۔

    اور اب جبکہ جنگ اخبار نے کھل کر گرفتار شدگان کا تعلق نائیجیریا اور ازبک اور انڈین را کے اُنکو افغانستان میں تربیت دینے کا الزام بھی لگا دیا ہے تو میری تو دعا ہے کہ یہ بات اب سچ ہی ہو جائے ورنہ اگر یہ جھوٹ نکلا تو ملک کے سب سے بڑے میڈیا سنٹر کا یہ جھوٹ پاکستانی قوم کو بہت مہنگا پڑ سکتا ہے اور ہمارا بہت تمسخر اڑایا جائے گا۔
     
  7. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    یہ اونٹ کسی کروٹ بیٹھتا نظر نہیں آتا ۔۔ باقی اونٹوں کی طرح۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. خرم

    خرم محفلین

    مراسلے:
    2,294
    مغل جی اگر اونٹ کسی کروٹ بیٹھ گیا تو پھر گالیاں کسے دیں گے؟ یہاں یہی سب چلنا ہے۔ جیسا مُنہ ویسا تھپڑ۔ کافی سخت جان لوگ ہیں زندہ رہ جاتے ہیں درگت جتنی بھی بنے۔ کبھی کبھی تو سمجھ نہیں آتا کہ ایک الگ ملک بنا کر واقعی کیا کچھ اچھا کیا؟ ہم نے تو لڑتے ہی رہنا تھا۔ اگر ہندوستان متحد رہتا تو ہندوؤں سے لڑتے رہتے۔ اب بھی تو ایک دوسرے کو دشمن بنانے کے لئے اتنی محنت کرتے ہیں۔ ویسے بھی بُت پرستی کی عادت تو ہم میں گئی نہ۔ مٹی کے بُت گھروں میں سجانے کی بجائے دلوں میں اُتار لئے ہیں۔ مسئلہ کوئی بھی ہو، ہماری کوشش صرف یہی ہوتی ہے کہ ان بُتوں کو ٹھیس نہ لگ جائے۔ ایسے میں کیسا اونٹ اور کہاں کی کروٹ۔ گراوٹ ہی گراوٹ ہے اور بدقسمتی سے اس کی انتہا نظر نہیں‌آتی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  9. آبی ٹوکول

    آبی ٹوکول محفلین

    مراسلے:
    3,501
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Drunk
    ایک تو مجھے ان بی بی صاحبہ کی سمجھ نہیں آتی کہ جو کوئی بھی انکی مزاج کہ خلاف بات کہہ دے یہ فورا اس پر جیسے کا فتوٰی جڑ دیتی ہیں پہلے حامد میر جیسے ہوگئے تھے اب انصار عباسی بھی جیسے ہوگئے ہیں
    اللہ ہی بہتر جانتا ہے بی بی صاحبہ کہ حق الیقین کہ سورس کو ۔ ۔ ۔ ۔:nailbiting:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    کیا آپ پوری عبارت پڑھنے کے قابل نہیں؟ میں نے صاف طور پر تو لکھا ہے کہ میں اس رپورٹ کی یکسر مسترد نہیں کر رہی ہوں، مگر اس رپورٹ کے متعلق مجھے جو شکوک ہیں وہ میں نے ساتھ میں درج کر دیے ہیں۔
    اور حامد میر کے متعلق میں نے اس کے تھریڈ میں اسکی منافقت کے ثبوت بھی دے دیے تھے جب پاکستانی طالبان کا ملا عمر کھل کر دعوی کر رہا تھا کہ واہ کینٹ میں خوش کش حملہ آور اسکے طالبانی ٹولے سے تعلق رکھتے ہیں، مگر اس پاک میڈیا پر اس کھلم کھلے اعتراف کے باوجود حامد میر وہ شخص ہے جو ہر دفعہ طالبان کو بچانے کے لیے غیر ملکی را کی ملوث ہونے کی سازشی تھیوریاں لے کر آ جاتا ہے اور اس کھلم کھلے اعتراف کے باوجود اس دفعہ پھر ہمیشہ کی طرح حامد میر پھر طالبانی فتنے کا دامن صاف کر رہا تھا اور را اور افغانستان کا راگ الاپ رہا تھا۔ نجانے کتنے سالوں تک مزید میڈیا میں موجود یہ طالبانی ہمدرد ایسے ہی اس عوام کو بے وقوف و بے حس بناتے رہیں گے اور کب تک یہ بے حس و مردہ قوم ایسے منافقوں کے ہاتھ اندھی بنی بیٹھی رہے گی۔

