دیوانِ میر حسن

شمشاد نے 'برقیانے کیلئے کتب کی فرمائش' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 17, 2010

  1. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کنز تحتُ العرش مَفَاتِیحہَاَ الَسِنَتِہ الشُعراِئُ

    الحمد للہ والمنہ کہ درین زمن بفضل رب ذو المنن مجموعۃ کلام مصداق الشعر حسنہ حسن

    اعنے

    دیوانِ میر حسن

    نتیجہ فکر

    اُستاد فن شاعر یکناے زمن بدرمنیر سپہر سخن جناب میر غلام حسن صاحب حسن مرحوم

    بمطبع منشی نوک شو و ارقع لکھنؤ مزین بہ زیور بطع شد
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    گر کیجے رقم کچھ تری وحدت کے بیان کا
    تو چاہیے خامہ بھی اسی ایک زبان کا

    تو ہے تو مری جان و دل و جسم ہے ورنہ
    کیسا یہ دل اور کیسا یہ جی اور میں کہان کا

    رکھتے ہین نکچھ نام ہی اپنا نہ نشان ہم
    کیا نام و نشان پوچھو ہو بے نام و نشان کا

    اس بات کو ٹک سُن کہ جہانکا نہو اثبات
    کیا دل مین بھروسا کرے پھر کوئی دہان کا

    مت دست ہوس کو تو جُھکا لینے کو اسکے
    ماٹی سے سب آلود ہے اسباب جہان کا
    سربستہ رہا یو نہین یہ رازِ حرم و دیر
    معلوم ہوا بھید نہ یان کا نہ وہان کا

    بیگانہ ہے یان کون اور اپنا ہے یہان کون
    ہے سب یہ بکھیڑا مرے ہی وہم و گمان کا

    جس عالمِ ہستی کو سمجھتے تھے بہار آہ
    آخر کو جو دیکھا تو وہ موسم تھا خزان کا

    سچ کیون نہ کہین ہمتو مسلمان ہین اے شیخ
    رہتا ہے یہان نامِ خدا ذکر بتان کا

    مرضی ہو جہان اُسکی وہی جا ہمین بہتر
    مشتاق دل اپنا نہین کچھ باغِ جنان کا

    سر دیویگا جسدم تو حسن تیغ کو اُسکی
    اسرار کھلے گا تبھی اس سرِ نہان کا​
     
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    کیونکر خدا نہ بخشے گنہ اِس غلام کا
    بندہ ہون دل سے مین تو محمد ﷺ کے نام کا

    بھیجون ہون زلف و رخ پہ محمدﷺ کی نِت درود
    مین نے کیا ہے در دیہی صبح و شام کا

    جلوے سے ہے نبی ہی کے ساری یہ کائنات
    خَلَص دہی ہے دونون جہان مین تمام کا

    جسجا پہ ایک مرتبہ اُسنے رکھا قدم
    رتبہ ہے عرش سے بھی پرے اُس مقام کا

    ہر مہر جسپر اُسکی تو ذرہ ہو آفتاب
    ہے نور اُسکا رتبہ رسان خاص و عام کا

    برحق ہے بعد اُسکے وصی اُسکا مرتضی
    حق کو نہ مانے جو کوئی ہے وہ حرام کا

    شیرِ خدا کا بسکہ تولد ہوا ہے دان
    واجب ہے سجدہ اسلیئے بیت الحرام کا

    مین و دستدار پنجتن و اہلبیت ہون
    بندہ ہون جان نثار ہون بارہ امام کا

    ہوتی ہے جنکو بندگی انکی جناب مین
    اُنکو مقام ملتا ہے دارالسلام کا

    سیراب مجکو کیجیے محشر مین یا علی
    امیدوار رہتا ہون کوثر کے جام کا

    گر ہو قبول یہ غزل نعت و منقبت
    شہرا جہان مین تب ہو حَسن کے کلا م کا​
     
  4. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    گر عشق سے کچھ مجکو سروکار نہوتا
    تو خواب عدم سے کبھی بیدار نہوتا

    یارب مین کہان رکھتا ترا داغِ محبت
    پہلو مین اگر میرے دلِ زار نہوتا

    دنیا مین تو دیکھا نہ سوائے غم و اندوہ
    مین کاشکے اِس بزم مین ہشیار نہوتا

    یون نالہ پریشان نہ نکلتا یہ کبھی آہ
    سینے مین جو میرا یہ دل افگار نہوتا

    خمیازے بہت کھینچتا پھرتا مین جہان مین
    گر تیری مے عشق سے سرشار نہوتا

    کرتا میں حسن قُدس کے عالم ہی مین پرواز
    ہستی کا اگر اپنی گرفتار نہوتا​
     
  5. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    چھوٹا نہ دان تغافل اُس اپنے مہربانکا
    اور کرم کر چکا یان یہ اضطراب جانکا

    اُٹھتے ہی دل جگر مین کیا آگ سے لگا دی
    خانہ خراب ہوئے اس نالہ و فغان کا

    وے دن گئے جو گلشن تھا بود و باش اپنا
    ابتو قفس مین بھولے نقشہ بھی گلستانکا

    سامان لیچلا ہے اندوہ کا یہین سے
    کیا جائیے ارادہ دلنے کیا کہانکا

    جانا تو ہمنے چھوڑا پر کیا کریں حسن ہائے
    چُھٹتا نہین ہے دلسے ہرگز خیال وانکا​
     
  6. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    تیرا حسن یہ رونا یونہی رہیگا
    ظالم تو پھر کسیکا کاہیکو گھر رہیگا

    تیرے ہی غم کا گھر ہے یہ دل جلا نہ اِسکو
    گر یہ جلا تو تیرا پھر غم کدھر رہیگا

    تربت پہ بیکسونکی رکھیو نہ پھول کوئی
    گُل کی جگہ اُنھونکا داغِ جگر رہیگا

    آنا ہے گر تو آ جا جلدی وگرنہ یہ دل
    یونہین تڑپ تڑپ کر کوئی دم مین مر رہیگا

    بتخانہ ہی مین چل بیٹھ یا کعبہ مین حسن اب
    یون کب تلک دوانے تو دربدر رہیگا​
     
  7. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    کرون شکوہ تو بے وسواس مین اُس سے نہ آنیکا
    نہو دھڑکا مرے دلمین گر اُسکے روٹھ جانیکا

    وساطت سے کسیکی چھپ کے بھی چاہا نکچھ ورنہ
    کیا تھا ڈھب تو یارون نے بہت اُس سے ملانیکا

    ترے پہلو سے اُٹھ جانیکا جتنا ہے الم ہمکو
    نہیں اتنا تو غم اپنے تئین دل کے بھی جانیکا

    مجھے آتا ہے رونا دیکھکر زانو کو اب اپنے
    کہ تھا اک وقت مین تکیہ کسیکے یہ سرھانیکا

    رقیبِ روسیہ کی بات پر مت گوش رکھیو تو
    کیا ہے فکر اِسنےمیرے اور تیرے لڑانیکا

    حسن تو ہر کسی سے حال دل کہتا پھرے ہے کیون
    عبث بدنام ہو گا اور نہین کچھ اِسمین پانیکا

    ملامت ہی کرینگے اور اُلٹی تجکو ہنس ہنس کر
    کوئی احوال پر تیرے نہین افسوس کھانیکا​
     
  8. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    عشق کبتک آگ سینہ مین مِرے بھڑکائیگا
    راکھ تو مین ہو چکا کیا خاک اب سُلگائیگا

    لیچلی ہے ابتو قسمت تیرے کوچہ کی طرف
    دیکھیے پھر بھی خدا اس طرف ہمکو لائیگا

    کر چکے صحرا مین وحشت پھر چکے گلیون مین ہم
    دیکھیے اب کام ہمکو عشق کیا فرمائیگا

    نو گرفتاریکے باعث مضطرب صیاد ہون
    لگتے لگتے جی قفس مین بھی مرا لگ جائیگا

    دم کی آمد شد تجھی تک تو ہے دلمین میری جان
    تو اگر یانسے گیا تو کون پھر یان آئیگا

    ابتو کرتا ہے حسن کو قتل تو یون بیگناہ
    دیکھیو پر کوئی دم ہی مین بہت پچتائیگا​
     
  9. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    زنگِ الم کا صیقل ہو کیون نہ یار رونا
    روشندلی کا باعث ہے شمع وار رونا

    جسجا پہ تمنے باتین کی تھین کھڑے ہو اکدن
    جب دیکھنا وہ جاگہ بے اختیار رونا
    آ لینے دے یہانتک اُس گل کو ٹک تو رہجا
    پھر ساتھ میرے ملکر ابرِ بہار رونا

    تو آ کے آستین رکھ اس چشم تر پہ میری
    پاوے جہان مین میرا تا اشتہار رونا

    محوِ خیال ہین جو اُس شوخ کم نما کے
    درد و الم مین اُنکا ہے ننگ و عار رونا

    جبسے جدا ہوا ہے وہ شوخ تبسے مجکو
    نِت آہ آہ کرنا اور زار زار رونا

    دم ہی نہین ٹھہرتا آنسو کی کیا کہون مین
    جی سے حسن پڑی ہے اب درکنار رونا​
     
  10. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    ہوا سے زلف و رخ مین ہے سمان ہے یار رونیکا
    بندھا ہے شام سے لے تا سحر ایک تار رونیکا

    خدا جانے کہ آخر رفتہ رفتہ حال کیا ہوئے
    ہوا ہے بیطرح آنکھون کو کچھ آزار رونیکا

    ابھی گر لہر آویگی مجھے تو دنگ ہوئیگا
    ٹکرا ہے ابر تو آگے مرے اظہار رونیکا

    اثر ہوئے نہوئے پر بلا سے جی تو بہلے گا
    نکالا شغل تنہائی مین مین ناچار رونیکا

    اسی مین ناخوشی گر ہے تو لے آ بیٹھ مت غم کھا
    ترے کہنے بس اب مین نہین دلدار رونیکا

    ابھی رو رو کے ٹک آنسو تھنبے ہین میرے اے ہمدم
    نہ لا پھر پھر کے تو کچھ ذکر اور ازکار رونیکا

    حسن کچھ تو کہا ہے اُسنے تجکو مین سمجھتا ہون
    تری آنکھین تو نم ہین تو نہ کر انکار رونیکا​
     
  11. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    نے ہون چمن کا مائل نے گل کے رنگ درد کا
    رنگ وفا ہو جسمین بندہ ہون اُسکی بو کا

    وہ ملک دل کہ اپنا آباد تھا کبھو کا
    سو ہو گیا ہے تجھ بن اب وہ مقام ہو کا

    مت سہم دل مبادا یہ خون سوکھ جاوے
    آتا ہے تیر اُسکا پیاسا ترے لہو کا

    غنچہ ہون مین نہ گل کا نہ گل ہونمین چمن کا
    حسرتکا زخم ہون مین اور داغ آرزو کا

    لایا غرور پر یہ عجز و نیاز تجکو
    تیرا گنہ نہین کچھ اول سے مین ہین چو کا

    دامان و جیب ہے کچھ ٹکڑے نہین ہے ناصح
    ہے چاک میرے ہاتھون سینہ تو اب رفو کا

    خاموش ہی رہا وہ ہر گز حسن نہ بولا
    جسکو مزا پڑا کچھ اُس لب کی گفتگو کا​
     
  12. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    قیامت مجھپہ سب اوسکا ترحم اور تظلم تھا
    کبھی تھین گالیان منھ پر کبھی لب پر تبسم تھا

    یہ سب اپنے خیالِ خام تھے تم تھے پرے سب سے
    جو کچھ سمجھے تھے ہم تمکو یہ سب اپنا توہم تھا

    اب اُلٹے ہم ہی اِسکے حکم مین رہنے لگے ناصح
    وہ دفتر ہی گیا جو اپنا اِس دلپر تحکم تھا

    تمھین بھی یاد آتے ہین کبھی وہی دن کہ کوئی دن
    ہمارے حال پر کیا کیا تفصل اور ترحم تھا

    شب اُس مطرب پسر کے یان حسن تھی زور ہی صحبت
    اِدھر تو نالہ دل تھا اُدھر اُسکا ترنم تھا​
     
  13. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    دیکھ آئینہ مین عکسِ رخِ جانا نہ جدا
    مین جدا محو ہوا اور دلِ دیوانہ جدا

    سرسری قصہ مین غیرونکے نہ سن میرا حال
    گوش دلسے کبھی سنیو مرا افسانہ جدا

    آہ کیا جانیئے محفل مین یہ کسکی خاطر
    شمع روتی ہے جدی جلتا ہے پروانہ جدا

    شرکتِ شیخ و برہمن سے مین نکلا جبسے
    کعبہ سونا ہے جدا خالی ہے بتخانہ جُدا

    دور مین اپنے الٰہی رہیگا کبتئین یون
    بادہ شیشے سے جدا شیشے سے پیمانہ جدا

    درد کرتا ہے تپ عشق کی شدت سے مرا
    سر جاد سینہ جدا قلب جدا شانہ جدا

    جب ہوے ہم ہین جدا اُس سے تو کچھ کام نہین
    غیر اُس شوخ سے اب ہوئے جدا یا نہ جدا

    اسکو امید نہین ہے کبھی پھر بسنے کے
    اور ویرانونسے اس دلکا ہے ویرانہ جدا

    کیا کہون اپنی مصیبت کا بیان تجھسے غرض
    جیسے وہ مجھسے ہوا ہے مرا جانانہ جدا

    کارم از عشق رسیدست بجائے مخلص
    کہ بمن خویش جدا گریدو بیگانہ جدا

    گوشہ چشم مین بھی مردمِ بدبین ہین حسن
    واسطے اسکے بنا دل مین نہانخانہ جدا​
     
  14. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    رو رو کے کیا ابتر سب کام مرے دلکا
    کھویا مری آنکھون نے آرام مرے دلکا

    آغازِ محبت میں دیکھا تو یہ کچھہ دیکھا
    کیا جانئیے کیا ہو گا انجام مرے دلکا

    جسدن سے ہوا پیدا اُسدنسے ہوا شیدا
    دیوانہ و سودائی ہہے نام مرے دلکا

    طوفان ہے زلفون پر بہتان ہے کاکل پر
    ہے رشتہ اُلفت ہی پر دام مرے دلکا

    جبتک مین جیا مجکو قاصد نہ ملا آخر
    اب جی ہی چلا لیکر پیغام مرے دلکا

    بتخانہ دل میرا کعبے کے برابر ہے
    واجب ہے تجھے جانان اکرام مرے دلکا

    معشوق کی اُلفت سے مت جان حسن خالی
    لبریز محبت ہے یہ جام مرے دلکا​
     
  15. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    کب میں گلشن میں باغ باغ رہا
    مین تو جون لالہ وان بھی داغ رہا

    جو کہ ہستی کو نیستی سمجھا
    اُسکو سب طرف سے فراغ رہا

    ہے یہ کس عندلیب کی تربت
    جسکا گل ہی سدا چراغ رہا

    سیر گلشن کرین ہم اُس بن کیا
    اب نہ وہ دل نہ وہ دماغ رہا

    طبع نازک کے ہاتھ سے اپنے
    میرے ہی دل کا یہ ایاغ رہا

    دل حسن ایسے گم ہوئے کہ سدا
    ایک کو ایک کا سُراغ رہا​
     
  16. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    دل خدا جانے کسکے پاس رہا
    اندنون جی بہت اُداس رہا

    کیا مزا مجکو وصل مین اُسکے
    مین رہا بھی تو بیحواس رہا

    یون کھلا، اپنا یہ گُلِ اُمید
    کہ سدا دلپہ داغِ یاس رہا

    شاد ہون مین کہ دیکھ میرا حال
    غیر کرنے سے التماس رہا

    جب تلک مین جیا حسن تب تک
    غم مرے دلپہ بے قیاس رہا​
     
  17. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    اک وقت مین کہ عشق کا ہمکو خیال تھا
    جو شعر درد کا تھا سو وہ حسب حال تھا

    مانند عکس دیکھا اُسے اور نہ مل سکے
    کس رو سے پھر کہین گے کہ روزِ وصال تھا

    اب رفتہ رفتہ باتین وہ ہموار ہو گئین
    آگے جنھون کے نام سے جی کو ملال تھا

    کیا جانین آہ کیونکہ ہوا ہمسے دل جدا
    اپنے تو جی سے چھوٹنا اُسکا محال تھا

    بارے ترے قدم تئین پہونچے ہزار شکر
    مدت سے اشتیاق یہ ہمکو کمال تھا

    دل اُسکی زلف سے جو چھٹا تو بھلا ہوا
    ناحق یہ اپنے جی کے لئیے اک وبال تھا

    اس بزم سے کہان گئے وہ شعلہ رو حسن
    روشن زیادہ شمع سے جنکا جمال تھا​
     
  18. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    کہا مین کہ بھرتا ہون دم آپکا
    لگا کہنے صاحبِ کرم آپکا

    نہون غیر گر ساتھ تو آئیے
    سر آنکھونپہ میرے قدم آپکا

    سوا میرے اتنا تو بندہ نواز
    اوٹھا دے نہ کوئی ستم آپکا

    مجھے اپنے مرنے سے تو ہے یہ غم
    کہ تنہا رہیگا یہ غم آپکا

    اُنھون کے تو لینے مین اتنا عبث
    یہ انکار ہے دمبدم آپکا

    دل و جان جو ہین یہ سو اپنے نہین
    سمجھتے ہین انکو تو ہم آپکا

    مجھے بھی حسن سوجھتا ہے غرض
    ڈبو دیگا یہ چشم نم آپکا​
     
  19. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    نہ مین شمع سان سر بسر جل گیا
    سراپا محبت کا گھر جل گیا

    محبت کا رستہ عجب گرم تھا
    قدم جب دھرا خاک پر جل گیا

    فلک تک گیا نالہ پر آہ آہ
    رہا کام ابتر اثر جل گیا

    لگایا محبت کا جب یان شجر
    شجر لگ گیا اور ثمر جل گیا

    اگر غم ہے تو ہے فقط جان کا
    نہین مال کا غم اگر جل گیا

    غضب تھا شرارہ غضب آہ کی
    گیا خط بھڑک نامہ بر جل گیا

    گلُ شمع کا نخل تھا مین حسن
    لگا شام یان اور سحر جل گیا​
     
  20. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,558
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    غیرون مین جو ہمپر وہ غضب تھا
    کیا جانئیے اسکا کیا سبب تھا

    وہ تاب و توان کہان ہے یارب
    جو اس دلِ ناتوان مین تب تھا

    اب رونے سے آ پڑا ہے جسکو
    ہنسنے ہی سے کام روز و شب تھا

    تھے محو خیال رات اُس سے
    باتونکا ہمین دماغ کب تھا

    کیا جانے کی اُسکے پودھین تجھسے
    جینا ہی ترا حسن عجب تھا​
     

اس صفحے کی تشہیر