رقصِ شرر۔۔ ع واحد

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 5, 2007

ٹیگ:
  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    افسانۂ حیات کا عنواں بدل گیا
    کیا کیجیے کہ آج کا انساں بدل گیا
    یوسف کو بے گناہ اسیری میں ڈال کر
    کچھ یوں ہوا کہ شہرِ نگاراں بدل گیا
    اس چشمِ نیم باز کے بھر پور وار سے
    ایک پیرِ خانقاہ کا ایماں بدل گیا
    قوس قزح کے رنگ لچک کر بکھر گئے
    رُوئے زمین سارا گلستاں بدل گیا
    کچھ رمز گاہِ زیست میں ایسی گزرگئی
    سارا تمیز مشکل و آساں بدل گیا
    نوحہ کناں ہے کب سے زمانے کے حال پر
    واحدؔ کے تھا جو ایک غزل خواں بدل گیا
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دل پر ہے گراں ظلمتِ شب جاگتے رہئے
    ہو اس کی سحر دیکھئے کب جاگتے رہئے
    ہے کرب کا احساس ہی آسائش ہستی
    ملحوظ رہے پاسِ ادب جاگتے رہئے
    یاں کس کو پڑی ہے جو بنے درد کا درماں
    اس دور کی ہر شے ہے عجب جاگتے رہئے
    توحید کو مرغوب ہیں راتوں کی دعائیں
    پھیلائیے کچھ دستِ طلب جاگتے رہئے
    دہکائیے اشعار سے اِک آتشِ دلسوز
    گرمائیے کچھ بزمِ طرب جاگتے رہئے
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    رات کیوں جدائی کی مختصر نہیں ہوتی
    دوستو شبِ غم کی کیوں سحر نہیں ہوتی
    روگ عشق کا دل کو ایک بار لگتا ہے
    پھر دوا کوئی کیجیے کارگر نہیں ہوتی
    تازہ حادثوں کی پھر زیست کو ضرورت ہے
    یاد کے سہاروں پر اب گزر نہیں ہوتی
    روزگار کے غم گرجاں گسل نہیں ہوتے
    زندگی ہماری یوں در بہ در نہیں ہوتی
    ظلم کرنے والے بھی جان تو گئے ہوں گے
    آہ ہم غریبوں کی بے اثر نہیں ہوتی
    ایک لمحہ مائل تو ایک لمحہ بے زاری
    آپ کے ارادوں کی کچھ خبر نہیں ہوتی
    شاعری میں گر واحدؔ جان و دل نہ مائل ہوں
    شاعری تو ہوتی ہے معتبر نہیں ہوتی
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چمن میں فصل بہار بھی اور زخم دل بھی ہرا ہرا سا
    گلوں پہ شبنم گری گری سی لہو سے دامن بھرا بھرا سا
    ابھی سے واعظ ہمارے آگے فضول ہے ذکرِ حور و کوثر
    کہ فکرِ دنیا بہت ہے دل کو خیالِ عقبیٰ ذرا ذرا سا
    نظامِ نو پاسبانِ عالم یہ کیسا ترتیب دے رہے ہیں
    ہے ساری دنیا پہ خوف طاری ہر اک بشر ہے ڈرا ڈرا سا
    صلح پر امن و آشتی پر تمہارا ایمان اٹھ گیا کیوں
    نہ پوچھے واحدؔ سے کوئی ورنہ جواب دیں گے کھرا کھرا سا
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    زخم سے بڑھی قلب ناتواں کی گنجائش
    کہکشاں کے دم سے ہے آسماں کی گنجائش
    آرزو کے صحرا میں جستجو کی وادی میں
    ہوگئی عیاں دل پر لامکاں کی گنجائش
    شوق کا تلاطم بھی فکر کی فراوانی بھی
    میرے جام میں بحرِ بیکراں کی گنجائش
    حسن کی تجلّی بس مصر کی دوکانوں تک
    عشق کے لیے کم ہے دوجہاں کی گنجائش
    طے شدہ ازل سے ہیں قسمتیں زمانوں کی
    کچھ نہیں یہاں واحدؔ این و آں کی گنجائش
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آپ سے طرفہ تعلق ہے وفاداری کا
    حوصلہ جس سے فزوں ہے مری غمخواری کا
    کیجیے کس سے گلہ ظلم و جفاکاری کا
    خود حلف ہم نے اٹھایا تھا وفاداری کا
    رات اس شان سے کچھ یاد کسی کی آئی
    راگ چھڑجائے کسی ساز پہ درباری کا
    صورتِ بادِ صبا کیسی سبک رو تھی حیات
    شائبہ تک نہ ذرا سا تھا گرانباری کا
    میں کہ معصوم ازل باغ اِرم میں خوش تھا
    راستہ کیوں یہ دکھایا ہے گنہگاری کا
    رات دن جو خس و خاشاک جمع کرتے ہیں
    رقص ایک روز دکھادو انہیں چنگاری کا
    میں نے مانا کہ سخن فہم ہیں احباب میرے
    ان پہ الزام نہ آجائے طرف داری کا
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غم سے ہے یوں حیات وابستہ
    جس طرح دن سے رات وابستہ
    روزمرّہ کی زندگی سے ہیں
    اس قدر حادثات وابستہ
    کیا تعجّب وجودِ عالم سے
    ہو کوئی واردات وابستہ
    اِس تلاطم میں دیکھئے کب ہو
    ہم سے شاخِ نبات وابستہ
    بالیقیں راہِ میکدہ سے ہے
    اپنی راہِ نجات وابستہ
    ذکرِ حسن ازل کا تھا مقصود
    ہوگئی ان سے بات وابستہ
    میری رسوائیوں سے کیا کیجئے
    آپ کی بھی ہے ذات وابستہ
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آؤ کچھ خیر و شر کی بات کریں
    کچھ اِدھر اُدھر کی بات کریں
    آؤ خونِ جگر کو گرمائیں
    آؤ پھر چشمِ تر کی بات کریں
    آشیاں کا سکوں ہے جن کو عزیز
    ان سے برق و شرر کی بات کریں
    سن کے صحرا نورد ہنستے ہیں
    ہم جو دیوار و در کی بات کریں
    دعوتِ موت راحتِ منزل
    ایک لمبے سفر کی بات کریں
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک شیریں سخن کی بات کریں
    ایک غنچہ دہن کی بات کریں
    ایک شعلہ بدن کی بات کریں
    آؤ ایک سیم تن کی بات کریں
    مہر تاباں کے رخ پہ بوسہ دیں
    مہ کی اُجلی کرن کی بات کریں
    لالہ و گل کا ذکر تازہ ہو
    نرگس ونسترن کی بات کریں
    خلوتِ خانہ کچھ تو ہو آباد
    اک حسیں انجمن کی بات کریں
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہے عشق میں نشاط بھی یوں غم کے ساتھ ساتھ
    خوشیاں منائی جاتی ہیں ماتم کے ساتھ ساتھ
    جو خانماں خراب کے برباد عشق ہے
    خندہ بہ لب ہے دیدۂ پرنم کے ساتھ ساتھ
    کیا کیجیے کہ عہدِ وفا جس کے ساتھ ہے
    اس کے مزاج بدلے ہیں موسم کے ساتھ ساتھ
    کرتے ہیں زخمِ دل کا یونہی چارہ گر علاج
    نشتر لگائے جاتے ہیں مرہم کے ساتھ ساتھ
    تشکیلِ نیک و بد سے ہے رنگینیٔ حیات
    ابلیس کا بھی ذکر ہے آدم کے ساتھ ساتھ
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آرزوئے دیرینہ پھر کوئی مچل نہ جائے
    یونہی پھر کھلونوں سے آدمی بہل نہ جائے
    حسن کا نظّارہ سوز آفتاب ڈھل نہ جائے
    قافلہ بہاروں کا راستہ بدل نہ جائے
    اک نگارِ محشر خیز زینت فسوں آمیز
    موم کی بنی گڑیا دھوپ میں پگھل نہ جائے
    محورقص ہے عریاں ظلم و جبر کی ملکہ
    حرّیت کی دلہن کو یہ کہیں نگل نہ جائے
    راہرو کی جرأت پر راہبر پریشاں ہیں
    ٹھوکریں یہ کھا کھا کر ایک دن سنبھل نہ جائے
    بادِ گلستاں کو اک احتیاط لازم ہے
    کوئی گل کچل نہ جائے یا کلی مسل نہ جائے
    خواب عہد جمہوری دور امن و آزادی
    ایک حسرت ناکام دل میں ہے نکل نہ جائے
    برموقع انتخابات پاکستان ۱۹۹۷ء
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک سود و زیاں زیست کا مفہوم ہوا ہے
    ایک درد ہے جو عشق سے موسوم ہوا ہے
    دنیا کی عنایات سے ہی شاد تھا کب دل
    یا کون سا آفات سے مغموم ہوا ہے
    تاریخ کا رخ موڑدے کیا جانئے کس سمت
    صفحہ جو ابھی خون سے مرقوم ہوا ہے
    پھر دل کی زمیں گریہ سے ذرخیز ہوئی ہے
    پیدا کوئی پھر جذبۂ معصوم ہوا ہے
    وہ ترکِ مئے ناب کی تعلیم تھی جن سے
    وہ خود بھی پرستار ہیں معلوم ہوا ہے
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چمن میں نغمہ خواں اے دوست بلبل اب بھی ہوتا ہے
    کہ جس سے اعتبارِ لالہ و گل اب بھی ہوتا ہے
    خوشا باقی ہے اب بھی اہلِ دل کی گرمیٔ محفل
    کہ ذکرِ چشم و لب رخسار و کاکل اب بھی ہوتا ہے
    قلم سے حسن کی تعریف کچھ اپنا بھی شیوہ ہے
    تصور میں کوئی جان تغزل اب بھی ہوتا ہے
    خرد کی گفتگو کیا کیجیے بے ربط ہوتی ہے
    جنوں کی بات میں اپنی تسلسل اب بھی ہوتا ہے
    کسی کے ساتھ ساری عمر گذری ہے مگر اس کو
    وہی ایک عارفانہ سا تجاہل اب بھی ہوتا ہے
    جفاکاری میں ثانی تو کوئی اس کا نہیں لیکن
    اسے بے مہر کہنے میں تامل اب بھی ہوتا ہے
    تیرے مسجود کل ہونے سے کب اللہ منکر ہوں
    پہ روز و شب کے سجدوں میں تغافل اب بھی ہوتا ہے
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    چمن میں میرا آشیانہ تو ہے
    چھپانے کو سر ایک ٹھکانہ تو ہے
    خوشی کا مری کچھ بہانہ تو ہے
    حقیقت نہ ہو اک فسانہ تو ہے
    سکوں ہے کہ صحرا کی اس دھوپ میں
    کہیں پر کوئی شامیانہ تو ہے
    بہاروں نے برتی ہے گو بے رخی
    سلوکِ خزاں دوستانہ تو ہے
    بہ فیضانِ رنج و الم ہی سہی
    لبوں پر میرے ایک ترانہ تو ہے
    نصیبوں کی ہوگی کبھی یاوری
    کہ گردش میں سارا زمانہ تو ہے
    علی گڑھ کا دانش کدہ آج بھی
    ایک علم و ادب کا خزانہ تو ہے
    برائے یومِ سرسیّد ۱۹۹۷ء
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دیکھ کر روئے زیبا کی تابندگی
    ماند ہے ماہ و انجم کی رخشندگی
    حسن کو کیا ضرورت حجابات کی
    بوالہوس کو ہے احساسِ شرمندگی
    غیر لطف و کرم سے نوازے گئے
    ہم اطاعت سے کرتے رہے بندگی
    نہ توقع کسی سے نہ شکوہ کوئی
    بس گذاری اسی طور سے زندگی
    مہ جبینوں کی محفل میں اپنے سوا
    عشق کی کون کرتا نمائندگی
    عہد حاضر میں سب فرق ہی مٹ گئے
    کیسی پاکیزگی اور کیا گندگی
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہر جنوں کی رسم ایک دن معتمد ہوجائے گی
    باعثِ رسوائی اہلِ خرد ہوجائے گی
    گر تصرف کا یہی عالم زمانے میں رہا
    ہر ذرا سی بات پر داد و ستد ہوجائے گی
    ہاں یونہی طبقات کی جاری رہے گی کشمکش
    کشمکش پھر ایک دن جدوجہد ہوجائے گی
    صورتِ حالات کچھ ہوجائے گی تشویشناک
    جبر و استبداد کی جس روز حد ہوجائے گی
    دہر کو لازم ہے ارباب سخن کا احترام
    بات یہ جو بھی کہیں گے مستند ہوجائے گی
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    رودادِ غمِ عشق سنا کیوں نہیں دیتے
    پتھر کے بنے بت کو رلا کیوں نہیں دیتے
    اک راز کے سینے میں چھپا رکھا ہے کب سے
    وہ راز زمانے کو بتا کیوں نہیں دیتے
    قائم ہے تمیز ہوس و عشق کے جن سے
    ان اپنے رقیبوں کو دعا کیوں نہیں دیتے
    شاعر کے تفکر سے بدلتی نہیں دنیا
    ہر نقش کہن خود ہی مٹا کیوں نہیں دیتے
    واحدؔ کہ دھنی کہتے ہیں الفاظ کا خود کو
    الفاظ سے پھر آگ لگا کیوں نہیں دیتے
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہے ادارے کی غرض خلق خدا کی تعلیم
    ہم کو سیّد سے ملی مہر و وفا کی تعلیم
    اب بھی اقرا کی روایات یہاں تازہ ہیں
    اب بھی جاری ہے یہاں غارِ حرا کی تعلیم
    یوں مٹایا ہے جہالت کو جہاں سے جیسے
    پرتو خور سے ہو شبنم کو فنا کی تعلیم
    خالقِ کون و مکاں سے یہ دعا ہے کہ بنے
    فکر و دانش کا سبب ارض و سماء کی تعلیم
    حکمت و علم سے بستی مری آباد رہے
    حاصل بزم رہے فہم و ذکا کی تعلیم
    بہ موقع یومِ سرسیّد ۱۹۹۸ء
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عجب رسم دوراں زمانے عجیب
    رہِ شوق کے ہیں فسانے عجیب
    تصرف کی دنیا کا ہے فیض عام
    لٹائے گئے ہیں خزانے عجیب
    فروغِ ہوس نے ذرا دیکھئے
    تراشے ہیں کیسے بہانے عجیب
    تصور کو ہے قوتِ خواب کم
    حقیقت کے منظر سہانے عجیب
    گلوں کو ہے احساسِ قرب خزاں
    ہیں بلبل کے لب پر ترانے عجیب
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دن گزرتے نہیں اب اشک کے آہوں کے بغیر
    کاٹنا رات غضب ہے تیری باہوں کے بغیر
    فرحتِ روح نہیں کچھ تیری صورت کے سوا
    دل کو تسکین ہے کب تیری نگاہوں کے بغیر
    ابن آدم کو ہے کیوں پھر کسی جنت کی تلاش
    حسن سے زیست ہے محروم گناہوں کے بغیر
    حاکمِ وقت نے کیا خوب کیا ہے انصاف
    جرم عائد ہیں کئی ہم پہ گواہوں کے بغیر
    غیر بستی کو وطن اپنا بنانا چاہا
    نہ بنا کچھ بھی کفالت کے پناہوں کے بغیر
     

اس صفحے کی تشہیر