مظفر وارثی جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں

ابو المیزاب اویس نے 'حمد، نعت، مدحت و منقبت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 4, 2017

  1. ابو المیزاب اویس

    ابو المیزاب اویس محفلین

    مراسلے:
    368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful

    جو عرش کا چراغ تھا میں اس قدم کی دھول ہوں
    گواہ رہنا زندگی میں عاشقِ رسول ہوں

    مری شگفتگی پہ پت جھڑوں کا کچھ اثر نہ ہو
    کِھلا ہی جو ہے مصطفٰے کے نام پر وہ پھول ہوں

    مری دعاؤں کا ہے رابطہ درِ حضور سے
    اسی لیے خدا کی بارگاہ میں قبول ہوں

    بڑھا دیا ہے حاضری نے اور شوقِ حاضری
    مسرتیں سمیٹ کر بھی کس قدر ملول ہوں

    مظفؔر آخرت میں بخشوائیں گے وہی مجھے
    کہ سر سے پاؤں تک قصور ہوں، خطا ہوں، بھول ہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  2. سیما علی

    سیما علی لائبریرین

    مراسلے:
    20,568
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    جب بھی لب پہ میرے یہ نام محمد آئے
    مجھ کو مرتے ہوئے جینے کا سلیقہ آئے
     

اس صفحے کی تشہیر