دیوانِ میر حسن

شمشاد نے 'برقیانے کیلئے کتب کی فرمائش' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 17, 2010

  1. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    تیری مدد سے تیرا ادراک ہو سکے ہے
    ورنہ اِس آدمی سے کیا خاک ہو سکے ہے

    تو ہی سمجھ سمجھکر کر دے معاف ہمکو
    تیرا حساب ہمسے کب پاک ہو سکے ہے

    خطرا نہین کسی کا جو چاہہے کر سکے ہے
    تجھسا کوئی جہان مین بیباک ہو سکے ہے

    رونے کو میرے جلدی ٹک دیکھ کھول آنکھین
    ابتک ہے چشم میری نمناک ہو سکے ہے

    لاکھون کا دل جلایا لاکھون کا جی کھپایا
    تجھسے کوئی زیادہ سفاک ہو سکے ہے

    وہ جلد و ستیون کے جاتے رہے زمانے
    اب ہاتھ سے گریبان کب چاک ہو سکے ہے

    جو کچھ شراب مین ہیہن کیفیتین نشے کی
    تجھمین مزا یہ کوئی تریاک ہو سکے ہے

    اُس ماہرو کو باہم کر دے حسن سے اِک شب
    گردش سے تیری اتنا افلاک ہو سکے ہے​
     
  2. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    صنم پاس ہے اور شب ماہ ہے
    یہ شب ہے کہ اللہ ہی اللہ ہے

    ترے ناز کیونکر اُٹھاؤن نہ مین
    مری دوستی پر تو گمراہ ہے

    تجھے ہوش اتنا نہین بیخبر
    مرے حال سے کب تو آگاہ ہے

    ترا نام لیتے نکلتی ہے آہ
    مری آہ کے دل مین کیا آہ ہے

    کہان برق عشق و کہان کوہِ صبر
    بگولے کے آگے پرِ کاہ ہے

    مین کیونکر کہون تجھکو فرصت نہین
    پہ یہ بات کب تیرے دلخواہ ہے

    نہ انے کے سو عذر ہین میری جان
    اور آنے کو پوچھو تو سو راہ ہے

    مین اِک روز پوچھا جو اُس شوخ سے
    کہ کیون کچھ تجھے بھی مری چاہ ہے

    تو ہنسکر لگا کہنے کیا خوب کیون
    تو میرا کہان کا ہوا خواہ ہے

    یہ سُنکر جو مین چپ رہا تو کہا
    ابے دل کا مالک تو اللہ ہے

    حسن وصل اور ہجر مین یار کے
    کبھی آہ ہے اور کبھی واہ ہے​
     
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    آپ مین ابکی اگر ہم آئینگے
    تو ترے کوچے ہی کو پھر جائینگے

    روز کہتے ہو کہ تو مرتا نہین
    خوب یہ کہنا بھی ہم دکھلائینگے

    ہین قفس مین پر عبث باندھے ہے تو
    اس قفس سے ہم کہان اُڑ جائینگے

    یون تو جی تجھ بن بہلنے کا نہین
    تری ہی باتون سے کچھ بہلائینگے

    دوستون سے اِس دلِ دشمن کا حال
    کوئی مت کہنا کہ وہ غم کھائینگے

    فصل گل تک تو بھلا صیاد ہم
    دام سے تیرے نکلنے پائینگے

    قید کرتے ہیں مجھے ناصح عبث
    ابکی مین نکلا تو پھر چپتائینگے

    دل سے اُسکے دل ہیہ ک لیگا بیان
    ہمتو کہتے حالِ دل شرمائینگے

    ہر گھڑی مت ذکر کر اُسکا حسن
    اور سُن سُنکر بہت للجائینگے​
     
  4. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    ابرو سے اور مژہ سے عالم کی جان لی ہے
    پہلے پہل یہ اُسنے تیر و کمان لی ہے

    عاشق کے طور مجھسے مجنون نے ہین اُڑائے
    معشوق کی تجھی سے لیلٰی نے آن لی ہے

    بسمل کی طرح ابتک ہین رقص مین ہزارون
    مطرب پسر نے ایسی شب ایک تان لی ہے

    مجھسے خفا ہوا ہے یا ہے خلل ہوا کا
    اِکلائی اپنے مُنھ پر کیون تو نے تان لی ہے

    احسانمند ہون مین اپنے سخن شنو کا
    جو بات مین کہی ہے سو اُسنے مان لی ہے

    تو اب کہے ہے مجھسے مین تیری جان لونگا
    مین نے یہ چال تیری پہلے ہی جان لی ہے

    گونگے کی ہہے مٹھائی جانے ہے وہ یہ لذت
    جسنے کسی صنم کی مُنھ مین زبان لی ہے

    قدمون پر اُسکے جا کر گر ہی پڑونگا ابکی
    گو سر رہے کہ جاوے مین نے یہ ٹھان لی ہے

    کیونکر نشہ نہ ہوسے دونا لبون کے خط سے
    اس مین مین اور تو نے سبزی بھی چھان لی ہے

    کس شعلہ خو سے تو نے سیکھی ہے یہ شرارت
    کس مہروش سے گرمی یہ مہربان لی ہے

    ہر چند گل نہین ہے پر گل کے ڈھنگ ہین سب
    خو بو یہ کس سے تو نے اے بدگمان لی ہے

    ہے ایک تو خفا ہی جی سے حسن بچارا
    تو نے کِھجا کِجھا کر اور اُسکی جان لی ہے​
     
  5. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    ہر ایک دل و جان کے مرغوب نظر آئے
    مین خوب تمھین دیکھا تم خوب نظر آئے

    یہ طرز و ادا ہے تو انسے نہ وفا ہو گی
    خوبان کے خوش آیندہ اسلوب نظر آئے

    دیوانگی اپنی سے طے کر گئے منزل کو
    سالک ہم اسی رہ کے مجذوب نظر آئے

    گذرا ہے چمن سے کیا پھر آج کوئی گلرو
    جو گل نظر آئے سو محجوب نظر آئے

    جی پہلے ہی جا پہونچا کیا پرزون سے اب دل کے
    تم اشک عبث لیکر مکتوب نظر آئے

    ہے دل مین ہمین کیا کیا امید ترحم کی
    دیکھا تو غضب ہم کچھ مغضوب نظر آئے

    جب آنکھ اُٹھا دیکھا اُس چشم ستمگر کو
    سب تیر مژہ دل مین سر ڈوب نظر آئے

    عالم کا یہ مجمع بھی چھڑیونکا تھا اِک سیلا
    جو دم کے لیے کیا کیا محبوب نظر آئے

    دیکھا تو نکچھ دیکھا پھر خاک ہی وان ہمنے
    جون نقش قدم طالب مطلوب نظر آئے

    کوچے مین حسن اُسکے تامردمکِ دیدہ
    دیتے ہوئے پلکون سے جاروب نظر آئے​
     
  6. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    چرخ کی جس سے دوستی تو نے
    کی غرض اُس سے دشمنی تو نے

    آپ سے مل گیا گلے ہنس کر
    یہ تو بس مرے جی سے لی تو نے

    ذوقِ تنہائی مین خلل ڈالا
    آ کے مجھ پاس اِک گھٹری تو نے

    آفرین دل پہ تھا ترا ہی جگر
    جو پڑی تجھپہ سو سہی تو نے

    جو دکھائین خرابیان مجھکو
    سو مری جان زندگی تو نے

    جی نکل جائیگا لیا ابکی
    ہجر کا نام جس گھڑی تو نے

    زندگی کا بہت مزا پایا
    اے حسن کر کے عاشقی تو نے​
     
  7. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    جو دن کو شور و افغان ہے تو شب کو آہ و زاری ہے
    غرض مین کیا کہون دل کو نہایت بیقراری ہے

    کوئی گر اور سا ہووے تو گھبرا کر نکل جاوے
    مرا جی جانتا ہے جو کہ حالت مجھپہ طاری ہے

    مری تعریف تم کرتے ہو اپنی قدردانی سے
    ابھی صاحب مین کس قابل ہون یہ کوبی تمھاری ہے

    تمھین ہمسے ہمین تمسے بھلا اب اسکو کیا کہیے
    وہ کچھ قسمت تمھاری ہے یہ کچھ قسمت ہماری ہے

    بھلا تو سیکڑون باتین سنائے مین سنون چپکے
    کہا جاتا نہین کچھ یان کہ یہ بے اختیاری ہے

    جو وہ پوچھے مرے احوال کو قاصد تو یہ کہنا
    دعا کرتا ہے تمکو اور تمہارے یادگاری ہے

