1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

سخن آباد۔۔ منظور ہاشمی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 4, 2008

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سخن آباد



    منظور ہاشمی



    فضائیں نغمہ پرور، خلوتِ جاں شاد کرتے ہیں
    ہم اپنے خانۂ دل میں، سخن آباد کرتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ترتیب وانتخاب : راحت حسن

    ٭ مصنّف : منظور ہاشمی.17 بدر باغ، علی گڑھ 202002
    فون نمبر : 2701425 -0571
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    انتساب

    اپنے والدین اور ان کے چمن کی چوتھی فصل

    سمیر نتاشا
    نبیل عنبرین
    سہیم اور اور
    عامر ریم
    امروز
    فواذ
    کے نام
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نعت پاک​


    اک گھرانہ پھول والا، ایک گھر خوشبو کا ہے
    بس اسی کے فیض سے، سارا نگر خوشبو کا ہے
    سبز گنبد چومتے رہتے ہیں، جتنے بھی پرند
    ان کے لب خوشبو کے ہیں، اک ایک پَر خوشبو کا ہے
    مدتیں گزریں کہ گزرا تھا، کوئی مشکیں بدن
    آج تک ان راستوں ہی میں، گزر خوشبو کا ہے
    باغِ جنّت کا چراغاں کیا، کہ شہرِ شوق میں
    ہر علاقہ نور کا ہے، ہر شجر خوشبو کا ہے
    یوں ہی اٹھلا کے نہیں چلتی، وہاں بادِ نسیم
    ایک اک جھونکا ہَوا کا، نامہ برخوشبو کا ہے
    ہرطرف پھولوں کا موسم ہے، سرِ راہِ خیال
    جیسے ان کو سوچتے رہنا، سفر خوشبو کا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نعت شریف


    نذر، میرے نبیؐ کے جب، ہوجائیں
    لفظ اور شعر، باادب ہوجائیں
    اپنی آنکھوں سے سوچ کر دیکھوں
    وہ مری دیدبان اب ہوجائیں
    اور یوں ہو، بدن کے سب اعضاء
    ذکر میں ان کے، نطق و لب ہوجائیں
    میرا دل، میری آنکھیں، میری جان
    ان پہ قربان، سب کے سب ہوجائیں
    اپنے دکھ درد پہ، میں واری جاؤں
    مرحمت کا اگر، سبب ہوجائیں
    کاش گن لیں، غلام زادوں میں
    ہم بھی پھر، صاحبِ نسب ہوجائیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ///////

    غزلیں


    /////////
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شرارِ جاں سے دہک رہے ہیں چراغ اور میں
    سیاہ شب میں چمک رہے ہیں چراغ اور میں

    بصارتیں بھی، وہاں وہاں بانٹ دی گئی ہیں
    جہاں جہاں، دیر تک رہے ہیں،چراغ اور میں

    گلاب رت کی بشارتیں ہم سے مل رہی ہیں
    کہ جلتے جلتے مہک رہے ہیں،چراغ اور میں

    کبھی تو بستی میں روشنی کی بھی قدر ہوگی
    ابھی تو در در بھٹک رہے ہیں چراغ اور میں

    نئی سحر نے بھی دھند میں منھ چھپا لیا ہے
    دھویں سے سر اپنا ڈھک رہے ہیں چراغ اور میں

    دیارِ ظلمت میں، پرچمِ نور کیوں اٹھایا؟
    اسی لیے اب کھٹک رہے ہیںچراغ اور میں

    تمام شب کا خمار ٹوٹے، تو نور پھوٹے
    ابھی تو پلکیں جَھپک رہے ہیں چراغ اور میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وفورِ شوق میں، جب بھی کلام کرتے ہیں
    تو حرف حرف کو حُسنِ تمام کرتے ہیں

