فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    عُثمانی سلطنت کے ایک شاعر کی ایک فارسی بیت:
    خُروسِ عرشِ معنایی بلالِ کعبهٔ دل شو
    در این چِرکاب‌زارِ دهر تا کَی ماکیان باشی

    (یئنی‌شهرلی عَونی بیگ)
    تم عرشِ معنی کے مُرغے ہو، کعبۂ دل کے «بِلال» بن جاؤ۔۔۔ تم کب تک دُنیا و زمانہ کے اِس پلیدی‌زار میں خانَگی مُرغی بنے رہو گے؟
    × خانَگی = گھریلو؛ پالتو
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اُمیدهاست مرا کز خودم جُدا نکنی
    وگر تو قصدِ جُدایی کُنی خُدا مکُناد
    (نِزاری قُهِستانی)

    مجھے اُمیدیں ہیں کہ تم مجھ کو خود سے جُدا نہیں کرو گے!۔۔۔ اور اگر تم [بالفرض] جُدائی کا قصد کرو تو [میری دُعا ہے کہ] خُدا ایسا نہ ہونے دے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,364
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    دلیل و حُجتِ حق دیگر است و حق دیگر
    طریقِ جہل ہزار و رہِ شناخت یکے


    نظیری نیشاپوری

    حق کے بارے میں دلیلیں دینا اور حجتیں اور تاویلیں بیان کرنا کوئی اور چیز ہے اور حق کچھ اور ہے۔ جہالت اور نادانی کے تو ہزاروں طریقے اور راستے (دلائل) ہیں لیکن شناخت اور عرفان کی بس ایک ہی راہ ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    عُثمانی سلطنت کے ایک شاعر کی ایک فارسی رُباعی:
    (رباعی)
    دیدم به درِ مَی‌کده مستی پُردرد
    در دست سبُویِ مَی به لب نالهٔ سرد
    گُفتم که سبُو زیرِ عبا باید داشت
    گُفتا که به ماهِ رمَضان باید کرد
    (یئنی‌شهرلی عَونی بیگ)

    میں نے میکدے کے در پر ایک پُردرد مست کو دیکھا۔۔۔ جس کے دست میں شراب کا کُوزہ، اور لب پر نالۂ سرد تھا۔۔۔میں نے کہا کہ کُوزۂ [شراب] کو عبا کے زیر میں [پوشیدہ] رکھنا چاہیے۔۔۔ اُس نے کہا کہ [ایسا] ماہِ رمضان میں کرنا چاہیے (یا ایسا ماہِ رمضان میں کرنا ضروری ہے)۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 15, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. یاسر شاہ

    یاسر شاہ محفلین

    مراسلے:
    526
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ویسے وارث صاحب اس شعر سے اختلاف ممکن ہے کیونکہ آیت ہے

    (آیت) ” والذین جاھدوا فینا لنھدینھم سبلنا وان اللہ لمع المحسنین “۔ (العنکبوت : ٦٩)

    مفہوم : اور جن لوگوں نے ہماری راہ میں جہد کیا ہم ضرور انھیں اپنے راستوں کی ہدایت دیں گے اور بیشک اللہ ضرور نیکی کرنے والوں کے ساتھ ہے۔

    اس سے اشکال ہوتا ہے منزل چاہے ایک ہو، طریقہ چلنے کا بھی ایک ہو، مگر "رہِ شناخت یکے" چہ معنی دارد؟ ممکن ہے کوئی صاحبِ علم بشمول آپ کے یہ اشکال حل کر دے -ہرچند روحِ شعر میں پا گیا کہ بقول شخصے (شاید یہ شخص میں ہی ہوں ):

    بحثِ لا یعنی کا کیا حاصل
    حق حق ہے اور باطل باطل
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بُوَد علم میراثِ پیغمبران
    روا نیست غفلت نمودن از آن
    (سید محمد شافی قُریشی)

    علم پیغمبروں کی میراث ہے۔۔۔ اُس سے غفلت کرنا روا نہیں ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اطرافِ جهان پُر از پری‌رُوی
    چون دیده بِدوزد آدمی‌زاد

    (نِزاری قُهِستانی)
    جہان کی [تمام] سَمتیں پری رُو [زیباؤں] سے پُر ہے۔۔۔ [کوئی] آدم زاد (یعنی انسان) چشم کیسے بند کرے (چشم پوشی و صَرفِ نظر کیسے کرے)؟
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 15, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دِلم بی‌دوست چون ماهی‌ست بی‌آب
    مُعافش دار اگر طاقت نیارد

    (نِزاری قُهِستانی)
    دوست کے بغیر میرا دل ماہیِ بے آب کی مانند ہے۔۔۔ اگر وہ تاب نہ لائے (دُوری کو تحمُّل نہ کر سکے) تو اُس کو مُعاف رکھو!
    × ماہیِ بے آب = بے آب مچھلی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    خوب می‌دانم وفا از خود، جفا از یارِ خود
    زان که او در کارِ خود خوب است و من در کارِ خود

    (محمد فضولی بغدادی)
    میں اپنی جانب سے وفا، اور اپنے یار کی جانب سے جفا کو خوب و بہتر سمجھتا ہوں۔۔۔ کیونکہ وہ اپنے کار میں خوب ہے، اور میں اپنے کار میں۔ (یعنی شاعر کہہ رہا ہے کہ میری نظر میں مُناسب و بہتر یہی ہے کہ میری جانب سے وفا ہو، اور یار کی جانب سے جفا ہو، کیونکہ میں وفا کرنے میں ماہر ہوں، جبکہ میرا یار جفا کرنا بخوبی جانتا ہے۔)
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 16, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    من کِیَم تا افکنَد آن سرْو بر من سایه‌ای؟
    کاش بِگْذارد مرا در سایهٔ دیوارِ خود

    (محمد فضولی بغدادی)
    میں کون ہوں کہ وہ [محبوبِ] سرْو قامت مجھ پر ذرا سایہ ڈالے؟۔۔۔ [یہی کافی ہے کہ] کاش وہ مجھ کو اپنی دیوار کے سائے میں جانے دے دے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    می‌کند هر لحظه روزم را سیاه از دودِ آه
    می‌کَشم صد آه هر دم از دلِ افگارِ خود

    (محمد فضولی بغدادی)
    [میرا دل اپنی] آہ کے دُھوئیں سے ہر لمحہ میرے روز کو سیاہ کر دیتا ہے۔۔۔ میں اپنے دلِ مجروح کے باعث ہر دم صد آہیں کھینچتا ہوں!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ای که از دستِ دلم هر دم شکایت می‌کنی
    گر نمی‌خواهی، برافشان طُرّهٔ طرّارِ خود

    (محمد فضولی بغدادی)
    اے [محبوب] کہ جو ہر دم میرے دل کے سبب شکایت کرتے ہو!۔۔۔ اگر تم [ایسا] نہیں چاہتے تو اپنی زُلفِ طرّار کو بِکھرا دو۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 21, 2019 6:25 شام
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,364
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بیہودہ رَوَد بادِ صبا بر اثرِ ما
    ما گم شدگانیم کہ یابد خبرِ ما


    چندر بھان برہمن

    بادِ صبا فضول ہی ہمارے کھوج میں چلتی ہے، ہم تو (عشق میں) گم شدہ ہیں، ہماری خبر کون پائے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بِیا، که بی‌تو دلم راحتی نمی‌یابد
    بِیا، که بی‌تو ندارد دو دیده بینایی
    (فخرالدین عراقی)

    آ جاؤ، کہ تمہارے بغیر میرا دل کوئی راحت نہیں پاتا۔۔۔ آ جاؤ، کہ تمہارے بغیر [میری] دو چشمیں بینائی نہیں رکھتیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    من و ابری که برمی‌خیزد از دشت
    دو هم‌دردیم، می‌گِرییم با هم
    (میر تقی میر)

    مَیں، اور اِک ابر کہ جو دشت سے بالا اُٹھتا ہے۔۔۔ ہم دو ہم‌درد ہیں (یعنی ہم یکساں درد رکھتے اور ایک دوسرے کے غم میں شریک ہیں)، ہم باہم [مِل کر] گِریہ کرتے ہیں۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 18, 2019 9:44 صبح
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مکن ای دوست ملامت منِ سودایی را
    که تو روزی نکشیدی غمِ تنهایی را
    (هُمام‌الدین تبریزی)

    اے دوست! مجھ عاشق و مجنون کو ملامت مت کرو۔۔۔ کیونکہ تم نے کسی [بھی] روز تنہائی کا غم نہیں کھینچا [ہے]۔ (لہٰذا تم نہیں جانتے کہ مجھ پر کیا گُذر رہی ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  17. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    24,364
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    چہ حاصل گر ہزاراں گُل دمد یا صد بہار آید
    مرا چوں با تو کار افتادہ است اینہا چہ کار آید


    ہلالی چغتائی

    کیا فائدہ اگر ہزاروں پُھول کھلیں یا سو سو بہار آئے، میرے جب سارے معاملے تجھ سے ہیں، مجھے جب کام ہی تجھ سے ہے تو یہ باغ و بہار کس کام کے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  18. لاریب مرزا

    لاریب مرزا محفلین

    مراسلے:
    5,567
    بہت خوب!!!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فارسی شاعری کی سِتائش میں ایک بیت:
    تا سر از خاور برآرَد آفتابِ خاوری
    می‌تپد فرهنگِ ما در سینهٔ شعرِ دری

    (سید ابوالفضل قاضی شریعت‌پناهی)
    جب تک آفتابِ مشرقی مشرق سے طُلوع ہو[تا رہے] گا (یعنی تا قیامت)، ہماری ثقافت شعرِ فارسی کے سینے میں دھڑکتی [رہے] گی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    16,410
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «سُلطان محمود غزنوی» کے برادر «امیر ابویعقوب یوسف بن ناصرالدین غزنوی» کی مدح میں کہے گئے قصیدے سے تین ابیات:

    از پَیِ آن‌که در از خیبر برکَند علی
    شیرِ ایزد شد و بِگْذاشت سر از عِلِّیین
    درِ قُسطَنطین صد ره ز درِ خیبر مِه
    قاضیِ شهر گواهی دِهد اِمروز بر این
    گر خُداوندِ مرا شاهِ جهان امر کند
    برِ شاه آرد در دست درِ قُسطَنطین

    (فرُّخی سیستانی)

    چونکہ حضرتِ علی نے درِ خیبر اُکھاڑا تھا، لہٰذا وہ شیرِ خُدا ہو گئے اور جنّت کے بالائی طبقے و درجے سے [بھی] بالا گُذر گئے۔
    درِ قُسطَنطین (قُسطَنطینیہ) درِ خیبر سے صد مرتبہ بُزُرگ تر ہے۔۔۔ قاضیِ شہر اِمروز (آج) اِس کی گواہی دیتا ہے۔
    اگر شاہِ جہاں (سُلطان محمود غزنوی) میرے مالک کو حُکم کرے تو وہ درِ قُسطَنطین کو [اپنے] دست میں [لیے] شاہ کے نزدیک لے آئے گا۔

    × یہ ابیات اُس زمانے میں کہی گئی تھیں کہ جب شہرِ قُسطَنطینیہ ہنوز فتح نہ ہوا تھا۔
     
    آخری تدوین: ‏مارچ 20, 2019 7:09 شام
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر