انتخابِ کلامِ میر (دیوان اول)

وہاب اعجاز خان نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 22, 2006

  1. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    انتخاب کلامِ میر دیوانِ اول


    میر کے پانچ اہم انتخابات کا مجموعہ

    انتخاب

    نواب عماد الملک سید
    مولوی عبدالحق
    حسرت موہانی
    اثر لکھنوی
    محمد حسن عسکری

    ۔۔۔۔۔۔۔۔​
     
  2. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    الف


    تھا مستعار حسن سے اُس کے جو نور تھا
    خورشید میں بھی اس ہی کا ذرہ ظہور تھا

    ہنگامہ گرم کن جو دلِ ناصبور تھا
    پیدا ہر ایک نالے سے شورِ نشور تھا

    پہنچا جو آپ کو تو میں پہنچا خدا کے تئیں
    معلوم اب ہوا کہ بہت میں بھی دور تھا

    آتش بلند دل کی نہ تھی ورنہ اے کلیم
    یک شعلہ برقِ خرمنِ صد کوہِ طور تھا

    مجلس میں رات ایک ترے پرتوے بغیر
    کیا شمع کیا پتنگ ہر اک بے حضور تھا

    معنم کے پاس قاقم و سنجاب تھا تو کیا
    اُس رند کی بھی رات گزر گئی جو غور تھا

    ہم خاک میں ملے تو ملے لیکن اے سہپر
    اُس شوخ کو بھی راہ پہ لانا ضرور تھا

    ق

    کل پاوں ایک کاسہء سر پر جو آگیا
    یکسر وہ استخوان شکستوں سے چور تھا

    کہنے لگا کہ دیکھ کے چل راہ، بے خبر!
    میں بھی کبھو کسو کا سرِ پُر غرور تھا

    تھا وہ تو رشکِ حور بہشتی ہمیں میں میر
    سمجھے نہ ہم تو فہم کا اپنی قصور تھا


     
  3. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    [align=center:77a299e74e]

    کیا میں بھی پریشانیِ خاطر سے قریں تھا
    آنکھیں تو کہیں تھیں، دلِ غم دیدہ کہیں تھا

    کس رات نظر کی ہے سوئے چشمکِ انجم
    آنکھوں کے تلے اپنے تو وہ ماہ جبیں تھا

    آیا تو سہی وہ کوئی دم کے لیے ، لیکن
    ہونٹھوں پہ مرے جب نفسِ باز پسیں تھا

    اب کوفت سے ہجراں کی جہاں تن پہ رکھا ہاتھ
    جودرد و الم تھا، سو کہے تُو کہ کہ وہیں تھا

    جانا نہیں کچھ، جز غزل آکر کے جہاں میں
    کُل میرے تصرف میں یہی قطعہ زمیں تھا

    نام آج کوئی یاں نہیں لیتا ہے انھوں کا
    جن لوگوں کے کل مُلک یہ سب زیرِ نگیں تھا

    مسجد میں امام آج ہوا آ کے کہاں سے
    کل تک تو یہی میر خرابات نشیں تھا

    [/align:77a299e74e]
     
  4. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    نکلے ہے چشمہ جو کوئی جوش زناں پانی کا
    یاد وہ ہے وہ کسو چشم کی گریانی کا

    لطف اگر یہ ہے بتاں صندلِ پیشانی کا
    حسن کیا صبح کے پھر چہرہء نورانی کا

    کفر کچھ چاہیے اسلام کی رونق کے لیے
    حسن زنار ہے تسبیحِ سلیمانی کا

    درہمی حال کی ہے سارے مرے دیواں میں
    سَیر کر تو بھی یہ مجموعہ پریشانی کا

    جان گھبراتی ہے اندوہ سے تن میں کیا کیا
    تنگ احوال ہے اس یوسفِ زندانی کا

    کھیل لڑکوں کا سمجھتے تھے محبت کے تئیں
    ہے بڑا حیف ہمیں اپنی اپنی بھی نادانی کا

