بادۂ کہن۔ مولوی احمد علی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 4, 2008

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    *******

    بادۂ کہن

    احمد علی


    چیف جسٹس، عدالتِ شرعیہ، ریاست جاؤرہ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    پیش لفظ


    ہم اپنے تہذیبی اثاثے کے بڑے حصے سے اس وجہ سے محظوظ ہوتے رہے ہیں کہ جن گوشوں میں وہ محفوظ ہیں وہاں تک ہماری رسائی نہیں ہوتی یا وہ لوگ اُس کی پرواہ نہیں کرتے جن کے پاس وہ محفوظ ہیں۔ بسا اوقات اُن کی قدر و قیمت کا تعیّن کرنے میں لوگوں کو تامّل ہوتا ہے اور صواب دید کے مطابق اُسے رکھتے ہیں یا رد کردیتے ہیں۔ نہ جانے کتنا کچھ ہمارا خزانہ ضائع ہوگیا اور ضائع ہوتا رہا اور ضائع ہوتا رہے گا۔ کچھ اداروں نے اس کی کوشش ضرور کی ہے کہ اس طرح کی چیزوں کو محفوظ کریں اور ممکن ہو تو لوگوں کے سامنے لائیں اور یہ طے کرنے کا کام اہلِ علم اور اہلِ مذاق پر چھوڑیں کہ اُن کی قدر و قیمت کیا ہے۔ ہمارے قصّے کہانیاں، ہمارے مذہبی عقائد پر مبنی ادب ایک نسل سے دوسری نسل تک سینہ بہ سینہ پہنچنے والی روایات، صندوقوں میں بند دستاویزات؛ یہ سب ایسی چیزیں ہیں جن میں ہماری تہذیب کے ارتقا کا نسل در نسل لوگوں کے رویّوں کا غرض کہ انسانی قافلے کی سمت و رفتار کا سادے نقش و نشان انھیں چھپے ہوئے یا کھوئے ہوئے گوشوں میں موجود ہے جنھیں سامنے لانا ضروری ہے۔ احمد علی صاحب مرحوم اُس نسل سے تعلق رکھتے تھے جو صدیوں کی بندھی ہوئی روایات اور اُن کی اقدار کے پاسدار تھے۔ شعر و شاعری تو یوں بھی اردو کلچر کا ایک لازمی حصہ ہی ہے لیکن ایک زمانہ تھا کہ ہر پڑھے لکھے شخص کی آزمائش ہی اس پیمانے پر پورا اترنے سے ہوتی تھی کہ وہ اپنے افکار و خیالات اور عقائد کے اظہار کے لیے اور طریقوں کے علاوہ شعر و شاعری میں کتنا کمال دکھاتا ہے۔ اُس نسل نے اپنے افکار و خیالات کا بڑا حصہ اسی شکل میں چھوڑا ہے۔ احمد علی صاحب کا زمانہ وہ تھا جب سرسیّد احمد خاں کی تہذیب کے اثرات پوری دنیائے علم و ادب پر چھائے ہوئے تھے۔ شاعری میں حالیؔ کا طرز عموماً اس لئے مقبول تھا کہ اُس کے ذریعے پڑھے لکھے لوگوں کے ایک بڑے حلقے تک پیغام پہنچایا جاسکتا تھا۔ پھر خواہ جذبات عاشقانہ ہو یا مصلحانہ، سادگیِ بیان میں جو ایک جادو تھا، جسے داغؔ اور اُن کے دبستان کے لوگوں نے دریافت کیا اور اُسے بہت فروغ دیا تھا اُس کی مقبولیت عام تھی۔ چنانچہ احمد علی صاحب مرحوم اپنی اور روایات کے ان پہلو سے ذہنی طور پر زیادہ قریب تھے جس کا اظہار اُن کے اس مجموعے ’بادۂ کہن‘ میں ہوتا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ اُن کے خاندان کے افراد نے خصوصاً عبدالواحد صاحب نے مدتوں بیرونِ ملک میں زندگی گزارنے کے ساتھ ساتھ احمد علی صاحب کے کلام کو بھلایا نہیں بلکہ اُس کی اشاعت کا بڑے سلیقے سے اہتمام کیا۔
    پروفیسر صدیق الرحمن قدوائی
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عرضِ مرتّب

    ’بادۂ کہن‘ کی اشاعت میں ’پدرم سلطان بود‘ کا سوقیانہ پن ہرگز کارفرما نہیں ہے۔ بات صرف اتنی تھی کہ والدِ محترم کی شاعری کی بیاض جو نصف صدی تک صرف خاندانی ورثہ بنی رہی، اُس کو ورثۂ عامّہ بنانے کی تحریک نہ صرف میرا ارادہ تھا بلکہ اس ارادے کی حوصلہ افزائی جن اربابِ ادب نے فرمائی اُن کا تہِ دل سے شکرگزار بھی ہوں اور یہاں فرداً فرداً اُن اسمائے گرامی کا ذکر بھی لازم ہے۔
    سب سے اوّل تو صدیق الرحمن قدوائی صاحب نے اس ترتیب پر پیش لفظ عنایت فرماکر از حد ممنون فرمایا ہے، بعد ازاں ایوانِ غالب کے ناظم شاہد ماہلی صاحب کا اور ’صدا‘ کے مدیر اقبال مرزا صاحب کا عملی تعاون، جس کے تحت مرتّب نے تُرکی سے آکر ایوانِ غالب ہی میں قیام کیا اور اپنی ہی نگہداشت میں اس مرحلے کی تمام منازل طے کیں۔ خاندانی افراد میں سیّد محمد ذوالفقار، اُن کے صاحبزادے سروش، بڑے بھائی عبدالماجد صاحب، اُن کے صاحبزادے ریحان ماجد کی تگ و دو اور انٹرنیٹ سے دو شہروں کے درمیان ترسیل کے سلسلے قابلِ ذکر ہیں۔
    علاوہ ازیں سرورق کی مصوّری اور صفحۂ اوّل کی خطاطی عزیزم نعمان اشرف صدیقی کی مرہونِ منّت ہے جو سعودی عرب کی بحریہ میں ملازم ہیں اور جبیل میں مقیم ہیں، جن کی نوازش اور عنایت بھی میرے لیے ناقابلِ فراموش ہے۔

    ع. واحد​
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مناجات


    مناجات بفرمائش ناصر علی خاں ولی عہد جاورہ

    اے خدا اے بادشاہ اے کارساز
    اے خدا اے مالکِ بندہ نواز
    گمرہی سے میری حالت ہے تباہ
    معصیت کے زنگ سے دل ہے سیاہ
    دین کے کاموں سے وحشت ہے مجھے
    ناروا خوشیوں سے رغبت ہے مجھے
    بندگی کا فرض مجھ پر بار ہے
    میری نیکی سے بدی کو عار ہے
    صدق سے خالی ہے مری زندگی
    زندگی ہے سر بسر شرمندگی
    میری طاعت بے اثر بے جان ہے
    لفظ بے معنی مرا ایمان ہے
    آپ خود اپنی نظر میں خوار ہوں
    نفس اور شیطاں کا خدمت گار ہوں
    پھنس گیا حرص و ہوس کے جال میں
    پڑگیا دھوکے سے اک جنجال میں
    میں ہوں اور دنیا کی جنت کے مزے
    عیش کے عشرت کے راحت کے مزے
    کام ہے بس مجھ کو اپنے کام سے
    بے خبر ہوں کام کے انجام سے
    یہ نہ جانا عیش ماتم خیز ہے
    یہ نہ سمجھا شہد زہر آمیز ہے
    قاعدہ تیرا بدل سکتا نہیں
    آنے والا وقت ٹل سکتا نہیں
    پھر ہیں بیگانے عزیز و یار سب
    عقل و حکمت زور و زر بے کار سب
    آتشیں دریا ہے اور منجدھار ہے
    تو کرم کردے تو بیڑا پار ہے
    پیشوائے مُرسلیں کے واسطے
    رحمت للعالمین کے واسطے
    تو نے نعمت دی ہے زحمت سے بچا
    تو نے عزت دی ہے ذلّت سے بچا
    لاج رکھ لے میری تو ستّار ہے
    بخش دے سب جرم تو غفّار ہے
    مہربانی سے بدل دے میرا حال
    دور ہوں دل سے گناہوں کے خیال
    ہے یہاں کی زندگی ناپائیدار
    آخرت کی جائے ہے جائے قرار
    وقتِ رخصت ایک تیرا دھیان ہو
    مطمئن دل ہو، قویٰ ایمان ہو
    تیری مرضی کے زباں پر ہوں کلام
    سامنے آنکھوں کے ہو دارالسلام
    قیدِ تن سے روح جب آزاد ہو
    پاس تیرے شاد ہو آباد ہو
    پوری فرما دے مری یہ آرزو
    ہے ترے قران میں لاتقنطوا
    نیک و بد پر عام ہے احساں ترا
    ہو قبول احمد علی کی یہ دعا
    ۱۹۳۸ء
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ///////


    غزلیاتِ اردو


    //////
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    اُن سے ہر روز نہ ملنے کی شکایت کیسی
    دل ناداں یہ حکومت پہ حکومت کیسی
    دی بلندی مجھے اونچے سے گرانے کے لیے
    یہ زمانے کی شرارت ہے عنایت کیسی
    منزلِ یار بھی ہے سامنے دلدار بھی ہے
    عیش فردوس ہے اے شیخ عبادت کیسی
    رنج و راحت غم و شادی کے سبب ہیں معلوم
    ہم سمجھتے ہیں فقط آپ کو قسمت کیسی
    آنکھیں شرماتی ہیں نظروں کو جھجک ہوتی ہے
    چشم بددور ملی تم کو لطافت کیسی
    دین سے دور رہا کرتے ہیں دنیا سے نفور
    وحشیوں نے ترے پائی ہے فراغت کیسی
    صبر نے آکے ہلاکت سے بچایا دل کو
    کام آتی ہے بُرے وقت رفاقت کیسی
    لطفِ آغاز عیاں زحمتِ انجام نہاں
    پھنس گئے جال میں ہم ہو گئی غفلت کیسی
    نہ ہوئیں صوفی مغرور کی نذریں منظور
    مل گئی خاک میں قارون کی دولت کیسی
    جان دنیا سے جدا ہونے لگی جب سمجھی
    کہ بری ہوتی ہے ناجنس کی صحبت کیسی
    سازگاری سے بہم مل نہ سکے تُند حریف
    ہو گئی دین میں دنیا میں عداوت کیسی
    ملنے والے ترے سمجھے ہیں نہ سمجھوگے کبھی
    صبر کیا چیز ہے ہوتی ہے قناعت کیسی
    نہیں اے واعظو! مطلب سے کوئی دل خالی
    بندگی اپنی غرض کی ہے عبادت کیسی
    آج تک زندگی افسردہ دلی میں گزری
    میرے حصے میں الم بھی نہیں راحت کیسی
    مدعا زیر زمیں روئے زمیں پر تگ و دو
    قبر میں ملتی ہے دنیا میں فراغت کیسی
    سامنے وادیِ پُرخار ہے میں آبلہ پا
    اے خدا تیری مدد چاہیے ہمّت کیسی
    نغمہ سنجی ہے تری بلبلِ خوش لہجہ عبث
    کان پھولوں کے ہیں بیکار سماعت کیسی
    عشق سے مرتے ہو اور عشق پہ مرتے بھی ہو
    مرض الموت سے احمدؔ یہ محبت کیسی
    ****
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    (اُسی بحر میں دوسری غزل)

    آئے ہو بہر تسلّی تو اجازت کیسی
    یہ تو رخصت ہے مری آپ کی رخصت کیسی
    جان بے صبر ہے جاتی رہی غیرت کیسی
    ہوئی نازل یہ مصیبت پہ مصیبت کیسی
    ہم نہیں جانتے بیگانگی کہتے ہیں کسے
    تم نہیں جانتے ہوتی ہے مروت کیسی
    غلغلہ آہ و بکا شور و فغاں واویلا
    دھوم سے آئی مرے گھر شبِ فرقت کیسی
    قتل فرماؤ تو احسانِ شہادت سمجھوں
    یہ عقیدت ہے تو پھر مجھ سے عداوت کیسی
    دوستو مجھ کو بڑا کہتے ہو دیکھو تو ذرا
    چال کیسی ہے ادا کیسی ہے صورت کیسی
    میکدے میں تمھیں دیکھا تو کہا اے زاہد
    یہ خدا جانے کہ تھی آپ کی نیت کیسی
    کامیابی پہ مرے جلتے ہیں ناحق دشمن
    یہ بھی دیکھیں کہ اٹھائی ہے مشقّت کیسی
    دلِ ناداں غمِ الفت کو غذا سمجھا ہے
    زہر کھانے کی اسے ہو گئی عادت کیسی
    خود ہی تم دیکھ لو کیسے ہیں تمھارے برتاؤ
    پوچھتے کیا ہو کہ ہے تیری طبیعت کیسی
    عقل ہے جان ہے ایماں ہے غرض جو کچھ ہے
    مال ہے آپ کا لے لیجیے قیمت کیسی
    اُس طرف شرم و حیا اور ادھر پاسِ ادب
    ہو گئی عین ملاقات میں فرقت کیسی
    میں ہی بن جاتا ہوں خود اپنی شکایت کا جواب
    سامنے اُن کے بدل جاتی ہے صورت کیسی
    چارہ یہ ہے کہ تغافل ہی سے باز آجائیں
    میں کہ تم سے بھی ہوں محروم عنایت کیسی
    سخت مشکل ہے کہ جن باتوں سے توبہ کی تھی
    پھر انھیں باتوں میں لگتی ہے طبیعت کیسی
    مست ہوں رقص پہ آنکھیں ہیں تو نغموں پر کان
    بے محل حضرتِ واعظ یہ نصیحت کیسی
    بے طلب محفلِ اغیار میں پہنچے احمدؔ
    شرم آتی نہیں جاتی رہی غیرت کیسی
    باز آ باز آ یہ طور بُرے ہیں احمد
    دور از حال تری ہو گئی حالت کیسی
    ***
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    ان سے شکوہ کیا جاہل ٹھہرا
    میں ہی خود پردۂ حائل ٹھہرا
    عشق ناکام نہیں ہوسکتا
    وہی رستہ وہی منزل ٹھہرا
    نہ ملی کون و مکاں میں راحت
    تم کو دیکھا تو میرا دل ٹھہرا
    ڈھنگ ملنے کے نرالے دیکھے
    مٹ گیا جو وہی واصل ٹھہرا
    جو ہوا آپ کا منظورِ نظر
    وہی شایانِ سلاسل ٹھہرا
    ہوئی کونین سے الفت سب کو
    تو جو کونین کا حاصل ٹھہرا
    مقصدِ خاص تھا جس دل میں رقم
    وہی دل صفحۂ باطل ٹھہرا
    بٹ گیا تفرقہ نفس و کمال
    جسے دیکھا وہی کامل ٹھہرا
    مے کشوں کو ترے تسکین کہاں
    بحرِ ذخار بھی ساحل ٹھہرا
    چشم ہر سو نگراں پیدا کر
    کھائی چوٹ اس نے جو غافل ٹھہرا
    تھا فلک سے بھی سوا طاقت میں
    جو ترے راز کا حامل ٹھہرا
    پھر کسی دید کے قابل نہ رہا
    جو تری دید کے قابل ٹھہرا
    خضر بھی چھوڑ گئے رستے میں
    شوق سالارِ قوافل ٹھہرا
    زندہ وہ تھا جو رہا مثل چراغ
    جل کے بھی رونقِ محفل ٹھہرا
    حیف اے دل کہ رہا تو محروم
    آئینہ دید کے قابل ٹھہرا
    ہم وہ آئینہ ہیں جو آئینہ
    آئینہ گر کے مقابل ٹھہرا
    دو جہاں دیں تو توجہ نہ کرو
    میں فقط آپ کا سائل ٹھہرا
    غیرتِ عشق اگر ہے احمدؔ
    دوسروں کو نہ وسائل ٹھہرا
    ***
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل



    پھر نہ جنت میں بھی وہ دل ٹھہرا
    جو ذرا تیرے مقابل ٹھہرا
    ساربان کچھ تو مرا دل ٹھہرے
    دے ذرا ناقۂ محمل ٹھہرا
    مرنے جینے کو میرے طے نہ کیا
    تمھیں یہ کام بھی مشکل ٹھہرا
    صاف دل میں ہے ترے ظلم کا نقش
    جس طرح رخ پہ ترے تِل ٹھہرا
    کیا سحر ہے کہ تری آنکھوں میں
    سرمہ بھی جادوئے بابل ٹھہرا
    اُسے دیکھا تو ہوئے سب خاموش
    جھوٹ سچ قصہ باطل ٹھہرا
    راز کا پاس تھا ہم کو ورنہ
    اس طرح کب کوئی بسمل ٹھہرا
    دین کو رو ہی رہا تھا کہ مجھے
    روکنا جان کا مشکل ٹھہرا
    مجھ کو دوزخ میں جلاتا ہی رہا
    پھر بھی تو حور شمائل ٹھہرا
    چشم بددور ترا جوش طرب
    نالہ آہنگِ عنادل ٹھہرا
    خود کشی عشق کو سب کہتے ہیں
    جو مری زیست کا حامل ٹھہرا
    فتنہ پرداز کو دی تھی ترغیب
    اپنا میں آپ ہی قاتل ٹھہرا
    کچھ تو احساس تجھے بھی ہو مرا
    کوئی تو مدِ مقابل ٹھہرا
    میرے رونے پہ تری بزم ہے خوش
    نوحہ گر مطرب محفل ٹھہرا
    پیچ در پیچ تمھاری باتیں
    اور میں سادہ خصائل ٹھہرا
    سب نے مانا تھا مسیحا جس کو
    وہ مرا دشمنِ قاتل ٹھہرا
    موت سے کام مجھے کیا احمدؔ
    اُس کے مقتولوں میں داخل ٹھہرا
    ****
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    یہ دل جاں سے گزر جائے تو اچھا
    وفا میں نام کر جائے تو اچھا

    مجھے دیکھا طبیبوں نے تو بولے
    کہ یہ بیمار مرجائے تو اچھا

    مجھے راحت ہے مرجانا بھی لیکن
    شبِ فرقت گزر جائے تو اچھا

    بہت دلچسپ ہے ناصح تری بات
    مگر دل میں اتر جائے تو اچھا

    کہاں تک خوف بہ سیل و حوادث
    اگر سر سے گزر جائے تو اچھا

    دمِ آخر کا حال اُن کو نہ بھیجو
    وہاں پوری خبر جائے تو اچھا

    عزیزوں سے کیا احمدؔ نے انکار
    وہ ظالم بھی مُکر جائے تو اچھا
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل
    (ذوقؔ کی زمین میں)


    لطف ہر بات سے ہر حال میں حاصل ہوتا
    ذوقِ الفت سے خبردار اگر دل ہوتا
    دل نہیں سنگ سے بدتر ہے اگر دل ہوتا
    ایک آئینہ ترے منہ کے مقابل ہوتا
    نہ ملا مقتلِ عشاق میں زاہد کا پتہ
    آتا میدان میں گر وہ کسی قابل ہوتا
    شوقِ دیدار میں اتنا تو اثر ہو مجنوں
    دامنِ چاک ترا پردۂ محمل ہوتا
    کچھ تجھے کچھ مجھے دونوں کو مزہ آ جاتا
    تیری دزدیدہ نگاہوں سے جو بسمل ہوتا
    ہمیں مل جائیں اگر دیکھنے والی آنکھیں
    خار بھی گل کا یہاں دید کے قابل ہوتا
    اٹھ گئے یار سب آغازِ محبت ہی میں
    پار ہوتے اگر اس بحر کا ساحل ہوتا
    دیکھ سکتی اسے اے دیدہ دیدار طلب
    رخِ روشن جو مثال مہِ کامل ہوتا
    دم نکل جاتا خوشی سے یہ بشارت سن کر
    جو مرے قتل پہ آمادہ وہ قاتل ہوتا
    صبر اور ہجر کی ایذا پہ بہت مشکل تھا
    چیخ اٹھتا جو تری یاد سے غافل ہوتا
    مل نہ جاتی جو اسے آہ و فغاں کی رخصت
    سانس لینا ترے دل خستہ کو مشکل ہوتا
    جس پہ قرباں ہے احمدؔ وہ ادا ہے کچھ اور
    بوالہوس تھا جو تری شکل پہ مائل ہوتا
    ***
     
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل



    ہے یہی یار کی خوشی نغمہ شکر گائے جا
    رنج و الم اٹھائے جا چوٹ پہ چوٹ کھائے جا
    جو تیرے جاں نثار ہیں دیر سے بے قرار ہیں
    تیرِ نظر چلائے جا چشم خوں بہائے جا
    مجھ کو ہے اے ستم شعار شرکتِ غیر ناگوار
    صرف مجھے ستائے جا صرف مجھے منائے جا
    ہوں تو ہوں راہ میں خطر راہ روئے حرم نہ ڈر
    عین ظفر ہے یہ سفر آگے قدم بڑھائے جا
    ہوش میں آ چلے ہیں ہم مطرب خوش نوا نہ تھم
    ساز وہی بجائے جا راگ وہی سنائے جا
    وہم و گماں کا جوش ہے جان و بدن کا ہوش ہے
    دل میں ابھی سمائے جا نقش خودی مٹائے جا
    بارشِ ابر ہو ادھر تابش برق ہو اُدھر
    روئیں گے ہم بھی زار زار تو یوں ہی مسکرائے جا
    سن کے پیام کیا کہا ہنس کے جواب کیا دیا
    قاصدِ خوش خبر مجھے ذکر یہی سنائے جا
    گرتی ہیں بجلیاں گریں جلتی ہیں بستیاں جلیں
    زیرِ نقاب کچھ نہ کچھ اپنی جھلک دکھائے جا
    پوری اگر ہے جستجو ہوکے رہے گا روبرو
    احمدؔ رہ نورد تو اُس کا پتہ لگائے جا
    ***
     
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    گھنی زلفوں میں الجھایا گیا ہوں
    بلا کے پیچ میں لایا گیا ہوں
    محبت کے طریقے مجھ سے پوچھو
    بہت اس راہ میں آیا گیا ہوں
    بڑے دلکش تھے تاج و تختِ شاہی
    کھلونے دے کے بہلایا گیا ہوں
    مری فریاد بے معنی سنے کون
    بغیر آتش کے جلوایا گیا ہوں
    یہ مجھ پر بے سبب ظلم و ستم کیوں
    میں خود آیا نہیں لایا گیا ہوں
    یہ ذلت ہے مجھے عزت سے بہتر
    تری ٹھوکر سے ٹھکرایا گیا ہوں
    کہاں پاؤں ٹھکانہ بیٹھنے کا
    تری محفل سے اٹھوایا گیا ہوں
    بھلا اب کس کے در پہ سر جھکاؤں
    فرشتوں سے میں پُجوایا گیا ہوں
    میں ہوں اسرارِ فطرت کا خزینہ
    دلِ انساں میں دفنایا گیا ہوں
    کہاں قیدِ توہّم سے رہائی
    بہت مضبوط بندھوایا گیا ہوں
    لگے کیا دل مرا ویراں جہاں میں
    کہ جنت سے نکلوایا گیا ہوں
    سمجھنے سے مرے حکمت ہے عاجز
    بہت پیچیدہ بنوایا گیا ہوں
    مصیبت سے نہیں اک دم جدائی
    میں جب سے ہوش میں لایا گیا ہوں
    مجھے کیا کامیابی سے خوشی ہو
    ہزاروں بار ترسایا گیا ہوں
    ***
     
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    زہر دیتے بھی نہیں زعم مسیحائی بھی
    تپ فرقت ہے طبیبو! غمِ تنہائی بھی
    حسن اور حسن پہ ہے دعوے یکتائی بھی
    بدلی نیت کی طرح سمت جبیں سائی بھی
    موت کے منہ میں جیا کرتے ہیں زخمی تیرے
    زہر بھی ہے دم خنجر میں مسیحائی بھی
    عشق کے حملہ اول ہی میں دل ختم ہوا
    ہوش پرواں ہوئے ٹھہری نہ توانائی بھی
    جب گری برقِ تجلی تو رہا خشک نہ تر
    آگ میں اہلِ نظر بھی ہیں تماشائی بھی
    اپنی آزادی کو روتی ہے قفس میں بلبل
    آئی کیا خاک جو اُس وقت سمجھ آئی بھی
    ساری امیدیں تر و تازہ ہیں آخر دم تک
    ہیں غضب تیرے ستم بھی ستم آرائی بھی
    جب مری جاں سے ہے وابستہ تری مشق ستم
    جور کے ساتھ ہو کچھ حوصلہ افزائی بھی
    مدد اے خضر کے رستے ہیں بہت پیچیدہ
    فکر گردش میں ہے چکر میں ہے دانائی بھی
    ہوں صفا کیش تو اغیار ہیں یاروں سے سوا
    نہ ہو اخلاص تو اغیار بھی ہیں پھر بھائی بھی
    اک ترے غم نے کیا سارے غموں کو زائل
    ہے فلاطون زمانہ ترا سودائی بھی
    آبِ رحمت کی جگہ برق ہی گرتے دیکھی
    گر مری خشک زراعت پہ گھٹا چھائی بھی
    عشق ہے عشق تو پھر ہجر کی برداشت کہاں
    چارہ بے فائدہ بے کار شکیبائی بھی
    اس نے تو آپ بلایا تھا کہ حالات سنے
    میں ہی گم ہوگیا جاتی رہی گویائی بھی
    اے خرد ہم پہ گراں ہے یہ ترا لطفِ مدام
    دلِ بیمار کو درکار ہے تنہائی بھی
    بُتِ مغرور کی ٹھوکر بھی میسّر نہ ہوئی
    کی عزیزوں نے بہت ناصیہ فرسائی بھی
    ان سے ملنے کے لیے شوقِ طلب تھا رہبر
    بے خبر عقل تھی نادان تھی دانائی بھی
    چشمِ بیمار کی چولیں بھی نہ سنبھلیں اے دل
    دیکھ لی ہم نے تری معرکہ آرائی بھی
    چھوڑا اس قصے کو اے نامہ بر اتنا کہہ دے
    پائی جاتی ہے کچھ امیدِ پذیرائی بھی
    کھوج اس آہوئے رم دیدہ کا ملنا معلوم
    بادہ پیما تھی یہ بادیہ پیمائی بھی
    خوف ہے رنگ بنا لائیں نہ دونوں مل کر
    سادگی بھی تری آفت ہے خودآرائی بھی
    کی نئے جور کی تمہید جو اُس ظالم نے
    حال پر میرے عنایت کوئی فرمائی بھی
    اپنی کچھ فکر نہیں راز نہاں کا ہے خیال
    میری رسوائی میں ہے آپ کی رسوائی بھی
    خویش و احباب کو جن کے لیے تم نے چھوڑا
    احمدؔ ان کو نہیں اقرارِ شناسائی بھی
    *****
     
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    رنج وغم سے باغ دنیا کی فضا خالی نہیں
    جس میں گل بے خار ہوں ایسی کوئی ڈالی نہیں
    ہیں جوان و پیر اُس کے دامِ گیسو میں اسیر
    قحبۂ دنیا کسی کو چھوڑنے والی نہیں
    کچھ نہیں آتا سمجھ میں آپ کا سحر و فسوں
    جاورے کا رہنے والا ہوں میں بنگالی نہیں
    قتل سے بچنے کی مجھ پر بدگمانی کیوں ہوئی
    آج تک میں نے کوئی بات آپ کی ٹالی نہیں
    سادہ گو ہوں میں نہیں آتیں سخن آرائیاں
    لیکن اے شاعر یہ حالِ دل ہے نقالی نہیں
    خوں چکانی کی عجب ایجاد ہے اے نیش عشق
    جلد سینے پر مرے چسپاں ہے یہ جالی نہیں
    منزلِ اول ہی میں دہری الجھ کر رہ گیا
    اس کی نظروں میں یہ باغ دہر ہے مالی نہیں
    میکدے میں کم ہیں رندوں کی سیہ مستی کے جوش
    بدلیاں کعبے سے آئی ہیں مگر کالی نہیں
    رفتہ رفتہ شادمانی کی امنگیں مٹ گئیں
    نام کی ہے زندگی جب فارغ البالی نہیں
    پہلے ہی حملے میں عقل و دیں کو غارت کردیا
    تیری آنکھیں ہیں بہت عیار متوالی نہیں
    واپسیں دم تک رہا فرقِ مراتب کا لحاظ
    ہم نے اپنی بات اُن کے کان پر ڈالی نہیں
    دل وہ پتھر ہے جو ذوقِ دید سے محروم ہو
    آنکھ ہے کس کام کی گر دیکھنے والی نہیں
    گوشِ محرم چاہیے رندوں کے رمزوں کے لیے
    شیخ یہ اسرار کی مجلس ہے قوالی نہیں
    دل لگاکر کچھ نہ کچھ لکھیں بھی تو احمدؔ علی
    لیں سخن کی داد کس سے ہند میں حالیؔ نہیں
    ***
     
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    بر زمینِ بہادر شاہ ظفر

    خلشِ غم تجھے اے دل کبھی ایسی تو نہ تھی
    اشک ریزی سرِ محفل کبھی ایسی تو نہ تھی
    شبِ فرقت، شبِ رحلت ہی نہ ہو اے یارو
    کہ مری جان پہ مشکل کبھی ایسی تو نہ تھی
    جب نہیں کچھ بھی تو بدلے ہوئے تیور کیسے
    تیز چتون تری قاتل کبھی ایسی تو نہ تھی
    دل نے دنیا سے کیا قطعِ تعلق شاید
    کہ فراغت مجھے حاصل کبھی ایسی تو نہ تھی
    کستے جاتے ہیں مگر نارِ نظر کے پھندے
    مجھے تکلیف سلاسل کبھی ایسی تو نہ تھی
    نزع ہے موت نہیں دیکھیے کیا ہو انجام
    کوئی اس راہ میں منزل کبھی ایسی تو نہ تھی
    جل گئی قہر کی گرمی سے مری کشتِ امید
    تیری عادت مہِ کامل کبھی ایسی تو نہ تھی
    کیا نظر بھی تری بدلی مری قسمت کی طرح
    جو مرے حال سے غافل کبھی ایسی تو نہ تھی
    کاش خلوت کا ارادہ ہو کہ جلوت اُن کی
    جسم اور جان میں حائل کبھی ایسی تو نہ تھی
    لٹ گیا قافلہ پھولوں کا چمن میں شاید
    سُنی فریادِ عنادل کبھی ایسی تو نہ تھی
    روؤں تو ہنستے ہیں شکووں پہ خفا ہوتے ہیں
    بات بگڑی ہوئی اے دل کبھی ایسی تو نہ تھی
    کچھ ہوا قصدِ تلافی کہ طبیعت اُن کی
    میری دلجوئی پہ مائل کبھی ایسی تو نہ تھی
    چوٹ کچھ دل میں لگی ہے نگہ بسمل کی
    مضطرب شوخیِ قاتل کبھی ایسی تو نہ تھی
    ناخدا پیش نہ آئے کہیں طوفانِ بلا
    کہ مجھے حسرتِ ساحل کبھی ایسی تو نہ تھی
    ضبط شاید کششِ حسن سے مغلوب ہوا
    روح پرواز پہ مائل کبھی ایسی تو نہ تھی
    نذرِ جاں لے کے وہ خوش بھی ہیں کرم پر ہے کرم
    جنس یہ قدر کے قابل کبھی ایسی تو نہ تھی
    جان بیتاب ہے اور موت کے آثار احمدؔ
    غم زدہ رخصت محمل کبھی ایسی تو نہ تھی
    ***
     
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل
    آغا جان عیشؔ کی زمین میں

    جب دیا دل کہ دل دیے ہی بنی
    وہ کیا کام جو کیے ہی بنی
    اُس کو دیکھا تو دل دیے ہی بنی
    پھر جو اس نے کہا کیے ہی بنی
    دیے امید نے بڑے دھوکے
    اُن نصیبوں پہ بھی جیے ہی بنی
    سحر تھا التفاتِ ساقی میں
    جس کو ساغر دیا پیے ہی بنی
    رازداری رہی جنوں میں بھی
    چاک سینے کے تھے سیے ہی بنی
    شوق نے کردیا ہمیں ناچار
    جو نہ کرنا تھا وہ کیے ہی بنی
    کیسے بچتے کہ اُن کا ایما تھا
    بار سر پر اٹھا لیے ہی بنی
    دشمنِ جاں ہوئی وفاداری
    مر رہے تھے مگر جیے ہی بنی
    تھک گئے تھے اٹھا اٹھا کے ستم
    چھپ کے مرقد میں دم لیے ہی بنی
    اُن کے تارِ نظر سے آخرکار
    زخمِ تیرِ نظر سئے ہی بنی
    دیکھتا کیوں کر اُن کی ناامیدی
    جان مطلوب تھی دیے ہی بنی
    مضطرب کی دعا خدا کی پناہ
    ان کو خود معذرت کیے ہی بنی
    مدتوں نزع میں رہے آخر
    بیوفائی ہمیں کیے ہی بنی
    اس مصیبت کا لیں وہ کیوں الزام
    جو مصیبت مرے لیے ہی بنی
    جب دیا اس نے بزمِ غیر میں جام
    زہر کا گھونٹ تھا پئے ہی بنی
    عشق پر بس نہ چل سکا احمدؔ
    سر تسلیم خم کیے ہی بنی
    ***
     
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    تن من میں ایک آگ سمائی ہوئی سی ہے
    یہ خود نہیں لگی ہے لگائی ہوئی سی ہے
    پرہیز یادِ یار سے کیوں کر ہو اے طبیب
    تصویر اس کی دل میں سمائی ہوئی سی ہے
    وہ اور مجھ کو پوچھنے آئیں، نہیں نہیں
    یہ بات نامہ بر کی بنائی ہوئی سی ہے
    اے غمگسار ہم ہیں ازل سے شکستہ دل
    جو دل پہ چوٹ آئی ہے کھائی ہوئی سی ہے
    آنکھوں کا رنگ و روپ تو آنکھوں سے دیکھ جاؤ
    پتلی ہر ایک خوں میں نہائی ہوئی سی ہے
    کیا جانے وہ ابھی ستمِ ہجر بعدِ وصل
    تدبیر یہ کسی کی بتائی ہوئی سی ہے
    جاری ہر ایک سانس پہ ہے موت کا عمل
    آئی نہیں قضا مگر آئی ہوئی سی ہے
    جاں جفا پسند کو راحت کہاں نصیب
    کم بخت کچھ ازل کی ستائی ہوئی سی ہے
    کیا حفظِ راز ہو کہ سمجھنے لگے عزیز
    لگتی نہیں جو آنکھ لگائی ہوئی سی ہے
    ہستی ہماری اُس متکبّر کے سامنے
    اک مشتِ خاک وہ بھی اڑائی ہوئی سی ہے
    راضی ہیں ہم رضا پہ تری اے ستم شعار
    احمدؔ کی ہر مراد برائی ہوئی سی ہے
    ***
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل
    یوں عالم خراب بنا اور بگڑ گیا
    گویا طلسم خواب بنا اور بگڑ گیا
    نقشہ تھا وہ ہماری حیات و ممات کا
    دریا میں جو حباب بنا اور بگڑ گیا
    کیا کہیے کیا نہ کہیے جو وہ نکتہ چیں ملے
    سو بار یہ حساب بنا اور بگڑ گیا
    اچھی تھی شکل بدر کی گھٹنے سے گھٹ گئی
    رُخ کا ترے جواب بنا اور بگڑ گیا
    نازاں ہے شیخ قدرے مقامِ بلند پر
    یہ خانماں خراب بنا اور بگڑ گیا
    پھر دل کو سوزِ دل طلب ذوقِ نو کی ہے
    یعنی جگر کباب بنا اور بگڑ گیا
    طوفان اشک و آہ و فغان سے ہزار بار
    بالائے سر سحاب بنا اور بگڑ گیا
    ہو عُمر عمرِ نوح بھی تو اعتبار کیا
    دنبالہ شباب بنا اور بگڑ گیا
    بے درد تو نے کی نہ مرے آنسوؤں کی قدر
    کیا کیا درِخوشاب بنا اور بگڑ گیا
    رند شکستہ حال کے مدفن کی خاک تھی
    جو ساغرِ شراب بنا اور بگڑ گیا
    سب زندگی نمائشِ امید و یاس تھی
    پیشِ نظر سراب بنا اور بگڑ گیا
    سب ولولے مٹا دیے فکرِ مآل نے
    ہنگامہ شباب بنا اور بگڑ گیا
    ایسا مکاں بنا کہ ہمیشہ بنا رہے
    یہ کیا کہ اک حباب بنا اور بگڑ گیا
    جمنے لگی ہے چہرے پہ کچھ کچھ نگاہِ شوق
    جلوہ ترا کتاب بنا اور بگڑ گیا
    احمدؔ جہاں میں عیش جہاں کی نمود کیا
    ساغر میں اک حباب بنا اور بگڑ گیا
    ***
     
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    غزل

    ہوا زاہد بھی آخر معترف سوزِ محبت کا
    کہ سیدھا راستہ نکلا اسی دوزخ میں جنّت کا
    کہاں اب وصل کے نغمے کہاں اب ہجر کے نوحے
    کہیں ہنسنا ہے غفلت کا کہیں رونا ہے شامت کا
    جہاں مشتاق محشر خیز جلوہ حسن بے ہمتا
    مناسب تھا جو اُس نے وعدہ فرمایا قیامت کا
    کوئی مظلوم سہ سہ کر جفائیں مرگیا شاید
    رہی امید راحت کی نہ اندیشہ مصیبت کا
    مقدر کا لکھا ہوتا ہے پر اکثر یہ دیکھا ہے
    موافق تیری مرضی کے عمل ہے میری قسمت کا
    جو یوں آساں نہیں اس کی ادائیں دلفریبی میں
    ہمیں کھانا پڑا دھوکا مدارا پر عنایت کا
    فلک نے چاند اور سورج کو لے کر مدتوں ڈھونڈا
    نہ پایا تیری سیرت کا نہ دیکھا تیری صورت کا
    ہوئی ہے شب کہاں دشتِ طلب کے جادہ پیما کو
    جہاں ہردم ہے دن کی روشنی میں خوف غارت کا
    یہ مانا عشق عصیاں ہے مگر اے مہرباں واعظ
    ہمارا جرم ضامن ہوگیا خود ہی شفاعت کا
    جدائی میں رہا تیرا مریض سخت جاں برسوں
    مثالِ جاں بلب کوئی گھڑی کا کوئی ساعت کا
    ذرا سی رہ گئی ہے اے فلک آرام لینے دے
    نہ میں سائل ہوں عزت کا نہ میں طالب ہوں عشرت کا
    محبت نے مجھے محفوظ رکھا ہر مصیبت سے
    تباہی خیز تھا حملہ زمانے کی عداوت کا
    نکالا آپ نے کوچے سے اپنے اور ہم نکلے
    مگر کس طرح گویا قصد ہے دنیا سے رحلت کا
    نہ اتنا تنگ کر ظالم کہ نوبت آہ تک پہنچے
    لب فریاد مضطر قفل ہے بابِ اجابت کا
    لبوں تک آتے آتے خندہ شیون بن گیا احمدؔ
    بہت مشکل ہے دل میں بند رکھنا جوشِ حسرت کا
    ***
     

اس صفحے کی تشہیر