غضب شاعری

  1. طارق شاہ

    فانی شوکت علی خاں فانؔی بدایونی ::::: وفا بیگانۂ رسمِ بیاں ہے :::::: Fani Badayuni

    غزل وفا بیگانۂ رسمِ بیاں ہے خموشی اہلِ دِل کی داستاں ہے مِرا دِل ہے کسی کی یاد کا نام محبّت میری ہستی کا نِشاں ہے تماشا چاہیے تابِ نظر دے نگاہِ شوق ہےاور رائیگاں ہے مُسلّم پُرسِشِ بیمار، لیکن ! وہ شانِ چارہ فرمائی کہاں ہے تِرا نقشِ قدم ہے ذرّہ ذرّہ زمِیں کہتے ہیں جس کو، آسماں ہے بچے گی...
  2. طارق شاہ

    شہریاؔر ::::::دشت میں پُہنچے، نہ گھر میں آئے!:::::: Shahryar

    غزل دشت میں پُہنچے، نہ گھر میں آئے! کِن بَلاؤں کے اثر میں آئے قہر آندھی کا ہُوا ہے نازِل پُھول، پھل پِھر بھی شجر میں آئے کب سے بے عکس ہے آئینہ چشم! کوئی تصوِیر نظر میں آئے کِتنی حسرت تھی ،کہ سیّاح کوئی دِل کےاِس اُجڑے نگر میں آئے قافلہ دِل کا ، کہیں تو ٹھہرے کوئی منزِل تو سفر میں آئے...
  3. طارق شاہ

    ناصر کاظمی ::::: چھوٹی رات، سفر لمبا تھا ::::::Nasir Kazmi

    چھوٹی رات، سفر لمبا تھا میں اِک بستی میں اُترا تھا سُرماندی کے گھاٹ پہ اُس دن جاڑے کا پہلا میلا تھا بارہ سکھیوں کا اِک جُھرمٹ سیج پہ چکّر کاٹ رہا تھا نئی نکور کنواری کلیاں کورا بدن کورا چولا تھا دیکھ کے جوبن کی پُھلواری چاند گگن پر شرماتا تھا پیٹ کی ہری بھری کیاری میں سُرخ مُکھی کا...
  4. طارق شاہ

    شفیق خلش :::::: یادوں سے سیلِ غم کو ہیں آنکھوں میں رَوکے ہم ! :::::: Shafiq Khalish

    یادوں سے سیلِ غم کو ہیں آنکھوں میں روکے ہم کب بھُولے، زندگی سے محبّت کے بوسے ہم دیکھیں برستی آگ لبِ نغمہ گو سے ہم حیراں ہیں گفتگو کو مِلی طرزِ نَو سے ہم سب دوست، آشنا جو تھے تاتاری بن گئے آئے وطن، تو بیٹھے ہیں محبوس ہوکے ہم اپنی روایتوں کا ہَمَیں پاس کب رہا ! کرتے شُمار خود کو ہیں اِس...
  5. طارق شاہ

    شفیق خلش :::: کچھ نہ ہم کو سُجھائی دیتا ہے :::: Shafiq Khalish

    غزل کچھ نہ ہم کو سُجھائی دیتا ہے ہر طرف وہ دِکھائی دیتا ہے خود میں احساس اب لئے اُن کا لمحہ لمحہ دِکھائی دیتا ہے ہوگئے خیر سے جواں ہم بھی گُل بھی کیا گُل دِکھائی دیتا ہے دسترس میں ہے کُچھ نہیں پھر بھی اُونچا اُونچا سُجائی دیتا ہے کب محبّت میں سُرخ رُو ہونا اپنی قسمت دِکھائی دیتا...
  6. طارق شاہ

    شفیق خلش :::::: آئیں اگر وہ یاد تو مرتے نہیں ہیں ہم :::::: Shafiq Khalish

    غزل آئیں اگر وہ یاد تو مرتے نہیں ہیں ہم حالت خراب دِل کی گو کرتے کہیں ہیں کم دِل خُون ہے اگرچہ شب و روز ہجر میں آنکھوں کو اپنی شرم سے کرتے نہیں ہیں نم ایسا بُجھادِیا ہَمَیں فُرقت کی دُھوپ نے کوشِش رہے ہزار نِکھرتے کہیں ہیں ہم اِک پَل نہ ہوں گوارہ کسی طور یُوں ہَمَیں دِل پر سوار ہو کے...
  7. طارق شاہ

    شاذ تمکنت شاؔذ تمکنت :::::: خوار و رُسوا تھے یہاں اہلِ سُخن پہلے بھی ::::::Shaz Tamkanat

    غزل خوار و رُسوا تھے یہاں اہلِ سُخن پہلے بھی ایسا ہی کُچھ تھا زمانے کا چلن ، پہلے بھی مُدّتوں بعد تجھے دیکھ کے یاد آتا ہے مَیں نے سِیکھا تھا لہُو رونے کا فن پہلے بھی ہم نے بھی پایا یہاں خِلعَتِ سنگ و دُشنام وضعدار ایسے ہی تھے اہلِ وطن پہلے بھی دِلنواز آج بھی ہے نِیم نِگاہی تیری دِل شکن...
  8. طارق شاہ

    فیض فیض فیض احمد فیض ::::: شرح ِبے دردئ حالات نہ ہونے پائی ::::: Faiz Ahmad Faiz

    غزل شرح ِبے دردئ حالات نہ ہونے پائی اب کے بھی، دِل کی مدارات نہ ہونے پائی پِھر وہی وعدہ، جو اِقرار نہ ہونے پایا ! پِھروہی بات، جو اثبات نہ ہونے پائی پِھر وہ پروانے جنھیں اذنِ شہادت نہ مِلا پِھر وہ شمعیں، کہ جنھیں رات نہ ہونے پائی پِھر وہی جاں بہ لَبی، لذَّتِ مے سے پہلے! پِھر وہ محفِل، جو...
  9. طارق شاہ

    شفیق خلش :::::: سائے ہیں بادلوں کے وہ، چَھٹتے نہیں ذرا :::::: Shafiq Khalish

    شفیق خلش غزل سائے ہیں بادلوں کے وہ، چَھٹتے نہیں ذرا لا لا کے غم سروں پہ یہ، تھکتے نہیں ذرا کیسے قرار آئے دلِ بے قرار کو گھر سے اب اپنے وہ، کہ نکلتے نہیں ذرا کیا وہ بچھڑگئے، کہ خُدائی بچھڑ گئی دُکھ اب ہماری ذات کے بٹتے نہیں ذرا سُوجھے کوئی نہ بات ہَمَیں آپ کے بغیر موسم تخیّلوں کے بدلتے نہیں...
  10. طارق شاہ

    ایاؔز صدیقی ::::::چہرۂ وقت سے اُٹّھے گا نہ پردا کب تک::::::Ayaz Siddiqui

    غزل چہرۂ وقت سے اُٹّھے گا نہ پردا کب تک پسِ اِمروز رہے گا، رُخِ فردا کب تک اُس کی آنکھوں میں نمی ہے، مِرے ہونٹوں پہ ہنسی میرے اللہ! یہ نیرنگِ تماشا کب تک یہ تغافُل ، یہ تجاہل ، یہ سِتم ، یہ بیداد کب تک ، اے خانہ براندازِ تمنّا !کب تک بن گیا گردشِ دَوراں کا نِشانہ آخر لشکرِ وقت سے لڑتا دلِ...
Top