    وہ بھی جانے کہ لہو رو کے لکھا ہے مکتوب
    ہم نے سرنامہ کیا کاغذِ افشانی کا

    اس کا منھ دیکھ رہا ہوں سو وہی دیکھوں ہوں
    نقش کا سا ہے سماں میری بھی حیرانی کا

    بت پرستی کو تو اسلام نہیں کہتے ہیں
    معتقد کون ہے میر ایسی مسلمانی کا

     
  5. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    جامہء مستیِ عشق اپنا مگر کم گھیر تھا
    دامنِ تر کا مرے، دریا ہی کا سا پھیر تھا

    دیر میں کعبے گیا میں میں خانقہ سے اب کے بار
    راہ سے مے خانے کی اس راہ میں کچھ پھیر تھا

    بلبلوں نے کیا گُل افشاں میر کا مرقد کیا
    دور سے آیا نظر پھولوں کا اک ڈھیر تھا​
     
  6. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    اس عہد میں‌ الہی محبت کو کیا ہوا
    چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا

    امیدوارِ وعدہء دیدار مرچلے
    آتے ہی آتے یارو قامت کو کیا ہوا

    اس کے گئے پر ایسی گئی دل سے ہم نشیں
    معلوم بھی ہوا نہ کہ طاقت کو کیا ہوا

    بخشش نے مجھ کو ابرِ کرم کی کیا خجل
    اے چشم جوشِ اشک ندامت کو کیا ہوا

    جاتا ہے یار تیغ بہ کف غیر کی طرف
    اے کشتہء ستم تری غیرت کو کیا ہوا

    تھی صَعت عاشقی کی ہدایت ہی میر پر
    کیا جانیے کہ حالِ نہایت کو کیا ہوا
     
  7. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    شبِ‌ ہجر میں کم تظلم کیا
    کہ ہمسائگاں پر ترحم کیا

    کہا میں نے کتنا ہے گل کا ثبات!
    کلی نے یہ سن کر تبسم کیا

    زمانے نے مجھ جُرعہ کش کو ندان
    کیا خاک و خشتِ سرِ‌ خم کیا

    جگر ہی میں یک قطرہء خوں ہے سرشک
    پلک تک گیا تو تلاطم کیا

    کسو وقت پاتے نہیں گھر اُسے
    بہت میر نے آپ کو گم کیا​
     
  8. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    7

    الٹی ہوگئیں سب تدبیریں، کچھ نہ دوا نے کام کیا
    دیکھا اس بیماریِ دل نے آخر کام تمام کیا

    عہد جوانی رو رو کاٹا پیری میں لیں آنکھیں موند
    یعنی رات بہت تھے جاگے، صبح ہوئی آرام کیا

    حرف نہیں جاں بخشی میں اس کی، خوبی اپنی قسمت کی
    ہم سے جو پہلے کہہ بھیجا سو مرنے کا پیغام کیا

    ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختیاری کی
    چاہتے ہیں سو آپ کریں ہیں، ہم کو عبث بدنام کیا

    سارے رند اوباش جہاں کے تجھ سے سجود میں رہتے ہیں
    بانکے، ٹیڑھے، ترچھے، تیکھے سب کا تجھ کو امام کیا

    سرزد ہم سے بے ادبی تو وحشت میں بھی کم ہی ہوئی
    کوسوں اس کی اور گئے پر سجدہ ہر ہر گام کیا

    کس کا کعبہ، کیسا قبلہ، کون حرم ، ہے کیا احرام
    کوچے کے اُس کے باشندوں نے سب کو یہیں سے سلام کیا

    شیخ جو ہے مسجد میں ننگا، رات کو تھا مے خانے میں
    جُبہ ، خرقہ، کرتا، ٹوپی، مستی میں انعام کیا