    بھائی جی، جب میں حامد میر پر دلائل دے رہی تھی اُس وقت تو آپ نے کوئی جوابی دلائل دیے نہیں، مگر بعد میں پلٹ پلٹ کر پھر وہی اعتراضات لیکر پرانے مردے اکھاڑنے آپ اس نئے تھریڈ میں آ گئے ہیں۔ خود بتائیے میرے لیے کیسے ممکن ہے کہ ہر پرانی سے پرانی بات اور ہر پرانے سے پرانے اعتراض کا بار بار جواب دیتی رہوں؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    آبی ٹو کول،
    برادر آپ نیچے کی رپورٹ کو پھر غور سے پڑھیں۔ انصار عباسی جیسے لوگ سینئر صحافت کے نام پر دھبہ ہیں اور اصل میں صحافت کے نام پر حقائق پیش کرنے کے اپنے مخالفین پر سچے جھوٹے الزامات کا پلندہ باندھ دینا انکا وطیرہ ہے۔

    سلمان تاثیر سے آپ میں سے کچھ لوگوں کی جتنی بھی دشمنی ہو، اور انصار عباسی کی زرداری حکومت سے جتنا بھی اللہ واسطے کا بیر ہو، مگر انصاف یہ ہے کہ فریق مخالف کا موقف پورا سنا جائے۔ اور اسی طرح صرف جنگ کی ایک رپورٹ پر پورا الزام را پر ڈال کر طالبان کو معصوم ثابت کرنے کی بجائے اپنے دل و دماغ کی کھڑکھیاں کھلی رکھیں اور اگر تفتیش سے جنگ اخبار کی رپورٹ جھوٹی ثابت ہو اسے قبول کریں کیونکہ یہ بھی بہت ممکن ہے کہ یہ ہمارے ہی مذھبی جنونی ہوں جو ان سری لنکن ٹیم پر حملوں میں دیگر ہزاروں جرائم کی طرح ملوث ہوں۔

    **************

    لاہور: کار مکینک مشتبہ افراد زیرِ حراست [بشکریہ بی بی سی]
    علی سلمان
    بی بی سی اردوڈاٹ کام، لاہور
    [​IMG]
    [​IMG] [​IMG]
    لبرٹی چوک پر پولیس اہلکاروں کی جائے ہلاکت پر پھول چڑھائے گئے اور گارڈ آف آنر پیش کیا پاکستان کے صوبہ پنجاب کے پولیس چیف نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ سری لنکا کرکٹ ٹیم پر حملے کےسلسلے میں چند مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا ہے جبکہ گورنر پنجاب سلمان تاثیر نے کہا ہے کہ سری لنکا ٹیم کی سیکیورٹی کی ذمہ داری گورنر راج پر نہیں ڈالی جاسکتی۔
    پولیس نے ملزموں کے موبائل فون کی کالوں کے ذریعے چند مشتبہ افراد کو حراست میں لیا اور اس کارمکینک کو بھی شام تفتیش کیا گیا جس سے مبینہ طور پر ملزموں نے اپنی کار مرمت کرائی تھی۔ پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ جھنگ، رحیم یارخان، فیصل آباد اور لاہور کے سرحدی علاقوں سے بعض گرفتاریاں عمل میں آئی ہیں۔ حراست میں لیے جانے والوں کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ ان میں ایک کالعدم مذہبی تنظیم کے اراکین بھی شامل ہیں۔

    [​IMG]لاہور: چار حملہ آوروں کے خاکے جاری
    [​IMG]لاہور: حملے کا اگلا دن
    [​IMG]سری لنکن ٹیم کی واپسی
    [​IMG]سری لنکا کی ٹیم پر حملہ: تصاویر
    [​IMG]پاکستان کو بدنام کرنے کی سازش
    [​IMG]نشانہ براہ راست کھلاڑی تھے
    [​IMG]حملہ آور کون اور مقصد کیا ہے؟
    [​IMG]’دہشتگردوں کی بزدلانہ حرکت ہے‘