    گَھنے درختوں کے سائے کی عمر، لمبی ہو
    کہ ان کے نیچے، مسافر قیام کرتے ہیں

    اُسے پسند نہیں، خواب کا حوالہ بھی
    تو ہم بھی آنکھ پہ نیندیں، حرام کرتے ہیں

    نہ خوشبوؤں کو پتہ ہے، نہ رنگ جانتے ہیں
    پرند پھولوں سے، کیسے کلام کرتے ہیں؟


    رواں دواں ہیں، ہوا پر، سواریاں کیسی؟
    جنھیں درخت بھی، جھک کر سلام کرتے ہیں

    چمن میں جب سے اسے، سیر کرتے دیکھ لیا
    اُسی ادا سے غزالاں، خرام کرتے ہیں

    اب اس کو یاد نہ ہوگا، ہمارا چہرہ بھی
    تمام شاعری، ہم جس کے نام کرتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دھوپ بن میں، پگھل رہا ہوں میں
    لیکن آہن میں، ڈھل رہا ہوں میں

    راستہ، دوسرا نکالا ہے
    اب تو پانی پہ چل رہا ہوں میں

    یہ تراش و خراش، راس آئی
    کٹ رہا ہوں، تو پھل رہا ہوں میں

    اب کڑے فیصلوں کی باری ہے
    کشمکش سے، نکل رہا ہوں میں

    راستہ تو بدل کے دیکھ لیا
    اب کے منزل بدل رہا ہوں میں

    اُس شجر کو ہرا بھرا رکھوں؟
    جس کے سائے میں جل رہا ہوں میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    جو کھلی چمن میں نئی کلی، تو وہ جشنِ صوت و صدا ہوا
    کہیں بلبلیں ہوئیں نغمہ زن، کہیں رقصِ بادِ صبا ہوا

    کوئی پھول، خوشبو سے چور سا،کوئی رنگ حلقۂ نور سا
    کوئی حسن غیرتِ حور سا،ترے نام سارا لکھا ہوا

    وہ بچھڑ گیا، تو پتہ چلا، کہ تھا سخت کتنا یہ حادثہ
    گیا نور جیسے چراغ کا، کہ بدن سے عکس جدا ہوا

    جو سوار راہِ زیاں کے تھے، کہیں نام اب کے نہ کر سکے
    نہ جنوں میں سرخ ہوئی زمیں، نہ سکوں میں دشت ہرا ہوا

    مری جنگ، میرے ہی ساتھ تھی، کہ حریف بھی تھا، حلیف بھی
    کبھی دوستوں میں گھرا ہوا، کبھی دشمنوں سے ملا ہوا

    وہ ہَوا چلی، کہ مرے چمن، ہوئے راکھ اور دھویں کے بن
    کہ ہرے شجر بھی سلگ اٹھے، یہ بھری بہار میں کیا ہوا؟

    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بہت گمان تھا، موسم شناس ہونے کا
    وہی بہانہ بنا ہے، اداس ہونے کا

    بدن کو کاڑھ لیا، زخم کے گلابوں سے
    تو شوق پورا کیا، خوش لباس ہونے کا

    فضا مہکنے لگے، روشنی جھلکنے لگے
    تو یہ نشاں ہے، ترے آس پاس ہونے کا

    گلوں کے بیچ، وہ چہرہ کھلا، تو ہر تتلی
    تماشا کرنے لگی، بدحواس ہونے کا


    اُسے بھی شوق تھا، بے وجہ دل دکھانے کا
    سو ہم نے کھیل رچایا، اداس ہونے کا

    نئے سفر،پہ روانہ تو ہم بھی ہوجاتے
    بس انتظار تھا موسم کے راس ہونے کا

    نظر میں خاک ہوئے، گلرخاں بھی جب سے ہمیں
    شرف ملا ہے، ترے روشناس ہونے کا

    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    خوشبو نے جب وجد میں آکر رقص کیا
    غنچہ و گل نے ہاتھ ملا کر رقص کیا

    مٹی بھی پہلی بارش سے مست ہوئی
    پانی کے دو گھونٹ چڑھا کر رقص کیا

    صحنِ چمن میں رنگوں کا آنچل لہرایا
    تتلی نے جب پَر پھیلا کر رقص کیا

    صبر و ضبط کی سب زنجیریں ٹوٹ گئیں
    زنداں کی خوشخبری پاکر رقص کیا

    اس میں مرنے والے جب شہداء کہلائے
    ہم نے اس کوچے میں جاکر رقص کیا

    وحشت کی شدّت کو سرد کیا یوں بھی
    انگاروں کا فرش بچھا کر رقص کیا

    گویائی کا فن آنکھوں نے سیکھ لیا
    خاموشی کو نطق بنا کر رقص کیا

    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شدید گرمی میں پہلے ان کو ندی میں نہلا دیا گیا ہے
    ہَوا میں پھر گیلے بادلوں کو جھٹک کے پھیلا دیا گیا ہے

