1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

زیرک کی پسندیدہ اردو نظمیں

زیرک نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 26, 2019

  1. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سنو
    اے موم کی گڑیا
    اب اس دور میں
    کوئی مجنوں نہیں بنتا
    کوئی رانجھا نہیں ہوتا
    قدم دو چار چلنے سے
    سفر سانجھا نہیں ہوتا
    تو ان بیکار لمحوں پہ
    سنو
    رونے کا ڈر کیسا؟
    جسے پایا نہیں تم نے
    اسے کھونےکا ڈر کیسا؟​
     
  2. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ذرا دیکھ کے چال ستاروں کی
    کوئی زائچہ کھینچ قلندر سا
    کوئی ایسا جنتر منتر پڑھ
    جو کر دے بخت سکندر سا

    کوئی چِلہ ایسا کاٹ کہ پھر
    کوئی اس کی کاٹ نہ کر پائے
    کوئی ایسا دے تعویذ مجھے
    وہ مجھ پر عاشق ہو جائے

    کوئی فال نکال کرشمہ گر
    مِری راہ میں پھول گلاب آئیں
    کوئی پانی پھُوک کے دے ایسا
    وہ پیئے تو میرے خواب آئیں

    کوئی ایسا کالا جادو کر
    جو جگمگ کر دے میرے دن
    وہ کہے مبارک جلدی آ
    اب جیا نہ جائے تیرے بِن

    کوئی ایسی رہ پہ ڈال مجھے
    جس راہ سے وہ دلدار ملے
    کوئی تسبیح دم درود بتا
    جسے پڑھوں تو میرا یار ملے

    کوئی قابو کر بے قابو جن
    کوئی سانپ نکال پٹاری سے
    کوئی دھاگہ کھینچ پراندے کا
    کوئی منکا اِکشا دھاری سے

    کوئی ایسا بول سکھا دے نا
    وہ سمجھے خوشگفتارہوں میں
    کوئی ایسا عمل کرا مجھ سے
    وہ جانے، جان نثار ہوں میں

    کوئی ڈھونڈھ کے وہ کستُوری لا
    اسے لگے میں چاند کے جیسا ہوں
    جو مرضی میرے یار کی ہے
    اسے لگے میں بالکل ویسا ہوں

    کوئی ایسا اسمِ اعظم پڑھ
    جو اشک بہا دے سجدوں میں
    اور جیسے تیرا دعویٰ ہے
    محبوب ہو میرے قدموں میں

    پر عامل رک، اک بات کہوں
    یہ قدموں والی بات ہے کیا؟
    محبوب تو ہے سر آنکھوں پر
    مجھ پتھر کی اوقات ہے کیا

    اور عامل سن یہ کام بدل
    یہ کام بہت نقصان کا ہے
    سب دھاگے اس کے ہاتھ میں ہیں
    جو مالک کل جہان کا ہے​
     
  3. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    اب کون کہے تم سے
    ہر خوابِ محبت کی
    تعبیر نہیں ہوتی

    زین شکیل​
     
  4. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سائیں
    حق سائیں
    برحق سائیں
    ہم بد رنگے
    عاجز
    جھوٹے
    تم
    سچ سائیں

    زین شکیل​
     
  5. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    لوگو
    اپنے قدم گِنا کرو
    آہستہ آہستہ چلا کرو
    جھک جھک کر دیکھا کرو
    کوئی کُچلا تو نہیں گیا
    کچھ مَسلا تو نہیں گیا
    پیروں میں چھالوں کی زنجیر پہنا کرو
    چونک چونک کر
    پلٹ پلٹ کر دیکھا کرو
    یہ جو پیچھے پیچھے چلا آرہا ہے
    تمہیں ترازو میں تولتا آ رہا ہے
    کوئی اور نہیں
    خدا ہے

    نور الہدیٰ شاہ​
     
  6. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    لوگو
    آؤ
    ایک بار
    فقط ایک بار
    صدقِ دل سے
    خود پر ماتم کریں
    بال نوچیں
    دیواروں سےسر ٹکرائیں
    مٹھی بھر بھر مٹی
    بالوں میں بھریں
    کوئلے کی راکھ منہ پر ملیں
    لعنت بھیجیں خود پر
    دھاڑیں مارمار روئیں
    سینہ کوبی کریں
    ہائے ہائے ہم مرگئے
    وائے کہ بدبودار لاشیں نکلےہم
    فرشتے بھی ہمیں چھوڑگئے

    نور الہدیٰ شاہ​
     
  7. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ٹھیلے پر رکھا ہے ملک
    ملک لے لو
    رعایا لے لو
    سب سے سستی رعایا لے لو
    نہ آہ بھرے گی نہ فریاد کرے گی
    ری سیل ویلیو ہے
    بار بار بکے گی
    ملک جس قیمت پر چاہے لے لو
    ہر کام میں کام آئے گا
    جس طرف چاہو گے مڑ جائے گا
    استعمال ہوتا چلا جائے گا
    بازار میں ایسا سستا مال نہیں ملے گا
    ملک لے لو
    رعایا لے لو

    نور الہدیٰ شاہ​
     
  8. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    میرے خاموش خدا کو کہنا
    شور بڑھ گیا ہے کتنا تو
    شہر کا شہر ہو گیا ہے بہرا
    گونگے الفاظ تڑپ رہے ہیں حلق میں
    کون ہے کون، جو بات کرے؟
    وحشتوں کو بندھی ہوئی ہیں پگڑیاں
    زندہ جہنم کی کھانی ہے
    یہ جو زور سے بج رہے ہیں لاؤڈ اسپیکر
    بھڑکا رہا ہے آگ ان میں سے کوئی​
     
  9. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    عید آنے کو ہے

    میں نے سوچا بہت
    پھول بھیجوں کہ مہکار بھیجوں اسے
    چند کلیوں سے شبنم کے قطرے لیے
    اس کے رخسار پر آنسوؤں کی طرح
    خوبصورت لگیں گے اسے بھیج دوں
    پھر یہ سوچا نہیں
    اس کے عارض کہاں؟ گُل کی پتیاں کہاں؟
    اس کے آنسو کہاں؟ شبنم کے قطرے کہاں؟​
     
  10. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    رات کے غلافوں میں
    خواب تم نہیں رکھنا
    چاند سے نہیں کہنا کچھ ہمارے بارے میں
    چغلیاں ستاروں کے بس میں ہیں تو کرنے دو
    خاموشی کی چادر کو سر پہ تان کر تنہا
    شاعری پڑھا کرنا
    شاعری بھی میری ہو
    اور آئینے جیسی
    جس کو تم جہاں سے بھی
    پڑھ کے دیکھ لو تو بس
    خود کو تم نظر آؤ​
     
  11. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    شام کا وقت
    بارش کی ٹِپ ٹِپ
    سُونا کمرہ
    چائے کا کپ
    تیری یاد
    خاموشی
    اداسی
    شاعری کی کھلی کتاب
    اور اک آنسو​
     
  12. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    بول کنارے

    کانچ کی چُوڑی ہاتھ پہ توڑ کے
    ٹکڑوں میں اک خواب سجایا
    بادل میں اک شکل بنا کر
    پورے سال کی بارش آنکھ سے برسا دی
    رخساروں سے پلک اٹھا کر
    اس کے تیز کنارے سے اک چھید کیا اور
    ایک لکیر لپک کر آئی
    رات کی کالی چادر پر اک تارا ٹوٹا
    اپنی دعا میں انجانا اک نام لیا
    اور لمبے بالوں کی اک سیڑھی
    شام کی کھڑکی سے لٹکائی
    کتنے بوجھل پہر گزارے
    جانے کس بے درد سے پل میں
    اپنے پانو کو خواب کی بہتی جھیل میں دَھر کر
    نیند کی ایک صدی سے ڈر کر
    کھڑکی کے کونے کو چھوڑا
    اور سڑک سے ریزہ ریزہ جسم اٹھایا
    ایک سہیلی باغ میں بیٹھ کے کبھی نہ روئی
    لیکن دل ہی دل میں کھیل بہت یہ کھیلا
    بات کوئی جو ساتھ کسی کے یکدم کہہ دی
    لکڑی کو دھیرے سے چھوا
    اور اپنے نام کو اس کے نام کے ساتھ ملا کر ریت پہ لکھا
    ایک اک حرف کو درد کے نوکیلے نشتر سے کاٹ دیا
    دوری کے اک دھندلے پل میں
    پھول کی ایک اِک پتی توڑ کے طاق میں رکھی
    خوابوں سے تعبیر نکالی
    کاغذ سے اک ناﺅ بنائی
    آنسو کی گہری بارش سے جل تھل کو اک سار کیا
    کشتی میں اس دل کو رکھا
    بول کنارے
    کتنا پانی آج کی شب دریا میں آیا؟

    عنبرین صلاح الدین​
     
  13. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    تمثیل

    کتنی صدیوں کے انتظار کے بعد
    قربتِ یک نفس نصیب ہوئی
    پھر بھی تو چپ اداس کم آمیز

    اے سلگتے ہوئے چراغ بھڑک
    درد کی روشنی کو چاند بنا
    کہ ابھی آندھیوں کا شور ہے تیز

    ایک پل مرگِ جاوداں کا صلہ
    اجنبیت کے زہر میں مت گھول
    مجھ کو مت دیکھ لیکن آنکھ تو کھول

    احمد فراز​
     
  14. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کنیز
    حضور آپ اور نصف شب مِرے مکان پر؟
    حضور کی تمام تر بلائیں میری جان پر
    حضور خیریت تو ہے حضور کیوں خموش ہیں
    حضور بولیے کہ وسوسے وبالِ ہوش ہیں
    حضور، ہونٹ اس طرح کپکپا رہے ہیں کیوں؟
    حضور آپ ہر قدم پہ لڑکھڑا رہے ہیں کیوں؟
    حضور آپ کی نظر میں نیند کا خمار ہے
    حضور شاید آج دشمنوں کو کچھ بخار ہے
    حضور مسکرا رہے ہیں میری بات بات پر
    حضور کو نہ جانے کیا گماں ہے میری ذات پر
    حضور منہ سے بہہ رہی ہے پیک صاف کیجیے
    حضور آپ تو نشے میں ہیں، معاف کیجیے
    حضور کیا کہا، میں آپ کو بہت عزیز ہوں
    حضور کا کرم ہے ورنہ میں بھی کوئی چیز ہوں
    حضور چھوڑیے ہمیں ہزار اور روگ ہیں
    حضور جائیے کہ ہم بہت غریب لوگ ہیں

    احمد فراز​
     
  15. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    اگر
    دو، چار دن
    ہفتہ، مہینہ
    میرا کوئی لفظ
    مرا کوئی شعر
    نظر تم کو نہ آ پائے
    کوئی دکھ سکھ کا لمحہ
    کوئی شکوہ شکایت بھی
    آپ اپنی موت ہی مر جائے
    تو مجھ کو جان کر مُردہ
    مجھے اک بات بتلاؤ
    خوشی کتنی مناؤ گے؟
    غم کتنا مناؤ گے؟​
     
  16. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    اکثر

    آنسو راہ بھٹک جاتے ہیں
    آنکھیں بنجر ہو جاتی ہیں
    سپنے مردہ ہو جاتے ہیں
    نیندیں ماتم کر لیتی ہیں
    اکثر ایسا ہو جاتا ہے
    بھولی بسری یادیں آ کر
    دل میں درد جگا دیتی ہیں
    روح کو زخم لگا دیتی ہیں
    بے چینی کے اس عالم میں
    ساری رات گزر جاتی ہے
    آنکھیں سرخ رہا کرتی ہیں
    سر میں درد رہا کرتا ہے
    اکثر

    زین شکیل​
     
  17. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    شاعروں کے بختوں میں
    رونقیں نہیں ہوتیں
    یہ عجیب ہوتے ہیں
    جنگلوں، پہاڑوں میں اک نگر بساتے ہیں
    خواب کے سہارے پر
    شہر میں تو رہتے ہیں
    بَس مگر نہیں پاتے

    زین شکیل​
     
  18. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کس طرح کہیں تجھ سے
    تیرے روٹھ جانے سے
    ہم دکھوں کے ماروں پر
    دو ٹکے کے لوگوں نے
    انگلیاں اٹھائی ہیں

    زین شکیل​
     
  19. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سنو محبت کے صاف مُنکر
    بجا کہا کہ، کہیں‌ نہیں ہوں
    تمہارے دل کے کسی بھی گوشے میں‌ یاد بن کر
    نہیں ہوں اب میں
    غبارِ ہجراں‌ کے سلسلوں نے
    وصال رُت کی تمام یادیں
    تمہارے دل سے دھکیل دی ہیں‌
    مگر میری جاں‌
    سمے ملے تو یہ غور کرنا
    تمہاری آنکھوں کی سرحدوں پر
    ابھرنے والی ہر ایک نس میں‌
    یہ سرخ ڈورے جو بُن رہا ہے
    لہو نہیں‌ ہے
    وہ میں‌ ہوں جاناں
    کہ جس لہو کو طواف کر کے
    تمہارے دل میں ہی لوٹنا ہے

    عاطف جاوید عاطف​
     
  20. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    2,879
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    منتظر ایوبی کے
    غزنوی کی آمد کے
    بِن سروں‌ کے لاشوں‌ پر
    بین کرتے جاتے ہیں‌
    اپنے اپنے بچوں‌ کے
    چھید چھید جسموں‌ کو
    بے یقین آنکھوں‌ سے
    دیکھتے ہی جاتے ہیں‌
    اور دعائیں‌ کرتے ہیں‌
    ربِ ذوالجلال تُو، عدل کرنے والا بھی
    منصف و مدبر بھی
    رحمتوں‌ کا ہالہ بھی
    ہم پہ تنگ ہو گیا
    آخری نوالہ بھی
    مشرقی ایوانوں ‌سے، مغربی ایوانوں ‌تک
    امن کے سفیروں‌ نے
    ہونٹ سی لیے اپنے
    آج چپ ملالہ بھی؟
    ربِ ذوالجلال ہم
    منتظر ایوبی کے
    غزنوی کی آمد کے

    عاطف جاوید عاطف​
     

اس صفحے کی تشہیر