    انسپکٹر جنرل پنجاب پولیس خواجہ خالد فاروق نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی کہ پولیس نے چند مشتبہ افراد کو پکڑ لیا ہے لیکن انہوں نے ان کے بارے میں مزید تفصیلات بتانے سے انکار کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس سے تفتیش اور کیس خراب ہونے کا خطرہ ہے لیکن انہوں نے کہا کہ پولیس کی تفتیش ختم اس وقت ہی ہوگی جب تمام اصل ملزم پکڑے جائیں گے اور ابھی ایسا نہیں ہوا۔ پنجاب پولیس کے سربراہ نے بتایا کہ گورنر کے حکم پر اس بات کی تفتیش کی جارہی ہے کہ سیکیورٹی میں کہاں خامی رہ گئی تھی۔ مقامی ٹیلی ویژن پر ایک انٹرویو میں کمشنر لاہور خسرو پرویز نے اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ سیکیورٹی کے منصوبے میں کچھ خامیاں تھیں جو حکومت کو تسلیم کرنا چاہیں۔ کمشنر لاہور کا شمار ان افسروں میں ہوتا ہے جو شہباز شریف دور میں تعینات ہوئے تھے۔
    گورنر پنجاب سلمان تاثیر نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جب سری لنکا کی کرکٹ ٹیم پر حملہ ہوا اس وقت صوبے میں شہباز شریف دور کے پولیس افسر تعینات تھے اور سیکیورٹی کے اسی منصوبے پر عمل کیا گیا جو شہباز شریف دور میں بنا تھا اس لیے اس میں اگر کوئی خامی رہ گئی تو اس کی ذمہ گورنر پنجاب پر نہیں ڈالی جا سکتی۔
    انہوں نے کہا صرف لاہور کے پولیس سربراہ کو تبدیل کیا گیا تھا جبکہ آئی جی پنجاب شوکت جاوید نے خود ذمہ داری نبھانے سے انکار کیا۔انہوں نے کہا کہ سیکرٹری داخلہ سے لیکر نیچے تک باقی تمام افسر پرانے تھے اور سیکیورٹی کے لیے انہی کے منصوبے پر عمل درآمد کیا گیا۔
    انہوں نے شریف بردران کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ وہ وہی زبان بول رہے ہیں جو انڈیا میں پاکستان کے خلاف بولی جا رہی ہے۔ گورنر نے کہا کہ سابق وزیر اعلی شہباز شریف نے سی آئی ڈی کی رپورٹ فوری طور پر میڈیا کو تو دکھا دی لیکن حکام کو اس کےبارے میں نہیں بتایا۔ اس رپورٹ میں حکومت پنجاب کو کرکٹ ٹیم پر حملے کے خدشہ سے ہوشیار کیا گیا تھا۔ گورنر پنجاب نے جمعرات کو سی آئی ڈی کے سربراہ ایڈیشنل آئی جی ملک اقبال کو ان کے عہدے سے ہٹا کر افسر بکار خاص بنا دیا ہے جبکہ ٹریفک پولیس کے انچارج ڈی آئی جی غالب بندیشہ کو تبدیل کرکے دوسرے محکمہ میں بھجوادیا ہے۔ اس کے علاوہ بھی درجن بھر دیگر پولیس افسروں کے تبادلے کیے گئے ہیں۔
    [​IMG] [​IMG]
    گورنر پنجاب نے سری لنکا کا ٹیم پر حملے کے دوران جان دینے والے پولیس اہلکاروں کی ترفین میں شمولیت کی
    پاکستان کے ٹی وی چینلز پر بار بار ایک فٹیج دکھائی جارہی ہے جس میں ملزموں کو فائرنگ کے بعد اطمینان سے پیدل چلتے ہوئے اور موٹر سائیکلوں پر فرار ہوتے دکھایا جا رہا ہے اس موقع پر پولیس کی گاڑیاں بھی دکھائی گئیں جو ملزموں کے قریب سے گذر گئیں۔گورنر پنجاب نے کہا کہ اس فٹیج کو بنیاد بنا کر ان کی حکومت کو بلا جواز تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا حقیقت یہ ہے کہ ان ملزموں کی گرفتاری کرکٹ ٹیم کے سیکیورٹی پر تعینات اہلکاروں کی نہیں تھی گورنر کے بقول ان ذمہ داری صرف اتنی تھی کہ وہ سری لنکا ٹیم کو بچائیں جو انہوں نے بخوبی سرانجام دیں۔
    گورنر پنجاب نے کہا کہ اس بات کی تحقیقات ہو رہی ہیں کہ سیکیورٹی منصوبے میں کہا کمی رہ گئی البتہ انہوں نے کرکٹ ٹیم کو بلٹ پروف گاڑیاں فراہم کرنا ممکن نہیں تھا۔ انہوں نے کہا کہ کرکٹ بورڈ کے پاس دو ہی بڑی کوچیں جن پر دونوں ٹیمیں کو لے جایا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نہ تو ہمارے پاس بڑی کوچیں اور نہ ہی ہمارے پاس اتنی جگہ ہے کہ زیادہ کوچوں کو چلایا جاسکے۔
    گورنر پنجاب نے کہا کہ سیکیورٹی میں خامی کےبارے میں تحقیقاتی رپورٹ کل انہیں مل جائے گی جو میڈیاکے ذریعے عوام کے سامنے پیش کردی جائے گی۔
    گورنر سلمان تاثیر نے کہا کہ کل وہ ان پولیس اہلکاروں کے اعزاز میں تقریب کر رہے ہیں جنہوں نے اپنی جان پر کھیل کر سری لنکا کی کرکٹ ٹیم کو بچایا۔ آئی جی پنجاب پولیس خواجہ فاروق نے لبرٹی چوک پر پولیس اہلکاروں کی جائے ہلاکت کا دورہ کیا، پھول چڑھائے اور گارڈ آف آنر پیش کیا۔

