خیمۂ خواب۔۔۔۔ اسعد بدایونی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 12, 2006

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گھر دیکھتے نہ گھر کے دروبام دیکھتے
    بس تیرا خواب ہی سحر و شام دیکھتے
    لوحِ خیال پر تری تصویر کھینچتے
    دل کے ورق پہ لکھ کے ترا نام دیکھتے
    یہ شاخچے یہ پھول یہ لکھتے ہوئے چمن
    حیرت سے تتلیوں کو تہہ دام دیکھتے
    سورج کے ڈوبنے کا عجب دیدنی تھا رنگ
    دریا کی تمکنت کو سرشام دیکھتے !
    جھوٹی خبر محاذ سے لاتے کوئی تو ہم
    مچتا ہے کیسے شہر میں کہرام دیکھتے
    وہ ابتدائے کارِ جنوں ہی میں مرگئے
    جن کو یہ فکر تھی مرا انجام دیکھتے
    بہتر تھا چند لوگ نہ کرتے جو شاعری
    اچھا بھلا سا اور کوئی کام دیکھتے
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہی نہیں کہ مرا گھر بدلتا جاتا ہے
    مزاجِ شہر بھی یکسر بدلتا جاتا ہے
    رتیں قدیم تواتر سے آتی جاتی ہیں
    درخت پتوں کے زیور سے بدلتا جاتا ہے
    افق پہ کیوں نہیں رکتی کوئی کرن پل بھر
    یہ کون تیزی سے منظر بدلتا جاتا ہے
    غبارِ وقت میں سب رنگ گھلتے جاتے ہیں
    زمانہ کتنے ہی تیور بدلتا جاتا ہے
    چھڑی ہوئی ہے ازل سے دل و نگاہ میں جنگ
    محاذ ایک ہے لشکر بدلتا جاتا ہے
    یہ کس کا ہاتھ ہے جو بے چراغ راتوں میں
    فصیلِ شہر کے پتھر بدلتا جاتا ہے
    پرند پیڑ سے پرواز کرتے جاتے ہیں
    کہ بستیوں کا مقدّر بدلتا جاتا ہے
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہی نہیں کہ مرا گھر بدلتا جاتا ہے
    مزاجِ شہر بھی یکسر بدلتا جاتا ہے
    رتیں قدیم تواتر سے آتی جاتی ہیں
    درخت پتوں کے زیور سے بدلتا جاتا ہے
    افق پہ کیوں نہیں رکتی کوئی کرن پل بھر
    یہ کون تیزی سے منظر بدلتا جاتا ہے
    غبارِ وقت میں سب رنگ گھلتے جاتے ہیں
    زمانہ کتنے ہی تیور بدلتا جاتا ہے
    چھڑی ہوئی ہے ازل سے دل و نگاہ میں جنگ
    محاذ ایک ہے لشکر بدلتا جاتا ہے
    یہ کس کا ہاتھ ہے جو بے چراغ راتوں میں
    فصیلِ شہر کے پتھر بدلتا جاتا ہے
    پرند پیڑ سے پرواز کرتے جاتے ہیں
    کہ بستیوں کا مقدّر بدلتا جاتا ہے
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بدی کے نور سے روشن سماعتیں ساری
    خمیدہ سر ہیں ازل سے صداقتیں ساری
    سپاہِ مکر و ریا ساحلوں پہ خیمہ زن!!
    غریقِ دجلۂ خوں ہیں شجاعتیں ساری
    دھواں دھواں ہیں صحیفوں کے ماننے والے
    گماں گزیدہ ہوئی ہیں عبارتیں ساری
    بیاں ہوں شعر میں اب واقعات جاں کیسے
    مثالِ حرفِ غلط ہیں علامتیں ساری
    سفر تمام ٹھہرنے کا اک وسیلہ ہیں !
    بجز گماں نہیں ، کچھ مسافتیں ساری
    نہ اب وہ نجد نہ مجنوں نہ کوئی لیلیٰ ہے
    تہہ غبارِ زمانہ میں وحشتیں ساری
    یہ سحر کیا ہے کہ بدمست بادلوں کے بغیر
    ٹپک رہی ہیں گھنی دھوپ میں چھتیں ساری
    دیارِ درد میں دریا دلی کی ضرورت ہے
    وگرنہ ہم نہ اٹھاتے یہ زحمتیں ساری
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ذرا سے دل میں بسائی ہے میں نے حیرت کیا
    مگر یہ سوچتا ہوں ، بن سکے گی جنّت کیا
    وصال وہجر سے آگے بھی منزلیں ہیں بہت
    مرے سفر کو کسی انتہا سے نسبت کیا
    مرے یہ خواب سلامت رہیں تو اچھا ہے
    حقیقتوں سے ملاقات کی ضرورت کیا
    رگوں میں دوڑرہی ہے ترے وصال کی آگ
    مگر یہ آگ جو ٹھنڈی ہوئی تو لذّت کیا
    مرے رفیق مجھے تجربوں کی ہمّت دے
    جو منفرد نہ ہو سب سے تو میری چاہت کیا
    مرے وجود کی تکمیل ہوگئی تجھ سے
    بتا کہ میں بھی کبھی تھا تری ضرورت کیا
    یہ طاقِ ہجر ، یہ بجھتا ہوا چراغِ وصال
    اگر فریبِ نظر ہیں تو ہے حقیقت کیا
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پرندے ،پھول ،تتلیاں

    چہار سو محاذ سر دجنگ کے کھلے ہوئے
    منافقت کی تیز روندی میں سب صداقتیں
    مثالِ خارو خس رواں
    سکون، عافیت ، مسرتیں ، بس اک گماں
    چہار سوزوالِ حرف وصوت کا سماں
    مقدروں کورورہی ہیں بستیاں
    سبھی کے روز وشب گزررہے ہیں ایسے منظروں کے درمیاں
    مگر کبھی کبھی میں دیکھتا ہوں
    چہچہاتے خوش نوا پرندے ، پھول تتلیاں
    اور ہنستے مسکراتے بچے ، جن کی آنکھو ں میں ہیں خواب کے جہاں
    میں جانتا ہوں ان کے خواب
    اک دن مری طرح سے ہوں گے رائیگاں
    مگر میں چاہتا ہوں کچھ دنوں یہ خواب دیکھتے رہیں
    پھر اس کے بعد عمر بھر کا عذاب دیکھتے رہیں
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    زیاں رتوں کی ایک نظم


    میں شاعری میں اعترافِ ذات چاہتا تو تھا ، مگر
    مرے چہار سو جو لوگ ہیں
    سماعتوں کو ان کی حرفِ نرم سے لگا و ہے
    اور میری داستاں کے سارے لفظ تلخ ہیں
    زیاں رتو ں میں دکھ دیار سے جو میں نے جمع کیں
    خواہشو ں کی مردہ تتلیوں کے پر ہی میرے پاس ہیں
    مجھے بھی زعم تھا کبھی
    کہ میں جہاں کو اپنے زاویے سے دیکھنے کا اہل ہوں
    اور میرے سوچنے کا اپنا ایک ڈھنگ ہے
    مگر کھلا کہ یہ جہان اہلِ دل پہ تنگ ہے
    بس اک فریب ہے ، جو روشنی جور نگ ہے
    مرازمانہ سرکشی کا عہد ہی نہیں
    مزاج میرے نیک دوستوں کا سرد جنگ ہے
    اور مجھ سا بے قرار آدمی
    ہوا کے رخ پہ اک کٹی پتنگ ہے
    سو، اب میں اہلِ شہر کی پسند کے حروف جمع کررہا ہوں
    شاعری کے واسطے
    کیونکہ صرف داد ہی نہیں
    میں روٹیاں بھی چاہتا ہوں زندگی کے واسطے
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اجنبی منظروں کے درمیاں

    سارباں
    اب کے تو نے یہ کس دشت میں
    ناقۂ ناتواں لاکے ٹھہرادیا
    چہار جانب جہاں ایک اسرار ہے
    یہ کیسی خموشی ہے۔جس میں
    کوئی بولتا لگ رہا ہے
    یہ کیسی ہوائیں ہیں
    ان میں عجب باس ہے
    یہ کیسے مناظر ہیں
    جن کو مری آنکھ سے واسطہ کوئی
    پہلے نہ تھا
    یہ ندّی: کہ جیسے کوئی اژدھا سا پڑا ہوا
    یہ اشجار: گویا کہ بدمست ہاتھی کھڑے ہیں
    مکڑیوں ، بچھوؤں کی طرح لگتے ہیں
    فرش پر جتنے پتّے پڑے ہیں
    یہاں میرا خیمہ نہ استادہ کر
    پشتِ ناقہ سے اسباب مت کھولنا
    یہ زمیں مقتل دوستاں لگ رہی ہے
    یہ ہریالی مجھ کو خزاں لگ رہی ہے
    سجدۂخاک کا موسم
    شاخ کو چھوڑ چلا برگِ خزاں آمادہ
    جانے کس خاک کو جاتا ہے ، ہوا کے رتھ پر
    سب کو مٹی کے بلاوے پہ چلے جانا ہے
    جتنی مخلوق ہے اس عالمِ آب وگل میں
    خاکدانوں کی ضیافت کے لیے زندہ ہے
    کون سی روشنی تابندہ ہے
    سب چراغوں کی لگامیں ہیں
    ہواکے ہاتھوں
    خاک ہی سب سے بڑامنبع ہے
    خاک ہی خاک ہے ہر جسم کے شریانوں میں
    خاک ہی ذہن میں ہے خاک ہی ہے کانوں میں
    دل، ذہن ، آنکھ سبھی خاک کے ہیں
    سجدۂ خاک کا موسم آیا
    یعنی ادراک کا موسم آیا
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک نظم


    بڑا عجیب وقت ہے
    کہ ہجر بھی نہیں ، وصال بھی نہیں
    سگانِ قریہ روتے روتے چپ گیے
    مگر
    طویل رات کو زوال بھی نہیں
    پرند، گھونسلوں میں گریہ کررہے ہیں
    اور
    ہوا میں اعتدال بھی نہیں
    کشتیوں سے بادبان کب کے ہوچکے جدا
    سمندروں میں اشتعال بھی نہیں
    پانیوں میں زندگی اتاردیں؟
    نہیں ۔ ۔ ۔ نہیں !!
    ابھی زمین اتنی پائمال بھی نہیں
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دعا


    بے حسی اوڑھے ہوئے شہر کے لوگو ں پہ ہو
    خورشیدِ برفلک تاب کا قہر
    تاکہ یہ برف
    جو ذہنوں پہ دریچوں پہ مکانوں پہ جمی ہے
    پگھلے
    بادِ صرصر کا کرم ہوتھوڑا
    تاکہ یہ صاف بدن صاف لباس
    مرتبہ خاک کا پہچان سکیں
    اور ہوا برسیہ کی یورش
    جس سے اس بستی کے خوش رنگ مکاں
    کچّے رنگوں کے لبادے سے نکل کر ، اپنی
    اصل صورت میں ہویدا ہوجائیں۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گلہ

    طائروں کے ذرا سے پروں میں
    اڑانوں کے کیا حوصلے بھر دیے ہیں
    سمندر کو موجیں ، ندی کو بہاؤ
    ہواؤں کوتیور دیے ہیں
    درختوں کو پتوں کے زیوردیے ہیں
    غرض سب کو خالق نے
    اپنی عطا سے نوازا ہے
    لیکن
    ہمیں دیکھنے والی آنکھیں
    تڑپتے ہوئے دل کی دولت
    سوچ کے بوجھ سے ٹوٹتے سردیے ہیں ۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    حیرتوں کے سلسلے

    ایک ناؤ ایک بھنور کی طرف ہے رواں دواں
    تیزی سے بنتے ٹوٹتے جاتے ہیں دائرے
    اک زہر سارگوں میں اترتا ہے رائیگاں
    آنکھوں کی پتلیوں میں ہیں عالم بسے ہوئے
    کانوں میں گونجتی ہیں ہواؤں کی سیٹیاں
    یہ اقتباس جیسے داستاں کے ہیں
    منظر وہی تمام پرانے جہاں کے ہیں
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
    بدن دریدہ خواہشیں
    رگوں کی آگ
    آبشار کی تلاش میں
    یہاں وہاں ، رواں دواں
    بدن دریدہ خواہشوں کا ایک سیل
    جو فصیلِ جسم وجاں تک آگیا ہے
    اس پہ بند باندھنا محال ہے
    کسی نشیب کی خبر ملے تو اس کا رخ
    ادھر کو موڑنے کی کوشش کروں
    وگر نہ
    یہ بلندیوں کو چاٹ جائے گا
    مجھے زوال کی تہیں دکھائے گا
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    روداد


    اور پھر یوں ہوا
    ایک شجر نے بلندی کے سب راز
    اپنی جڑوں میں اتارے
    چار سو بے نیازی سے دیکھا
    تیز آندھی کے منہ پر
    سپر پھینک دی
    اور پھر
    اپنی مٹی کو سجدہ کیا
    تیز آندھی
    سپر کی کڑی چوٹ سے
    تلملائی ۔مگر
    اس نے اپنی کلہہ
    اس بہادر زمین زاد لمبے شجر کے لیے
    سر سے ہاتھوں میں لی
    اس کے لاشے کو تعظیم دی۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک اداس دعا

