دیوانِ میر حسن

شمشاد نے 'برقیانے کیلئے کتب کی فرمائش' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 17, 2010

  1. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    آج دل بیقرار ہے کیا ہے
    درد ہے انتظار ہے کیا ہے

    جس سے جلتا ہے دل جگر وہ آہ
    شعلہ ہے یا شرار ہے کیا ہے

    یہ جو کھٹکے ہے دل مین کانٹا سا
    مژہ ہے نوکِ خار ہے کیا ہے

    چشم بد دور تیری آنکھون مین
    نشہ ہے یا خمار ہے کیا ہے

    میرے ہی نام سے خدا جانے
    ننگ ہے اسکو عار ہے کیا ہے

    جسنے مرا ہے دام دلپہ مرے
    خط ہے یا زلف یار ہے کیا ہے

    کیون گریبان تیرا آج حسن
    اس طرح تار تار ہے کیا ہے

    دریا مین ڈوب جاوے کہ یا چاہ مین پڑے
    اے عشق پر نکوئی تری راہ مین پڑے

    مت پوچھ جورِ غم سے دلِ ناتوانکا حال
    بجلی تو دیکھی ہو گی کبھی کاہ مین پڑے

    اِکدم بھی دیکھ سکتا نہین ہمکو اُسکے پاس
    خاک اس فلک کے دیدہ بدخواہ مین پڑے

    جو دوستی کے نام سے رکھتا ہو دشمنی
    دیوانہ ہو جو اُسکی کوئی چاہ مین پڑے

    آ جا کہین شتاب کہ مانندِ نقش پا
    تکتے ہین راہ تیری سرِ راہ مین پڑے

    جلوے دو چند ہووین شبِ ماہ کے ابھی
    اُس ماہرو کا عکس اگر ماہ مین پڑے

    سُلگے ہے نیم سوختہ جیسے دھوین کے ساتھ
    جلتے ہین یون ہم اپنی حسن آہ مین پڑے​
     
  2. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    یون غیر کچھ کہین تو بلا کو بُری لگے
    تو کچھ نکھ کہ ہم غُربا کو بُری لگے

    ننگی کرے نہ ھوصلہ اپنا کہین بس اب
    اتنی جفا نکر کہ وفا کو بُری لگے

    تجھ بن یہ زیست اپنی ہمین یون ہے جس طرح
    قیدِ حیات اہلِ فنا کو بُری لگے

    ہون خاک تیرے کوچہ کی ہم اور اپنی گرد
    تیری گلی سے آہ صبا کو بُری لگے

    ہمتو سہین گے وہ بھی پہ لازم نہین تجھے
    اُس ناز کی جفا جو ادا کو بُری لگے

    ہے بیحیائی حد سے جو گرمی زیادہ ہو
    شوخی بہت تو مردونسا کو بُری لگے

    چون آئینہ دل اپنا کدورت سے صاف رکھ
    گردِ ملال اہل صفا کو بُری لگے

    ہر دم جواب صاف مروت سے ہے بعید
    وہ بات تو نکر کہ حیا کو بُری لگے

    اُس بُت بندگی سے نہ آزاد ہو حسن
    یہ بات بھی کہین نہ خدا کو بُری لگے​
     
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    ہمتو ہین تجھ زلف ہی سے سر بسر باندھے ہوے
    صید بستہ پر پھرے ہے کیون کر باندھے ہوے

    جون سلیمانی یہ کسکا اب خیالِ زلف و رخ
    ساتھ پھرتا ہے مجھے شام و سحر باندھے ہوے

    جان و دل کا قتل ہے منظور یا ہے مخلصی
    لیچلے ہو اِن اسیرون کو کدھر باندھے ہوے

    دامِ الفت سے نہ نکلے ہم کبھی سائے کی طرح
    تم گئے جیدھر گئے ہم بھی اُدھر باندھے ہوے

    خون دل کسکا ہے یہ جون طاہرِ رنگِ حنا
    ناز سے آتا ہے تیرے ہاتھ پر باندھے ہوے

    خانہ زنجیر کے مانند تیری قید مین
    عشق آتے ہین چلے اب گھر کے گھر باندھے ہوے

    تا نہو برباد نکہت کی طرح یہ تنگدل
    غنچہ سان رکھتے ہین مُٹھی ہی مین زر باندھے ہوے

    اور ہر دامِ قفس سے چھٹ سکے ہین ہمنشین
    اک نہین چھٹتے تو اُلفت کے مگر باندھے ہوے

    اور بھی دل روبرو ہین تیری ٹک تیرِ نگاہ
    پھیکیو اپنی نشانی پر نظر باندھے ہوے

    قتل ہے کسکا تجھے منظور اے خونی نگاہ
    ہر گھڑی پھرتا ہے کیوں تیغ و سپر باندھے ہوے

    کس روش مین آہ پہونچوں اُڑ کے گلشن تک حسن
    مجھکو تو صیاد نے چھوڑا ہے پر باندھے ہوے​
     
  4. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    بیکلی مجھکو نہین ہر گلبدن کے واسطے
    جان بلب ہون اپنے اُس غنچہ دہن کے واسطے

    دل تری خاطر ہے اور تو دل کی خاطر اس طرح
    خون جون گل کے لیے اور گل چمن کے واسطے

    قول اِدھر دیتا ہے اور اُودھر مکر جات ہے وہ
    کیجیے کیا فکر اُس پیمان شکن کے واسطے

    شمع تب ٹھنڈی ہوئی جب خاکساری سے پتنگ
    توتیا جلکر ہوا چشمِ لگن کے واسطے

    عالمِ وحشت مین جو دست جنون سے بچ رہے
    چاک پھر یا رب وہ جامہ ہو کفن کے واسطے

    کچھ سُنا تھا حق مین اپنے ایک دن تجھسے سخن
    سیکڑون سنتا ہون باتین اُس سخن کے واسطے

    شربتَ دیدار شیرین یون ملے خسرو کو ہاے
    زہر کا پیالہ بنے یون کوہکن کے واسطے

    عیش و عشرت کس طرح ہو دوستان مجھکو نصیب
    مین تو یان پیدا ہوا رنج و محن کے واسطے

    بیجگہ عاشق ہوا ہے کیا کرین کچھ بس نہین
    جی تو کڑھتا ہے بہت اپنا حسن کے واسطے​
     
  5. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    نہ ملا وہ نفاق کے مارے
    کیا کرین ہم وفاق کے مارے

    جبتک آوے ہے آوے تو ہمتو
    مر چکے اشتیاق کے مارے

    مت خفا ہو کہ آن نکلے ہین
    ہم بھی یان اتفاق کے مارے

    ملگئے خاک مین ہزارون ہی
    چرخ کہنہ رواق کے مارے

    ہو چکا حشر بھی حسن لیکن
    نہ جیے ہم فراق کے مارے​
     
  6. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    تیر پر تیر لگے تو بھی نہ پیکان نکلے
    یا رب اس گھر مین جو آوے نہ وہ مہمان نکلے

    نیک و بد مین جو نہین جنگ عدم مین تو بھلا
    کیون گل و خار بہم دست و گریبان نکلے

    دستِ چالان جنون سینہ کو بھی کر دے چاک
    تا کہین پہلو سے میرے دلِ نالان نکلے

    کونسی رات وہ ہووے کہ جو آوے سبِ وصل
    کونسا روز وہ ہو جو شبِ ہجران نکلے

    گلشنِ دل مین بھی تھی اپنی کچھ اُلٹی تاثیر
    تخم امید جو بوئے گُلِ حرمان نکلے

    کر نظر رخ کو ترے کفر سے نکلے کافر
    زلف کو دیکھ تری دن سے مسلمان نکلے

    جتنا کہتے ہین نکلتا ہے حسن گھر سے ترے
    غصے ہو ہو یہی کہتا ہے ابھی ہان نکلے​
     
  7. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    آہون سے مرے گھر مین ہوا گرم رہیگی
    مین جاؤنگا تو بھی مری جا گرم رہیگی

    بھرتے ہی رہینگے نفس سرد ہزارون
    جبتک کہ تری آن و ادا گرم رہیگی

    جلنا مِرے تب دل کا لگے گا یہ ٹھکانے
    صحبت تری جب مجھسے سدا گرم رہیگی

    چوٹی مین دلِ سوختہ کو گوندھ کے پیارے
    مت پھیک قفا پر کہ قفا گرم رہیگی

    بلبل نہ مجھے دیجیو تو نالے کی تکلیف
    ورنہ اثر اسکے سے صبا گرم رہیگی

    جبتک نہین تو دختر زر ہی کو رکھونگا
    کچھ تو یہ بغل میری بھلا گرم رہیگی

    عشاق کو ترغیب محبت ہی کریگا
    جبتک ہے حسن بزم وفا گرم رہیگی​
     
  8. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    جس شخص کی ہو زیست فقط نام سے تیرے
    اُس شخص کا کیا حال ہو پیغام سے تیرے

    گالی ہے کہ ہے سحر کوئی یا کہ ہے افسون
    جی شاد ہوا جاتا ہے دشنام سے تیرے

    ہے اپنی خوشی اُسمین کہ تو جس مین خوشی ہو
    آرام ہی اپنے تئین آرام سے تیرے

    آہستہ قدم رکھیو تو اے ناقہ لیلٰی
    مجنون کا بندھا آتا ہے دل گام سے تیرے

    جب کوچے مین جا بیٹھتے ہین تیرے تو اپنی
    آنکھین لگی رہتی ہین در و بام سے تیرے

    ہے اپنے ہمین کام سے کام اے بتِ خود کام
    ہم کام نہین رکھتے ہین کچھ کام سے تیرے

    کیا ہجر کی رات آئی کہ مانند چراغان
    پھر جلنے لگے داغ حس شام سے تیرے​
     
  9. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    جان مین جان تبھی قیس کے بس آتی ہے
    ناقہ لیلٰی کی جب بنگ جرس آتی ہے

    ساتھ دیکھون ہون کسی کے جو کسی دلبر کو
    مین بھی جی رکھتا ہون مجھکو بھی ہوس آتی ہے

    قیس و فرہاد کے رونے کی جب آ جاتی ہے لہر
    کوہ و صحرا پہ گھٹا جا کے برس آتی ہے

    زندگی ہے تو خزان کے بھی گذر جائینگے دن
    فصل گل جیتون کو پھر اگلے برس آتی ہے

    جب قفس مین تھے تو تھی یاد چمن ہمکو حسن
    اب چمن مین ہین تو پھر یادِ قفس آتی ہے​
     
  10. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    دلبر سے ہم اپنے جب ملین گے
    اس گم شدہ دل سے تب ملین گے

    یہ کسکو خبر ہے ابکی بچھڑے
    کیا جانیے اُس سے کب ملین گے

    جان ودل و ہوش و صبر و طاقت
    اِک ملنے سے اُسکے سب ملین گے

    دنیا ہے سنبھل کے دل لگانا
    یان لوگ عجب عجب ملین گے

    ظاہر مین تو ڈھب نہین ہے کوئی
    ہم یار سے کس سبب ملین گے

    ہو گا کبھی وہ بھی دور جو ہم
    دلدار سے روز و شب ملین گے

    آرام حسن تب ہی تو ہو گا
    اُس لب سے جب اپنے لب ملین گے​
     
  11. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,274
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ایم ایس ورڈ کی دو فائلیں منسلک ہیں۔

    divan mir hasan.zip صفحہ نمبر کے حساب سے ہے۔
    divan mir hasan 2.zip غزلوں کے حساب سے ہے۔
     

    منسلک فائلیں:

    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,349
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اتار تو لیا ہے میں نے، دیکھیں فرخ کیا کہتے ہیں پروف ریڈنگ کے بارے میں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3

اس صفحے کی تشہیر