    ******************

    ۔ تو اب صورتحال واضح ہوئی ہے کہ کرائم انویسٹیگیشن برانچ کا سربراہ ملک اقبال شہباز شریف کا بندہ تھا اور اُس نے اور نہ شہباز شریف حکومت نے نئے گورنر کو اس خطرے سے آگاہ کیا [مگر نئے گورنر پر الزامات لگاتے وقت میڈیا میں آگے آگے تھے]۔ اگر سری لنکن ٹیم کی سیکورٹی میں خامی تھی تو اسکے سب سے بڑے ذمہ دار پھر شہباز شریف اور ملک اقبال ہیں [ملک اقبال کو سلمان تاثیر نے اس مجرمانہ غفلت پر فورا فارغ کر دیا ہے]۔ کاش انصار عباسی جیسے سینئر صحافی الزامات کا پلندہ کھولنے سے پہلے ذرا تحقیق کر لیا کریں تو ہزاروں لاکھوں لوگ گمراہ ہونے سے بچ جایا کریں کیونکہ اصل ذمہ دار ان کے سامنے آئیں۔

    ۔ نیز جنگ اخبار میں جو نائیجیرین اور ازبک اور انکی را کے ہاتھوں افغانستان میں تربیت کی خبر چھپی ہے، اسکی ڈان اور بی بی سی جیسے دیگر نامور اخبارات نے تصدیق کی ہے اور نہ حکومت نے، بلکہ اسکے الٹ کالعدم تنظیم کا نام سامنے آ رہا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. ساجد

    ساجد محفلین

    مراسلے:
    7,113
    موڈ:
    Question
    افففففففففف۔ دماغ چکرا گیا ہے۔ دھاگہ کس لئیے شروع کیا گیا تھا اور کس طرف چلا گیا۔:notlistening:
    دوستوں سے انتہائی معذرت کے ساتھ عرض کرتا ہوں کہ یہ دھاگہ اب بحث کی بجائے بک بک کا وسیلہ بن رہا ہے۔
    شمشاد بھائی ، حرکت میں آئیے نہیں تو پانی پت کی چوتھی جنگ شروع ہونے والی ہے۔:sad2:
     
  13. آبی ٹوکول

    آبی ٹوکول محفلین

    مراسلے:
    3,501
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Drunk
    بہن جی مجھے اس باب میں دلائل سے کوئی غرض نہیں میں تو فقط وہ الہامی زریعہ جاننا چاہتا ہوں کہ جس کی بدولت آپ فی الفور اپنے مخالف نقطہ نظر رکھنے والے پر جیسے یا پھر صحافت کہ نام دھبہ جیسے الفاظ کا فتوٰی جڑ دیتی ہیں اگر سورس آپ کا بھی یہی تجزئیے اور اخباری رہپورٹنگ ہے اور جو کہ یقینا یہی ہے تو پھر مجھے حیرت ہے آپ کہ فتاوٰی پر ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  14. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بہتر یہی ہے کہ اب یہ بحث ختم ہی کر دی جائے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  15. خرم

    خرم محفلین

    مراسلے:
    2,294
    آہو جی وگرنہ محفل کا بھی وہی حشر ہونا ہے جو پاکستان کا ہوتا ہے۔
     
  16. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    مجھے مجبوراً یہ دھاگہ مقفل کرنا پڑا۔
    اگر کسی رکن کو کچھ کہنا ہے تو مجھے ذ پ کریں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    میں نے شمشاد بھائی کو دو عدد ذاتی پیغامات اس تھریڈ کے متعلق ارسال کیے تھے جس کے جواب میں انہوں نے مہربانی فرما کر تھریڈ میں یہ پوسٹیں شامل کرنے کے لیے اسے اوپن کیا ہے۔
    میں اب اس تھریڈ میں صرف موضوع پر صرف اپنے خیالات لکھوں گی اور معزز اراکین کے ذاتی اعتراضات کا جواب دینے سے معذرت کرنا چاہتی ہوں۔ شکریہ۔

    *****************

    [​IMG]
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. مہوش علی

    مہوش علی لائبریرین

    مراسلے:
    3,003
    جنگ اخبار کے کردار پر ایک نظر

    جنگ اخبار پاکستان میں فروخت ہونے والا سب سے بڑا روزنامہ ہے۔ اور دعوی کیا جاتا ہے کہ اسکے اینکرز اور سٹاف پاکستان میں سب سے زیادہ پروفیشنل اینکرز اور سٹاف ہے۔

    جب جنگ اخبار The News نے کل کو بڑی شہ سرخی لگائی کے ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور وہ نائیجیرین اور اربکوں پر مشتمل ہیں جنہیں را نے افغانستان میں تربیت دی ہے [وغیرہ وغیرہ] ۔۔۔۔ تو باخدا میں نے دل سے دعا مانگنی شروع کر دی کہ اللہ تعالی یہ بات تو اب سچ ہی کر دے، ورنہ اگر یہ جھوٹ کا پلندہ نکلا تو بحیثیت قوم یہ ہماری اتنی سبکی و بے عزتی ہے کہ جہاں عزت دار اور غیرت مند لوگوں اور قوموں کے سر شرم سے جھک جائیں۔

    افسوس!

    حد افسوس کہ میری تمنا میری دعا قبول نہ ہو سکی اور جنگ وہ منافق اخبار ہے تو پل بھر میں پنتیرے بدلتا ہے اور اپنی چولی بدلتا ہے اور آج بنا کسی غیرت و شرم کے بالکل الٹ خبر چھاپ رہا ہے۔
    جنگ اخبار کے اینکرز ایسے جھوٹ بول کر اور اور سچ میں جھوٹ کی آمیزشیں کر کے قوم کو مغالطوں میں ڈال کر اصل حقائق سے گمراہ کرنا چاہتا ہیں تاکہ قوم بس کنفیوزڈ رہے اور کبھی انکے سامنے مذھبی جنونیوں کے اصل جرم کی داستان بھی پہنچ جائے تو وہ اس کنفیوژن میں کوئی ٹھیک اور ٹھوس فیصلہ نہ کر پائیں۔

    ******************

    پرانے زمانے میں بادشاہوں کے دور میں ایک اصطلاح ہوتی تھی "بادشاہ گر"۔
    یہ "بادشاہ گر" وہ سازشی ٹولہ ہوتا تھا جو خود تو بادشاہ نہیں بن سکتا تھا مگر سازشیں کر کے اپنی مرضی کے کمزور شہزادوں کو تخت پر بٹھا کر خود پس پردہ رہتے ہوئے حکومت کرتا تھا۔

    جنگ اخبار کے انصار عباسی اور حامد میر جیسے اینکرز ایسے ہیں سازشی "بادشاہ گر" ہیں۔
    انصار عباسی سینئر صحافت کے نام پر سلمان تاثیر حکومت کے خلاف جھوٹے الزامات لے کر آ گیا اور اسکے ساتھ ناچ میں شہباز شریف اور کرائم انویسٹیگیشن برانچ کا ملک اقبال بھی شامل جو میڈیا میں فورا سیکورٹی رپورٹ لے کر فورا سے پیشتر پہنچ گئے، مگر ان کی مجرمانہ غفلتیں یہ کہ حکومتی اتھارٹیز کو یہ تھریٹ لیٹر نہیں دکھایا۔

    اب جبکہ کالعدم مذھبی جنونی تنظیم کا اس حملے کے پیچھے ہاتھ واضح ہو گیا ہے تو لگتا ہے کہ ملک اقبال بھی جیسے اس سازش میں شامل ہے اور اتنا بڑا تھریٹ ہونے کے باوجود جان بوجھ کر حکومت کو اندھیرے میں رکھتا ہے۔ اس کو صرف افسر بکار بنا دینا کافی نہیں، بلکہ اسکے خلاف بھی انویسٹیگیشن ہونی چاہیے ہیں۔

    اور جنگ اخبار اور اسکے اینکرز انصار عباسی کا حال یہ ہے کہ یہ اخبار سلمان تاثیر حکومت کے خلاف جھوٹے الزامات لگانے پر تو سب سے آگے ہے، مگر جب سلمان تاثیر وضاحت پیش کر کے معاملات کو صاف کرتا ہے تو پھر یہ اخبار اسے سازش کر کے پھر عوام کو گمراہ رکھنے کے لیے چھپا جاتا ہے [سلمان تاثیر کی معاملات کی وضاحت دیگر اخبارات میں شائع ہوئی، مگر اس فتنے کی جڑ جو جنگ اخبار اور اسکے انصار عباسی جیسے اینکرز بذات خود ہیں، اُس نے اس خبر کا مکمل بائیکاٹ کر کے ابھی تک عوام کو اندھیرے میں رکھا ہوا ہے]۔ فیصلہ اب ہمیں کرنا ہے کہ واقعی کیا یہ ہی سینئر صحافت ہے، یا پھر سینئر صحافت کے نام پر دھبہ اور انتہا درجے کی سازشی کینہ پروری ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    ایک مراسلہ جو وہاں لگایا کہ یہ لڑی مقفل تھی ۔۔ سو اب یہاں دیکھیں :

    صاحبان و صاحبات ! آپ وضاحتوں کے پھیرے لگائیں یا معذرت کے چکر۔ میں تو سمجھتا ہوں کہ :
    ہزار حرف برہنہ ہیں کوئی کیا لکھے ----------------------- امیرِ شہر کو القاب سے ذرا پہلے
    کہ میرے نزدیک سب ہی ایک تھالی کے چٹے بٹے ہیں ۔ دودھ کادھلا کوئی بھی نہیں ۔ہم ( عوام ) صرف ان کی انا اور موشگافیوں کا ایندھن بنتے ہیں ، کمی کمین کی زندگی ہماری ہے کما کر ہم دیں (‌محصول ) موج یہ اڑا تے پھرتے ہیں ۔ عوام کی اکثریت کو جاہل رکھنے وا لے یہی ہیں ۔۔ نتیجہ کے طور پر کوئی جے الطاف ، کوئی جے بھٹو، کوئی جے نواز، کوئی جے مشرف اور کوئی جے فلاں جے فلاں کے نعرے لگاتے ان کے پیچھے سگان ِ شہر کی صورت دم ہلاتے پھریں ۔۔ میں ایک بات جانتا ہوں کہ ’’ لکھنے والے ‘‘ ( لکھنے والے پر ہی زور ہے ) کسی تعصب اور وابستگی سے منہا ہو کر تو کچھ بہتری کی کوشش کرسکتے وگرنہ دوسرے لفظوں‌میں یہ سب ’’ علم برائے شر ‘‘ کے مطیع اور مامور من الشیطان ہیں ۔ واللہ اعلم بالصواب ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  20. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,357
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    آپ کو بھی کوئی غلط فہمی ہو رہی ہے شاید میری برداشت کی عادت سے ، کہ آپ کا رویہ دن بدن مزید ہتک آمیز ہوتا چلا جا رہا ہے ۔۔ کافی عرصے سے سے آپ بجائے میرے مراسلے میں موجود موضوع سے متعلق گفتگو کرنے کے میری ذات کو موضوع بنا لیتے ہیں ۔۔ جوابا میں ایسا تو نہیں کروں گا مگر لہجہ تلخ ضرور ہو سکتا ہے ۔۔ اسلیے اس ضمن میں آئندہ احتیاط کیجیے کہ نہ تو میں آپ سے مرعوب ہوں اور نہ مجھے آپ سے کوئی ہمدردی ہے ، یہ بھی میں عادت سے مجبور ہوں کہ ذاتی تنقید پر مشتعل نہیں ہوتا مگر ہر ایک کی برداشت کی حد ضرور ہوتی ہے ۔۔ :)
    وسلام
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر