زیرک کی پسندیدہ اردو نظمیں

زیرک نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 26, 2019

  1. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    ہنستے بولتے لوگ بھی ہم کو حیراں حیراں تکتے ہیں
    تو ہی بتا اے راہِ تمنا! ہم کس دیس سے آئے ہیں
    تم اِک چاک گریباں دیکھ کے ہم کو رُسوا کرنے لگے
    اچھا کِیا جو ہم نے تم سے دل کے چاک چھپائے ہیں
    چَین کہاں لینے دیتی ہے درد کی میٹھی میٹھی آگ
    ہم نے چھپ کر دامنِ شب میں کتنے اشک بہائے ہیں
    ایک ذرا سی بات تھی لاکھوں افسانے مشہور ہوئے
    ہم بھی تیرے پیار کے صدقے دیوانے مشہور ہوئے
    ہم کو تنہا تنہا چھوڑ کے کس نگری کو چلتے ہو
    چُپ چُپ چلنے والے لمحو! ٹھہرو، ہم بھی چلتے ہیں
    اپنی یادوں میں بسا رکھی ہیں کیا کیا صورتیں
    سنگدل، گل رو، سمن بر، شعلہ آسا صورتیں
    اور ہوں گے جن کے سینے میں اجالا کر گئیں
    ہم کو یارو! دے گئیں داغِ تمنا صورتیں
    جب بھی تنہائی کے آنگن میں سنی قدموں کی چاپ
    درد بن بن کر ابھر آئیں سراپا صورتیں
    سوچ کے صحرا میں مرجھایا ہوا نخلِ خیال
    چھوڑ کے ایسے گئی ہیں ہم کو تنہا صورتیں
    خاک میں مِلتے دیکھے ہم نے کیا کیا راج دُلارے لوگ
    کیسی سُندر سندر کلیاں، کیسے پیارے پیارے لوگ
    میر ملیں تو ان سے کہیو اب بھی اس دکھ نگری میں
    تیرے بہانے، اپنے فسانے، کہتے ہیں دُکھیارے لوگ
    دھوپ کو اپنے گھروندوں میں سمیٹے رکھو
    جانے کب برف پہاڑوں سے اترنا چاہے
    کون تجھ کو میرے ہونے سے رہائی دے گا
    جو ملے گا میرا ہم شکل دکھائی دے گا

    احمد شمیم​
     
  2. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    رات اندھیری، بن ہے سُونا، کوئی نہیں ہے ساتھ
    پوَن جھکولے پیڑ ہلائیں، تھر تھر کانپیں پات
    دل میں ڈر کا تیر چبھا ہے سینے پر ہے ہاتھ
    رہ رہ کر سوچوں، یوں کیسے پوری ہو گی رات؟
    برکھا رُت ہے اور جوانی، لہروں کا طوفان
    پیتم ہے نادان، میرا دل رسموں سے انجان
    کوئی نہیں جو بات سُجھائے، کیسے ہو سامان
    بھگوان! مجھ کو راہ دکھا دے مجھ کو دے دے گیان
    چپُو ٹوٹے، ناؤ پرانی دور ہے کھیون ہارا
    بیری ہیں ندی کی موجیں اور پیتم اس پار
    سن لے سن لے دکھ میں پکارے اک پریمی بیچارا
    کیسے جاؤں کیسے پہنچوں کیسے جتاؤں پیار؟
    کیسے اپنے دل سے مٹاؤں بِرہ اگن کا روگ
    کیسے سجھاؤں پریم پہیلی کیسے کروں سنجوگ
    بات کی گھڑیاں بیت نہ جائیں، دور ہے اس کا دیس
    دور دیس ہے پیتم کا اور میں بدلے ہوں بھیس

    میرا جی​
     
  3. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سلسلۂ روز و شب

    خدا نے الاؤ جلایا ہوا ہے
    اسے کچھ دکھائی نہیں دے رہا ہے
    ہر اک سمت اس کے خلا ہی خلا ہے
    سمٹتے ہوئے، دل میں وہ سوچتا ہے
    تعجب کہ نورِ ازل مِٹ چکا ہے
    ٭
    بہت دور انسان ٹھٹکا ہوا ہے
    اُسے ایک شعلہ نظر آ رہا ہے
    مگر اس کے ہر سمت بھی اک خلا ہے
    تخیّل نے یوں اس کو دھوکا دیا ہے
    ازل ایک پل میں ابد بن گیا ہے
    ٭
    عدم اس تصور پر جھنجھلا رہا ہے
    نفس دو نفس کا بہانہ بنا ہے
    حقیقت کا آئینہ ٹوٹا ہوا ہے
    تو پھر کوئی کہہ دے یہ کیا ہے، وہ کیا ہے؟
    خلا ہی خلا ہے، خلا ہی خلا ہے

    میرا جی​
     
  4. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    جوہو کے کنارے

    افق پہ دور
    کشتیاں ہی کشتیاں جہاں تہاں
    کوئی قریب بارِ نور سے عیاں تو کوئی دور کہر میں نہاں
    ہر ایک ایسے جیسے ساکن و خموش و پر سکون، ہر ایک
    بادباں ہے ناتواں
    مگر ہر ایک ہے کبھی یہاں کبھی وہاں
    سکوں میں ایک جستجوئے نیم جاں
    حیاتِ تازہ و شگفتہ کو لیے رواں دواں
    افق پہ دور کشتیاں ہی کشتیاں جہاں تہاں
    ٭
    قریب شورِ ساحلِ خمیدہ ہے
    ہر ایک موج یوں رمیدہ ہے
    کہ جیسے آبدیدہ ہے
    کہ دور افق پہ کشتیاں نہیں ہیں کوئی روح پارہ پارہ
    غم گزیدہ ہے
    کنارِ آب سیپیاں ہی سیپیاں ہیں ایک عکسِ ناتواں
    اچانک اک گھٹا اُٹھی
    اچانک اس کے پار آفتاب چھپ گیا
    اچانک ایک پل میں کشتیاں بھی مٹ گئیں
    کنارِ آب پر کھلی ہوئی پڑی ہوئی ہیں سیپیاں ہی سیپیاں

    میرا جی​
     
  5. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کیفِ حیات

    نرم اور نازک، تند اور تیز
    میٹھا میٹھا درد مِرے دل میں جاگا
    میرا ہے، میرا ہے جھُولا خوشیوں کا
    مست، منوہر، میٹھا میٹھا درد مِرے دل میں جاگا
    جھُول رہی ہوں، جھُول رہی ہوں سندر جھُولا خوشیوں کا
    نرم بہاؤ تند اور تیز
    پیارے گھاؤ جنوں انگیز
    میٹھا میٹھا درد مِرے دل میں جاگا
    جیون کی ندی رُک جائے
    رُک جائے تو رُک جائے
    رُک جائے تو رُک جائے
    صرف مرے احساس کی ناؤ چلتی جائے، نرم اور تیز
    گرم لہو رگ رگ میں مچلتا
    ساتھ ہے سپنوں کے پیتم کا
    خوشیوں کا جھُولا ہے میرا
    جھُول رہی ہوں، جھُول رہی ہوں، نرم بہاؤ، نرم اور تیز
    جیون کی ندی رُک جائے، رُک جائے جیون کا راگ
    رُک جائے تو رُک جائے
    رُک جائے تو رُک جائے
    رُک جائے تو رُک جائے
    میٹھا میٹھا درد مرے دل میں جاگا
    جھُول رہی ہوں، جھُول

    میرا جی​
     
  6. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    تمثیل

    کتنی صدیوں کے انتظار کے بعد
    قربتِ یک نفس نصیب ہوئی
    پھر بھی تو چپ اداس کم آمیز

    اے سلگتے ہوئے چراغ بھڑک
    درد کی روشنی کو چاند بنا
    کہ ابھی آندھیوں کا شور ہے تیز

    ایک پل مرگِ جاوداں کا صلہ
    اجنبیت کے زہر میں مت گھول
    مجھ کو مت دیکھ لیکن آنکھ تو کھول

    احمد فراز​
     
  7. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    نا سپاس

    روبرو ہیں مرے سب میرے تراشے ہوئے بت
    میرے شہکار، مرے نقش پرانے سارے
    کون جانے کہ یہ کن خوابوں کی تعبیریں ہیں
    یوں تو اظہارِ غمِ جاں کے بہانے سارے

    کوئی گوتم، کوئی عیسیٰ، کوئی مریم، کوئی جون
    درد کی آگ لیے، حسن کی تقدیس لیے
    خود نمائی پہ ہیں مغرور سبھی کے پیکر
    کاوشِ تیشۂ آذر کو فراموش کئے

    احمد فراز​
     
  8. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    غم بکتے ہیں

    غم بِکتے ہیں
    بازاروں میں
    غم کافی مہنگے بِکتے ہیں
    لہجے کی دُکان اگر چل جائے تو
    جذبے کے گاہک
    چھوٹے بڑے ہر غم کے کھلونے
    منہ مانگی قیمت پہ خریدیں
    میں نے
    ہمیشہ اپنے غم اچھے داموں بیچے ہیں
    لیکن
    جو غم مجھ کو آج ملا ہے
    کسی دُکاں پر رکھنے کے قابل ہی نہیں ہے
    پہلی بار میں شرمندہ ہوں
    یہ غم بیچ نہیں پاؤں گا

    جاوید اختر​
     
  9. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    بنجارہ

    میں بنجارہ
    وقت کے کتنے شہروں سے گزرا ہوں
    لیکن
    وقت کے اس اک شہر سے جاتے جاتے مڑ کے دیکھ رہا ہوں
    سوچ رہا ہوں
    تم سے میرا یہ ناتا بھی ٹوٹ رہا ہے
    تم نے مجھ کو چھوڑا تھا جس شہر میں آ کر
    وقت کا اب وہ شہر بھی مجھ سے چھوٹ رہا ہے
    مجھ کو بِدا کرنے آئے ہیں
    اس نگری کے سارے باسی
    وہ سارے دن
    جن کے کندھے پر سوتی ہے
    اب بھی تمہاری زُلف کی خوشبو
    سارے لمحے
    جن کے ماتھے پر ہے روشن
    اب بھی تمھارے لمس کا ٹیکا
    نم آنکھوں سے
    گُم سُم مجھ کو دیکھ رہے ہیں
    مجھ کو ان کے دکھ کا پتا ہے
    ان کو میرے غم کی خبر ہے
    لیکن مجھ کو حکمِ سفر ہے
    جانا ہو گا
    وقت کے اگلے شہر مجھے اب جانا ہو گا
    وقت کے اگلے شہر کے سارے باشندے
    سب دن سب راتیں
    جو تم سے ناواقف ہوں گے
    وہ کب میری بات سُنیں گے
    مجھ سے کہیں گے
    جاؤ اپنی راہ لو رَاہی
    ہم کو کتنے کام پڑے ہیں
    جو بیتی سو بِیت گئی
    اب وہ باتیں کیوں دھراتے ہو
    کندھے پر یہ جھولی رکھے
    کیوں پھِرتے ہو کیا پاتے ہو
    میں بے چارہ
    اک بنجارہ

    جاوید اختر​
     
  10. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    محبت خواب جیسی ہے

    کسی بھی آنکھ کی پتلی پہ چپکے سے
    اترتی ہے، نشاں سا چھوڑ جاتی ہے
    یقیں کے رنگ دھندلا کر
    گماں سا چھوڑ جاتی ہے
    محبت کا کوئی کلیہ، کوئی قانون
    لوگوں کی سمجھ میں آ نہیں سکتا
    کوئی بھی اس کے گہرے بھید ہرگز پا نہیں سکتا
    چمکتی دھوپ کی ان چلچلاتی زرد تاروں سے
    بُنا ہے اس کو فطرت نے
    یہ سب رنگوں سے برتر ہے
    مگر ہر رنگ اس میں گھل گیا گویا
    چھوؤ تو ہاتھ کی پوریں گلابی ہوں
    سماعت میں اترتی دھیمی دھیمی چاپ جیسی ہے
    کتابِ زیست کے بھولے ہوئے سے باب جیسی ہے
    محبت خواب جیسی ہے

    فاخرہ بتول​
     
  11. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    محبت کی نہیں تم نے

    اگر تم کو محبت تھی
    تو تم نے راستوں سے جا کے پوچھا کیوں نہیں منزل کے بارے میں
    ہواؤں پر کوئی پیغام تم نے لکھ دیا ہوتا
    درختوں پر لکھا وہ نام، تم نے کیوں نہیں ڈھونڈا؟
    وہ ٹھنڈی اوس میں بھیگا، مہکتا سا گلاب اور میں
    مرے دھانی سے آنچل کو تمہارا بڑھ کے چھو لینا
    چُرانا رنگ تتلی کے، کبھی جگنو کی لو پانا
    کبھی کاغذ کی کشتی پر بنانا دل کی صورت اور اس پر خواب لکھ جانا
    کبھی بھنورے کی شوخی اور کلیوں کا وہ اِٹھلانا
    تمہیں بھی یاد تو ہو گا؟
    اگر تم کو محبت تھی، تو تم یہ ساری باتیں بھول سکتے تھے؟
    نہیں جاناں
    محبت تم نے دیکھی ہے، محبت تم نے پائی ہے
    محبت کی نہیں تم نے

    فاخرہ بتول​
     
  12. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    مسیحا (ڈاکٹر حیدر شیرازی کے نام)

    خُدا نے جب شفا تقسیم سارے زمانے میں
    تمہاری انگلیوں پر اس نے اپنے ہاتھ سے لکھا
    کسی بیمار کو چھو لو
    شفا اس کا مقدر ہے
    تم ہر بیمار کو اپنا سمجھتے ہو
    مداوا اس کا کرتے ہو
    ہر اک بیمار کے چہرے پہ رونق تم سے قائم ہے
    دعا عیسٰی کی تم کو لگ گئی شاید
    تمہی امید ہو اس کی
    شفا ہاتھوں پہ تم نے رب سے لکھوا لی
    مسیحا ہو

    فاخرہ بتول​
     
  13. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    محبت حادثہ ہے

    محبت حادثہ ہے
    حادثے سے بچ نکلنے کی
    کوئی تدبیر کر لو
    اس سے پہلے کہ خواب ہو جاؤ
    جسے ہم حادثہ کہتے ہیں
    جیون کو گھڑی بھر میں
    مِٹا کر خاک کرتا ہے
    کوئی الزام دھرتا ہے
    کبھی معذوریوں کے جال میں قیدی
    بنا کر چھوڑ دیتا ہے
    یہ بندھن توڑ دیتا ہے
    محبت حادثہ ہے
    حادثے سے بچ نکلنے کی کوئی تدبیر کر لو
    اس سے پہلےکہ خواب ہو جاؤ

    فاخرہ بتول​
     
  14. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سفر

    تھکن سارے ہی چہروں پر
    لکھی تھی اس سفر نے
    وہ سر تا پا مسافت میں بندھے تھے
    اچانک میٹھی میٹھی دھوپ نے انگڑائی سی لی
    یہ صبح کی کرن پہلی
    تھکن کو لے گئی تھی
    تھکے ہاروں سے سونے کی لگن کو لے گئی تھی
    نئی صبح نئی امید لے کے آ گئی تھی
    مسافر کے لیے یہ عید لے کر آ گئی تھی

    فاخرہ بتول​
     
  15. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    مان لے

    کسی ہاتھ پر کسی لوح پر
    جو لکھا نہیں
    وہی ایک حرفِ گماں ہیں ہم
    خطِ گمشدہ میں لکھی گئی
    کوئی اجنبی سی زباں ہیں ہم
    کسی اور خطۂ درد پر
    جو گزر سو گزر گیا
    کوئی بے نشاں سا نشاں ہیں ہم
    ٭
    کبھی اپنے ہونے کے واہمے سے نکل کے دنیا کو دیکھئے
    تو نہ کھل سکے کہ کہاں ہیں ہم؟
    مری جاں! ہماری یہ داستاں
    اسی آسماں کی چھت تلے
    انہی کہکشاؤں کے درمیاں
    کئی لاکھ بار کہی گئی
    کئی لاکھ بار سنی گئی
    ٭
    یہ حدیثِ نغمۂ بے صدا
    کبھی سرخ پھولوں کی تیز خوشبو میں رک گئی
    کہیں آنسووں میں رواں ہوئی
    یہ وہ شمعِ شامِ وصال ہے
    جو تمام رات جلی کبھی
    کبھی ایک پل میں دھواں ہوئی
    کبھی روشنی کا یقیں بنی
    کبھی تیرگی کا گمان ہوئی
    تو جو ہو گیا اسے مان لے

    امجد اسلام امجد​
     
  16. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    کبھی کبھی

    کبھی کبھی ان حبس بھری راتوں میں
    جب سب آوازیں سو جاتی ہیں
    آدھی نیند کی گھائل سی مدہوشی میں
    اک خواب انوکھا جاگتا ہے
    میں دیکھتا ہوں
    گرد کی اس چادر سے ادھر
    جو میرے اس کے بیچ تنی ہے
    وہ بھی تنہا جاگ رہا ہے

    امجد اسلام امجد​
     
  17. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    خلافِ قانون

    لوگ کہتے ہیں پانی میں لکڑی نہیں ڈوبتی
    اور وجہ یہ بتاتے ہیں
    لکڑی کا اپنا حجم
    چونکہ پانی کی اتنی ہی مقدار کے
    بالمقابل زیادہ نہیں
    اس لئے وہ سدا
    سطح آبِ رواں پہ رہے گی، مگر
    ڈوبنے کا عمل اس پہ ہو گا نہیں
    ازل سے یہ قدرت کا قانون ہے
    اور قانون قدرت بدلتا نہیں
    پہ میں سوچتا ہوں
    اگر یہ حقیقت میں قانون ہے
    تو تیرے غم کے دریا میں
    دل کیسے ڈوبا؟

    امجد اسلام امجد​
     
  18. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    آج

    یہ آج جو کل میں زندہ تھا
    وہ کل جو آج میں زندہ ہے
    وہ کل جو کل کے ساتھ گیا
    وہ کل جو ابھی آئندہ ہے
    گزر چکے اور آنے والے جتنے کل ہیں جتنے کل تھے
    ان کا کوئی وجود نہ ہوتا
    ہم اور تم بے اسم ہی رہتے
    آج اگر موجود نہ ہوتا
    ممکن ہے آئندہ صرف اک خواب ہو جس کی
    تعبیروں میں جینے والی ساری آنکھیں ڈوب چکی ہوں
    (لیکن وہ خود بجھ کر بھی رخشندہ ہو)
    ہو سکتا ہے
    رفتہ کی دہلیز پہ ٹھہری
    بھید بھری اس آنکھ کے اندر
    چھپا ہوا آئندہ ہو
    آئندہ کے منہ پہ پڑی یہ غیب کی چادر
    اٹھ جائے تو ہو سکتا ہے
    اس میں ہمارا اور تمہارا
    ایک اک لمحہ زندہ ہو
    (روشن اور تابندہ ہو)
    لیکن یہ بھی دھیان میں رکھنا
    ہو سکتا ہے آنے والے کل میں ہمارا آج نہ ہو
    اور اس کی جگہ
    اک ایسے وقت کا سایہ سا رقصندہ ہو، جو
    ماضی حال اور مستقبل کے
    تین کناروں والے اس دریا سے یکسر باہر ہو
    (اور کہیں سے جنم ہو اس کا، اور کہیں پہ ظاہر ہو)
    ٭
    ماضی حال اور مستقبل
    تین کناروں والے اس دریا کے اندر
    اپنی اپنی موجیں مارتے چلتے ہیں
    پھر اس لہر میں ڈھلتے ہیں
    جو صبحِ ازل کو اچھلی تھی اور اب تک کہیں معلق ہے
    اسی معلّق لہر کے بے خود قطرے ہیں ہم
    ہم اور ہم سے اربوں، کھربوں
    (گزر چکے اور آنے والے)
    سو اے وقت کی حیرت میں کھو جانے والی آنکھ! ٹھہر
    آج کے پُل پر رک کر آگے پیچھے دیکھ
    روشنی اور تاریکی شاید، ایک ہی ڈال کے پتے ہیں
    لمحوں کا یہ فرق نظر کا دھوکہ ہے
    وقت کی اس نا وقتی کے سیلاب میں شاید
    آج ہی واحد لمحہ ہے
    عمرِ رواں کی دہشت میں کھو جانے والی آنکھ ٹھہر

    امجد اسلام امجد​
     
  19. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    بانٹ کے کھاؤ

    بانٹ کے کھاؤ، اس میں، بانٹ کے بوجھ اٹھاؤ
    جس رستے میں سب کا سکھ ہو، وہ رستہ اپناؤ
    اس تعلیم سے بڑھ کر جگ میں کوئی تعلیم نہیں
    کہہ گئے فادر ابراہیم

    کتے سے کیا بدلہ لینا گر کتے نے کاٹا
    تم نے گر کتے کو کاٹا، کیا تھوکا کیا چاٹا
    تم انسان ہو یارو، اپنی کچھ تو کرو تعظیم
    کہہ گئے فادر ابراہیم

    جھوٹ کے سر پر تاج بھی ہو تو جھوٹ کا بھانڈا پھوڑو
    سچ چاہے سولی چڑھوا دے، سچ کا ساتھ نہ چھوڑو
    کل وہ سچ امرت ہو گا، جو آج ہے کڑوا نیم
    کہہ گئے فادر ابراہیم

    ساحر لدھیانوی​
     
  20. زیرک

    زیرک محفلین

    مراسلے:
    4,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Buzzed
    سنبھل اے دل

    سنبھل اے دل، تڑپنے اور تڑپانے سے کیا ہو گا
    جہاں بسنا نہیں ممکن، وہاں جانے سے کیا ہو گا

    چلے آؤ کہ اب منہ پھیر کر جانے سے کیا ہو گا
    جو تم پر مر مٹا، اس دل کو تڑپانے سے کیا ہو گا

    ہمیں سنسار میں اپنا بنانا کون چاہے گا؟
    یہ مسلے پھول سیجوں پر سجانا کون چاہے گا؟
    تمناؤں کو جھوٹے خواب دکھلانے سے کیا ہو گا

    تمہیں دیکھا، تمہیں چاہا، تمہیں پوجا ہے اس دل نے
    جو سچ پوچھو تو پہلی بار کچھ مانگا ہے اس دل نے

    جنہیں ملتی ہیں خوشیاں، وہ مقدر اور ہوتے ہیں
    جو دل میں گھر بناتے ہیں، وہ دلبر اور ہوتے ہیں
    امیدوں کو کھلونے دے کے بہلانے سے کیا ہو گا

    بہت دن سے تھی دل میں، اب زباں تک بات پہنچی ہے
    وہیں تک اس کو رہنے دو، جہاں تک بات پہنچی ہے
    جو دل کی آخری حد ہے، وہاں تک بات پہنچی ہے

    جسے کھونا یقینی ہو، اسے پانے سے کیا ہو گا

    ساحر لدھیانوی​
     

اس صفحے کی تشہیر