    گزرنے والی ہے اپنے تختِ رواں پہ صرصر کی شاہزادی
    تمام شہروں میں جنگلوں میں ہوا سے کہلا دیا گیا ہے

    گرجتے بادل کڑکتی بجلی مچلتی موجوں کی منھ زبانی
    جو ہونے والا ہے اس کا احوال پہلے بتلا دیا گیا ہے

    سخی کے دولت کدے پہ جاری ہے کھیل اب بھی نوازشوں کا
    کہ صرف وعدوں کی بھیک سے سائلوں کو بہلا دیا گیا ہے

    وہی پرانے دکھوں کے منظر نئی رتوں کے نصاب میں ہیں
    ذرا سا خاکہ بدل کے پچھلے سبق کو دُہرا دیا گیا ہے

    کِھلا دئے پھول روشنی کے فلک پہ تاروں کی انجمن میں
    گلاب زادوں کی کہکشاں کا زمیں کو تحفہ دیا گیا ہے





    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کمالِ حسن و جمال اگر دیکھنے کی خواہش ہے زندگی میں
    تو دیکھ لینا کسی دن اس کو ہمارے لفظوں کی روشنی میں

    یہ تتلیاں دیوداسیاں ہیں کِھلے ہوئے پھول مندروں کی
    نثار کرتی ہیں عمر ان کے طواف میں رقصِ بندگی میں

    گلاب کی اشکبار آنکھوں سے کیا ٹپکنے لگا لہوسا؟
    یہ حال کیا کرلیا گیا ہے؟ ہمارے زخموں کی دوستی میں

    سفید اجلے پرند اڑ کر چلے تو ہیں آسماں کی جانب
    مری دعا کے سفیر جاتے ہوں جیسے دربارِ خُسروی میں


    وہ اسم پھر ذہن و دل کے میرے قریب چمکا کچھ اس طرح سے
    چراغ جیسے جلا دیا ہو کسی نے زنداں کی تیرگی میں

    بجھے ہوئے سیکڑوں چراغوں کی راکھ آنکھوں میں بھر گئی ہے
    مگر اضافہ بھی کر گئی آنسوؤں کی بہتی ہوئی ندی میں

    بیان کیا ہے مراد کیا ہے کسے وسیلہ بنا رہے ہو
    نہ جانے کیا گل کِھلا رہے ہو تم اب کے میدانِ شاعری میں









    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بجھی آنکھوں کو بھی پُرآب رکھنا چاہتے ہیں
    کہ ہم صحرا کو بھی شاداب رکھنا چاہتے ہیں

    ہمیں مٹّی کی یہ پوشاک پیاری ہے تو اس کو
    حریفِ اطلس و کمخواب رکھنا چاہتے ہیں

    شفق کے پاس ہو خونِ تمنا کا ٹھکانہ
    وہاں اک منظرِ نایاب رکھنا چاہتے ہیں

    تمنا رنگ لائے گی کسی بھی دن تو ہم بھی
    رگوں میں خون کو بیتاب رکھنا چاہتے ہیں

    جو اپنی نیند کی پونجی بھی کب کی کھو چکی ہیں
    انہیں آنکھوں میں ہم اک خواب رکھنا چاہتے ہیں

    ہماری آنکھ میں اک بوند تو باقی ہے اب بھی
    اسی قطرے میں اک سیلاب رکھنا چاہتے ہیں


    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بہت گمان اسے اپنے سرخ رو کا تھا
    مگر یہ رنگ کسی اور کے لہو کا تھا

    میں اس میں ڈوب گیا ہوں تو کیا تعجب ہے
    کہ ہر طرف مرے سیلاب رنگ و بو کا تھا

    تمام حرف ونوا خرچ کرکے بیٹھ گئے
    ہمیں بھی شوق بہت اس سے گفتگو کا تھا

    اِس آسمان سے میں ہار مان تو جاتا
    مگر سوال زمیں کی بھی آبرو کا تھا

    ہر ایک بوند کا دینا پڑا حساب مجھے
    کہ جاں پہ قرض تھا جتنا وہ سب لہو کا تھا





    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پیدا ہونے سے پہلے مر جاتا ہے
    میرا کل بھی آج گزر جاتا ہے

    لفظوں کی تصویریں بننے لگتی ہیں
    اس کا لہجہ جادو سا کر جاتا ہے

    آوازوں کی گود میں پلنے والا بھی
    سناٹے کی آہٹ سے ڈر جاتا ہے

    ایسا وقت بھی آجاتا ہے جب اپنی
    جان بچائے رکھنے میں سر جاتا ہے


    پھولوں کا موسم ہے اس کا ہمراہی
    سارا رستہ خوشبو سے بھر جاتا ہے

    مٹّی کی خوشبو بھی پیچھا کرتی ہے
    پہلا گھر بھی باہر کے گھر جاتا ہے

    اچھے خاصے سیدھے سادے لوگوں کو
    بس اک لمحہ دیوانہ کر جاتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سفر منجملۂ اسباب سے آگے بھی ہے
    کوئی منزل خیال و خواب سے آگے بھی ہے

    چمک اٹھتی ہے کوئی شےافق کے پار جیسے
    تحیّر جلوۂ نایاب سے آگے بھی ہے

    تعلق کی حدیں بھی دور تک پھیلی ہوئی ہیں
    کہ قصّہ عشق کے ابواب سے آگے بھی ہے

    دیارِ شب میں روشن ہیں نئے رستے سفر کے
    کوئی گھر انجم و مہتاب سے آگے بھی ہے


    اشارے کر رہا ہے سرخ کرنوں کا کنارا
    کوئی شعلہ اسی برفاب سے آگے بھی ہے

    سمندر کا سفر تو اک مسلسل امتحاں ہے
    ہَوا کا جال اس گرداب سے آگے بھی ہے

    سمندر کی خموشی میں تباہی تہ نشیں ہے
    کہ طوفاں ساحلِ پایاب سے آگے بھی ہے

    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کِھلی ہے چاندنی اور شاہزادے کی سواری آنے والی ہے
    کنیزانِ چمن آراستہ ہیں آج باری آنے والی ہے

    ہَواؤں سے لرزتی کانپتی شاخیں وظیفہ پڑھتی رہتی ہیں
    کہ یہ ساعت گزر جائے تو پھر بادِ بہاری آنے والی ہے

    تماشا دیکھنے میں اس قدر کھوئے کہ یہ بھی بھول بیٹھے ہیں
    کہ اس ناٹک میں اب اپنی بھی باری آنے والی ہے

    دیارِ جاں میں لگتا ہے کہ اک آتش فشاں پھر پھٹنے والا ہے
    ہمارے بند ہونٹوں تک دلوں کی آہ و زاری آنے والی ہے

    مرے لفظوں کے ماتھے پرمعانی کی نئی تحریر روشن ہے
    کہ حصے میں مرے اب کے سخن کی شہر یاری آنے والی ہے


    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,431
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    خواب کچھ شاداب شاخوں کے دکھا کر لے گیا
    زرد پتوں کو ہر اک جھونکا اڑا کر لے گیا

    موم کے پتلے تھے ہم اور گرم ہاتھوں میں رہے
    جس نے جو چاہا ہمیں ویسا بنا کر لے گیا

    تھک چکا تھا میں مگر ہو شوقِ منزل کا بھلا
    راستے بھر اپنے ہاتھوں پر اٹھا کر لے گیا

    جس کے پانی کو دعا دیتی رہی پیاسی زمیں
    ایک دن فصلیں وہی دریا بہا کر لے گیا

    راستے کی چیز تھا میں جس کی نظریں پڑ گئیں
    وہ مسافر اپنی مٹھی میں دبا کر لے گیا


    ***
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر