بادۂ کہن۔ مولوی احمد علی

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 4, 2008

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    قدیم گمشدہ غزل، قبل از ۱۹۰۹ء
    پوری کوئی کسی کی تمنا ہوئی تو کیا
    اک شاخ شاخسار میں پھولی پھلی تو کیا
    کل خار و خس پہ بیٹھ کے روئے گی زار زار
    پھولوں پہ آج بیٹھ کے بلبل ہنسی تو کیا
    باتیں کریں ہمیں جو کوئی رازداں ملے
    سوتوں کے آگے رام کہانی کہی تو کیا
    سانچے گرو کا پنتھ ہے من خاک میں ملاؤ
    سائیں جی راکھ آپ نے تن پر ملی تو کیا
    خرمن کے انتظار میں بجلی ہے بے قرار
    اے ابر تیرے فیض سے گنگا بہی تو کیا
    طے ہونے والی راہ میں ناداں مسافرو
    راحت ملی تو کیا جو مصیبت سہی تو کیا
    یہ رسم ہے کہ آپ ملے ضبط کو بچائے
    کم ظرف شمع اشک بہاتی جلی تو کیا
    جینے کا لطف جب ہے کہ ہو یار ہمکنار
    مرنے کی آرزو میں کٹی زندگی تو کیا
    احمدؔ کلام وہ ہے جو کرلے دلوں میں گھر
    اس طرح یہ جناب نے کی دل لگی تو کیا
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناتمام غزل، قبل از ۱۹۰۹ء
    جہاں میں بے بہا نعمت ہے صحبت آشناؤں کی
    مگر ملنے کے لائق آشنا مشکل سے ملتا ہے
    وہ میرے قتل کے درپے فدا ہونے کا میں خواہاں
    کوئی کس دل سے ملتا ہے کوئی کس دل سے ملتا ہے
    خس و خاشاک آنکھوں سے نکلواکر تجھے دیکھیں
    جو کہتے ہیں ترا چہرہ مہ کامل سے ملتا ہے
    کہاں قسمت گلے تجھ سے ملے یہ بھی غنیمت ہے
    کہ جھک جھک کر ترا خنجر ترے بسمل سے ملتا ہے
    تماشا بن گیا ڈوبا ہوا پیکاں کلیجے میں
    کوئی بسمل سے ملتا ہے کوئی قاتل سے ملتا ہے
     
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایضاً قبل از ۱۹۰۹ء

    وائے ناکامی کہ شد آغاز من انجام من
    اندریں مردم کہ چوں آزاد باید ریستن
    احمد از بوسیدن لب ہائے جاناں آرزوست
    ہمچو نئے با نالہ و فریاد باید ریستن
    خوبیِ کالانگر جوشِ خریداراں ببیں
    آں چناں را با چنیں بیداد باید ریستن

    یک شعر
    دلم غرق خیالش محو دیدار ست پنداری
    بخود ہم ننگرد از خویش بیزارست پنداری
    مزید یک شعر
    بہ رنج و راحتِ گیتی عبث گرفتاری
    کہ قدر و قیمتِ ایں ہا چناں کہ دانی نیست
     
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گمشدہ غزل،قبل ۱۹۰۲ء

    سہ چلے ہم عمر کے آزار سوتے جاگتے
    کٹ گئی یہ راہِ ناہموار سوتے جاگتے
    دل پریشاں دن کو ہے خواب پریشاں رات کو
    کل نہیں پڑتی مجھے اے یار سوتے جاگتے
    مدعا یہ ہے ٹھہرنے میں نہیں کچھ اختیار
    نبض ہم کو دے رہی ہے تار سوتے جاگتے
    چشم دل ہوتی ہے واجب چشم سر ہوتی ہے بند
    مجھ کو حاصل ہے ترا دیدار سوتے جاگتے
    پھر بھی پرہیز و دوا سے جی چراتا ہے بشر
    موت کے منہ میں ہے یہ بیمار سوتے جاگتے
    ہم عناں ہیں ناز شاہی و نیاز بندگی
    پاس رہتے ہیں مرے سرکار سوتے جاگتے
    حبِّ دنیا دشمن جاں ہو گئی احمد علی
    کھائے جاتی ہے مجھے مردار سوتے جاگتے
    ایضاً
    کیا سر میں ترے سودے نے گھر آہستہ آہستہ
    وبالِ سر ہوا یہ دردِ سر آہستہ آہستہ
    لطافت کا بھلا ہو خوف ہے کانٹے نہ چبھ جائیں
    گل عارض پہ پھرتی ہے نظر آہستہ آہستہ
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گمشدہ غزل،قبل ۱۹۰۲ء

    سہ چلے ہم عمر کے آزار سوتے جاگتے
    کٹ گئی یہ راہِ ناہموار سوتے جاگتے
    دل پریشاں دن کو ہے خواب پریشاں رات کو
    کل نہیں پڑتی مجھے اے یار سوتے جاگتے
    مدعا یہ ہے ٹھہرنے میں نہیں کچھ اختیار
    نبض ہم کو دے رہی ہے تار سوتے جاگتے
    چشم دل ہوتی ہے واجب چشم سر ہوتی ہے بند
    مجھ کو حاصل ہے ترا دیدار سوتے جاگتے
    پھر بھی پرہیز و دوا سے جی چراتا ہے بشر
    موت کے منہ میں ہے یہ بیمار سوتے جاگتے
    ہم عناں ہیں ناز شاہی و نیاز بندگی
    پاس رہتے ہیں مرے سرکار سوتے جاگتے
    حبِّ دنیا دشمن جاں ہو گئی احمد علی
    کھائے جاتی ہے مجھے مردار سوتے جاگتے

    ایضاً

    کیا سر میں ترے سودے نے گھر آہستہ آہستہ
    وبالِ سر ہوا یہ دردِ سر آہستہ آہستہ
    لطافت کا بھلا ہو خوف ہے کانٹے نہ چبھ جائیں
    گل عارض پہ پھرتی ہے نظر آہستہ آہستہ


    ضائع شدہ چند بند قبل از ۱۹۰۹ء
    زمانہ دیکھ لیا سیر کی دیار دیار
    ہوا نصیب نہ پل بے خمار و گل بے خار
    ظلام و نور بہم نیش و نوش ہیں توّام
    ہوئے ہیں شاہ کے ہمدم جہاں کے افکار
    کلاہ دار سروں کو ہے دردِ سر لازم
    کلاہ دار نہ بیمار ہوں تو ہیں بیمار
    مگر مریض جہاں کے یہی صحیح مریض
    نہ ہوں طبیب تو ہوجائے زندگی آزار
    یہ جاگ جائیں تو ہوجائے عام چین کی نیند
    اگر یہ سوئیں تو فتنے تمام ہوں بیزار
    معین مذہب و ملّت امیر مستعصم
    رقم طراز ہے عباسیوں کا نامہ نگار
    ہوئے سریرِ خلافت پہ جب جلوس نواز
    بدل چکی تھی بہت آسمان کی رفتار
    کبھی زمیں میں دباتا ہے یہ نفیس گہر
    کبھی زمیں سے اٹھاتا ہے یہ خسیس غبار
    صغار نوحہ کناں تھے کبار نغمہ زناں
    یہ میگسار وہ بیچارے زیست سے بیزار
    نوائے حال کے جو گوش دل تھے محرمِ راز
    ہر ایک سمت سے وہ سن رہے تھے یہ آواز

    ایضاً

    دیے ہیں دیس نکالے معاشیوں کو عبث
    نکل سکیں تو نکالیں دلوں سے کینوں کو
    میسر آئی جواہر مآب کان تو کیا
    کریں تلاش معارف مآب سینوں کو
    جوان و پیر کے مدنظر رہے یہ پند
    ہر آنچہ خود نہ پسندی بہ دیگرے مپسند
     
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    قدیم گمشدہ

    حذر ہے عدل کے ان سے فرس نشینوں کو
    مہم ہے سخت گدھوں پر کسیں نہ زینوں کو
    حریر پوش تن و توش پر ہیں اتراتے
    شرف مکاں سے ملا ہے انہی مکینوں کو
    خودی سے بیخود اور اس بیخودی سے ہیں غافل
    کوئی کہے تو چڑھاتے ہیں آستینوں کو
    دل ان سے کون ملائے کہ یہ فرش ابرو
    ملائے رکھتے ہیں اپنی جبیں سے چینوں کو
    نہ ہوں فلک سے بلندی طلب کہ یہ تارے
    ملے ہیں خاک پہ رکھی ہوئی جبینوں کو
    گہر فروش بہت معتبر سہی لیکن
    خریدتے ہیں تو خود آنک لیں نگینوں کو
     
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناتمام

    راز کی بات رازدار سے پوچھ
    حال گلزار کا بہار سے پوچھ
    صبر سرمایہ مسرت ہے
    عربستاں کے روزہ دار سے پوچھ
    رمز حب الوطن من الایماں
    دور افتادہ دیار سے پوچھ

    ناتمام

    سراسر کامیابی ہے محبت اے ستم پرور
    چھری گردن پہ چلتی پھر بھی لب پر آفریں ہوتی
    ہر اک جلوہ نیا ہے وصل بھی ہوتا تو کیا ہوتا
    کبھی راحت نہیں ملتی کبھی تسکیں نہیں ہوتی
    سمجھتا میں کہ پہنچے پاؤں میرے چرخ ہفتم پر
    اگر اس کے قدم کی خاک پر میری جبیں ہوتی
     
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناتمام قدیم قبل از ۱۹۰۹ء

    ستم اس لیے ہیں مجھ پر کہ الم سے کل نہ آئے
    اُسے زہر دے رہے ہو کہ جسے اجل نہ آئے
    مری حق گزاریاں یہ کہ رہوں مدام شاکی
    تری پاس داریاں وہ کہ جبیں پہ بل نہ آئے
    مرے ناصبور دل کو یہی آرزو تھی زیبا
    جو کیوں تو آن جائے نہ کیوں تو کل نہ آئے

    ایضاً ارتجالاً، ناتمام

    دھن دولت شان اور شوکت سے سب امیدیں بے فائدہ ہیں
    غافل ناداں گر تجھ کو خواہش چین کی ہو تو مرکر دیکھو
    تو کس کو ڈھونڈتا پھرتا ہے دریا دریا جنگل جنگل
    ہے تو یہی ہے جہاں جو کچھ ہے ذرا آپے سے اپنے گزر کر دیکھ
    آنکھ کے اک ادنیٰ سے ذرے میں بے گنتی سورج مخفی ہیں
    آنکھیں تو دل کی کھول ذرا پھر اس دنیا پر نظر کر دیکھ

    قبل از ۱۹۲۳ء

    دریا کی تہ میں منزلِ مقصود ہے نہاں
    کشتی ہماری بیچ میں ڈوبے تو پار ہو
    نادان زاہدوں کی رسائی وہاں کہاں
    فردون جس کی راہ میں اک سبزہ زار ہو
    احمد صف فعال میں بیٹھے ہیں دیکھنا
    جیسے کہ زیبِ صدر کوئی شہریار ہو
    ایک شعر
    جو حال ہے دل کا وہ بیاں ہو نہیں سکتا
    کہنے سے بھی یہ راز عیاں ہو نہیں سکتا
     
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناتمام و گمشدہ، ۱۹۲۵ء

    زخموں سے تپاں شوق شہادت میں رواں بھی
    بسمل تری نظروں کے چنیں بھی ہے چناں بھی
    اللہ کرم اب تو مری تشنہ لبی پر
    ساقی ہے شب قدر بھی ماہِ رمضاں بھی
    پروانے کے انداز ہیں بچوں کا تماشہ
    پُھنک جائیے اس طرح کہ اٹھے نہ دھواں بھی
    اس راہ سے آگے ہے بہت رند کی منزل
    جس راہ میں اک سبز خیاباں ہے جناں بھی
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ناتمام

    یہاں بقا ہے فنا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    طبیب مری دوا ہو تو ہو نہ ہو تو ہو
    ہمیں تو حقِ محبت سے کچھ نہیں سروکار
    یہ قرض تم سے ادا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    مری مراد ہے تم پر نثار ہوجانا
    تمھیں خیال مرا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    ہمیں تو نگہتِ گل کی امید کافی ہے
    چمن میں بادِ صبا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    مری وفا ہے طبیعی کسی غرض سے نہیں
    کسی کو پاسِ وفا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    غنی ہوئے جو ملی دیدِ یار کی دولت
    یہ ملک و مال ہے کیا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    وہ اپنی چال چلیں گے کچھ اس کی فکر نہیں
    جہاں میں حشر بپا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    مجھے تو آپ سے عرضِ نیاز لازم ہے
    قبول میری دعا ہو تو نہ ہو تو نہ ہو
    ہماری زیست ہماری نہیں تمھاری ہے
    اگر تمھاری رضا ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    سوال خوئے رضا کے خلاف ہے احمدؔ
    وہ آپ جلوہ نما ہو تو ہو نہ ہو تو نہ ہو
    *****
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تشکر جناب ع واحد اور ڈاکٹر شاہد ماہلی۔ ڈائریکٹر، غالب اکیڈمی دہلی
    ان پیج سے تبدیلی، تدوین، اور ای بک کی تخلیق: اعجاز عبید
    اردو لائبریری ڈاٹ آرگ، کتابیں ڈاٹ آئی فاسٹ نیٹ داٹ کام اور کتب ڈاٹ 250 فری ڈاٹ کام کی مشترکہ پیشکش
     

اس صفحے کی تشہیر