    میں نے ایک من موہنی صورت
    دل میں بسائی
    صورت، جس پر گہری اداسی کے سائے ہیں
    وہ سائے کتنے اچھے ہیں ، وہ سائے کتنے پیارے ہیں
    یعنی اس کی ساری دلکشی، سار ا جادو
    صرف اس سایوں سے روشن ہے
    سوچتا ہوں میں
    کیا یہ اداسی ، جو مجھ کو اچھی لگتی ہے
    اس لڑکی کی مجبوری ہے
    یا اس کے چہرے کی بناوٹ کا حصّہ ہے
    یا پھر ایک الگ قصّہ ہے
    جو کچھ بھی ہو
    میری تو بس ایک دعا ہے
    یہ سائے اس کے چہرے پر
    اور بھی گہرے ہوتے جائیں
    میری شاموں سے بھی گہر ے
    میری سانسوں سے بھی گہر ے
    جو مجھ کو اچھے لگتے ہیں ۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایک نظم


    جب لمس کے سورج بجھ جائیں
    جب راتیں بوجھل ہوجائیں
    جب لوگ گھروں میں سوجائیں
    جب برف رگوں میں جم جائے
    جب قہر بدن پر ٹوٹ پڑے
    جب لمس کے سورج بجھ جائیں
    جب ساعتِ آخر آپہنچے !!
    تو کس کو پکاریں کس سے کہیں
    کیالذّت تھی ان راتوں میں
    کیا نشّہ گھر کی باتوں میں
    کیا رگ رگ میں لہراتا تھا
    کیا تتلی جیسے منظر تھے
    سانسوں میں سات سمندر تھے
    اب حد نظر تک صحرا ہے
    اک قافلہ جس میں ٹھہرا ہے
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مشورہ

    جن دنوں بادِ صرصر کے جھونکوں سے
    تتلی کے پر ٹوٹ جائیں
    فقط اپنے بازو کی جانب نگاہیں رکھو
    جن دنوں آسمانوں پہ سورج کا گولا غضب ناک ہو
    صر ف اپنے ہی سر کے لیے
    سائے کی التجائیں کرو
    جن دنوں راتیں سفاک ہوں
    شام سے گھر پہنچنے کی جلدی کرو
    اور جب سارے موسم سبھی سلسلے
    حسبِ معمول ہوں
    سب جہانوں کے غم اپنے چہرے پہ لکھ کر
    زمانے کا ماتم کرو
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اعتراف
    صرف ہوا کے ہاتھ مرے دروازے پر دستک دیتے ہیں
    صرف ہوا کے ہاتھ مرے کمرے کا پردہ چھوتے ہیں
    مرے کانوں میں سرگوشی
    صرف ہوا کرتی ہے
    مرے بالوں کو سہلاتی ، مجھے سلاتی ہے
    مری آنکھیں ، نیند کے بوجھ سے بھرتی جاتی ہے
    مجھے رقص جنوں سکھلاتی میری وحشت اور بڑھاتی ہے
    مجھ پر اس نے شفقت کے سارے دروازے کھول دیے ہیں
    میں نے ہوا کے ہاتھ پہ بیعت کرلی ہے ۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ہوا کی مسافت

    ہوا چل رہی ہے
    دریچوں کے پردے ہلاتی ہوئی
    گیت گاتی ہوئی گنگناتی ہوئی
    خوشبو ئے یار ہمراہ لاتی ہوئی
    ہوا چل رہی ہے
    بیاباں میں سوئے بگولے جگاتی ہوئی
    سبز وشاداب جنگل کے کہنہ درختوں کو
    تاراج کرتی ہوئی ،خاک اڑاتی ہوئی
    طاقچوں میں رکھے ننھے ننھے چراغوں کو
    آنکھیں دکھاتی ہوئی
    روشنی کو ڈراتی ہوئی
    زمانے کے سود وزیاں سے اسے کوئی مطلب نہیں
    ہوا چل رہی ہے فقط اپنے انداز سے
    ہوا کی مسافت عجب ہے
    کہ جس کا سرا ہاتھ آتا نہیں
    کہاں جاکے دم لے گی
    کوئی بتا تا نہیں ۔
    ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ﴿٭٭٭٭٭﴾۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,993
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اجازت شدہ
    ان پیج کمپوزنگ: شارپ کمپیوٹرس، چادر گھاٹ، حیدر آباد
    ان پیج سے تبدیلی، پروف ریڈنگ، ای بک کی تشکیل: اعجاز عبید
    اردو لائبریری ڈاٹ آرگ، کتابیں ڈاٹ آئی فاسٹ نیٹ ڈاٹ کام اور کتب ڈاٹ 250 فری ڈاٹ کام کی مشترکہ پیشکش
    A presentation of http://urdulibrary.org, http://kitaben.ifastnet.com and http://kutub.250free.com
     

اس صفحے کی تشہیر