    حسن اُس سرگران کے زلف کے غم مین قدم مت رکھ
    سبک اے ناتوان مت ہو کہ یہ زنجیر بھاری ہے​
     
  8. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    کہتا نہین کہ مجھسے ہر اک کوبرو ملے
    کوئی ملے کہ یا نہ ملے ایک تو ملے

    تھی آرزو تو یہ کہ ملے آرزوے دل
    یہ آرزو نہ تھی کہ فقط آرزو ملے

    تجھسا تو زود رنج مین دیکھا نہ ایک بھی
    یونتو جہان مین مجھکو بہت تند خو ملے

    مُنھ پھیر بڑ بڑاتے ہو کیا دیکھو اس طرف
    گالی کا تب مزا ہے کہ جب دو بدو ملے

    ہوتے ہی اُسکے سامنے بس دل تو مل گیا
    ظاہر مین گو کسی کے نہ ہم روبرو ملے

    یون توروٹھے تو روٹھے پر اب جی ہے بیقرار
    یا رب کہین شتابی سے وہ جنگجو ملے

    ڈھونڈھون ہون دل کو مین تو بھلا تو بھی دھیان مین
    رکھیو حسن جو تجھکو کہین اُسکی بو ملے​
     
  9. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    مزے ندیکھے کبھی ہمنے زندگانی کے
    یونھین گذر گئے افسوس دن جوانی کے

    سنا نہ ایک بھی شب اُسنے حالِ دل میرا
    نصیب جاگے نہ افسوس اس کہانی کے

    ہمین غضب سے تو اپنے تو مت ڈرایا کر
    ہم آشنا ہین فقط تیری مہربانی کے

    رہی بھی مدنظر پرورش تو غیرون کی
    سدا سے کشتہ ہین ہم تیرے قدردانی کے

    ثبات ہستی کو ٹک بھی ہوا نہ اپنی حسن
    مثال برق گئے روز شادمانی کے​
     
  10. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    گر بخت اپنے جاگین تو اک کام کیجیے
    سائے مین اُسکے زلف کے آرام کیجیے

    مکھڑے کو دیکھ دیکھ ترے کیجیے سحر
    گیسو کو دیکھ دیکھ ترے شام کیجیے

    بوسہ عقیق لب کا ترے لیجیے غرض
    دو دن کی زندگانی ہے کچھ نام کیجیے

    ہے نیکنامی اپنی تو نزدیک عین یہ
    گر آپ کو ترے لیے بدنام کیجیے

    اس ابتدائے عشق مین ہو انتہا کی چاہ
    آغاز اپنا صورتِ انجام کیجیے

    اب مین نے بیقراری پر اپنے لیا قرار
    بس آپ خیر شوق سے آرام کیجیے

    رہتا ہے ان بتونکو یہی دھیان رات دن
    کسکو لپیٹ لیجے کسے رام کیجیے

    بولے ٹھٹھولی بات لطیفہ جگت ہے سب
    جو کام پختہ ہو اُسے کیون خام کیجیے

    تھوڑا ہے اپنے مُنھ سے قبولیگا آپ وہ
    اب دیر کیا ہے وصل کا پیغام کیجیے

    اُلجھائیے دل اپنا کہین جان بوجھکر
    رشتے کو دوستی کے حسن دام کیجیے​
     
  11. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    نظرون مین اُسنے مجھسے اشارات آج کی
    کیا تھا یہ خوب کچھ نہ کھلی بات آج کی

    مین نے تو بھر نظر تجھے دیکھا نہین ابھی
    رکھیو حساب مین نہ ملاقات آج کی

    اک بات تلخ کہکے کیا زہر عشق سب
    تو نے ہماری خوب مدارات آج کی

    یہ گفتگو کبھی بھی نہ آئی تھی درمیان
    جو کچھ کہ تو نے حرف و حکایات آج کی

    دل مین یہی تھی میرے کہ دورِ شراب ہو
    مین سچ کہون یہ تو نے کرمات آج کی

    بلبل کے ناؤن پر بھی نہ آیا بھلا ہوا
    صیاد تیری خالی گئی گھات آج کی

    عیشِ شبِ وصال کو ہے صبح ہجر بھی
    ٹھہری ہے یار کل پہ ملاقات آج کی

    بھولے سے نام لیکے مرا ہٹ پٹا گیا
    پیاری لگی یہ مجھکو تری بات آج کی

    مجھپہ یہی قلق جو رہیگا تو یار بن
    کس طرح شب یہ گذریگی ہیہات آج کی

    ابتو جو کچھ ہوا سو ہوا خیر رات ہے
    قسمت مین دیکھنی تھی یہ آفات آج کی

    لیکن مجھے تو پھر وہین کل دیکھیو حسن
    گر خیر و عافیت سے کٹی رات آج کی​
     
  12. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    عالم ہی تب کچھ اور تھے اور ڈھنگ اور ہی
    روز و شبِ جوانی کے تھے رنگ اور ہی

    لطف و غضب کا عشق کے کچھ ماجرا نہ پوچھو
    ہے اسمین صلح اور ہی اور جنگ اور ہی

    غیرون کے ہاتھ تجھسے یہ جی کیونکہ صاف ہو
    اس دل کے آئینہ پہ تو ہے زنگ اور ہی

    وہ جو سرودِ عشق کے ماہر ہین اے حسن
    ہے وان رباب اور ہی اور چنگ اور ہی​
     
  13. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    اس ڈر سے مین نے زلف کی اُسکی نبات کی
    جاتی ہے دور دور تک آواز رات کی

    دیکھا جب آنکھ کھول کے مثل حباب تب
    معلوم کائنات ہوئی کائنات کی

    اُس بلبلِ چمن کی ہوئی عاقبت بخیر
    سائے مین جسنے آن کے گل کے وفات کی

    مین ہون صفات ہی کے تحیر مین ہمنشین
    کیا بات مجھسے پوچے ہے تو اُسکے ذات کی

    دل اپنا اُسکو دیجیے یا جی کو کھوئیے
    اسکے سوا طرح نہین کوئی نجات کی

    بولا اگر تو قند مکرر ہوے وہ لب
    اور چپ رہا تو یہ بھی ہے صورت نبات کی

    واقف ہو کیون نہ شعلہ آتش سے دل کے وہ
    رہتی ہے باغبان کو خبر پھول پات کی

    شہ چال ہو رہا ہون صنم تیرے عشق مین
    تو نے دکھا کے رخ مری بازی ہی مات کی

    زلف عرق فشان تری جانبخش کیون نہو
    ترکیب اُسنے پائی ہے آبِ حیات کی

    اِس سر سے غیر سر نہین واقف کوئی غرض
    لذت بیان مین آتی نہین تیری لات کی

    چون زندگی و مرگ ہین آپس مین ضد حسن
    چشم و لب اُسکی ضد ہے حیات و ممات کی​
     
  14. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    وہ عشق کی گرمی نہین دو چار برس سے
    دل سرد ہوا اپنا ہوا اور ہوس سے

    صیاد کی خاطر ہی نہین اتنا ہون لاغر
    چاہون تو نکل بھاگون ابھی چاک قفس سے

    سچ مچ تجھے خاطر ہے اگر میری تو جانان
    غلطا نہ کیا کر تو ہر اک ناکس و کس سے

    دل ساتھ دو انو نکا تو مت چھوڑ جنون مین
    کوئی بھی بگاڑے ہے کہین اپنی اُلس سے

    حلقہ سے تری زلف کے جاؤنگا کدھر مین
    ڈالے ہین مرے پانؤن مین الفت کے تو رستے

    جنت سے مین نکلا تھا تری دید کی خاطر
    گندم سے مجھے کام نہ کچھ کام عدس سے

    کیا جانیے مجھکو لیے جاتا ہے اُدھر کون
    جاتا نہین کوچے مین ترے اپنے تو بس سے

    جب وجد مین آتا ہے تو کرتا ہے یہ فریاد
    تعلیم مگر لی ہے مرے دلنے جرس سے

    ہر مور و مگس کو نہین اس مصری سے رشتہ
    شیرینی لب تیری مبَرا ہے مگس سے

    گو جل کے ہوا راکھ پہ جون آتش خاموش
    پھینکا نہ کبھی آہ کو مین دوشِ نفس سے

    مت پنجہ مژگان کو رکھ اس فندق پا پر
    ڈرتا ہون حسن آگ بھڑک اُٹھے نہ خس سے​
     
  15. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    اُسکی جب بات کان پڑتی ہے
    دل مین مُردے کے جان پڑتی ہے

    بندہ عاجز ہے رو ہی دیتا ہے
    آدمی پر جب آن پڑتی ہے

    جانتا ہے وہی مصیبتِ عشق
    جسپر اے مہربان پڑتی ہے

    کسکے ابرو کا عکس ہے یہ جو
    آسمان پرکمان پڑتی ہے

    غمزہ و ناز دلبران سے ہمیش
    دلپہ تیغ و سنان پڑتی ہے

    دیکھتے دیکھتے نظر اُسکی
    اِس طرف بھی ندان پڑتی ہے

    آج مطرب پسر گلے مین ترے
    اور ہی ڈھب کی تان پڑتی ہے

    جسکو دل اپنا چاہتا ہے حسن
    بات کب اُسکی دھیان پڑتی ہے​
     
  16. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    غفلت سے چونکنے بھی نہ پائے کہ مر گئے
    دیکھا بھی تمنے کچھ کہ یہ دن کیا گذر گئے

    ایسے غضب کے آنیکا مشتاق کون تھا
    دل کو جلا کے اور مری خاک کر گئے

    جوشِ بہارِ عشق پہ کیجو ذرا نظر
    داغون سے دل جگر کے چمن سارے بھر گئے

    خوش وہ کہ تیرے سائی دیوار کے تلے
    دنیا مین باد کھانیکو اکدم ٹھہر گئے

    دیکھا کیے ہم انکھون سے اور کچھ نہ بس چلا
    اشکون مین ٹکڑے ہو ہو کے دل اور جگر گئے

    ناز و ادا ؤ غمزہ کو اُس بت کے دیکھکر
    جتنے صنم خدائی مین تھے سب سنور گئے

    ہمدرد کل جو ایک ملا ہمکو راہ مین
    باتون مین ہم کہین کے کہین بیخبر گئے

    پھر ہوش مین جو آن کے دیکھا تو واہ وا
    جانا کدھر کو تھا ہمین اور ہم کدھر گئے

    بارے وہان سے دل کو پھرے ہم پکارتے
    دلنے بھی دی صدا تو ذرا راہ پر گئے

    در پر جو تیرے آئے تو دیکھا نہ تجھکو حیف
    جیسے ہم آئے ویسے ہی پھر اپنے گھر گئے

    کچھ بھی ملا نہ پھل ہمین کاغذ پر اے حسن
    مقراض سے زبان کے بہت گل گئے​
     
  17. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    کہہ بیٹھ نہ دل جی ترا جس بت سے لگا ہے
    اللہ کو چوری نہین تو بندہ کا کیا ہے

    بارے وہ صنم مجھسے ملا خود بخود آ کر
    سچ ہے کہ نہین جسکا کوئی اُسکا خدا ہے

    آئینہ مین صورت مجھے دکھلاتا ہے اپنی
    یعنی کہ ترے اور مرے بیچ صفا ہے

    جی کھویا جو تو نے تو دل آرام پایا
    اس جینے سے گر پوچھو تو مرنا ہی بھلا ہے

    کیا جانیے کیدھر کو گیا ناقہ لیلٰی
    نہ شور جرس کا ہے نہ آواز درا ہے

    اگلے ہی مزے لوٹ گئے باغ جہان کے
    اب حال مین گر پوچھو تو کیا خاک رہا ہے

    اور اب بھی جنھین ہےہ اُنھین ہے اپنے تئین کیا
    اپنے تو نصیبون مین قفس ہے سُو ملا ہے