    یاں کے سپید و سیہ میں ہم کو دخل جو ہے سو اتنا ہے
    رات کو رو رو صبح کیا دن کو جوں جوں شام کیا

    ساعدِ سمیں دونوں اس کے، ہاتھ میں لا کر چھوڑ دیے
    بُھولے اُس کے قول و قسم پر، ہائے خیالِ خام کیا

    کام ہوئے ہیں سارے ضائع ہر ساعت کی سماجت ہے
    استغنا کی چوگنی اُن نے، جُوں جُوں میں ابرام کیا

    ایسے آہوئے رم خوردہ کی وحشت کھونی مشکل تھی
    سحر کیا اعجاز کیا، جن لوگوں نے تجھ کو رام کیا​
     
  9. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    8

    چمن میں گل نے جو کل دعویِ جمال کیا
    جمالِ یار نے منھ اُس کا خوب لال کیا

    فلک نے آہ تری رہ میں ہم کو پیدا کر
    بہ رنگِ سبزہء نورستہ پائمال کیا

    رہی تھی دم کی کشاکش گلے میں کچھ باقی
    سو اُس کی تیغ نے جھگڑا ہی انفصال کیا

    بہارِ رفتہ پھر آئی ترے تماشے کو
    چمن کو یمنِ قدم نے ترے نہال کیا

    جواب نامہ سیاہی کا اپنی ہے وہ زلف
    کسو نے حشر کو ہم سے اگر سوال کیا

    لگا نہ دل کو کہیں، کیا سنا نہیں‌ تو نے
    جو کچھ کہ میر کا اس عاشقی نے حال کیا​
     
  10. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    9

    دیکھے گا جو تجھ رُو کو، سو حیران رہے گا
    وابستہ ترے مُو کا، پریشان رہے گا

    منعم نے بِنا ظلم کی رکھ، گھر تو بنایا
    پر آپ کوئی رات ہی مہمان رہے گا

    چھوٹوں کہیں‌ ایذا سے ، لگا ایک ہی جلاد
    تا حشر مرے سر پہ یہ احسان رہے گا

    چمٹے رہیں گے دشتِ محبت میں سرو تیغ
    محشر تئیں خالی نہ یہ میدان رہے گا

    جانے کا نہیں شور سخن کا مرے ہرگز
    تا حشر جہاں میں میرا دیوان رہے گا

    دل دینے کی ایسی حرکت اُن نے نہیں کی
    جب تک جیے گا میر پشیمان رہے گا

     
  11. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    10

    تا گور کے اوپر وہ گل اندام نہ آیا
    ہم خاک کے آسودوں کو آرام نہ آیا

    بے ہوش مئے عشق ہوں، کیا میرا بھروسا
    آیا جو بخود صبح تو میں‌شام نہ آیا

    کس دل سے ترا تیرِ نگہ پار نہ گزرا
    کس جان کو یہ مرگ کا پیغام نہ آیا

    دیکھا نہ اُسے دور سے بھی منتظروں نے
    وہ رشکِ‌ مہ عید لبِ بام نہ آیا

    سو بار بیاباں میں‌گیا محملِ لیلیٰ
    مجنوں کی طرف ناقہ کوئی گام نہ آیا

    اب کے جو ترے کوچے سے جاوں گا توسنیو!
    پھر جیتے جی اس راہ وہ بدنام نہ آیا

    نَے خون ہو آنکھوں سے بہا ٹک نہ ہوا داغ
    اپنا تو یہ دل میر کِسو کام نہ آیا​
     
  12. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    11

    جس سر کو غرور آج ہے یاں تاج وری کا
    کل اُس پہ یہیں شور ہے پھر نوحہ گری کا

    آفاق کی منزل سے گیا کون سلامت
    اسباب لٹا راہ میں یاں‌ ہر سفری کا

    زنداں میں‌ بھی شورش نہ گئی اپنے جنوں کی
    اب سنگ مداوا ہے اس آشفتہ سری کا

    ہر زخمِ جگر داورِ محشر سے ہمارا
    انصاف طلب ہے تیری بیداد گری کا

    اپنی تو جہاں آنکھ لڑی پھر وہیں دیکھو
    آئینے کو لپکا ہے پریشاں نظری کا

    صد موسمِ‌گل ہم کو تہِ بال ہی گزرے
    مقدور نہ دیکھا کبھو بے بال و پری کا

    اس رنگ سے چمکے ہے پلک پر کہ کہے تو
    ٹکڑا ہے مرا اشک عقیقِ جگری کا

    لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام
    آفاق کی اس کارگہِ شیشہ گری کا

    ٹک میرِ جگر سوختہ کی جلد خبر لے
    کیا یار بھروسہ ہے چراغِ سحری کا
     
  13. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    12

    وہ اک روش سے کھولے ہوئے بال ہوگیا
    سنبل چمن کا مفت میں پامال ہوگیا

    کیا امتدادِ مدتِ ہجراں بیاں کروں
    ساعت ہوئی قیامت و مہ سال ہوگیا

    دعویٰ کیا تھا گل نے ترے رخ سے باغ میں
    سیلی لگی صبا کی تو منہ لال ہوگیا

    قامت خمیدہ، رنگ شکستہ، بدن نزار
    تیرا تو میر غم میں عجب حال ہوگیا​
     
  14. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    13

    بے تاب جی کو دیکھا، دل کو کباب دیکھا
    جیتے رہے تھے کیوں ہم جو یہ عذاب دیکھا

    پودا ستم کا جس نے اس باغ میں لگایا
    اپنے کیے کا اُن نے ثمرہ شتاب دیکھا

    دل کا نہیں ٹھکانا بابت جگر کی گم ہے
    تیرے بلاکشوں کا ہم نے حساب دیکھا

    آباد جس میں تجھ کو دیکھا تھا ایک مدت
    اُس دل کی مملکت کو اب ہم خراب دیکھا

    لیتے ہی نام اُس کا سوتے سے چونک اُٹھے ہو
    ہے خیر میر صاحب! کچھ تم نے خواب دیکھا!​
     
  15. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    14

    دل بہم پہنچا بدن میں، تب سے سارا تن جلا
    آ پڑی یہ ایسی چنگاری کہ پیراہن جلا

    سرکشی ہی ہے جو دکھلاتی ہے اس مجلس میں داغ
    ہو سکے تو شمع ساں دیجے رگِ گردن جلا

    بدر ساں اب آخر آخر چھا گئی مجھ پر یہ آگ
    ورنہ پہلے تھا مرا جوں ماہِ نو دامن جلا

    کب تلک دھونی لگائے جوگیوں کی سی رہوں
    بیٹھے بیٹھے در پہ تیرے تو مرا آسن جلا

    سوکھتے ہی آنسووں کے، نور آنکھوں سے گیا
    بجھ ہی جاتے ہیں دیے جس وقت سب روغن جلا

    آگ سی اک دل میں سلگے ہے کبھو بھڑکی تو میر
    دے گی میری ہڈیوں کا ڈھیر جوں ایندھن جلا​
     
  16. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    15

    حالِ دل میر کا رو رو کے سب اے ماہ، سنا
    شب کو القصہ عجب قصہء جاں کاہ سنا

    کوئی ان طوروں سے گزرے ہے ترے غم میں مری
    گاہ تُو نے نہ سنا حال مرا، گاہ نہ سنا

    خوابِ غفلت میں ہیں یاں سب تُو عبث جاگا میر
    بے خبر دیکھا اُنھیں میں جنھیں آگاہ سنا​
     
  17. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    16

    جب جنوں سے ہمیں توسل تھا
    اپنی زنجیر پا ہی کا غُل تھا

    بسترا تھا چمن میں جوں‌ بلبل
    نالہ سرمایہء توکل تھا

    یک نِگہ کو وفا نہ کی گویا
    موسمِ گل صفیرِ بلبل تھا

    اُن نے پہچان کر ہمیں مارا
    مُنھ نہ کرنا اِدھر تجاہل تھا

    اب تو دل کو نہ تاب ہے نہ قرار
    یادِ ایام جب تحمل تھا

    جا پھنسا دامِ زلف میں‌ آخر
    دل نہایت ہی بے تاءمل تھا

    یوں‌گئ قد کے خم ہوئے جیسے
    عمر اک روہر سرِ پل تھا

    خوب دریافت جو کیا ہم نے
    وقتِ خوش میر نکہتِ گل تھا
     
  18. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    17

    آگے جمالِ یار کے معذور ہوگیا
    گُل اک چمن میں دیدہء بے نور ہوگیا

    اک چشمِ منتطر ہے کہ دیکھے ہے کب سے راہ
    جوں زخم تیری دوری میں ناسور ہوگیا

    پہنچا قریبِ مرگ کے وہ صیدِ ناقبول
    جو تیری صید گاہ سے ٹک دور ہوگیا

    اُس ماہِ‌ چاردہ کا چھپے عشق کیوں کہ آہ
    اب تو تمام شہر میں‌ مشہور ہوگیا

    شاید کسو کے دل کو لگی اُس گلی میں چوٹ
    میری بغل میں شیشہء دل چور ہوگیا

    دیکھا جو میں نے یار کو وہ میر ہی نہیں
    تیرے غمِ فراق میں‌ رنجور ہوگیا
     
  19. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    18

    فرہاد ہاتھ تیشے پہ ٹک رہ کے ڈالتا
    پتھر تلے کا ہاتھ ہی اپنا نکالتا

    بگڑا اگر وہ شوخ تو سنیو کہ رہ گیا
    خورشید اپنی تیغ و سپر ہی سنبھالتا

    یہ سر تبھی سے گوے ہے میدان عشق کا
    پھرتا تھا جن دنوں میں تو گیندیں اچھالتا

    بِن سر کے پھوڑے بنتی نہ تھی کوہ کن کے تئیں
    خسرو سے سنگِ سینہ کو کس طور ٹالتا

    چھاتی سے ایک بار لگاتا جو وہ تو میر
    برسوں یہ زخم سینے کا ہم کو نہ سالتا​
     
  20. وہاب اعجاز خان

    وہاب اعجاز خان محفلین

    مراسلے:
    1,587
    19

    گل شرم سے بہ جائےگا گلشن میں ہو کر آب سا
    برقعے سے گر نکلا کہیں چہرہ ترا مہتاب سا

    گل برگ کا یہ رنگ ہے مرجاں کا ایسا ڈھنگ ہے
    دیکھو نہ جھمکے ہے پڑا وہ ہونٹھ لعلِ ناب سا

    وہ مایہء جاں تو کہیں پیدا نہیں جوں کیمیا
    میں شوق کی افراط سے بے تاب ہوں سیماب سا

    دل تاب ہی لایا نہ ٹک، تا یاد رہتا ہم نشیں
    اب عیش روزِ وصل کا ہے جی میں بھولا خواب سا

    سناہٹے میں جان کے ہوش و حواس ودم نہ تھا
    اسباب سارا لے گیا، آیا تھا اک سیلاب سا

    ہم سرکشی سے مدتوں مسجد سے بچ بچ کر چلے
    اب سجدے ہی میں گزرے ہے قد جو ہوا محراب سا

    تھی عشق کی وہ ابتدا جو موج سی اٹھتی کبھو
    اب دیدہء تر کو جو تم دیکھو تو ہے گرداب سا

    رکھ ہاتھ دل پر میر کے دریافت کرکیا حال ہے!
    رہتا ہے اکثر یہ جواں کچھ ان دِنوں بے تاب سا

     

اس صفحے کی تشہیر