    نہ آہ سے نہ آتش ہجران سے نہ غم سے
    میرا تو بہت دل تری باتون سے جلا ہے

    بیزاری سے تو دیکھے ہے ہر چند و لیکن
    اس بیمزہ گی مین بھی مری جان مزا ہے

    کہتا ہے مرے دل کے تئین پانؤن سے ملکر
    اب بھی ترے دل مین کوئی ارمان رہا ہے

    اب جان کے درپے ہین مرے اتنے ستمگر
    غمزہؔ ہے کرشمہؔ ہے اشاراؔ ہے اداؔ ہے

    کیون جیسے مرے جی ترا ملتا نہین ظالم
    تجھکو بھی ہے معلوم کہ جی مین ترے کیا ہے

    کچھ تمنے سُنا اُس ستم ایجاد کا احوال
    یارو عجب اک طور ہے اور طرفہ مزا ہے

    آپ ہی مجھے کہتا ہے کہ چل دور پرے جا
    جاتا ہون تو کہتا ہے تجھے خبط ہوا ہے

    پھر اپنا سا مُنھ لیکے جو رہجاتا ہون تو وہ
    کہتا ہے کہ غصہ ترا اسوقت بجا ہے

    دل تیرا بہت مین نے جلایا ہے ادھر آ
    ہان ہان مری خاطر یہ ترا حال ہوا ہے

    کہتا ہے جو کوئی تو حسن سے نہین ملتا
    کرتا ہے بہانا کہ وہ روٹھا ہے لڑا ہے​
     
  18. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    مومن تو کافر پہ کیا سب کو ندائے خیز ہے
    ابلق ایام کو یان رات دن مہمیز ہے

    آئیو دامن سنبھالے اے خیالِ یار تو
    دل سے یان آنکھون تلک خونِ جگر لبریز ہے

    اُس طرف جتنی ضفا ہے اِس طرف اُتنی وفا
    گالیان ہین صاف وان اور یان نری انگیز ہے

    ابتو چل فرہاد تک شیرن ذرا خسرو کو چھوڑ
    وہ تو اب آخر ہے آخر تو ہے اور پرویز ہے

    جسنے دیکھا گورے منھ پر تیرے ابرو کو کہا
    یا الیمانی ہے یا تلوار یا اگریز ہے

    کوہ و صحرا کیا ہے سونا قیس اور فرہاد بن
    لیلی و شیرین کا خالی محمل و شبدیز ہے

    بیضہ نوروز و قندیلِ محرم ہے فلک
    شادی و غم کے قلم سے اسپہ رنگ آمیز ہے

    کسکی زلفونکا تصور ہے دلِ سوزان مین جو
    لخلخہ کی طرح دودِ آہِ عنبریز ہے

    پاے بند زلف تیرے اہل ایمان کیون نہون
    عروۃ الوثقیٰ کی آیۃ اُنکو دستاویز ہے

    خنجرِ مژگان کے مُنھ چڑھیو نہ اے دل ان دنون
    سنگ شرمی سے زبان اُسکی نہایت تیز ہے

    دِل ترا کس سرو کا قمری ہوا ہے اے حسن
    آہ ہے موزون تری اور نالہ وحشت خیز ہے​
     
  19. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    یار کا دھیان ہم نہ چھوڑینگے
    اپنی یہ آن ہم نہ چھوڑینگے

    جبتلک دم مین ہے ہمارے دم
    تجھکو اے جان ہم نہ چھوڑینگے

    تیرے ہاتھون سے اے جنون ثابت
    یہ گریبان ہم نہ چھوڑینگے

    ہے بڑا کفر ترک عشق بتان
    اپنا ایمان ہم نہ چھوڑینگے

    بعد مجنون کے شور سے خالی
    یہ بیابان ہم نہ چھوڑینگے

    دل مین اور ہم مین ہے یہ قول و قرار
    اُسکو ہر آن ہم نہ چھوڑینگے

    دل چھوڑیگا تیرا دامن اور
    دل کا دامان ہم نہ چھوڑینگے

    بن لئے بوسہ آج تو تجھکو
    مان مت مان ہم نہ چھوڑینگے

    ہے حسن دان یہی جو بے قرنی
    کب تلک شان ہم نہ چھوڑینگے​
     
  20. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    206,555
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed

    جان و دل ہین اُداس سے میرے
    اُٹھ گیا کون پاس سے میرے

    کوئی بھی اب امید باقی ہے
    پوچھیو داغِ یاس سے میرے

    سبکی عرضی سے خوش ہو تم پر لیکن
    ہو خفا التماس سے میرے

    شاید اُتھنے کا قصد تمنے کیا
    اُڑ چلے کچھ حواس سے میرے

    عیش مجھ تک تو پہونچے تب جو ٹلے
    فوج غم آس پاس سے میرے

    دَور ہی دَور پھرتے ہین کچھ بخت
    ابتو امید و یاس سے میرے

    کیا مین ٹھہراؤن اُسکو دل مین حسن
    ہے وہ باہر قیاس سے میرے​
     

اس صفحے کی تشہیر